PIB Headquarters

کووڈ-19 سے متعلق پی آئی بی کا یومیہ بلیٹن یا خبرنامہ

Posted On: 25 SEP 2020 6:21PM by PIB Delhi

22222.png

کووڈ-19 پر مشتمل پریس ریلیز ، جو 24 گھنٹوں میں جاری کی گئی ہیں، فیلڈ افسران سے حاصل کردہ معلومات اور پی آئی بی کے ذریعہ کئے گئے صحیح تجزیات پر مشتمل ہیں

 

  • پہلی مرتبہ ایک دن میں تقریباً 15 لاکھ کووڈ جانچ کی گئی۔مجموعی ٹیسٹ میں یہ انتہائی اضافہ ہے، جو 7 کروڑ کے قریب ہے۔
  • اب تک 47.5 لاکھ (47,56,164) مریض شفایاب ہوئے ہیں۔پچھلے 24 گھنٹوں میں شفایاب ہونے والے مریضوں کی تعداد81,177ہے۔
  • بحالی کی قومی شرح مستقل بڑھ رہی ہے، جو آج 81,74فیصد ہے۔
  • 73 فیصد نئے شفایاب کیسز 10 ریاستوں؍مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے سامنے آئے ہیں۔
  • نیشنل میڈیکل کمیشن اور چار خود مختار بورڈوں کی تشکیل کے ساتھ طبی تعلیم کے شعبے میں انقلابی اصلاحات عمل میں لائی گئیں ہیں۔
  • داخلی پروازیں دوبارہ شروع ہونے کے بعد سے اب تک ایک کروڑ سے زائد مسافروں نے ہوائی سفر کئے۔

 

04.jpg

 

05.jpg

 

بھارت میں شفایاب ہونے والوں کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے اور یہ تعداد 47.5 لاکھ سے آگے نکل گئی ہے؛صحت یاب ہونے وا لے نئے کیسوں میں 10 ریاستوں؍ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کا حصہ 73 فیصد ہے

 

اب تک 47.5 لاکھ (4756164)سے زیادہ مریض صحت یاب ہوچکے ہیں۔ پچھلے 24 گھنٹوں میں 81177 مریض بازیاب ہوئے۔ بازیافت ہونے والے معاملات آج فعال واقعات (970116) سے قریب 38 لاکھ (3786048) سے تجاوز کر چکے ہیں۔ بہت زیادہ بازیافتوں کی اس تعداد کے مطابق، قومی بحالی کی شرح بڑھتی ہوئی وکر کی پیروی کرتی ہے۔ آج کل یہ 81.74فیصد ہے۔ نئے بازیافت ہونے والے کیسوں میں سے 73، دس ریاستوں؍مرکز کے زیرانتظام خطوں سے رپورٹ ہوئے ہیں۔ مہاراشٹرا ، آندھرا پردیش ، کرناٹک ، تمل ناڈو ، اترپردیش ، اڈیشہ ، دہلی ، کیرالہ ، مغربی بنگال اور آسام۔ مہاراشٹر میں 17000 سے زیادہ نئی بازیابی کے ساتھ برتری حاصل ہے۔ ایک دن کی بازیابی میں آندھرا پردیش نے 8000 سے زیادہ کا تعاون کیا۔ ملک میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 86052 نئے تصدیق شدہ واقعات رپورٹ ہوئے ہیں۔ نئے معاملات میں سے 75 فیصد دس ریاستوں؍ریاستوں میں شامل ہیں۔ نئے معاملات میں مہاراشٹرا نے 19000 سے زیادہ کا تعاون کیا۔ آندھرا پردیش اور کرناٹک دونوں نے پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران 7000.1141 سے زیادہ اموات رجسٹر کی ہیں۔ ان میں سے 83فیصد 10 ریاستوں؍ مرکز کے زیرانتظام خطوں سے ہیں۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1659012

 

بھارت نے ایک تاریخی چوٹی سر کی ہے اور یومیہ ٹیسٹنگ کا اب تک کا سب سے بڑا ریکارڈ قائم کیا ہے،پہلی مرتبہ ایک دن میں تقریباً 15 لاکھ کووڈ ٹیسٹ کیے گئے؛ٹیسٹوں کی کُل تعداد میں غیر معمولی اضافہ ہوکر یہ تعداد 7 کروڑ کے قریب پہنچ گئی ہے

بھارت نے کووڈ-19 کے خلاف لڑائی میں ایک تاریخی چوٹی سر کی ہے۔ اس شاندار کامیابی کے تحت اس نے پہلی مرتبہ ایک دن میں تقریباً 15 لاکھ کووڈ ٹیسٹ کیے ہیں۔پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران 1492409 اب تک کیے گئے ٹیسٹوں کی تعداد تقریباً 7 کروڑ (68928440) ہوگئی ہے۔

یومیہ ٹیسٹنگ میں غیر معمولی اضافے سے ملک میں ٹیسٹ کرنے کے بنیادی ڈھانچے کے مضبوط ہونے کا اظہار ہوتا ہے۔پچھلے ایک کروڑ ٹیسٹ قریب قریب 9 دن میں کیے گئے۔ٹیسٹ فی ملین(ٹی پی ایم) آج تک 49948 پر ہے۔ قومی مجموعی مثبت شرح خواندگی آج 8.44فیصدہے۔ ٹیسٹنگ انفراسٹرکچر کی توسیع کے ساتھ ، ریاستوں؍ مرکز کے زیرانتظام خطوں کی طرف سے روزانہ کی جانچ میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ قومی ریاست اوسط (49948) کے مقابلے میں 23 ریاستوں؍ مرکز کے زیرانتظام خطو میں  فی ملین بہتر ٹیسٹ ہوتے ہیں۔ ٹیسٹنگ نیٹ ورک آج بڑھ کر 18 لیبز ہوچکا ہے ، جس میں سرکاری شعبے میں 1084 لیب اور 734 نجی لیب شامل ہیں۔

مزید تفصیلات کے لئے:

https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1658910


ڈاکٹر ہرش وردھن نے ایمس، نئی دہلی کے 65ویں یوم تاسیس کی تقریبات کا افتتاح کیا

صحت اور خاندانی فلاح وبہبود کے مرکزی وزیر اور ایم کے صدر ڈاکٹر ہرش وردھن نے نئی دہلی کے ایمس کے 65ویں یوم تاسیس کی تقریب کی صدارت کی۔ اس موقع پر صحت اور خاندانی فلاح وبہبود کے وزیر مملکت ڈاکٹر اشونی کمار چوبے بھی موجود تھے۔آج کا دن 1956 میں ایمس میں ایم بی بی ایس کلاسوں کے پہلے بیچ کی پڑھائی کی شروعات کی یاد تازہ کرتا ہے۔انسانی وسائل اور ترقی کی وزارت کے ذریعے نیشنل انسٹی ٹیوٹ رینکنگ فریم ورک (این آئی آر ایف) کی طرف سے طبی اداروں میں ایمس کو اوّل درجہ دیئے جانے پر ایمس کے اساتذہ کو مبارکباد دیتے ہوئے ڈاکٹر ہرش وردھن نے اطمینان کا اظہار کیا کہ ایمس، نئی دہلی نے اپنے قیام کے مقاصد پورے کردیئے ہیں۔ یہ مقاصد بھارتی پارلیمنٹ نے 1956 میں اس کی سنگ بنیاد کے موقع پر مقرر کیے تھے اور اس ادارے نے صحت خدمات، تعلیم اور ریسرچ کے میدان میں اعلیٰ معیار قائم کرنے کی مسلسل کوشش کی ہے۔ڈاکٹر ہرش وردھن نے وبائی بیماری کووڈ-19 کے دوران اس ادارے کے زبردست کردار کے لیے بھی شکریے کا اظہار کیا۔ انھوں نے کہا ‘‘5 ملین افراد سے زیادہ کورونا وائرس سے متاثرہوئے ہیں لیکن بھارت کے صحت کی دیکھ بھال کے نظام نے نہ صرف تشخیص اور بندوبست کی سہولتوں کی فراہمی میں زبردست اہلیت کا مظاہرہ کیا ہے بلکہ اموات کی شرح کم سے کم رکھنےاور صحت یابی کی شرح زیادہ سے زیادہ رکھنے میں بھی مہارت کا اظہار کیا ہے۔ مجھے بڑی خوشی ہے کہ پچھلے 6 ماہ کے دوران ایمس نے کووڈ-19 سے متاثرہ مریضوں کی دیکھ بھال کے سلسلے میں زبردست ذمے داری اٹھائی ہے اور تعلیم اور مواصلات کے نئے طریقوں کو فروغ دے کر پورے ملک میں اپنے ساتھیوں کی رہنمائی کرنے اور ریسرچ کے شعبوں میں اختراعات سے کام لیا ہے’’۔کووڈ-19 کے خلاف بھارت کی لڑائی میں ڈاکٹر ہرش وردھن نے کہا ‘‘ بھارت میں صحت یابی کی بڑھتی ہوئی شرح اور ہلاکت کی بتدریج گھٹتی ہوئی شرح نے کووڈ-19 کی روک تھام کے سلسلے میں ہمارے وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی انقلابی قیادت میں تمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کی طرف سے اپنائی گئی حکمت عملی کی کامیابی کوصحیح ثابت کردیا ہے۔ ہم نے ٹیسٹ کرنے کی اپنی صلاحیت میں کامیابی کے ساتھ اضافہ کیا ہے جس کے تحت آج تک تقریباً 15 لاکھ ٹیسٹ کیے گئے ہیں اور پورے ملک میں ٹیسٹ کرنے والی تجربے گاہوں کی تعداد 1800 سے زیادہ ہوگئی ہے۔ کووڈ-19 کے علاج اور ویکسین کی تیاری کے سلسلے میں جو پیشرفت ہو رہ ہے مجھے اس پر اعتماد ہے اور جلد ہی بھارت کووڈ-19 کے خلاف لڑائی میں مزید کامیابیاں حاصل کرے گا’’

مزید تفصیلات کے لئے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1659158


طبی تعلیم میں تاریخی اصلاحات : قومی طبی کمیشن ( این ایم سی ) تشکیل دیا گیا

طبی تعلیم کے شعبے میں تاریخی اصلاحات کے ساتھ مرکزی حکومت نے 4 خود مختار بورڈوں کے ساتھ قومی طبی کمیشن (این ایم سی ) تشکیل دیا ہے ۔ اس کے ساتھ ہی دہائیوں پرانی بھارتی طبی کونسل ( ایم سی آئی ) کالعدم ہو گئی ہے ۔ این ایم سی کے ساتھ انڈر گریجویٹ ( یو جی)اور پوسٹ گریجویٹ ( پی جی ) طبی تعلیم کے چار خود مختار بورڈ ، میڈیکل اسسمنٹ اور ریٹنگ بورڈ اور ایتھکس اور میڈیکل رجسٹریشن بورڈ بھی تشکیل دیئے گئے ہیں ، جو روز مرہ کی کار کردگی میں این ایم سی کی مدد کریں گے ۔ یہ تاریخی اصلاحات طبی تعلیم کو ایک شفاف اور معیاری اور جوابدہ نظام کی جانب لے جائیں گے ۔ بنیادی تبدیلی ، جو کی گئی ہے ، وہ یہ ہے کہ اب ریگو لیٹر کو میرٹ کی بنیاد پر منتخب کیا جائے گا ، جب کہ پہلے ایک نامزد ریگو لیٹر ہوتا تھا ۔ اب طبی تعلیم میں مزید اصلاحات کو آگے بڑھانے کے لئے غیر مشکوک ایمانداری ، پیشہ ورانہ مہارت اور تجربے والے مرد و خواتین کو آگے لایا جائے گا۔

مزید تفصیلات کے لئے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1659331

 

وزیر اعظم جناب نریندر مودی اور جاپان کے وزیر اعظم محترم سوگا یوشی ہِدے کے درمیان ٹیلی فون پر بات چیت
وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج جاپان کے وزیر اعظم محترم سوگا یوشی ہِدے کے ساتھ ٹیلی فون پر بات چیت کی ۔ وزیر اعظم نے ، وزیر اعظم سوگا کو جاپان کا وزیر اعظم مقرر ہونے پر مبارکباد دی اور اُن کے مقاصد کے حصول میں کامیابی کے لئے نیک خواہشات پیش کیں۔ دونوں لیڈروں نے اِس بات سے اتفاق کیا کہ بھارت – جاپان خصوصی اسٹریٹیجک اور عالمی ساجھیداری نے پچھلے کچھ برسوں میں زبردست ترقی کی ہے اور انہوں نے باہمی اعتماد اور مشترکہ اقدار پر مبنی ، اِن تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کی خواہش کا اظہار کیا ۔ دونوں لیڈروں نے ، اِس بات سے بھی اتفاق کیا کہ دونوں ملکوں کے درمیان ساجھیداری آج کے عالمی چیلنجوں ، بشمول کووڈ – 19 عالمی وباء کے لئے زیادہ مطابقت رکھتی ہے ۔ انہوں نے اِس بات پر زور دیا کہ ایک آزاد ، کھلے اور شمولیت والے بھارت بحرالکاہل خطے کے اقتصادی ڈھانچے کو ابھرنے والی سپلائی چین سے تقویت دی جانی چاہیئے اور اِس سلسلے میں بھارت – جاپان اور انہی خیالات والے ملکوں کے درمیان تعاون کا خیر مقدم کیا ۔دونوں لیڈروں نے ، دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی ساجھیداری میں پیش رفت کی ستائش کی اور اس سلسلے میں خصوصی صلاحیت والے ورکروں سے متعلق معاہدے کے متن کو قطعی شکل دیئے جانے کا خیر مقدم کیا ۔ وزیر اعظم نے ، وزیر اعظم سوگا کو عالمی کووڈ – 19 وباء کے باعث حالات میں بہتری آنے کے بعد سالانہ باہمی چوٹی میٹنگ کے لئے بھارت کا دورہ کرنے کی دعوت دی ۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1659116


‘‘امیونٹی کے لئے آیوش’’مہم کے ای-میراتھن حصہ کو وزارت آیوش کی حمایت

وزارت آیوش کے ‘‘یوگا بریک’’پروٹوکول کی تشہیر کے لئے سرگرمیاں ، جو کووڈ- 19 پروٹوکول کے آغاز کے بعد معطل کردی گئیں ، آج سے اس کا نفاذ دوبارہ شروع کردیا گیا ہے۔ پانچ منٹ کے اس پروٹوکول کا مقصد لوگوں کو کام کی جگہ پر یوگا سے متعارف کروانا ہے  اور کام کے شیڈول سے وقفہ لینے اور تازہ دم اور دوبارہ توجہ مرکوز کرنے میں ان کی مدد کرنا ہے۔ ایم ڈی این آئی وائی کے ساتھ مل کر وزارت آیوش نے 2019 میں کام کی جگہ پر کارکنوں کو دباؤ، تازگی اور دوبارہ توجہ دلانے کے لئے 5 منٹ کا یوگا بریک پروٹوکول تیار کیا۔ پروٹوکول ابتدائی طور پر جنوری 2020 میں آزمائشی بنیادوں پر لانچ کیا گیا تھا اور یہ موثر پایا گیا تھا ۔ شرکاءکے تاثرات کے تجزیے کی بنیاد پر۔ موجودہ صحت کی ہنگامی صورتحال کا جائزہ لیتے ہوئے ، پھیپھڑوں کی گنجائش میں اضافے میں اس کی تاثیر کے پیش نظر ، سانس لینے والی ورزش (پرانامایا) پر مزید زور دیا گیا۔ وزارت آیوش آنے والے ہفتوں میں جی پی او کمپلیکس ، آئی این اے ، نئی دہلی میں واقع مختلف دفاتر کے عملہ اور افسران کے لئے اس سہولت کو مفت فراہم کرے گی۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1658770


‘‘آیوش برائے استثنیٰ’’ مہم کے ایک حصے کے طور پر وزارت آیوش نے ایک ناول ای میراتھن کی حمایت کی

وزارت آیوش نے راجاگیری کالج آف سوشل سائنسز اور راجاگری بزنس اسکول ، کوچی کے ساتھ مل کر ایک ناول ای- میراتھن کا اہتمام کیا ہے ، جس میں ‘‘آیوش برائے استثنیٰ’’ نامی تین ماہ کی مہم کا حصہ ہے ، جس میں صحت کو فروغ دینے پر مرکوز ہے اور بیماری سے بچاؤ کے اقدامات۔ ٹیکنالوجی ، جسمانی رن ، خیراتی اور فلاح و بہبود کے پروگراموں کا امتزاج کرتے ہوئے ، اس ای-ایونٹ سے شرکاءکی زندگیوں میں مثبت اور اچھی صحت کو بڑھانے کی توقع کی جاتی ہے۔ یہ ای- میراتھن کویوڈ آئی ڈی سے متاثرہ بچوں کی تعلیم کی معاونت اور موجودہ وبائی بحران کے دوران شرکاء کی فلاح و بہبود کو بڑھانے کے لئے کیا جارہا ہے۔ ای- میراتھن کے شرکاءاپنی پسند کے اوقات اور محفوظ مقامات پر ایونٹ میں حصہ لے سکتے ہیں۔ ان کے پاس چلنے والے چیلنجوں کو مکمل کرنے کے لئے 10 دن کی طویل مدت بھی ہے۔ ایک فلاح و بہبود ایپ شرکاءکی انفرادی طور پر پڑھنے کو مرکزی سرور (کمپیوٹر) سے مربوط کرے گی تاکہ تمام شرکاءکو مرکزی سافٹ ویئر ایپلی کیشن کے ذریعے جوڑا جائے گا۔ ہندوستان اور بیرون ملک سے لگ بھگ 8000 شرکاءاس ناول ایونٹ میں شامل ہونے کی امید کرتے ہیں۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1658935


آیوش وزارت کواڈ - 19 کے انتظام کے لئے وسا (ادھاٹوداوسیکا) اور گڈوچی کی صلاحیت کے بارے میں طبی مطالعہ کرے گی

کووڈ-19 کے تیز رفتار حل کی ضرورت کے پیش نظر ، وزارت آیوش نے متعدد چینلز کے ذریعہ مختلف ممکنہ حلوں کے بارے میں منظم مطالعہ کیا ہے۔ اس کوشش کے ایک حصے کے طور پر کووڈ- 19 مثبت معاملات میں علامات کے علاج معالجے میں وسا گھانا ، گڈوچی گھانا اور واسا-گڈوچی گھانا کے کردار کا اندازہ لگانے کے لئے ایک طبی مطالعہ کی تجویز کو حال ہی میں منظوری دے دی گئی ہے۔ یہ ایک ‘‘بے ترتیب ، کھلا لیبل تھری مسلح’’ مطالعہ ہوگا  اور سی ایس آءآر کے آئی جی آئی بی یونٹ کے اشتراک سے آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف آیور وید (اے آئی آئی اے) نئی دہلی میں کیا جائے گا۔ طریقہ کار کے ساتھ تفصیلی تجویز جس میں نتائج کے اقدامات ، طبی اور لیبارٹری پیرامیٹرز ، تحقیق کی رسد تیار کی گئی ہے۔ اس مطالعے میں ایک انوکھا کیس رپورٹ فورم (سی آر ایف)استعمال ہوگا ، جو آوش وضع کی تحقیق کے لئے موزوں ہے۔ سی آر ایف اور اسٹڈی پروٹوکول کا جدید طب سمیت مختلف ڈومینز کے ماہرین نے ہم مرتبہ جائزہ لیا ہے اور ان کی تجاویز کو شامل کیا گیا ہے۔ یہ مطالعہ ادارہ جاتی اخلاقیات کمیٹی (آئی ای سی) کی طرح مطلوبہ منظوریوں کے تحت کیا جائے گا۔

مزید تفصیلات کے لیے:

بہار کی قانون ساز اسمبلی کے لئے عام انتخابات کا شیڈول

بھارت کے انتخابی کمیشن نے بہار کی ریاستی قانون ساز اسمبلی کے عام انتخابات کے لئے 2020 ء کے شیڈول کا آج اعلان کر دیا ہے ۔

مزید تفصیلات کے لئے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1659133

 

اس سال خریف فصلوں کی بوائی 1116.88 لاکھ ہیکٹر اراضی میں ہوئی، جبکہ پچھلے سال اسی مدت کے دوران میں خریف فصلوں کی بوائی 1066.06 لاکھ ہیکٹر میں ہوئی تھی

زراعت اور کسانوں کے بہبود کی وزارت اور ریاستی سرکاروں نے مشن پروگراموں اور فلیگ شپ اسکیموں کے کامیاب نفاذ میں تمام کوشش کی ہیں۔ بھارت سرکار کے ذریعے بیج، جراثیم کش دوائیں، کھادوں اور مشینری جیسے ان پٹس کی وقت پر پری پوزشنگ کرنےسے عالمی وبا کے سبب ہوئے لاک ڈاؤن کے دوران بھی بڑے کوریج کو ممکن بنایا گیا ہے۔ خریف فصلوں کے تحت آنے والے رقبے کی پیش رفت پر کووڈ-19 کا اب تک کوئی اثر نہیں ہے۔ اس کا سہرا کسانوں کو جاتا ہے، جنہوں نے بروقت قدم اٹھائے اور ٹکنالوجی کو اپنایا اور حکومت کی اسکیموں کا فائدہ حاصل کیا۔اس سال خریف فصل کا ایریا کوریج 1116.88 لاکھ ہیکٹر ہے، جبکہ پچھلے سال کی اسی مدت میں یہ 1066.06 لاکھ ہیکٹر تھا۔ خریف فصلوں کی عبوری بوائی کے آنکڑے یکم اکتوبر 2020 کو بند ہوجانے کی امید ہے۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1659486

 


بھارت کی دنیا کے ممالک سے کووڈ 19کے بعد تدبیری منصوبہ کے مرکز میں قدرت کو رکھنے کی اپیل

ماحولیات ، جنگلات اورموسمیاتی تبدیلی کے وزیرجناب پرکا ش جاوڈیکرنے دنیا کے ممالک سے ہمارے تدبیری منصوبہ کے مرکزمیں قدرت کو رکھنے اور ‘‘قدرت کے ساتھ تال میل بنائے رکھنے ’’کے نظریئے پرعمل کرنے کے لئے ‘‘مستحکم ترقی کے لئے کارروائی اور ڈلیوری کی اقوام متحدہ کی دہائی ’’کی شروعات میں ہاتھ ملانے کی اپیل کی ۔ جناب جاوڈیکر‘‘2020سے آگے نباتاتی تنوع :کرہ ارض کے تمام ذی روح کے لئے ایک مشترکہ مستقبل کی تعمیر ’’موضوع پرورچوول وزارتی راونڈٹیبل ڈائیلاگ میں بھارت کی نمائندگی کررہے تھے ۔ اس وزارتی مذاکرات کی میزبانی چین کے ذریعہ نباتاتی تنوع پر اقوام متحدہ کی آئندہ میٹنگ سے ایک ہفتے پہلے نباتاتی تنوع اورمستحکم ترقی کے بارے میں تبادلہ خیال کے مقصد سے کی گئی ۔مناسب علاقائی نمائندگی والے ممالک کے کل 15نمائندہ وزراء کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی تنظیموں کے سربراہوں نے اس پروگرام میں شرکت کی ۔اس موقع پربولتے ہوئے جناب پرکاش جاوڈیکرنے کہاکہ کووڈ -19وبائی مرض نے اس حقیقیت پرزوردیاہے کہ قدرتی وسائل کے بے جااستعمال کے ساتھ ساتھ کھانے پینے سے متعلق غلط عادتیں انسانی زندگی کے لئے مفید نظاموں کی برباد ی کا سبب بنتی ہیں ۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleasePage.aspx?PRID=1658987

 

گھریلو پروازوں کے بحال ہونے کے بعد سے ایک کروڑ سے زیادہ مسافروں نے ہوائی جہازوں کے ذریعے سفر کیا

شہری ہوا بازی کے وزارت شری ہردیپ سنگھ پوری کو مطلع کیا ، 25 مئی 2020 کو گھریلو کارروائیوں کا دوبارہ آغاز کرنے کے بعد ایک کروڑ سے زائد مسافر 108210 پروازیں کر چکے ہیں۔ شری پوری نے مزید کہا کہ گھریلو ہوابازی پہلے سے ہی کوویڈ کے اعداد و شمار کی طرف بڑھ رہی ہے۔ شہری ہوا بازی کے وزیر نے مشترکہ طور پر 24 ستمبر 2020 کو جانے والے مسافروں کی کل تعداد 119702 تھی اور اس عرصے کے دوران آنے والے مسافروں کی کل تعداد 121126 تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ مجموعی طور پر روانگی 1393 تھی جبکہ آمدنی 1394 تھی۔ کوویڈ 19 کے تناظر میں گھریلو شیڈول کمرشل ایئر لائنز کی کاروائیاں 25 مارچ 2020 سے ختم کردی گئیں۔ 25 مئی 2020 کو یہ کارواءدو ماہ بعد دوبارہ شروع ہوئی۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1659001

 

ڈی بی ٹی - ناول بروسیل ویکسین کی آئی سی اے آر ٹرانسفر آف ٹکنالوجی۔ بروسلا ابورٹس ایس 19 ڈیلٹا فی ویکسین

بروسی لوسیس ایک زونٹیک بیماری ہے جو مویشیوں کی پیداوار میں نقصان کا سبب بنتا ہے۔ عالمی سطح پر یہ بیماری ہر سال تقریباً 5 لاکھ انسانی آبادی میں آتی ہے۔ ہندوستان میں ایک بڑی آبادی جو براہ راست ڈیری فارمنگ سے جڑی ہوئی ہے، اس بروسی لوسیس سے متاثر ہے۔بی آئی آر اے سی کے ذریعے ویکسین کی ٹکنالوجی ڈی بی ٹی کے سکریٹری، آئی سی اے آر کے ڈی جی اے ایچ سی، ڈی اے ایچ ڈی، ڈائریکٹر آئی وی آر آئی، ڈاکٹر پی چودھری، ان وینٹر ڈاکٹر اون راوت، مشیر ڈی بی ٹی کی موجودگی میں ایم ایس ہیسٹر بائیو سانپنر پرائیویٹ لمیٹیڈ کو منتقل کی گئی۔بائیو ٹکنالوجی کے محکمے (ڈی بی ٹی)نے اس ہفتے کے شروع میں ویڈیو کانفرسنگ کے ذریعے نوول بروسیلا ویکسین یعنی بروسیلا ایبورٹس ایس-19 ڈیلٹا پرویکسن کی ٹکنالوجی کی منتقلی کو آسان بنایا اور ایک مفاہمت نامہ پر دستخط کئے۔ یہ ویکسین اترپردیش کے عزت نگر کے آئی سی اے آر- انڈین ویٹری نری ریسرچ انسٹی ٹیوٹ نے تیار کیا ہے اور اسے ڈی بی ٹی کے تعاون سے چلنے والے بروسیلوسیس سے متعلق ایک نیٹ ورک پروجیکٹ کے ذریعے ای سی اے آر-آئی وی آر آئی نے تیار کیا ہے۔بروسیلا ایبورٹس ایس-19 ڈیلٹا پرویکسین نیشنل بروسیلوسیس کنٹرول پروگرام میں ایک اہم رول ادا کرسکتا ہے جو مویشی پروری، ڈیری اور ماہی پروری کی وزارت کے مویشی پروری ڈیری کی طرف سے شروع کیاگیا ہے۔

مزید تفصیلات کے لیے:

https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1659034

 

پی آئی بی فیلڈ دفاتر سے ماخوذ

کیرالہ: روزانہ کووڈ- 19 مریضوں کی تعداد میں اضافے میں کیرالہ اب چوتھے نمبر پر ہے۔ ریاست میں اس بیماری کا موجودہ پھیلاؤ ٹیسٹ مثبت ہونے کے معاملے میں قومی اوسط سے بالاتر ہے۔ جب ملک کی دیگر ریاستوں کے مقابلے میں مریضوں کی تعداد میں ایک ہفتے میں 30 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ کیرالہ اس وقت ان ریاستوں کی فہرست میں چھٹے نمبر پر ہے، جہاں زیادہ سے زیادہ افراد زیر علاج ہیں۔ مثبت معاملات میں اضافے کے بعد ، مختلف ضلعی انتظامیہ نے کوڈ کے ضوابط کو سخت بنانے کے احکامات جاری کیے ہیں۔ کوئزیکوڈ جیسے اضلاع میں فوری رسپانس ٹیمیں تعینات کی گئیں ہیں جہاں وائرس کا پھیلاؤ بہت زیادہ ہے۔ اس وقت 45919 افراد اس وائرس کا علاج کر رہے ہیں اور 2.12 لاکھ افراد قرنطین میں ہیں۔ ہلاکتوں کی تعداد 613 ہے۔

تمل ناڈو: تامل ناڈو میں کلاس 10-12 کے لئے یکم اکتوبر سے اسکول دوبارہ کھولنے کے لئے تیار ہیں۔ یہ والدین یا سرپرستوں سے تحریری رضامندی حاصل کرنے کے ساتھ مشروط ہوگا۔ آن لائن کلاسز ، فاصلاتی تعلیم جاری رہے گی۔ تریچی میں صحت کے اہلکار بزرگ شہریوں کی صحت کی حالت کی جانچ کے لئے انتخابی فہرست کا استعمال کریں گے۔ اس وقت صحت کے عہدیدار ان کیمپوں میں روزانہ 3000 رہائشیوں کی صحت کی صورتحال کی جانچ کر رہے ہیں اور 750 افراد سے جھاڑیوں کے نمونے جمع کر رہے ہیں۔ کوئمبٹور سٹی میونسپل کارپوریشن (سی سی ایم سی) نے جمعرات کے روز ایک نجی لیبارٹری کو ایسی رپورٹ فراہم کرنے کے لئے سیل کردیا ہے، جس میں 27 سالہ شخص کو غلط طور پر کووڈ- 19 مثبت بتایا گیا ہے۔

کرناٹک: ایشا ءکے کارکنوں کی ہڑتال کے قریب ، ریاست میں لگ بھگ 30000 معاہدہ اور آؤٹ سورس ہیلتھ ورکرز جمعرات کو ڈیوٹی سے فارغ رہے۔ ایک غیر معمولی اشارے میں ، بلاری ضلع سے تعلق رکھنے والے کووڈ- 19 جنگجوؤں کو چند والدین نے اعزاز سے نوازا ہے، جو ڈاکٹروں اور نرسوں کے نام پر اپنے بچوں کا نام لینے کا ارادہ کر رہے ہیں۔ بنگلورو کے بعد اموات کی شرح سب سے زیادہ رجسٹر کرنے والے میسورو ضلع میں آئندہ ہفتوں میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ پر قابو پانے کے لئے ایک عملی منصوبہ تیار کیا گیا ہے۔ یہ قدم وزیر اعظم نریندر مودی نے کرناٹک کے سات اضلاع میں اموات کے واقعات میں اضافے پر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کیا ہے۔

آندھر پردیش: ایک ملین آبادی میں ایک لاکھ سے زیادہ ٹیسٹوں کے ساتھ ، آندھرا پردیش میں کووڈ -19 میں آزمائشی آبادی کا 10 فیصد ریکارڈ ہے۔ آج تک مجموعی طور پر 5378367 نمونے اسکرین کیے گئے تھے۔ ریاست گذشتہ چھ ماہ میں اپنی جانچ کی صلاحیت میں نمایاں اضافہ کرکے ملک میں پہلے نمبر پر بن چکی ہے۔ محکمہ میڈیکل اینڈ ہیلتھ کو مضبوط بنانے اور مریضوں کے لئے خدمات کو بڑھانے کے لئے خاص طور پر کووڈ-19وبائی بیماری کے پیش نظر ، ریاست نے میڈیکل اینڈ ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ میں نئے عملے کی بھرتی کی ہے۔ ادھر ، وبائی امراض کی وجہ سے لاک ڈاؤن کے تناظر میں اسٹیٹ روڈ ٹرانسپورٹ کارپوریشن کو کارگو خدمات کے لئے اچھا رسپانس ملا ہے۔ آر ٹی سی ریاست بھر میں کارگو لے کر حیدرآباد جارہی ہے۔

تلنگانہ: گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 2381 نئے کیسز ، 2021 بازیافت اور 10 اموات کی اطلاع؛ 2381 میں سے 386 مقدمات جی ایچ ایم سی سے رپورٹ ہوئے۔ کل معاملات: 181627؛ فعال مقدمات: 30387؛ اموات: 1080؛ ڈسچارجز: 150160۔ کووڈ- 19 وبائی بیماری کے پیش نظر 6 ماہ بعد سٹی بس سروسز حیدرآباد میں دوبارہ شروع ہوگئیں۔ بسیں تمام ضروری احتیاطی تدابیر کے ساتھ 25 بڑے راستوں پر چل رہی ہیں۔ ماؤ نوازوں نے 28 ستمبر کو مبینہ جعلی مقابلوں کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے تلنگانہ بند کا مطالبہ کیا۔

اروناچل پردیش: اروناچل پردیش میں کل 283 نئے کووڈ-19 مثبت واقعات کا پتہ چلا۔ اس وقت ریاست میں 2331 فعال معاملات ہیں۔

آسام: آسام کے وزیر صحت ہمت بیسوسوارما نے ٹویٹ کیا کہ کل 2432 مریضوں کو فارغ کیا گیا ہے۔ ڈسچارج شدہ مریض 135141 اور فعال مریض 29830 ہیں۔

منی پور: منی پور میں 161 نئے کووڈ-19 میں مثبت مثبت واقعات 9537 پر پہنچتے ہیں۔ بحالی کی 77 فیصد شرح کے ساتھ ، 2106 فعال معاملات ہیں۔

میگھالیہ: میگھالیہ میں  آج 199 افراد کورونا وائرس سے بازیاب ہوئے ہیں۔ کل فعال مقدمات 1977 ، کل بی ایس ایف اور مسلح افواج 219  کے لئے دیگر 1758 اور مجموعی طور پر 3058 بازیافت ہوئے۔

میزورم: گزشتہ روز میزورم میں کووڈ-19 کے 26 نئے معاملات کی تصدیق ہوگئی۔ کل مقدمات 1786 ، فعال مقدمات681۔

ناگالینڈ: مسلح افواج ناگالینڈ کے کووڈ-19 مثبت چارٹ میں 2716 (47فیصد) کیسوں میں سرفہرست ہے۔ واپس آنے والے افراد 1462 ہیں ، ٹریس کردہ رابطے 1216 اور فرنٹ لائن ورکرز 336 ہیں۔

سکیم : سکیم میں 95 نئے کیسز ریکارڈ کیے گئے ، فعال کیسز 679 ہیں اور کل علاج اور خارج ہونے والے معاملات 1994 ہیں۔

مہاراشٹر: مہاراشٹرا میں جمعرات کو 19164 کوویڈ 19 میں انفیکشن کی اطلاع ملی ہے ، جس کی تعداد 12.82 لاکھ ہے۔ ریاست میں 32284 اموات ریکارڈ کی گئیں۔ تاہم ، اعداد و شمار کے تجزیہ سے پتہ چلتا ہے کہ 20 اضلاع میں ریاست کے 36 اضلاع میں ، 92.91فیصد یا 11.92 لاکھ کیسز اور 94فیصد یا 32284 اموات کی اطلاع ملی ہے۔ ممبئی ، پونے اور تھانے کے علاوہ۔ کولہا پور ، ستارہ ، سولا پور ، سانگلی ، چندر پور اور ناگپور بدترین متاثر اضلاع میں سے کچھ ہیں ، جن کی نشاندہی کی گئی کوویڈ مینجمنٹ کی تیزرفتاری ہے۔ وزیر اعظم کے زیر جائزہ اجلاس کے بعد ، ان اضلاع کی صورتحال کی نگرانی کے لئے سرشار عہدیداروں کی تقرری کی جارہی ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ صورتحال کو جلد سے جلد قابو میں کیا جائے۔ اضلاع کو ہدایت کی جارہی ہے کہ مناسب تعداد میں بستروں ، آکسیجن کی فراہمی اور وینٹیلیٹروں والی صحت کی سہولیات کو بڑھایا جائے اور ساتھ ہی رابطوں کی بڑے پیمانے پر تلاش کی جاسکے۔

گجرات: ریاست کے محکمہ صحت نے بتایا کہ جمعرات کو گجرات کے کوڈ کی تعداد 1408 نئے کیسوں کے اضافے کے ساتھ بڑھ کر 128949 ہوگئی۔ ایک ہی وقت میں ، 1410 مریضوں کو اسپتالوں سے فارغ کیا گیا ، جس سے بازیاب کیسوں کی تعداد بڑھ کر 109211 ہوگئی۔ اس کے ساتھ ہی ریاست کی بازیابی کی شرح بڑھ کر 84.69 فیصد ہوگئی ہے۔

راجستھان: راجستھان صحت محکمہ نے آکسیجن تیار کرنے والی فرموں اور کمپنیوں میں ڈرگ کنٹرول افسروں کو مقرر کیا ہے تاکہ وہ جے پور میں آکسیجن مینوفیکچرنگ پر نگاہ رکھیں تاکہ کورون وائرس کے مریضوں کو آکسیجن کی مناسب فراہمی کو یقینی بنایا جاسکے۔ ضلع میں قائم میڈیکل گیس تیار کرنے والے یونٹ متعلقہ ڈرگ کنٹرول آفیسر کو ، روزانہ آکسیجن کی تیاری ، فروخت اور پلانٹ میں ہونے والی دیگر تمام سرگرمیوں کے بارے میں معلومات پیش کریں گے۔

چھتیس گڑھ: چھتیس گڑھ میں ، ریاست میں کورونا وائرس کے انفیکشن میں مسلسل اضافہ ہونے کے باعث کووڈ19 ٹیسٹ میں کافی حد تک اضافہ کیا جارہا ہے۔ اسپتالوں اور پرائمری ہیلتھ سنٹرز کے علاوہ موبائل ٹیمیں بھی کورونا ٹیسٹ کرواتی ہیں۔ کورونا سے متاثرہ مریضوں کی شناخت کے لئے تیز اینٹیجن کٹس کے ذریعے ٹیسٹ کی سہولت فی الحال 832 مراکز میں دستیاب ہے۔ اس میں سے 539 مراکز دیہی علاقوں میں ہیں ، جبکہ 36 مراکز شہری علاقوں میں قائم ہیں۔ دریں اثنا ، آئی سی ایم آر نے ریاست کے سات اضلاع میں سیرو نگرانی کے لئے نمونے جمع کرنے کا کام مکمل کرلیا ہے۔

 

حقیقت کی جانچ

 

02.jpg

 

0.3.jpg

 

 

م ن۔ن ع

 (U: 5938)



(Release ID: 1659990) Visitor Counter : 3