PIB Headquarters

کووڈ-19 سے متعلق پی آئی بی کا یومیہ بلیٹن یا خبرنامہ

Posted On: 19 AUG 2020 6:21PM by PIB Delhi

 

Coat of arms of India PNG images free downloadhttp://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002PP7C.jpg

 

*بھارت زیادہ سے زیادہ ٹسٹنگ کی راہ پر مسلسل گامزن : مسلسل دوسرے دن 8 لاکھ یومیہ سے زیادہ ٹسٹ۔

* فی ملین ٹیسٹ میں اضافہ جاری ہے ، 23002 کو عبور کرلیا ہے ، جبکہ مثبت 8 فیصد کے قریب ہے۔

* بھارت نے ایک اور اونچی چوٹی کا پیمانہ لگایا: کل بازیافت 20 لاکھ سے تجاوز کر گئی۔

* پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران سب سے زیادہ دن میں 60091 کی بحالی ، بھارت کی بازیابی کی شرح بھی اونچائی پر ، جو73 فیصد ہے۔

* وزارت صحت کی ’ای سنجیونی‘ ٹیلی میڈیسن سروس نے 2 لاکھ ٹیلیفون مشاورت ریکارڈ کی۔

* کابینہ نے کووڈ - 19 کی وجہ سے مالی دباؤ میں آئے پاور سیکٹر کے بقایہ جات کے لئے نقد رقم فراہم کرنے کے اقدامات کو منظوری دی۔

 

کووڈ-19 پر مشتمل پریس ریلیز ، جو 24 گھنٹوں میں جاری کی گئی ہیں، فیلڈ افسران سے حاصل کردہ معلومات اور پی آئی بی کے ذریعہ کئے گئے صحیح تجزیات پر مشتمل ہیں

 


https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image005Y2RB.jpg

Image

بھارت زیادہ سے زیادہ ٹسٹنگ کی راہ پر مسلسل گامزن : مسلسل دوسرے دن 8 لاکھ یومیہ سے زیادہ ٹسٹ، فی ملین (ٹی پی ایم) ٹیسٹ میں اضافہ جاری ہے ، 23002 کو عبور کرتے ہیں، جبکہ مثبت 8 فیصد کے قریب ہے۔

نئی دہلی 19اگست 2020۔بھارت نے لگاتار دوسرے دن 8 لاکھ سے زیادہ کووڈ 19 کے نمونے آزمائے ہیں۔ روزانہ 10 لاکھ  کی جانچ کی گنجائش کو چھونے کے لئے ٹیسٹوں کی تعداد میں تیزی سے اضافہ کرنے کے پختہ عزم کے ساتھ ، گذشتہ 24 گھنٹوں میں 801518 نمونوں کا تجربہ کیا گیا۔ مجموعی جانچ 31742782 تک جا پہنچی ہے۔ ٹیسٹ فی ملین میں بھی 23002 تک تیزی سے اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ ہندوستان نے درجہ بندی اور تیار کی گئی حکمت عملی کے راستے پر عمل کیا ، جس نے سرکاری اور نجی شعبوں میں اپنے ملک بھر میں لیبز کے نیٹ ورک کو مستحکم کیا۔ 2020 میں جنوری میں ایک لیب سے شروع ہوکر ، آج 1486 لیبز نے ملک کو نوکری دی۔ سرکاری شعبے میں 975 لیب اور نجی شعبے میں 511 لیب۔

 

بھارت نے ایک نئی بلندی سر کی: روبہ صحت ہونے والوں کی مجموعی تعداد 2 ملین سے متجاوز،گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران واحد دِن کے اندر وبہ صحت ہونے والوں کی تعداد اب تک کی سب سے زیادہ 6091، بھارت میں روبہ صحت ہونے والوں کی شرح منتہائی عروج پر پہنچی اور گزشتہ 73 فیصد سے متجاوز

نئی دہلی 19اگست 2020۔3 کروڑ کے مجموعی ٹیسٹ کو عبور کرنے کے بعد ، بھارت نے ایک اور اعلی درجے کو ریکارڈ کیا ہے۔ بازیافتوں کی کل تعداد آج 20 لاکھ سے تجاوز کرچکی ہے (2037870) ۔اس کے ساتھ مل کر پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران 60091 افراد کی ایک دن کی بازیافت کا یہ ایک اور کارنامہ ہے۔ کووڈ 19 کے مریضوں کی اس بڑی تعداد سے صحت یاب ہونے اور انہیں اسپتالوں اور گھروں سے الگ تھلگ ہونے کی وجہ سے (معمولی اور اعتدال پسند معاملات کی صورت میں) بحالی کی شرح نے 73فیصد (73.64فیصد) کو عبور کرنے کی جڑواں چوٹی کو چھوٹا کر دیا ہے۔ اس سے کیسز اموات کی شرح میں بھی کمی واقع ہوئی ہے ، جو آج 1.91فیصد کی ایک کم ترین سطح پر ہے۔ فعال معاملات میں کمی واقع ہوئی ہے اور اس وقت کل مثبت واقعات میں سے 14 ویں (صرف 24.45فیصد) سے کم ہے۔ فعال مقدمات (676514) کے مقابلے میں بھارت نے 1361356 مزید بازیافتیں پوسٹ کیں۔ حکومت ہند / ریاستوں کی حکومتوں کی کاوشوں کے ساتھ ساتھ ملک بھر میں ہسپتالوں کی دیکھ بھال کے انفراسٹرکچر کو چھیڑ چھاڑ کی گئی ہے ،تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ مختلف قسم کے مثبت معاملات کے لئے طبی دیکھ بھال سرشار کووڈ کیئر سنٹر (ڈی سی سی سی) ، سرشار کووڈ ہیلتھ سینٹر کے ذریعے فراہم کی جاسکتی ہے۔ ڈی سی ایچ سی) اور سرشار کووڈ اسپتال (ڈی سی ایچ)۔ ان کی تعداد میں بھی کافی حد تک اضافہ ہوا ہے۔ آج یہاں 1667 DCH ، 3455 DCHC اور DCCC 11597 ہیں۔ اجتماعی طور پر 1545206 تنہائی کے بستر ، 203959 آکسیجن سہارے والے بستر ، اور 53040 آئی سی یو بیڈ فراہم کرتے ہیں۔

 

ڈیجیٹل انڈیا کے لئے ایک بڑی جیت: صحت کی وزارت کے ای سنجیونی ڈیجیٹل پلیٹ فارم نے ریکارڈ 2 لاکھ ٹیلی کنسلٹینشنز مکمل کئے

نئی دہلی ، 19 اگست2020۔ صحت او ر خاندانی بہبود کی مرکزی وزارت کے ای سنجیونی ڈیجیٹل پلیٹ فارم نے ریکارڈ 2 لاکھ ٹیلی کنسلٹینشز مکمل کئے ہیں۔ یہ سنگ میل 9 اگست کے بعد صرف 10 دن کے قلیل عرصے میں حاصل کیا گیا ہے جب صحت اور خاندانی بہبود کے مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے ڈیڑھ لاکھ ٹیلی کنسلٹینشز کے مکمل ہونے کی یاد کے موقع پر ایک کانفرنس کی صدارت کی۔ ڈیجیٹل انڈیا کے لئے یہ ایک بڑی تقویت کے طور پر دیکھا جاسکتا ہے۔ وزیراعظم کی پہل ای سنجیونی پلیٹ فارم نے اپنے فائدے کو ثابت کردیاہے اور کیئرگیور اور میڈیکل کمیونٹی کے لئے رسائی کو آسان کردیا ہے اور ان لوگوں کے لئے بھی رسائی کو آسان کردیا ہے، جو کووڈ کے دوڑ میں حفظان صحت کی خدمات کے خواہا ں ہیں۔ای ۔ سنجیونی پلیٹ فارم نے2 طرح کی ٹیلی میڈیسن سروسز یعنی خدمات ڈاکٹر سے ڈاکٹر کے مابین ( ای۔ سنجیونی) اور مریض سے ڈاکٹرکے مابین (ای۔ سنجیونی او پی ڈی) میں ٹیلی مواصلات کا راستہ ہموار کیا ہے۔ڈاکٹر سے ڈاکٹر کے مابین ( ای۔ سنجیونی) آیوشمان بھارت ہیلتھ اور ویلنس سینٹر کے تحت نافذ کیا جارہا ہے۔ اس کا مقصدایک ہب اور اسپوک ماڈل میں نشان زد میڈیکل کالجز، ہسپتالوں کے ساتھ تعاون سے تمام ڈیڑھ لاکھ صحت اور ویلنس سینٹروں میں ٹیلی مواصلات نافذ کرنا ہے۔ ریاستوں نے میڈیکل کالجز اور ضلع ہسپتالوں میں ڈیڈی کیڈڈ ہبس کی نشاندہی کی ہے اور انہیں قائم کیا ہے تاکہ اسکوپس۔ ایس ایچ سی، پی ایچ سی اور ایچ ڈبلیو سی کو ٹیلی مواصلات خدمات فراہم کی جاسکیں۔ صحت کی وزارت نے دوسری ٹیلی مواصلات سروس ای۔ سنجیونی او پی ڈی شروع کی ہے۔ اس کامقصد اپریل 2020 میں کووڈ۔19 عالمی وبا کی وجہ سے مریض سے ڈاکٹر کے مابین ٹیلی میڈیسن فراہم کی جاسکے۔ اس سے کووڈ کو پھیلنے سے روکنے میں کافی مدد ملی ہے۔ای۔ سنجیونی اب تک 23 ریاستوں میں نافذ کی جاچکی ہے اور دیگر ریاستیں اس کو شروع کرنے کے مرحلے میں ہے۔

 

کابینہ نے کووڈ - 19 کی وجہ سے مالی دباؤمیں آئے پاور سیکٹر کے بقایہ جات کے لئے نقد رقم فراہم کرنے کے اقدامات کو منظوری دی

نئی دہلی ، 19 اگست2020۔وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی زیرصدارت اقتصادی امور سے متعلق کابینہ کی کمیٹی نے ورکنگ کیپیٹل کی حد سے اوپر کی تقسیم کار کمپنیوں (ڈسکوم) کو قرضوں میں توسیع کرنے کے لئے پاور فنانس کارپوریشن (پی ایف سی) اور رورل الیکٹریفیکیشن کارپوریشن (آر ای سی) کو ایک بار رعایت کی منظوری دے دی ہے۔ یوجول ڈسکام انشورنس یوجنا (یو ڈی وائے) کے تحت گذشتہ سال کی آمدنی کا 25فیصد اور اس کے نتیجے میں ملک بھر میں لاک ڈاؤن نے بجلی کے شعبے میں لیکویڈیٹی کے مسائل کو بڑھاوا دیا ہے۔ بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کے محصولات ناکارہ ہوگئے، کیونکہ لوگ بجلی کی فراہمی کے لئے ادائیگی کرنے سے قاصر ہیں ،جبکہ بجلی کی فراہمی ، ایک ضروری خدمت کی حیثیت سے برقرار ہے۔ توانائی کی کھپت میں کافی حد تک کمی واقع ہوئی ہے۔ بجلی کے شعبے کی لیکویڈیٹی میں قلیل مدت میں بہتری کی توقع نہیں کی جارہی ہے ، کیونکہ معاشی سرگرمی اور بجلی کی طلب میں کچھ وقت لگے گا۔ اس طرح بجلی کی فراہمی کے تسلسل کے لئے بجلی کے شعبے میں لیکویڈیٹی پیدا کرنے کی فوری ضرورت ہے۔

 

دہلی پولیس کے کنبوں کے گھروں تک آیوروید پہنچانے کے لئے دھنونتری رتھ،اے آئی آئی اے اور دہلی پولیس کے مابین مفاہمت نامہ پر دستخط

نئی دہلی ، 19 اگست2020۔دہلی پولیس کی رہائشی کالونیوں میں آیوروید احتیاطی اور فروغ دینے والی صحت خدمات میں توسیع کے لئے آج آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف آیور وید (اے آئی آئی اے) اور دہلی پولیس کے مابین ایک مفاہمت نامہ پر دستخط ہوئے۔ یہ خدمات ’دھنونتری رتھ‘ نامی ایک موبائل یونٹ اور پولیس ویلینس سینٹرز کے ذریعہ فراہم کی جائیں گی اورآیوش وزارت کی مدد سے انہیں اے آئی آئی اے کے ذریعہ قائم کیا جائے گا۔دہلی پولیس کے کمشنر شری ایس این شریواستو اور آیوش وزارت کے ایڈیشنل سکریٹری شری پرمود کمار پاٹھک کے مابین ایک دستخط شدہ مفاہمت نامہ کا تبادلہ ہوا۔ پروفیسر تنجوا نیساری، ڈائریکٹر ، اے آئی آئی اے کی موجودگی میں دھنونتری رتھ کو ہری جھنڈی دکھا کر روانہ کیا گیا۔آیورکشا،اے آئی آئی اے کا ایک مشترکہ منصوبہ ہے، جو کہ آیوش وزارت اور دہلی پولیس کے تحت ایک خودمختار انسٹی ہے۔ اس کا مقصد آیوروید امیونٹی کو بڑھانے والے اقدامات کے ذریعہ دہلی پولیس اہلکاروں جیسے فرنٹ لائن کووڈ جانبازوں کی صحت کو برقرار رکھنا ہے۔ اس پروجیکٹ کے تسلسل میں اب دہلی پولیس اہلکاروں کے کنبوں تک آیوروید احتیاطی اور فروغ دینے والی حفظان صحت کی توسیع کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔

 

مہاجروں کے لیے اتم نربھر اسکیم-ایک جامع نقطہ نظر

نئی دہلی،19اگست 2020۔ ملک میں نوول کورونا وائرس(کووڈ-19) کے پھیلنے کے دوران حکومت ہند نے مئی 2020 کےوسط میں ملک بھر میں تاریکن وطن مزدوروں کے لیے آتم نربھر پیکیج (اے این بی ایس) کے تحت مختلف معاشی اقدامات کا اعلان کیاتھا۔ اس کے تحت خوراک اور پبلک ڈسٹری بیوشن کے محکمے نے تمام ریاستوں نیز مرکز کے زیرانتظام علاقوں کو تقریباً 8 لاکھ میٹرک ٹن اناج مختص کیا تھا، جس کی اطلاع آتم نربھر بھارت اسکیم (اے این بی ایس) کے تحت 15 مئی 2020 کو تمام ریاستوں نیز مرکز کے زیرانتظام علاقوں کو فراہم کی گئی تھی، جس کا مقصد ملک کے مختلف حصوں میں پھنسے ہوئے تارکین وطن کی غذائی ضروریات کو پورا کرنے میں مدد دینا تھا۔اس کے مطابق ، محکمہ فوڈ نے دو ماہ یعنی مئی اور جون 2020 کی مدت کے لئے تقریبا 4 ایل ایم ٹی غلہ اناج مختص کیا۔ 17 اگست 2020 تک دستیاب رپورٹوں میں ، کل 6.38 ایل ایم ٹی نے اناج اٹھایا ، ایک ریاستوں مرکزکے زیرانتظام علاقوں کے زیرقیادت مہاجرین پھنسے ہوئے مہاجرین کو اسکیم کے تحت تقریبا 2.49 ایل ایم ٹی (39فیصد) غلہ تقسیم کیا گیا ہے۔ 31 اگست 2020 تک تقسیم کے ساتھ ، یہ توقع کی جارہی ہے کہ کچھ اور تارکین وطن مفت سے فائدہ اٹھاسکیں گے، اس کے بعد ، اے این بی ایس کے تحت غذائی اجزائ۔ اس کے علاوہ ، یہ بتانا بھی مناسب ہے کہ اے این بی ایس کے تحت مفت اناج کی تقسیم کے علاوہ ، کچھ ریاستوں جیسے اترپردیش ، بہار ، تریپورہ ، منی پور ، جموں و کشمیر نے بھی مارچ ، 2020 کے بعد نئے راشن کارڈ جاری کردیئے ہیں۔ فائدہ اٹھانے والوں کو ، جو پہلے نہیں ڈھائے گئے تھے ، بالترتیب 45 لاکھ ، 15 لاکھ ، 25000 ، 10000 اور 35000 افراد کو باقاعدگی سے این ایف ایس اے پی ایم جی کے اے وائی کے تحت سبسڈی والے کوٹہ اناج وصول کریں۔

 

خوانچہ فروشوں سے قرض کے لئے درخواستیں طلب کرنے کے لئے یوزرس کے مطابق ڈیجیٹل انٹر فیس مہیا کرانے کے لئے موبائل ایپ کا آغاز کیا گیا

نئی دہلی،19 اگست 2020۔ہاؤسنگ اور شہری امور کے وزیر مملکت (آزادانہ چارج) جناب ہردیپ سنگھ پوری نے شہری ترقی وزرا ، چیف سکریٹریوں ، یو ڈی سکریٹریوں /چیف سکریٹریوں، پولیس کے ڈائریکٹر جنرلوں (ڈی جی پی) ، کلکٹروں/ ایس پی /ایس ایس پی/شہر کےکمشنروں/125 شہروں کے چیف ایگزیکٹیو افسروں کے ساتھ پردھان منتری اسٹریٹ وینڈرس آتم نربھر ندھی (پی ایم ایس وی اے ندھی) اسکیم کے سلسلہ میں بات چیت کی۔ اس اسکیم کو ریڑھی والا (خوانچہ فروشوں) کواپنے کاروبار کو دوبارہ شروع کرنے اورقرض مہیا کرانے شروع کی گئی ہے۔ یہ اسکیم فروخت کاروں کو قرض کی سہولت فراہم کرتی ہے، لیکن یہ یقینی بنانے کی ضرورت ہے، کہ وہ استحصال سے پاک ماحول میں تجارت یا کاروبار کرنے میں اہل ہوسکیں۔ میٹنگ میں ہاؤسنگ اور شہری امور کی وزارت کے سکریٹری جناب درگا شنکر مشرا بھی موجود تھے۔

 

ایس سی ٹی آئی ایم ایس ٹی اور آئی آئی ٹی مدراس کے ذریعہ کووڈ-19 کے لیے پورٹیبل ہاسپیٹل کے بنیادی ڈھانچے کی تیاری کا آغاز

نئی دہلی،19 اگست 2020۔سری چترا ترینونل انسٹی ٹیوٹ برائے میڈیکل سائنسز اینڈ ٹکنالوجی (ایس سی ٹی آئی ایم ایس ٹی) ، حکومت اور محکمہ سائنس اور ٹکنالوجی (ڈی ایس ٹی) کے تحت ایک خودمختار ادارہ ہے۔ آئی آئی ٹی مدراس کے ذریعہ 'ماڈیولس ہاؤسنگ' کے تعاون سے ہندوستان کا ایک آغاز شروع ہوا ہے ،جس میں مقامی برادریوں میں کووڈ19 مریضوں کا پتہ لگانے ، ان کے انتظام اور ان کے علاج معالجے کے لئے وکندریقرت طریقے سے استعمال کیا گیا ہے۔ "، جو ماڈیولر ، پورٹیبل ، پائیدار ، قائم کرنے میں آسان ہے اور گاہک کی ضروریات کے مطابق اپنی مرضی کے مطابق کیا جاسکتا ہے۔ یہ فولڈ ایبل ہے اور چار زونوں پر مشتمل ہے۔ ڈاکٹر کا کمرہ ، تنہائی کا کمرہ ، ایک میڈیکل روم / وارڈ ، اور جڑواں بستر والا آئی سی یو جو منفی دباؤ پر برقرار ہے۔ اسے جغرافیائی مقامات پر کہیں بھی آسانی سے پہنچا اور انسٹال کیا جاسکتا ہے اور چار افراد کی مدد سے صرف دو گھنٹوں میں کھڑا کیا جاسکتا ہے۔

 

49 انوویشن کو پانچ توجہ مرکوز علاقوں میں ملینیم الائنس راؤنڈ 6 اور کووڈ۔19 انوویشن چیلنج ایوارڈ سے نوازا گیا

نئی دہلی،19 اگست 2020۔ملینیم الائنس راؤنڈ 6 کووڈ۔19 چیلنج ایوارڈ نے ہندوستان میں پانچ توجہ مرکوز شعبوں میں 49 جدید طریقوں کی نشاندہی کی ہے، جس میں جدید ماحولیاتی نظام بنانے کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔ڈی ایس ٹی نے جلد ہی ایک اعلی تقسیم شدہ ماحولیتی نظام بنانے کے لئے ایک پروگرام لانچ کرنے کااعلان کرتےہوئے ، ڈی ایس ٹی سکریٹری، پروفیسر آشوتوش شرما نے کہا کہ جدت کے لئے اسٹارٹ اپ شروع کرنے کے لئےیہ ضروری ہے کہ اس کےلئے نیٹ ورکنگ، حمایت، مالی مدد اور پروٹو ٹائپ کی سہولیت کے ساتھ ساتھ سبھی دیگر سہولیات انکیو بیٹرس کے بیرونی دائرے کو مہیا کرائی جائیں۔

 

ڈاکٹر ہر ش ودھن نے ایف ایس ایس اے آئی کے ایٹ رائٹ چیلنج اورینٹیشن ورکشاپ سے ڈیجیٹل خطاب کیا

نئی دہلی،19 اگست 2020۔مرکزی وزیر صحت و خاندانی بہبود ڈاکٹر ہرش وردھن نے اس ایٹ رائٹ چیلنج کے ایک حصے کے طور پر فوڈ سیفٹی اینڈ اسٹینڈرز اتھارٹی آف انڈیا (ایف ایس ایس اے آئی) کے زیر اہتمام ایک آن لائن اورینٹیشن ورکشاپ کی صدارت کی۔ انہوں نے ملک بھر میں مختلف اسٹیک ہولڈروں کو ‘ایٹ رائٹ انڈیا’ اقدامات بڑھانے میں مدد کرنے کے لئے ایف ایس ایس اے آئی کی ” ایٹ رائٹ انڈیا “ ہینڈ بک اور ویب سائٹ eatrightindia.gov.in کا بھی آغاز کیا۔ ڈاکٹر ہرش وردھن نے بیماری کی روک تھام کے لئے صحت مند غذا اور تغذیہ کے ذریعہ اہم کردار ادا کیا۔ یہ بتاتے ہوئے کہ غذا مختلف قسم کی بیماریوں سے کسی کی لچک اور قوت مدافعت پیدا کرنے میں معاون ہوتی ہے ، انہوں نے زور دے کر کہا کہ “غیر مواصلاتی ذیابیطس ، ہائی بلڈ پریشر ، قلبی پیچیدگیوں وغیرہ سے ہونے والی 61.8فیصد اموات ، براہ راست یا بالواسطہ ناقص غذا سے متعلق ہیں۔ یہاں تک کہ تپ دق کی طرح مواصلاتی بیماریاں غیر اعلانیہ طور پر لوگوں کو متاثر کرتی ہیں جو غذائیت کا شکار ہیں۔ ایک ہی گھر کے افراد کووڈ پر اپنی غذائیت سے حاصل ہونے والی استثنیٰ کی بنیاد پر مختلف ردعمل ظاہر کررہے ہیں۔

 

پی آئی بی فیلڈ دفاتر سے ماخوذ

 

*چندی گڑھ: ایڈمنسٹریٹر ، یو ٹی چندی گڑھ ، نے بتایا کہ انتظامیہ کی توجہ مقدمات کی جلد پتہ لگانے پر مرکوز رکھنی چاہئے ، خاص کر مریضوں کے مریضوں کی ، تاکہ اموات کو کم سے کم رکھا جاسکے۔ انہوں نے جی ایم ایس ایچ۔16 کو موبائل ٹیسٹنگ کی سہولیات شروع کرنے کی بھی ہدایت کی تاکہ جانچ ٹیمیں موبائل وین پر جاسکیں اور نمونے جمع کرسکیں اور موقع پر ٹیسٹ کے نتائج دے سکیں۔ یہ بزرگ شہریوں کے لئے مددگار ثابت ہوگا ، جو اس طرح کے ٹیسٹنگ کے لئے ہسپتال جانے سے گریزاں ہیں۔

 

* کیرالہ: کووڈ مریضوں کی سی ڈی آر اکٹھا کرنے کے معاملے کے بارے میں ، ریاستی حکومت نے کیرالہ ہائی کورٹ کو بتایا کہ اس کے لئے کووڈ مثبت مریضوں کے ٹاور محل وقوع کی ضرورت ہے نہ کہ ذاتی نوعیت کی دوسری کال کی تفصیلات۔ عدالت کو یہ بھی بتایا گیا کہ فی الحال سی ڈی آر اکٹھا نہیں کیا جارہا ہے۔ دریں اثنا ، ریاست میں دوپہر تک مزید پانچ افراد کووڈ۔19 سے دم توڑ چکے ہیں ، جس سے ہلاکتوں کی تعداد 174 ہوگئی ہے۔ کابینہ کا ہفتہ وار اجلاس آج نہیں ہوا ،کیوں کہ وزیر اعلی اور 6 دیگر وزراءکیری پور کے دورے کے بعد خود کفالت ہیں۔ ہوائی حادثے کی سائٹ۔ گذشتہ روز کیرل میں کووڈ۔19 کے تقریبا 1758 نئے فعال کیسوں کی تشخیص ہوئی ہے۔ اس وقت ریاست بھر کے اسپتالوں میں 16274 مریض زیر علاج ہیں اور مختلف اضلاع میں 1.65 لاکھ افراد زیر مشاہدہ ہیں۔

 

* تمل ناڈو: ریاست پانی کے مختلف منصوبوں کو تیز کرنے کے لئے مرکز سے درخواست کرتی ہے۔ ٹی این نے نظر ثانی شدہ ای پاس سسٹم کے تحت درخواستوں میں اضافہ دیکھا ،جس کے نتیجے میں شاہراہوں پر بھاری ٹریفک اور بڑے ٹول پلازوں پر بھیڑ پڑ رہی ہے۔ چنئی میں تسماک کی دکانیں دوبارہ کھلنے کے بعد ، ماہرین صحت نے احتیاط برتنے کا مطالبہ کیا۔ 5509 کووڈ کے نئے کیس ، 5850 بازیافت اور 121 اموات کل رپورٹ ہوئے۔ چنئی سے 1182 مقدمات۔ کل معاملات: 349654؛ فعال مقدمات: 53860؛ اموات: 6007؛ ڈسچارجز: 289787؛ چنئی میں فعال معاملات:12103۔

 

* کرناٹک: ریاستی حکومت نے گنیشا چارتھوتھی منانے کے لئے رہنما اصولوں میں نظرثانی کی ہے ، صرف ایک عوامی جشن پالتو وارڈ یا گاؤں کی اجازت ہے اور تہوار سے متعلق جلوسوں اور ثقافتی تقریبات پر پابندی ہے۔ آج میڈیکل ایجوکیشن کے وزیر نے سرکاری اور نجی لیب کے سربراہوں سے ہدف کے مطابق کووڈ ٹیسٹ کروانے پر بات کی۔

 

* آندھرا پردیش: 9 اگست کو وجئے واڑہ سوارنا پیلس ہوٹل کے واقعے کی روشنی میں ، جس میں 10 کووڈ مریضوں کی موت کا دعوی کیا گیا تھا ، آندھرا پردیش حکومت نے ریاست بھر میں کووڈ کیئر سنٹرز پر خصوصی توجہ دی ہے۔ اسپتالوں کی نگرانی میں اضافہ کے علاوہ ، نگرانی کو مستحکم کرنے کے اقدامات بھی کیے گئے ہیں۔ کوشڈ میڈیکل کیئر فراہم کرنے والے 13 منتخب اسپتالوں میں سی سی ٹی وی کیمرے لگا کر میڈیکل ہیلتھ کمشنر کے جاری کردہ احکامات کے بعد کرشنا ضلع کے عہدیداروں نے جنگی بنیادوں پر عمل کیا۔ ٹی ڈی پی کے سابق ایم ایل اے جے سی پربھاکر ریڈی جو اس وقت کڑپہ جیل میں ہیں مثبت جانچ پڑتال کی۔ کڑپہ جیل میں 317 قیدیوں کا وائرس کے مثبت تجربہ کیا گیا۔ کل 9652 نئے کیسز ، 9211 خارج ہوئے اور 88 اموات کی اطلاع ملی۔ ریاست میں کل معاملات: 306261؛ فعال معاملات: 85130؛ اموات: 2820۔

 

* تلنگانہ: گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 1763 نئے واقعات ، 1789 بازیافت اور 08 اموات کی اطلاع۔ 1763 مقدمات میں سے ، جی ایچ ایم سی سے 484 مقدمات رپورٹ ہوئے۔ کل مقدمات: 95700؛ فعال مقدمات: 20990؛ اموات: 719؛ ڈسچارجز: 73991۔ نئے قانون کے مطابق ، ریاستی قانون ساز اسمبلی کے مانسون اجلاس کے دوران صرف ایک ممبر کو بینچ میں بیٹھایا جائے گا ، جس کا آغاز سات ستمبر کو کووڈ - 19 وبائی امراض کے درمیان ہونا ہے۔

 

* اروناچل پردیش؛ اروناچل پردیش میں ایک ہی دن کے لئے سب سے زیادہ بڑھتی ہوئی واردات کا اندراج 133کووڈ19 کیسز میں ہوا، جس میں اپر سبنسری کیس کا زیادہ تر حصہ لے کر رہا ہے (65 مثبت کیس) اور ویسٹ کامینگ دوسرے نمبر پر ہے (22 مقدمات)۔

 

* آسام: آسام میں 40 بہادروں نے تیج پور میڈیکل کالج اور اسپتال میں پلازما عطیہ کیمپ میں شمولیت اختیار کی ، آسام کے وزیر صحت شری ہیمنت بسوا شرما نے ٹوئٹ کیا۔

 

* منی پور: 78 نئے کیسز اور 55 بازیافتوں کے ساتھ ، منی پور میں اب وصولی کی شرح 58٪ ہے۔ ریاست میں 1958 میں فعال واقعات ہیں۔ منی پور میں کووڈ سے متعلقہ پیچیدگیوں کی وجہ سے ایک اور شخص کی ہلاکت کے ساتھ ، ریاست میں اموات کی تعداد 18 ہوگئی ہے۔

 

* میزورم: میزورم میں کووڈ19 کے 45 نئے کیسوں کی کل تصدیق ہوگئی۔ ریاست میں کل معاملات 860 تک پہنچ گئے اور فعال کیس 481 پر کھڑے ہیں۔

 

* ناگالینڈ: ناگالینڈ میں ، پیرن کی ضلعی انتظامیہ کووڈ 19 مثبت واقعات کی نشاندہی کے بعد اتھیبنگ سب ڈویڑن میں 5 مکانات سیل کرنے کا حکم دے رہی ہے۔ پیر کے ضلع ابوئی سب ڈویڑن میں مکمل لاک ڈاؤن ختم ہوگیا۔

 

*مہاراشٹرا: ہندوستان میں دس اضلاع میں سے سات اضلاع میں سب سے زیادہ کووڈ ٹیسٹ پوزیٹیویٹی شرح مہاراشٹرا میں ہے ، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ریاست میں وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے اور اس کی جانچ پڑتال کی ضرورت ہے۔ سات اضلاع رائے آباد ، تھانہ ، ناسک ، دھولے ، پونے ، جلگاؤں اور ستارا ہیں۔ فہرست میں رائے شماری میں 31.7 فیصد کی شرح مثبت ہے ، جبکہ ممبئی مثبت شرح 19۔7 فیصد کے ساتھ پہلے 10 میں شامل نہیں ہے۔ دیگر تین اضلاع بہار میں واقع ہیں۔ صحت عامہ کے ماہرین نے مثبتیت کی شرح پر غور کیا ، جو ان ٹیسٹوں کا تناسب ہے جو مثبت نتائج کی واپسی کرتے ہیں ، بیماریوں کی منتقلی کا اندازہ لگانے کا ایک اہم معیار بمبئی ہائی کورٹ نے مہاراشٹر حکومت سے پوچھا ہے کہ کیا نجی اسپتالوں اور نرسنگ ہوموں کو یقینی بنانے کے لئے اس میں کوئی باقاعدہ طریقہ کار موجود ہے۔ کووڈ19 وبائی امراض کے دوران پی پی ای کٹس اور دیگر ذیلی سامان کے لئے زیادہ سے زیادہ چارج نہ کریں۔ مہاراشٹرا حکومت نے ضلعی کلکٹروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ مہاتما جیوتی با پھولے جان آروگیہ  یوجنا کے تحت احاطہ کرنے والے اسپتالوں کے خلاف سخت کارروائی کرے اور اس کے باوجود کووڈ 19 کے مریضوں سے زیادہ قیمت وصول کی جا رہی ہے۔ بھاری جرمانے عائد کرنے کے علاوہ ، حکومت نے جمعکاروں سے کہا ہے کہ وہ ایسے اسپتالوں کی رجسٹریشن منسوخ کریں اور پولیس شکایات درج کریں۔

 

* گجرات: گجرات میں کووڈ19 کے کل 1212 نئے کیس درج ہوئے۔ نئے 1200 کیسوں میں سے زیادہ سے زیادہ 175 کیس سورت سے رپورٹ ہوئے۔ احمدآباد شہر میں پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران 149 نئے کیسز ریکارڈ ہوئے۔ محکمہ صحت کے محکمہ کے مطابق ، بازیابی کی شرح میں مزید بہتری آئی ہے اور یہ 78.71 فیصد تک پہنچ گئی ہیں۔

 

* راجستھان: راجستھان حکومت نے میڈیکل کالجوں سے منسلک تمام ضلعی اسپتالوں اور اسپتالوں میں آکسیجن کی سہولت والے بستروں میں اضافہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ حکومت نے نائٹ شفٹوں میں کام کرنے والے نرسنگ اہلکاروں کو ترغیب دینے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ وزیر صحت ڈاکٹر رگھو شرما نے کہا ہے کہ سپر پھیلاؤکی وجہ سے ریاست میں چند مقامات پر کورونا کیسز میں اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دودھ فروشوں ، سبزی فروشوں اور دکانداروں کے بے ترتیب سیمپلنگ کی جارہی ہے تاکہ انفیکشن کے پھیلاؤ  پر قابو پایا جاسکے۔

 

* مدھیہ پردیش: مدھیہ پردیش ملک میں فعال مریضوں کی تقابلی حیثیت کے مطابق 16 ویں نمبر پر ہے۔ مدھیہ پردیش میں ، ریاست میں کورونا انفیکشن کے دوران چھتر پور پولیس کے ذریعہ ’ایک سنکلپ ۔بزرگوں کے نام ‘سے چل رہی ہے۔ یہ انوکھی مہم عالمی وبائی مرض کووڈ19 کے دوران گھروں میں تنہا رہنے والے بزرگ افراد کے لئے اعزاز کا باعث ثابت ہورہی ہے۔ اس مہم میں ، پولیس بزرگ لوگوں کو کھانے سے لے کر ان کی صحت تک کی دیکھ بھال کر رہی ہے۔

 


https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image007O708.jpg

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0081JRO.jpg

******

 

U-4703



(Release ID: 1647539) Visitor Counter : 7