PIB Headquarters

کووڈ-19 سے متعلق پی آئی بی کا یومیہ بلیٹن یا خبرنامہ

Posted On: 15 JUL 2020 6:27PM by PIB Delhi



Coat of arms of India PNG images free downloadhttp://164.100.117.97/WriteReadData/userfiles/image/image001OZXY.jpg

کووڈ-19 پر مشتمل پریس ریلیز ، جو 24 گھنٹوں میں جاری کی گئی ہیں، فیلڈ افسران سے حاصل کردہ معلومات اور پی آئی بی کے ذریعہ کئے گئے صحیح تجزیات پر مشتمل ہیں

 

*پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران 20000 سے زیادہ کیسوں کی بازیابی سے بازیافت کی شرح 63.24فیصد ہوگئی
*6 6 لاکھ کے قریب مقدمات بازیافت ہوئے
*کووڈ 319840 فعال معاملات ۔
* بھارت میں 22 ریاستیں /مرکز کے زیرانتظام علاقے پہلے ہی 140 اور اس سے زیادہ ٹیسٹ / دن / ملین کا انعقاد کر رہے ہیں ، جو ڈبلیو ایچ او کے مشورے سے زیادہ ہے۔
* انسانی وسائل کی ترقی کے وزیر نے دنیا کی سب سے سستی کووڈ19 تشخیصی کٹ کوروسور کا آغاز کیا ، جسے آئی آئی ٹی دہلی نے تیار کیا ہے
* ایٹل انوویشن مشن کی وزارتوں اور شراکت داروں کے ساتھ مل کر کوویڈ 19 کے حل کے ساتھ اسٹارٹ اپ کی مدد کریں گے۔

 


https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0054PZT.jpg

Image

 

وزارت صحت اور خاندانی بہبود سے کووڈ 19 پر تازہ ترین خبریں: گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 20000 سے زیادہ کیسوں کی بازیابی سے بازیافت کی شرح 63.24 فیصد ہوگئی۔ 6 لاکھ کے قریب مقدمات بازیاب۔ کووڈ 19 کا اصل معاملہ صرف 319840 فعال معاملات ہیں
نئی دہلی 15جولائی 2020۔پچھلے 24 گھنٹوں میں COVID19 مریضوں کی بازیابی کی تعداد میں تیزی سے اضافہ دیکھا گیا ہے۔ کوویڈ 19 مریضوں میں بازیاب کیسوں کی کل تعداد 592031 ہوگئی۔ بحالی کی شرح آج 63.24فیصد تک جا پہنچی ہے۔ بازیاب ہونے والے معاملات میں اضافے کا عمل جارحانہ جانچ ، بروقت تشخیص اور مریضوں کی نگرانی میں گھر سے الگ تھلگ کے ذریعہ یا اسپتالوں میں فعال طبی امداد کے تحت مو ثر انتظام سے ہوتا ہے۔ COVID19 کا اصل معاملہ 319840 فعال معاملات ہے۔ وہ سب طبی نگرانی میں ہیں۔ ہوم آلوسیشن کے اصولوں اور معیاروں کے ساتھ ساتھ آکسیمیٹر کے استعمال سے اسپتال کے انفراسٹرکچر پر دباؤ ڈالے بغیر اسیمپٹومیٹک یا ہلکے علامتی مریضوں کی جانچ پڑتال میں مدد ملی ہے۔ بازیاب اور فعال معاملات کے مابین فرق مستقل طور پر بڑھتا ہی جارہا ہے۔ آج کل 272191 پر ہے۔ بازیاب ہونے والے کیسوں کی تعداد فعال مقدمات کی تعداد 1.85 کے عنصر سے کہیں زیادہ ہے۔

ڈبلیو ایچ او 140 ٹیسٹ / دن / ملین آبادی کو مشورہ ددیا ، بھارت میں 22 ریاستیں /مرکزکے زیرانتظام علاقے پہلے ہی 140 اور اس سے زیادہ ٹیسٹ / دن / ملین کر رہی ہیں۔ فی ملین ٹیسٹنگ 8994 کو عبور کرتی ہے
نئی دہلی 15جولائی 2020۔ڈبلیو ایچ او نے کووڈ19 کے تناظر میں صحت عامہ اور سماجی اقدامات کو ایڈجسٹ کرنے کے لئے صحت عامہ کے معیار" پر اپنے رہنما اصول میں مشکوک معاملات کے لئے جامع نگرانی کا مشورہ دیا ہے۔ ڈبلیو ایچ او نے مشورہ دیا ہے کہ ایک ملک کو فی دن 10 لاکھ آبادی میں 140 ٹیسٹ کی ضرورت ہے۔ مرکز اور ریاستوں / مرکزکے زیرانتظام علاقے کی طرف سے کی جانے والی متعدد مربوط کوششوں کے ساتھ ، ہندوستان میں 22 ریاستیں /مرکزکے زیرانتظام علاقے پہلے ہی فی دن 140 اور اس سے زیادہ ٹیسٹ لے رہے ہیں۔
 

States testing more than 140 per day per million.jpg
سرکاری شعبے میں 865 لیبز اور 358 نجی لیبز کے ساتھ ، ملک میں ٹیسٹنگ لیبز کی کل تعداد آج تک 1223 ہے۔ گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 320161 نمونوں کی جانچ کی گئی ہے۔ آزمائشی نمونوں کی مجموعی تعداد ، اب تک 1242664 ہے۔ بھارت کے لئے فی ملین ٹیسٹنگ میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔ آج اس نے 8994.7 کو چھو لیا ہے۔ 14 جولائی 2020 کو ، ایک ہی دن میں 3.2 لاکھ سے زیادہ ٹیسٹ کیے گئے۔

 

ایچ آر ڈی کے وزیر نے آئی آئی ٹی دہلی کے تیار کردہ دنیا کی سب سے سستی کووڈ۔19 تشخیصی کٹ کوروسور کا آغاز کیا
نئی دہلی 15جولائی 2020۔مرکزی ہیومن ریسورس ڈویلپمنٹ منسٹر ، شری رمیش پوکڑیال نشانک نے آج دنیا کی سب سے سستی آر ٹی پی سی آر پر مبنی COVID19 تشخیصی کٹ کو ای آئی ٹی دہلی کے ذریعہ تیار کیا اور نئی دہلی میں آئی سی ایم آر اور ڈی سی جی آئی نے منظور کیا۔ شری پوکھریال نے کہا کہ کوروسور ، کوویڈ۔ انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ٹکنالوجی دہلی کے ذریعہ تیار کردہ تشخیصی کٹ وزیر اعظم شری نریندر مودی کے ایک خود انحصاری ہندوستان کے ویڑن کی طرف ایک قدم ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو ملک کے لئے سستے اور قابل اعتماد جانچ کی ضرورت ہے جس سے وبائی امراض کو کنٹرول کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ کوروسور کٹ دیسی طور پر تیار کی گئی ہے اور دیگر کٹس کے مقابلے میں بہت سستی ہے۔

وزیراعظم نے نوجوانوں کی ہنرمندی کے عالمی دن کے موقع پر ا نہیں ہنرمندی، ہنرمندی کی تازہ کاری اور ہنرمندی کے فروغ پرا بھارا
نئی دہلی،15جولائی ، 2020۔نوجوانوں کی ہنرمندی کے عالمی دن اور “اسکل انڈیا ” مشن کی 5ویں سالگرہ کے موقع پر آج منعقدہ ڈیجیٹل اسکلس کانکلیو کے لئےاپنے پیغام میں وزیراعظم نے تیزی سے بدلتے ہوئے کاروباری ماحول اور بازار کے حالات میں موزوں بنائے رکھنے کےلئے نوجوانوں کو ہنرمندی، ہنرمندی کی تازہ کاری اور ہنرمندی کے فروغ پر ابھارا۔ انہوں نے اس موقع پرملک کے نوجوانوں کو مبارکباد دی اور کہا کہ دنیا کا تعلق نوجوانوں سے ا ن کی صلاحیت کی وجہ سے ہے تاکہ ہر وقت نئی ہنرمندیاں حاصل کی جا سکیں۔انہوں نے کہا کہ اسکل انڈیا مشن کوآج سے 5سال پہلے اسی دن شروع کیا گیا تھا، جس کے نتیجے میں ہنرمندی، ہنرمندی کی تازہ کاری اور ہنرمندی کے فروغ اور مقامی اور عالمی دونوں سطحوں پر روزگار تک رسائی کے مواقع میں اضافہ کے لئے ایک وسیع بنیادی ڈھانچہ قائم ہوا۔ اس کےنتیجے میں ملک بھر میں سیکڑوں پی ایم کوشل کیندر قائم کئے جا رہے ہیں اور آئی ٹی آئی کے ماحولیاتی نظام کی صلاحیت میں اضافہ ہورہا ہے۔ ان ارتکازی کوششوں کی وجہ سے پچھلے 5سالوں میں 5کروڑ سے زائدنوجوانوں کو ہنرمند بنایا گیا ہے۔ ہنرمند ملازمین اور امپلائر کی میپنگ کے لئے حال ہی میں شروع کردہ پورٹل کاذکر کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ اس سےتارکین وطن مزدوروں سمیت ا ن ہنرمند مزدوروں کو مدد ملے گی، جو اپنے گھر واپس آئے ہیں کہ وہ آسانی سے روزگار تک رسائی حاصل کر لیں اور امپلائرس کو اس بات کی آسانی ہوگی کہ وہ ہنرمند ملازمین سے فوری طور پر رابطہ قائم کرسکیں۔ انہوں نے اس بات پر زوردیا کہ تارکین وطن مزدوروں کی ہنرمندی سے مقامی معیشت کو بدلنے میں بھی مدد ملے گی۔

ورلڈ یوتھ اسکلس ڈے کے موقع پر وزیر اعظم کے خطاب کا متن

15ویں بھارت -ای یو آن لائن سمٹ : انگریزی میں وزیراعظم جناب نریندر مودی کی افتتاحی تقریر

 

الکحل پر مبنی ہینڈ سینی ٹائزر پرجی ایس ٹی کی شرح کے معاملے پر وضاحت
نئی دہلی:15 جولائی،2020۔میڈیا کے بعض حلقوں میں الکحل پر مبنی سینی ٹائز پر جی ایس ٹی کی شرح کے معاملے پر رپورٹ آئی ہے۔ میڈیا کے رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ہینڈ سینی ٹائزر پر18 فیصد کی شرح سے جی ایس ٹی لیا جارہا ہے۔ سینی ٹائزرصابن، بیکٹیریا کش سیال مادوں اور ڈیٹول جیسے جراثیم کش پر جی ایس ٹی نظام کے تحت18 فیصد کی معیاری جی ایس ٹی کی شرح لگتی ہے۔مختلف سامان پر جی ایس ٹی کی شرح جی ایس ٹی کونسل کے ذریعے طے کی جاتی ہے، جہاں مرکزی حکومت اور سبھی تمام ریاستی حکومتیں ایک ساتھ غورو خوض کرتی ہیں اور فیصلہ لیتی ہیں۔

اٹل انوویشن مشن نے کووڈ-19 کے سلسلے میں حل تلاش کرنے کے لئے اسٹارٹ اپس کی مدد کے لئےوزارتوں اور ساتھیوں سےرابطہ قائم کیا ہے
نئی دہلی:14 جولائی، 2020۔چونکہ کووڈ-19 وبائی بیماری اور اس کے نتیجے میں اقتصادی دشواریوں نے عالمی معیشت کو سخت نقصان پہنچایا ہے۔نیتی آیوگ کا اہم اٹل انوویشن مشن(اے آئی ایم) پورے ملک میں صنعت کاری کے جذبے کو برقرار رکھنے میں پوری تیاری میں ہے۔یہ کام کووڈ-19کے اختراعی نوعیت کے حل نکالنے اور اس وبائی بیماری کے خلاف جدوجہد کو مزید تیز کرنے کے ذریعے اسٹارٹ اپس کی مدد کے سلسلے میں دیگر وزارتوں اور ساتھیوں سے رابطہ قائم کئے ہوئے ہیں۔اس سلسلے میں اے آئی ایم نے آج ورچوول کووڈ-19 ڈیمو ڈیز کا سلسلہ چلاکر اسے مکمل کیا۔یہ ایک ایسی کوشش تھی، جس کا مقصد ایسے اسٹارٹ اَپس کی نشاندہی کرنا تھا، جو کووڈ-19اختراعات کے ذریعے پورے ملک میں مسائل کو حل کرسکیں۔اس کوشش کی شروعات سرکاری اداروں کے ساتھ شراکت داری سے کی گئی، جن میں بایو ٹیکنالوجی انڈسٹری ریسرچ اسسٹنس کونسل(بی آئی آر اے سی)، ڈپارٹمنٹ آف بایو ٹیکنالوجی(ڈی بی ٹی)، ڈپارٹمنٹ آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی(ڈی ایس ٹی)، اسٹارٹ اَپ انڈیا اے جی این آئی اور دیگر وزارتیں شامل تھیں۔یہ کام بھارت سرکار کے اعلیٰ سائنسی مشیر ڈاکٹر وجے راگھون اور ممبر ہیلتھ، نیتی آیوگ ڈاکٹر ونود پال کی ہدایت پر انجام دیا گیا۔کووڈ-19 سے متعلق 1000سے زیادہ اسٹارٹس اَپ کو جن کا تعلق مختلف زمروں سے تھا، جن میں علاج معالجے، احتیاطی تدابیر اور امدادی حل شامل ہیں،ایک ساتھ دو راؤنڈس میں ملا دیا گیا۔ان میں سے 70اسٹارٹ اَپس کو ورچوول کووڈ-19 ڈیمو ڈزیر کے لئے منتخب کیا گیا۔ ان اسٹارٹ اَپس کو فنڈنگ، مال کی تیاری کی صلاحیت تک رسائی ، سپلائی چین ، لوجسٹکس اور صحیح خوانچہ فروشوں اور نگرانوں کی تلاش کی شکل میں امداد حاصل ہوگی۔

جناب پیوش گوئل نے عالمی استحکام، سلامتی اور اقتصادی خوشحالی کو فروغ دینے کے مشترکہ مفاد کی وجہ سے بھارت۔ امریکی دو طرفہ تعلقات کے غیر معمولی فروغ کو واضح کیا
نئی دہلی:14 جولائی، 2020۔ہندوستان-امریکہ۔ سی ای او فورم کا انعقاد 14 جولائی 2020 کو ٹیلیفونک کانفرنس کے ذریعے ہوا۔ اس میٹنگ کی صدارت مشترکہ طور پر وزیر تجارت اور صنعت و ریلوے کے وزیر جناب پیوش گوئل نے کی تھی اور امریکی صدر برائے تجارت ، مسٹر ولبر راس نے کیا تھا۔ سکریٹری راس نے وزیر گوئل ، شریک چیئرمینوں اور سی ای او فورم کے ممبروں کی دوطرفہ تعلقات کو مستحکم کرنے میں ان کی شرکت اور پہل کے لئے شکریہ ادا کیا ، خاص طور پر کووڈ 19 وبائی کے مشکل وقت کے دوران ، جو اس موقع پر دونوں ممالک کو باہمی تعاون کے ذریعے قریب لانے کا موقع ہے۔ دواسازی ، طبی سامان اور متعلقہ سپلائی چین کا علاقہ۔ شری گوئل نے عالمی استحکام ، سلامتی اور معاشی خوشحالی کے فروغ میں مضبوط مشترکہ مفادات کے ذریعہ ہندوستان اور امریکہ دوطرفہ تعلقات میں استوار غیر معمولی رفتار کا اعادہ کیا۔ انہوں نے دونوں ممالک کی معیشتوں میں چھوٹے کاروباروں کی اہمیت اور اس شعبے میں روزگار اور مہارت میں اضافے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے فورم پر زور دیا کہ وہ کووڈ کے بعد کی دنیا میں ایک نیا راستہ طے کرنے کے لئے قائدین بنیں۔

سی بی ایس ای کے دسویں کلاس کے نتائج کا اعلان، تریویندرم خطے میں سب سے زیادہ پاس فیصد درج کیا
نئی دہلی، 15جولائی 2020۔ سینٹرل بورڈ آف سیکنڈری ایجوکیشن (سی بی ایس ای) کے دسویں کلاس کے نتائج آج جاری کئے گئے۔ سبھی خطوں (ریجن) میں تریویندرم نے سب سے بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا، جہاں 99.28 فیصد بچوں نے کامیابی حاصل کی۔ اس کے بعد چنئی خطہ رہا، جہاں کا پاس فیصد 98.95 ہے، جبکہ 98.23 پاس فیصد کے ساتھ بنگلورو خطے کو تیسرا مقام حاصل ہوا۔ مجموعی طور پر اس امتحان میں 1873015 طلباءشریک ہوئے، جن میں سے 1713121 طلباءنے کامیابی حاصل کی۔ اس سال کا بحیثیت مجموعی پاس فیصد 91.46 ہے۔

دیہی ترقی اور پنچایتی راج کے مرکزی وزیر جناب نریندر سنگھ تومر نے 6 ریاستوں کے نمائندوں کے ساتھ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ غریب کلیان روزگار ابھیان کی پیش رفت پر جائزہ میٹنگ کی
نئی دہلی15 جولائی 2020۔دیہی ترقی اور پنچایتی راج کے مرکزی وزیر جناب نریندرسنگھ تومرنے آج 6 ریاستوں کے دیہی ترقیاتی وزآ اور سینئیرافسران کے ساتھ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ غریب کلیان روزگار ابھیان کی پیش رفت پر جائزہ میٹنگ کی۔ 20 جو ن 2020 کو وزیر اعظم جناب نریندرمودی کا آغاز کردہ غریب کلیان روزگار ابھیان بہار ،اترپردیش ، جھارکھنڈ ، مدھیہ پردیش ، اوڈیشہ اور راجستھان جیسی ریاستوں کے 116 اضلاع میں چلایا جارہا ہے۔یہ ابھیان 125 دنوں تک چلے گا اور 11 مختلف وزارتوں کے تحت آنے والے کاموں کی تکمیل کے لئے نشاندہی کرلی گئی ہے۔مختلف معیارات کے لحاظ سے ابھیان کو اچھی پیش رفت کرتے ہوئے پایا گیا ہے اور اس پر مستقل طورپر نظررکھی جارہی ہے۔ریاستی نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے مرکزی وزیر نے کہا کہ یہ حکومت کی کوشش ہے ،جس کے تحت تارکین وطن مزدوروں کو ان کے آبائی مقامات پرروز گار فراہم کئے جارہے ہیں۔ یہ ابھیان نہ صرف یہ کہ اپنے گھروں کو لوٹنے والے تارکین وطن اور اسی طرح متاثرہ دیہی شہریوں کو روزگار فراہم کررہا ہے بلکہ اس سے معیشت بھی مضبوط ہورہی ہے اوراس کی نتیجے میں گاؤوں میں بھرپورعوامی بنیادی ڈھانچے ہوں گے اور ذریعہ معاش کے مواقع پیدا کئے جائیں گے ، جیسے سڑکیں ، مکانات ،آنگن واڑی سینٹر ، پنچایت گھروں ، متعدددذریعہ معاش کے اثاثے اور کمیونٹی کامپلیکس وغیرہ۔ انہوں نے مرکزاور ریاستوں کے درمیان سرگرم تعاون کے ذریعہ چلائی جارہی اس خصوصی مہم کی پیش رفت کی شرح پر اظہار اطمینان کیا اور اس مہم میں تیزی لانے اور زیادہ سے بنیادی ڈھانچے قائم کرنے پر زوردیا۔

جناب کرن رجیجو نے این وائی کے ایف ، این ایس ایس رضاکاروں کے ذریعے آتم نربھر بھارت کے بارے میں آگاہی پیدا کرنے کے لئے ریاستوں پر زور دیا ہے
نئی دہلی:14 جولائی، 2020۔نوجوانوں کے امور اور کھیل کود کے محکموں کے مرکزی وزیر جناب کرن رجیجو نے آج وڈیو کانفرنس کے ذریعے 18 ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے وزیروں اور نوجوانوں کے امور اور کھیل کود کے محکموں کے سینئر افسران کے ساتھ بات چیت کی۔آج کی میٹنگ دو روزہ کانفرنس کا پہلا حصہ تھی، جس میں تمام ریاستیں اور مرکز کے زیر انتظام علاقے، ریاستی سطح پر مختلف اسکیموں کو فروغ دینے کے لئے کووڈ-19 کے بعدکھیل کود کی بحالی کے سلسلے میں نہرو یووا کیندر سنگٹھن(این وائی کے ایس)اور نیشنل سروس اسکیم(این ایس ایس)کے رضاکاروں کواس کام میں شامل کرنے کے لئے ایک نقشہ راہ کی تیاری میں ایک دوسرے سے ساجھیداری کریں گے۔میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئےجناب کرن رجیجو نے کہا کہ  “این وائی کے ایس اور این ایس ایس رضاکاروں نے کووڈ-19 کے دوران سول انتظامیہ کے ساتھ کام کرکےایک قابل ستائش کارنامہ انجام دیا ہے۔ اس وقت رضاکاروں کی تعداد 75لاکھ ہے اور ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ اَن لاک -2 میں یہ تعداد بڑھا ایک کروڑ کردی جائے۔وزیر اعظم نے آتم نر بھر بھارت کا اعلان پہلےہی کردیا ہے۔جیسے ہی ملک پوری طرح کھل جائے گا، ہمارے رضاکار معاشرے کے تمام طبقوں، مثلاً کسانوں، چھوٹے کاروباریوں اور دیگر لوگوں میں خود کفالت کے سلسلے میں آگے بڑھنے کے براہ راست فائدوں کے بارے میں آگاہی پیدا کریں گے۔

پی آئی بی فیلڈ دفاتر سے ماخوذ

*چندی گڑھ: منتظم ، یو ٹی چندی گڑھ ، نے سیکرٹری لیبر کو ہدایت کی کہ وہ اس بات کو یقینی بنائے کہ کسی بھی فرد کے ساتھ ، جس کا علاج کووڈ سے ہوا ہے اور اسے نجی یا سرکاری شعبے میں نوکری پر واپس جانے سے انکار نہیں کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ایسے لوگ کافی محفوظ ہیں ، کیوں کہ ان کے دوبارہ کورونا سے رابطہ کرنے کا امکان نہیں ہے۔

*پنجاب: 72 گھنٹوں سے بھی کم وقت کے لئے پنجاب آنے والے اب لازمی طور پر گھر سے متعلق سنگرودھ سے مستثنیٰ ہیں ، اور انہیں صرف سرحدی چیک پوسٹ پر باضابطہ طور پر انڈرکینڈ جمع کرانے کی ضرورت ہے۔ یہ مراعات فراہم کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا تاکہ امتحانات یا کاروباری سفر کرنے والے طلبا، جو ریاست میں ان کی آمد کے وقت سے 72 گھنٹے سے بھی کم رہتے ہیں ، کے لئے آنے کے خواہشمند طلباءکی سہولت کےلیے فراہم کریں۔ اس مدت کے دوران ، وہ اپنی صحت کی نگرانی اور آس پاس کے لوگوں سے فاصلہ برقرار رکھنے کا عہد کریں گے ، اور اگر وہ COVID19 کے مطابق کسی علامت کا شکار ہیں تو وہ تفویض کردہ نگرانی ٹیم کے ساتھ بھی بات چیت کریں گے اور فوری طور پر 104 پر فون کریں گے۔

*ہریانہ: وزیر اعلی نے کہا کہ ریاستی حکومت نے COVID19 چیلنج کو ایک موقع کے طور پر لیا ہے اور اس عرصے کے دوران مختلف صنعتی اور معاشی اصلاحات متعارف کروائی ہیں جس کے نتیجے میں 60 سے زیادہ بڑی کمپنیوں نے ہریانہ میں سرمایہ کاری کرنے میں گہری دلچسپی ظاہر کی ہے۔ . اس کے علاوہ ، ریاستی حکومت نے کورونہ کے بعد کے دور میں ریاستی معیشت کی بحالی کے لئے ایک روڈ میپ بھی تیار کیا ہے جس کے تحت متعدد ٹاسک گروپس تشکیل دیئے گئے ہیں ، جن میں مختلف شعبہ ہائے زندگی کی ممتاز شخصیات ہیں۔

*ہماچل پردیش: وزیر اعلی نے محکمہ صحت کے اعلی افسران کے ساتھ جائزہ میٹنگ کے دوران کہا کہ ریاستی حکومت ریاست میں COVID19 پر قابو پانے کے لئے موثر اقدامات کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں تجارتی اور معاشی سرگرمیاں انلاک ہونے کے عمل کے بعد شروع ہوگئی ہیں۔ دوسری ریاستوں سے بھی صنعتی مزدوروں کی واپسی شروع ہوگئی ہے۔ تاہم ، دیگر ریاستوں سے آنے والے لوگوں کی وجہ سے کووڈ 19 کے مریضوں میں ہونے والے اضافے کو مدنظر رکھتے ہوئے ، ریاستی حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ صنعتی مزدوروں کو یا تو ادارہ جاتی قرنطین میں رکھا جائے یا گھریلو تعلقی میں رکھا جائے۔ ٹھیکیدار اور صنعتی ادارے اس کے لئے پوری طرح سے ذمہ دار ہوں گے۔ COVID19 کی رپورٹ منفی پائے جانے کے بعد انہیں کام کرنے کی اجازت ہوگی۔

*مہاراشٹرا: گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 6741 خبروں کے ساتھ کووڈ کے 19 واقعات رپورٹ ہوئے ، ریاست میں کل رپورٹ ہونے والے کیسوں کی تعداد 267655 کو پہنچ گئی ہے۔ ان میں سے 1.49 لاکھ مریض بازیاب ہوئے ہیں، جبکہ ریاست میں سرگرم کیسوں کی تعداد کھڑی ہے۔ 107963 پر۔ ممبئی میں ، منگل کو 969 مثبت مریضوں کی شناخت کی گئی ہے ، اس کے علاوہ 1011 بازیافت اور 70 اموات ہیں۔ اس کے ساتھ ہی ممبئی میں کووڈ 19 کی گنتی 94863 ہوگئی ہے۔ جبکہ بازیاب مریضوں کی کل تعداد اب 66633 ہے اور اموات کی تعداد 5402 ہے۔ اس وقت شہر میں 22828 سرگرم مریض ہیں۔ ممبئی میں کووڈ 19 کیسوں کی دگنی شرح 52 دن تک کم ہوگئی ہے۔

*گجرات: گجرات سے 951 نئے معاملات رپورٹ ہوئے ہیں ، جس سے ریاست میں کل معاملات 43723 ہیں۔ منگل کے روز 14 مریض اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ، جس میں اموات کی تعداد 2071 ہوگئی۔ ضلع سورت میں سب سے زیادہ 291 واقعات رپورٹ ہوئے ، اس کے بعد احمد آباد میں 154 واقع ہوئے۔ کووڈ 19 کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر ، متعدد دکانیں ، بازار اور صنعتی یونٹ سورت کے ٹیکسٹائل اور ڈائمنڈ ہب نے رضاکارانہ طور پر اپنے کاروبار بند کردیئے ہیں یا اپنا کام بند کردیا ہے۔ تقریبا 25 ٹیکسٹائل مارکیٹوں میں 35000 سے زیادہ دکانوں نے 20 جولائی تک مکمل طور پر بند رہنے کا اعلان کیا ہے۔

*راجستھان: آج صبح 235 نئے مثبت واقعات کی اطلاع کے ساتھ ریاست میں کووڈ 19 کی تعداد 25806 ہوگئی۔ کل بازیافتوں کی تعداد 19199 ہوگئی ہے ، جبکہ فعال معاملات صرف 6080 ہیں۔ راجستھان میں ہلاکتوں کی تعداد 527 ہے۔

* مدھیہ پردیش: ایک ہی دن میں ایک اعلی ترین دن میں ، منگل کے روز 798 مثبت واقعات رپورٹ ہوئے ہیں ، جو ریاست کووڈ 19 کو 19005 تک لے جاتا ہے۔ جبکہ ایم پی میں 4757 سرگرم مریض ہیں ، بازیاب مریضوں کی گنتی 13575 ہے اور اموات کی تعداد 673 ہے۔ زیادہ سے زیادہ معاملات ، یعنی گوالیار سے 190 نئے مریض رپورٹ ہوئے ، اس کے بعد بھوپال میں 103 مریض رپورٹ ہوئے۔

* چھتیس گڑھ: 105 نئے مثبت مریضوں کی شناخت کی گئی ہے جو ریاست کووڈ 19 سے لے کر 4379 تک جا رہے ہیں۔ نیز ، فعال مریضوں کی موجودہ گنتی 1084 ہے۔

* گوا: منگل کو 170 نئے مریضوں نے مثبت طور پر جانچ کی ہے، جس سے ریاست کی تعداد 2753 ہوجاتی ہے۔ بازیاب مریضوں کی موجودہ گنتی 1607 اور کوویڈ 19 میں مرنے والوں کی تعداد 18 ہے۔ فعال مریضوں کی تعداد 1128 ہے۔ وزیر اعلی پروموڈ ساونت نے بدھ کے روز کہا کہ ریاست میں COVID19 کے بڑھتے ہوئے واقعات کے پیش نظر گوا میں تین روزہ لاک ڈاون لاگو کیا جائے گا۔ گوا میں 10 اگست کو شام 8 بجے سے صبح 6 بجے تک جنتا کرفیو منایا جائے گا ، کووڈ 19 کے بڑھتے ہوئے معاملات کے پیش نظر۔ صرف طبی خدمات کی اجازت ہوگی۔

* اروناچل پردیش: اروناچل پردیش میں ، نامسئی ضلعی انتظامیہ نے کوڈ -19 کے پھیلاؤکی روک تھام کے لئے آج شام 10 بجے سے 23 جولائی (صبح 5 بجے) تک نو روزہ لاک ڈاو ¿ن نافذ کردیا ہے۔ اروناچل پردیش کے ہیلتھ سکریٹری کا کہنا ہے کہ اٹانگر میں نئے ایم ایل اے اپارٹمنٹس میں مجوزہ سنگرودھ کا مرکز ہر طرح کے اہم مریضوں کے لئے ہے اور نہ صرف کووڈ -19 کے مریضوں کے لئے۔
* آسام: آسام کے وزیر اعلی شری سربانندسوونوال نے آج ٹیوکراجاباری ایچ ایس اسکول میں سیلاب سے متعلق امدادی کیمپ میں مقیم لوگوں سے ملاقات کی۔ آسام حکومت کے ذریعہ ریاست کے مختلف سیلاب زدہ علاقوں میں لگائے گئے 198 امدادی کیمپوں میں اس وقت قریب 44000 افراد موجود ہیں۔

*منی پور: منی پور کے علاقے ککلچ میں پیلییل بازار میں متحدہ عوامی انتظامی کونسل کے اشتراک سے کولیشن ایڈوانس آف ڈرگس اینڈ الکحل کاکچنگ ڈسٹرکٹ کمیٹی کے زیر اہتمام کووڈ 19 پر بیداری کا پروگرام۔

*میزورم: میزورم بورڈ آف اسکول ایجوکیشن (ایم بی ایس ای) نے کل 12 ویں جماعت کے نتائج کا اعلان کیا۔ 78.52 فیصد طلبا امتحان میں کامیاب ہوئے۔

*کیرالہ: کیرالہ ہائی کورٹ نے آج 31 جولائی تک ریاست میں ہونے والے تمام مظاہروں ، ہڑتالوں اور مارچوں پر پابندی عائد کردی۔ اس میں ریاستی حکومت پر بھی زور دیا گیا کہ وہ کووڈ - 19 وبائی امراض سے متعلق مرکز کی طرف سے دی گئی ہدایات کو سختی سے نافذ کرے۔ کوزیکوڈ میں کووڈ کیسوں میں اضافے کے تناظر میں ، ضلعی کلکٹر نے آئندہ اطلاع تک اتوار کے روز مکمل لاک ڈاؤن کا حکم جاری کیا ہے۔ کوزیکوڈ کے تھنری میں 53 کوویڈ کیسز رپورٹ ہونے کے ایک دن بعد - جہاں ٹرپل لاک ڈاؤن کا عمل دخل ہے۔ آج مزید 43 واقعات کی اطلاع ملی ہے۔ دو بندرگاہ بھی بند کردیئے گئے ہیں۔ ریاست میں آج ایک اور کووی کی موت کی اطلاع ملی ہے ، جس کی تعداد 35 ہوگئی ہے۔ ریاست میں کل 608 نئے واقعات رپورٹ ہوئے جن میں 396 رابطے کے معاملات تھے۔ اس وقت مختلف اضلاع میں 4454 مریض زیر علاج ہیں اور 181847 افراد نگرانی میں ہیں۔

*تمل ناڈو: کوڈو میں تین مزید دم توڑ گئے جب پڈوچیری نے 67 تازہ واقعات کی اطلاع دی۔ کل تعداد 1596 تک پہنچ جاتی ہے۔ ٹی این حکومت نے آئی سی ایم آر کے چنئی انسٹی ٹیوٹ میں بی سی جی ٹرائل کو رضامندی دی۔ وزیر صحت سی وجئے باسکر نے کہا کہ امید ہے کہ عمر رسیدہ افراد کو بروقت جانچ شدہ بی سی جی سے ٹیکے لگانے سے کووڈ 19 کی شدت کم ہوسکے گی ، اسپتالوں میں داخلے اور اموات کی شرح میں کمی آئے گی۔ چنئی میں کووڈ کے معاملات قابو میں ہیں، کیونکہ باقی ٹی این میں بھی معاملات بڑھ رہے ہیں۔ گذشتہ روز مدورائی ، ترووالور اور ویرودھن نگر میں بالترتیب 450360 اور 328 واقعات ریکارڈ کیے گئے۔ کل 4526 نئے کیس اور 66 اموات کی اطلاع ہے۔ چنئی سے 1078 مقدمات۔ اب تک کل معاملات: 147324؛ فعال مقدمات: 47912؛ چنئی میں سرگرم مقدمات: 15814۔

*کرناٹک: بنگلور شہری اور بنگلور دیہی اضلاع میں سات دن سے لاک ڈاؤن سختی سے نافذ کیا جارہا ہے۔ شیوگوگا ضلع بھی اگلے احکامات تک کل سے شروع ہونے والی لاک ڈاؤن میں چلا جاتا ہے۔ ریاستی حکومت نے نجی اسپتالوں میں بستر الاٹمنٹ بورڈ کو لازمی طور پر ظاہر کرنے کا حکم دیا۔ سزا کو راغب کرنے کے حکم کی تعمیل نہیں۔ کرناٹک ہائی کورٹ نے ریاست سے پوچھا کہ آیا لاک ڈاؤن کے دوران ڈیوٹی پر موجود سرکاری ملازمین کے لئے کووڈ ٹیسٹ کروانے کی کوئی خاص سہولت موجود ہے۔ ریاست جلد ہی 1419 نرسوں ، 506 لیب ٹیکنیشنز ، 916 فارماسسٹ اور ڈی گروپ خالی آسامیوں کو پر کرے گی۔ کل 2496 نئے کیسز ، اور کل اموات کی اطلاع؛ بنگلور شہر میں 1267 مقدمات۔ مثبت مثبت معاملات: 44077؛ فعال مقدمات: 25839؛ اموات: 842۔

*آندھرا پردیش: ایسوی آئی ایم ایس سپر اسپیشلیٹی اسپتال ، کووڈ۔19 سے متاثرہ میڈیکل اور پیرامیڈیکل اہلکاروں سمیت اس کے چالیس سے زائد عملے کے ساتھ ، تروپتی نے پانچ دن سے باہر مریضوں کی خدمت بند کردی ہے۔ روزانہ 100 سے زیادہ مقدمات کی اطلاع کے ساتھ ، تروپتی شہری انتظامیہ نے 18 ڈویڑنوں میں مکمل لاک ڈاو ¿ن نافذ کردیا ہے۔ مزدور طبقے کی تشویش کے ساتھ ، اے پی ایس آر ٹی سی نے ریاست میں کمڈکٹر سے کم بس خدمات واپس لے لی ہیں تاکہ ڈیجیٹل لین دین کی حوصلہ افزائی کے لئے کورونا وائرس کے پھیلاؤپر قابو پایا جاسکے۔ وجئے واڑہ کے گنوارم ایئرپورٹ پر ڈیوٹی پر موجود اے پی ایس پی کانسٹیبل کے 26 ارکان کو کوڈ مثبت کے طور پر شناخت کیا گیا ہے۔ مختلف اسپتالوں میں ان کا علاج جاری ہے۔ 1916 نئے مقدمات ، 952 خارج ہوئے اور 43 نے کل اطلاع دی۔ کل معاملات: 33019؛ فعال مقدمات: 15144؛ اموات: 408۔

* تلنگانہ: ضلعی اسپتالوں اور تلنگانہ انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز کووڈ۔19 علاج شروع کریں گے۔ حیدرآباد میں نظام انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس (این آئی ایم ایس) ، کورونا وائرس ویکسین ، کوواکسن کے لئے کلینیکل ٹرائلز کرانے کا عمل شروع کرتا ہے۔ ملک کی پہلی گھریلو کوویڈ۔ 19 کواکسین ویکسن بھارت بائیوٹیک نے آئی سی ایم آر اور نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف وائرولوجی کے اشتراک سے تیار کی ہے۔ کل رپورٹ ہوئے: 37745؛ فعال مقدمات: 12531؛ اموات 375؛ فارغ ہوئے : 24840۔


https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0072MTI.jpg

*****

 

U-3972



(Release ID: 1639280) Visitor Counter : 7