وزارت خزانہ

وزیر خزانہ محترمہ نرملا سیتا رمن نے کوویڈ-19 کی وبا خلاف لڑائی میں بھارتی معیشت کو سہارا دینے کے لیے 628993 کروڑ روپے کے ریلیف پیکیج کا اعلان کیا


کوویڈ سے متاثرہ شعبوں کے لیے 1.1 لاکھ کروڑ روپے کی قرض گارنٹی اسکیم

ایمرجنسی کریڈٹ لائن گارنٹی اسکیم کے لیے اضافی 1.5 لاکھ کروڑ روپے مختص

25 لاکھ افراد کو قرضوں کی سہولت فراہم کرنے کے لیے مائیکرو فنانس اداروں (ایم ایف آئی) کے لیے کریڈٹ گارنٹی اسکیم

11000 سے زیادہ اندراج شدہ سیاحوں/ گائیڈز/سیاحتی سے وابستہ فریقوں کو مالی مدد

پہلے 5 لاکھ سیاحوں کو مفت ایک ماہ کا سیاحتی ویزا

آتم نربھر بھارت روزگار یوجنا میں توسیع 31 مارچ 2022 تک

ڈی اے پی اینڈ پی اینڈ کے کھاد کے لیے 14775 کروڑ روپے کی اضافی سبسڈی

وزیر اعظم غریب کلیان انا یوجنا (پی ایم جی کے اے وائی) کی توسیع - مئی سے نومبر 2021 تک مفت اناج

بچوں اور بچوں کی نگہداشت/ بچوں کے بستروں پر زور دینے کے ساتھ صحت عامہ کے لیے مزید 23220 کروڑ روپے مختص

تغذیے، آب و ہوا کی لچک اور دیگر صفات کے لیے بائیو فورٹیفائیڈ فصل کی 21 اقسام قوم کے نام وقف کی جائیں گی

77.45کروڑ روپے کے پیکیج کے ساتھ شمال مشرقی خطے کی زرعی مارکیٹنگ کارپوریشن (این ای آر اے ایم اے سی) کی بحالی

قومی برآمد بیمہ اکاؤنٹ (این ای آئی اے) کے ذریعے پراجیکٹ برآمدات کو فروغ دینے کے لیے 33000 کروڑ روپے مختص

ایکسپورٹ انشورنس کور کو فروغ دینے کے لیے 88000 کروڑ روپے مختص

بھارت نیٹ پی پی پی ماڈل کے وسیلے سے ہر گاؤں میں براڈ بینڈ کے لیے 19041 کروڑ روپے مختص

2025-26 تک بڑے پیمانے پر الیکٹرانکس مینوفیکچرنگ کے لیے پی ایل آئی اسکیم کی مدت میں توسیع

اصلاحات پر مبنی نتائج سے منسلک بجلی کی تقسیم اسکیم کے لیے 3.03 لاکھ کروڑ روپے مختص

پی پی پی منصوبوں اور اثاثہ مونیٹائزیشن کے لیے نیا ہموار عمل

Posted On: 28 JUN 2021 6:53PM by PIB Delhi

28 جون 2021 :مرکزی وزرات خزانہ اور کارپوریٹ امور کی وزیر محترمہ نرملا سیتارمن نے آج یہاں کوویڈ 19 وبا کی دوسری لہر سے متاثرہ مختلف شعبوں کو ریلیف پیکیج فراہم کرنے کے لیے متعدد اقدامات کا اعلان کیا۔ اعلان کردہ اقدامات کا مقصد ہنگامی ردعمل کے لیے صحت کے نظام کو تیار کرنا اور ترقی اور روزگار میں تیزی لانا بھی ہے۔ ریلیف پیکیج کے اعلان کے دوران مرکزی وزیر مملکت برائے خزانہ و کارپوریٹ امور جناب انوراگ سنگھ ٹھاکر، فنانس سکریٹری ڈاکٹر ٹی وی سوامی ناتھن، سکریٹری ڈی ایف ایس جناب دیباشیش پانڈا اور سکریٹری ریونیو جناب ترون بجاج بھی موجود تھے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001BTBL.jpg

نئی دہلی میں آج مرکزی وزیر خزانہ و کارپوریٹ امور کی وزیر جناب نرملا سیتارمن نے اقتصادی امدادی پیکج کا اعلان کیا

6,28,993 کروڑ روپے مالیت کے مجموعی طور پر 17 اقدامات کا اعلان کیا گیا ہے۔ ان میں پہلے اعلان کردہ 2 اقدامات یعنی ڈی اے پی اور پی اینڈ کھادوں کے لیے اضافی سبسڈی اور وزیر اعظم غریب کلیان انا یوجنا (پی ایم جی کے وائی) کو مئی سے نومبر 2021 تک توسیع دینا شامل ہیں۔

آج کے اعلان کردہ اقدامات کو 3 اہم زمروں میں رکھا جاسکتا ہے:

1۔ عالمی وبا سے اقتصادی ریلیف

2. صحت عامہ کو مستحکم بنانا

3. نمو اور روزگار کو مہمیز دینا

 

1۔ عالمی وبا سے اقتصادی ریلیف

اعلان کردہ 17 اسکیموں میں سے 8 کا مقصد کوویڈ 19 وبا سے متاثرہ افراد اور کاروباری اداروں کو اقتصادی ریلیف فراہم کرنا ہے۔ صحت اور سفر اور سیاحت کے شعبوں کی بحالی پر خصوصی توجہ دی گئی ہے۔

  1. کوویڈ سے متاثرہ علاقوں کے لیے قرض گارنٹی اسکیم کے تحت 1.10 لاکھ کروڑ روپے

اس نئی اسکیم کے تحت کوویڈ سے متاثرہ علاقوں کے لیے قرض گارنٹی اسکیم کے تحت ان تاجروں کو 1.10 لاکھ کروڑ روپے دیے جائیں گے۔ اس میں صحت کے شعبے اور سیاحت کے شعبے سمیت دیگر شعبوں کے لیے 50,000 کروڑ روپے شامل ہیں۔

صحت کے شعبے کے جزو کا مقصد کم سہولیات والے علاقوں میں طبی بنیادی ڈھانچے کے اہداف میں اضافہ کرنا ہے۔ میٹروپولیٹن شہروں کے علاوہ دیگر شہروں کو صحت/ طبی بنیادی ڈھانچے کے نئے منصوبوں کے قیام اور توسیع کے لیے گارنٹی کور ملے گا جب کہ 75 فیصد نئے منصوبوں کے لیے 50 فیصد توسیع اور گارنٹی کور ملے گا۔ نئے منصوبوں اور توسیع دونوں کے لیے پرجوش اضلاع کے لیے گارنٹی کور دستیاب ہوگا۔ اس اسکیم کے تحت زیادہ سے زیادہ 100 کروڑ روپے کا قرض حاصل کیا جاسکتا ہے اور ضمانت کی مدت 3 سال ہوگی۔ بینک ان ٹیکسوں پر زیادہ سے زیادہ 7.95 فیصد سود وصول کرسکتے ہیں۔ دیگر شعبوں کے لیے ٹیکسوں پر شرح سود 8.25 فیصد سالانہ مقرر کی گئی ہے۔ لہذا اس اسکیم کے تحت دستیاب قرضے عام شرح سود کے ساتھ ضمانت کے بغیر 10.11 فیصد سے کہیں سستے ہوں گے۔

  1. ایمرجنسی کریڈٹ لائن گارنٹی اسکیم (ای سی ایل جی ایس)

حکومت نے مئی 2020 میں شروع کیے گئے سیلف ریلائنٹ انڈیا پیکیج کے حصے کے طور پر ایمرجنسی کریڈٹ لائن گارنٹی اسکیم کو بڑھا کر 1.5 لاکھ کروڑ روپے کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ای سی ایل جی ایس کو بہت گرمجوشی سے جواب ملا ہے۔ 2.73لاکھ کروڑ روپے کی منظوری دی جارہی ہے اور اس اسکیم کے تحت پہلے ہی 2.10 لاکھ کروڑ روپے تقسیم کیے جاچکے ہیں۔ توسیعی اسکیم کے تحت ضمانت کی حد اور قرض کی رقم کو بقایا ہر قرض کے 20 فیصد کی موجودہ سطح سے بڑھانے کی تجویز ہے۔ رقبے کے لحاظ سے توسیع کو ضروریات کے مطابق حتمی شکل دی جائے گی۔ ایڈجسٹ ایبل گارنٹی کی پوری حد 3 لاکھ کروڑ روپے سے بڑھا کر 4.5 لاکھ کروڑ روپے کردی جائے گی۔

  1. مائیکرو فنانس اداروں کے لیے کریڈٹ گارنٹی اسکیم

آج کی اعلان کردہ اسکیم ایک بالکل نئی اسکیم ہے جس کا مقصد مائیکرو فنانس اداروں کے نیٹ ورک کے ذریعے فراہم کردہ چھوٹے قرض داروں کو فائدہ پہنچانا ہے۔ نئے یا موجودہ این بی ایف سی - ایم ایف آئی یا ایم ایف آئی کی ضمانت شیڈولڈ ٹریڈ بینکوں کو تقریباً 25 لاکھ چھوٹے قرض داروں کو 1.25 لاکھ روپے تک کے قرضوں کے لیے دی جائے گی۔ بینکوں کے قرضے ایم سی ایل آر پلس 2 فیصد پر جمع کرائے جائیں گے، زیادہ سے زیادہ قرضوں کی مدت 3 سال ہوگی اور 80 فیصد امداد ایم ایف آئی قرض کی نمو کے لیے استعمال کرے گی۔ شرح سود ریزرو بینک کی مقرر کردہ زیادہ سے زیادہ شرح کا کم از کم 2 فیصد ہوگی۔ یہ اسکیم نئے قرض دینے پر مرکوز ہے نہ کہ پرانے قرض کی ادائیگی پر۔ مائیکرو مالیاتی ادارے ریزرو بینک کے موجودہ رہ نما خطوط جیسے قرض دہندگان کی تعداد، قرض لینے والوں کو جے ایل جی کا رکن بننے اور گھریلو آمدنی اور قرضوں کی حد کے مطابق قرض دیں گے۔ اسکیم کی ایک خصوصیت یہ ہے کہ تمام قرض دار (نادہندگان سمیت 89 دن تک) اس کے اہل ہوں گے۔ ایم ایف آئی/ این بی ایف سی - ایم ایف آئی کے پاس ایم ایل آئیز کی جانب سے 31 مارچ 2022 کو جاری کی گئی رقم یا جب تک گارنٹی 7500 کروڑ ہے، جو بھی پہلے ہو، کے لیے فراہم کردہ فنڈز کے لیے گارنٹی کور ہوگا۔ نیشنل کریڈٹ گارنٹی ٹرسٹی کمپنی (این سی جی ٹی سی) کی جانب سے 3 سال کے لیے 75 فیصد ڈیفالٹ رقم کی ضمانت فراہم کی جائے گی۔ این سی جی ٹی سی کی طرف سے کوئی گارنٹی فیس وصول نہیں کی جائے گی۔

  1. سیاحتی گائیڈز/اسٹیک ہپولڈروں کے لیے اسکیم

آج اعلان کردہ ایک اور اسکیم کا مقصد سیاحت کے شعبے میں کام کرنے والے لوگوں کو راحت فراہم کرنا ہے۔ نئی قرض گارنٹی اسکیم کے تحت سیاحت کے شعبے کے لوگوں کو ان کی ذمہ داریوں کی ادائیگی اور کوویڈ 19 سے متاثرہ کاروبار دوبارہ شروع کرنے کے لیے ورکنگ کیپیٹل یا انفرادی قرضے فراہم کیے جائیں گے۔ اس اسکیم میں 10,700 علاقائی سطح کے سیاحتی اسکواڈ شامل ہوں گے جن سے وزارت سیاحت اور سیاحتی اسکواڈ کو ریاستی حکومت کی مدد حاصل ہے اور سیاحت کی وزارت کے ذریعے حاصل کردہ دورے میں 1,000 سیاحتی شرکا شامل ہوں گے۔ ہر ٹی ٹی ایس 10 لاکھ روپے قرض کے قابل ہوگا جب کہ سیاحتی گائیڈ ایک لاکھ روپے تک قرض حاصل کرسکتا ہے۔ کوئی پروسیسنگ چارج نہیں ہوگا، پہلے قرض/ چارجز کی ادائیگی کی پہلی ادائیگی پر چھوٹ ہوگی۔ کولیٹرل کی کوئی اضافی ضرورت نہیں ہوگی۔ یہ اسکیم وزارت سیاحت این سی جی ٹی سی کے ذریعے چلائے گی۔

  1. 5 لاکھ سیاحوں کے لیے ایک ماہ کا مفت سیاحتی ویزا

یہ سیاحت کے شعبے کو فروغ دینے کے لیے ایک اور اسکیم ہے۔ اس کی رو سے جب دوبارہ ویزا جاری کرنے کا عمل شروع ہوگا تو پہلے 5 لاکھ غیر ملکی سیاحوں کو مفت ویزا جاری کیا جائے گا۔ لیکن یہ فائدہ ہر سیاح کو صرف ایک بار ملے گا۔ یہ سہولت 31 مارچ 2022 تک یا 5 لاکھ ویزوں کے اجرا تک یا دونوں میں سے کسی کے پہلے واقع ہونے تک جاری رہے گی۔ حکومت کا اس اسکیم پر کل 100 کروڑ روپے کا خرچ آئے گا۔

  1. آتم نربھر بھارت روزگار یوجنا (اے این بی آر وائی) میں توسیع

آتم نربھر بھارت روزگار اسکیم یکم اکتوبر 2020 کو شروع کی گئی تھی جس میں آجروں کو نئی ملازمتیں پیدا کرنے اور ای پی ایف او سے کھوئے ہوئے روزگار کی بحالی کی ترغیب دی گئی ہے۔ اس اسکیم کے تحت اندراج کے 2 سال تک نئے ملازمین کو جو 15 ہزار روپے سے کم ماہانہ اجرت حاصل کرتے ہیں سبسڈی اور فراہم کی جائے گی جس میں 1000 ملازمین تک آجر اور ملازم کا حصہ (اجرت کا 12 فیصد) ہوگا۔ 18-06-2021 تک 79,577 یونٹس کے 21.42 لاکھ مستفیدین کو 902 کروڑ روپے کا فائدہ دیا گیا ہے۔ اس اسکیم کو 30-06-2021 سے بڑھا کر 31-03-2022 تک کر دیا گیا ہے۔

  1. ڈی اے پی اور پی کے کھادوں کے لیے اضافی سبسڈی کا اعلان

 حال ہی میں کسانوں کو ڈی اے پی اور پی اینڈ کے کھادوں کے لیے زیادہ سبسڈی کا اعلان کیا گیا تھا۔ اس میں توسیع کی گئی ہے۔ مالی سال 2020-21 میں موجودہ این بی ایس سبسڈی 27500 کروڑ روپے تھی جب کہ مالی سال 2021-22 میں یہ بڑھ کر 42275 کروڑ روپے ہوگئی ہے۔ 14,775 کروڑ روپے کا فائدہ کسانوں کو ہوگا۔ اس میں ڈی اے پی کے لیے 9125 کروڑ روپے کی اضافی سبسڈی اور این پی کے پر مبنی پیچیدہ کھادوں کے لیے اضافی سبسڈی 5650 کروڑ روپے شامل ہے۔

  1. وزیر اعظم غریب کلیان یوجنا (پی ایم جی کے وائی) کے تحت مئی سے ستمبر 2021 تک مفت اناج فراہم کیا جائے گا۔

گذشتہ مالی سال میں حکومت نے کوویڈ 19 وبا کی وجہ سے غریبوں کو درپیش مشکلات کو کم کرنے کے لیے پی ایم جی کے وائی کے تحت 1,33,972 کروڑ روپے خرچ کیے تھے۔ یہ اسکیم ابتدائی طور پر اپریل سے جون 2020 تک شروع کی گئی تھی لیکن غریبوں اور ضرورت مندوں کو امداد کی مسلسل ضرورت کے پیش نظر اس اسکیم میں نومبر 2020 تک توسیع کردی گئی تھی۔ کوویڈ 19 وبا کی دوسری لہر کے پیش نظر مئی 2021 میں اس اسکیم کو دوبارہ شروع کیا گیا تاکہ غریب اور کم زور طبقات کے لیے غذائی تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے۔ مئی سے نومبر 2021 تک اناج میں این ایف ایس اے سے فائدہ اٹھانے والوں کو 5 کلو گرام مفت اناج فراہم کیا جائے گا۔ اس اسکیم پر تخمینہ کے مطابق 93,869 کروڑ روپے مالی اخراجات آئیں گے اور اس سے پی ایم جی کے وائی کے کل مصارف 2,27,841 کروڑ روپے تک پہنچ جائیں گے۔

  1. صحت عامہ کو مضبوط بنانا

بچوں اور بچوں کی نگہداشت/ بچوں کے بستروں پر زور دیتے ہوئے صحت عامہ کے لیے 23,220 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔

کریڈٹ گارنٹی اسکیم کے ذریعے صحت کے شعبے کی مدد کے علاوہ صحت کے بنیادی ڈھانچے اور انسانی وسائل کو مستحکم کرنے کے لیے 23,220 کروڑ روپے کی رقم کے ساتھ ایک نئی اسکیم کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس اسکیم میں بچوں اور بچوں کی نگہداشت/ بچوں کے بستروں پر خصوصی زور دیتے ہوئے قلیل مدتی ہنگامی تیاریوں پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔ 23,220 کروڑ روپے موجودہ مالی سال میں اس اسکیم پر خرچ کیے جائیں گے۔ اس اسکیم کے تحت انسانی وسائل کی توسیع کے لیے میڈیکل طلبا (انٹرن، رہائش گاہیں، آخری سال) اور نرسنگ طلبا؛ آئی سی یو بستروں کی دستیابی میں اضافہ، مرکزی، ضلعی اور ذیلی ضلعی سطح پر آکسیجن کی فراہمی میں اضافہ، آلات کی دستیابی میں اضافہ، ادویات کی دستیابی، ٹیلی مشاورت تک رسائی، ایمبولینس خدمات کی مضبوطی اور تشخیص کے لیے جانچ کی صلاحیت میں اضافہ، جینوم سیکوئنسنگ اور نگرانی کی صلاحیت میں اضافے کے لیے فنڈز مختصر مدت کے لیے دستیاب ہوں گے۔

  1. ترقی اور روزگار کو فروغ دینے کے لیے حکومت کی طرف سے خصوصی توجہ دی گئی ہے۔ اس تناظر میں درج ذیل 8 اسکیموں کا اعلان کیا گیا ہے:

 

  1. آب و ہوا سے لچک رکھنے والی مخصوص اقسام کی فصلوں کو قوم کے نام وقف کرنا

اس سے قبل زیادہ پیداوار دینے والی اقسام میں غذائیت، آب و ہوا سے لچک اور دیگر خصوصیات کا خیال نہیں رکھا جاتا تھا۔ ان اقسام میں اہم غذائی اجزا پر مطلوبہ سطح سے نیچے کے عناصر شامل تھے جو حیاتیاتی اور اینٹی بائیوٹکس کو دبانے کا امکان رکھتے تھے۔ آئی سی اے آر نے زیادہ غذائی اجزا والی فصلوں کی بائیو فورٹیفائیڈ اقسام تیار کی ہیں جن میں پروٹین، آئرن، زنک اور وٹامن اے شامل ہیں۔ یہ اقسام بیماریوں، کیڑوں، حشرات، سیلن اور سیلاب وغیرہ سے محفوظ ہیں اور تیزی سے پکتی ہیں اور ان کی مشینی کٹائی بھی آسان ہے۔ چاول، مٹر، باجرہ، مکئی، سویابین، کینوا، بک وہیٹ، ونگڈ بین، جوار اور سورگم جیسی 21 اقسام قوم کے نام وقف کی گئی ہیں۔

  1. شمال مشرقی خطے کی زرعی مارکیٹنگ کارپوریشن (این ای آر ایم اے سی) کی بحالی

شمال مشرقی خطے کی زرعی مارکیٹنگ کارپوریشن کا قیام 1982 میں کسانوں کے تعاون کے لیے شمال مشرق میں زراعت اور باغبانی کی مصنوعات کی آمدنی میں مدد کے لیے کیا گیا تھا۔ اس کا مقصد شمال مشرق میں زراعت، خریداری، پروسیسنگ اور مارکیٹنگ کے بنیادی ڈھانچے کو مضبوط کرنا تھا۔ 75 کسان-پیداواری ادارے/ کمپنیاں نیرامک سے رجسٹرڈ ہیں۔ اس نے شمال مشرق کی 13 جغرافیائی اشاریہ فصلوں کے اندراج کی سہولت فراہم کی ہے۔ کمپنی نے ایجنٹوں اور بچولیوں کو ہٹا کر کسانوں کو 10 سے 15 فیصد زیادہ قیمت فراہم کرنے کا کاروباری منصوبہ تیار کیا ہے۔ آرگینک کاشت کاری کے کاروباری افراد کو ایکویٹی مالیات فراہم کرنے کے لیے شمال مشرقی مرکز قائم کرنے کی تجویز ہے۔ نیرامک کی بحالی کے لیے 77.45کروڑ روپے کا پیکیج مختص کیا گیا ہے۔

  1. نیشنل ایکسپورٹ انشورنس اکاؤنٹ (این ای آئی اے) برآمدی پروجیکٹوں کے لیے 33,000 ہزار کروڑ مختص

نیشنل ایکسپورٹ انشورنس اکاؤنٹ (این ای آئی اے) ٹرسٹ درمیانے اور طویل مدتی برآمدی منصوبوں کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ یہ خریداروں کے قرض کا کور فراہم کرتا ہے، جو ایکسم بینک کی طرف سے کم قرض کے اہل قرضوں دار افراد کو دیا جاتا ہے اور برآمد کنندگان کے منصوبوں کی معاونت کرتا ہے۔ این ای آئی اے ٹرسٹ نے 31 مارچ 2021 تک 63 مختلف بھارتی پروجیکٹ برآمد کنندگان کی جانب سے 52 ممالک میں 52,860 کروڑ روپے مالیت کے 211 پروجیکٹوں کی مدد کی ہے۔ یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ این ای آئی اے کو 5 سال کے لیے مزید کارپس فراہم کیے جائیں گے۔ اس سے 33 ہزار کروڑ روپے کے برآمدی منصوبوں کا مزید منظوری ممکن ہو سکے گی۔

  1. 88,000 کروڑ روپے کی مراعات برآمدی انشورنس کور کے لیے

ایکسپورٹ کریڈٹ گارنٹی کارپوریشن (ای سی جی سی) انشورنس خدمات کے لیے قرضے فراہم کرکے برآمدات کو فروغ دیتی ہے۔ بھارت کی برآمدات تقریباً 30 فیصد تجارت کی مصنوعات کی معاونت کرتی ہیں۔ فیصلہ کیا گیا ہے کہ ای سی جی سی 5 سال میں ایکویٹی لگا کر 88 ہزار کروڑ روپے کے ایکسپورٹ انشورنس کور کی حوصلہ افزائی کرے گی۔

  1. ڈیجیٹل انڈیا: بھارت نیٹ پی پی پی ماڈل کے ذریعے ہر گاؤں میں براڈ بینڈ کے لیے 19,041 کروڑ روپے مختص

2,50,000 گرام پنچایتوں میں سے 1,56,223 گرام پنچایتوں نے 31 مئی 2021 تک یہ سروس پہلے ہی تیار کر لی ہے۔ بھارت نیٹ میں پی پی پی ماڈل کے ساتھ 16 ریاستوں (جنھیں 9 پیکجز کے تحت جمع کیا گیا ہے) میں قابل عمل اور گیپ فنڈنگ کی بنیاد پر نافذ کرنے کی تجویز ہے۔ اس مقصد کے لیے 19,041 کروڑ روپے فراہم کیے جائیں گے۔ اس لیے بھارت نیٹ کے تحت مجموعی اخراجات بڑھا کر 61109 کروڑ روپے کر دیے جائیں گے۔ ان تمام گرام پنچایتوں اور آباد دیہاتوں کو بھارت نیٹ کی اپ گریڈیشن اور توسیع میں شامل کیا جائے گا۔

  1. بڑے پیمانے پر الیکٹرانکس مینوفیکچرنگ کے لیے پی ایل آئی اسکیم کی مدت میں توسیع

پی ایل آئی اسکیم بھارت میں بنائے گئے پانچ سالہ ٹارگٹ سیگمنٹ کے تحت اشیا کی فروخت کے 6 سے 4 فیصد کے لیے مراعات فراہم کرتی ہے۔ یہ مراعات 01-08-2020 تک لاگو ہوتی ہیں، 2019-20 کو بنیادی سال سمجھتے ہوئے، لیکن وبا کی وجہ سے لاک ڈاؤن، انفرادی نقل و حمل، پلانٹ اور مشینری پر ایک جگہ سے دوسری جگہ پابندیوں، اجزا کی سپلائی چین میں تاخیر اور خلل کی وجہ سے کمہنیاں مطلوبہ فروخت حاصل نہیں کرسکیں، لہذا 2020-21 میں شروع کی گئی اسکیم کی مدت میں مزید ایک سال کی توسیع کرکے 2025-26 کر دی گئی ہے۔ شریک کمپنیوں کے پاس اس اسکیم کے تحت پیداواری اہداف کے حصول کے لیے کسی بھی 5 سال کا انتخاب کرنے کا اختیار ہوگا۔ 2020-21 کے دوران کی گئی سرمایہ کاری کو اہل سرمایہ کاری سمجھا جائے گا۔

  1. اصلاحات پر مبنی نتائج سے منسلک بجلی کی تقسیم اسکیم کے لیے 3.03 لاکھ کروڑ روپے

مرکزی بجٹ 2021-22 میں اعلان کردہ ڈسکومز کے لیے اصلاحات اور صلاحیت سازی، نظام کی اپ گریڈیشن، اصلاحات پر مبنی نتائج کی مالی معاونت کے بنیادی ڈھانچے سے متعلق بجلی کی تقسیم کاری اسکیم کو از سر نو تشکیل دیا گیا ہے۔ اس کا مقصد ریاست کی خصوصی مداخلت کے ساتھ "ایک سائز سب کے لیے موزوں" کی جگہ لینا ہے۔ اس اسکیم میں شرکت مسابقتی معیار کے مطابق ہے جیسے آڈٹ شدہ مالیاتی رپورٹوں کی اشاعت، ریاستی حکومت کے واجبات، ترسیل کے لیے ڈسکومز سبسڈی اور اضافی ریگولیٹری پراپرٹی کی عدم موجودگی وغیرہ۔ اس اسکیم کے تحت 25 کروڑ سمارٹ میٹر، 10 ہزار فیڈرز، 4 لاکھ کلومیٹر این ٹی اوور ہیڈ لائنز کی تنصیب کے لیے امداد فراہم کی جانی ہے۔ اس اسکیم میں آئی پی ڈی ایس، ڈی ڈی یو جے وائی اور سوبھاگیہ کے جاری کاموں کو بھی شامل کیا جائے گا۔ اس اسکیم کے لیے کل اخراجات 3,03,058 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں جن میں سے مرکزی حکومت 97,631 کروڑ روپے خرچ کرے گی۔ اس اسکیم کے تحت دستیاب رقم کل ریاستی گھریلو پیداوار کا اضافی 0.5 فیصد قرض لینے کے علاوہ ہے جو اگلے 4 سال کے لیے ریاستوں کو مقرر کردہ بجلی کے شعبے میں اصلاحات کے تحت ہر سال دستیاب ہوگی۔ اس مقصد کے لیے دستیاب قرضوں کی رقم 1,05,864 کروڑ روپے ہے۔

  1. پی پی پی پروجیکٹوں اور اثاثوں کی مونیٹائزیشن کے لیے نیا ہم وار عمل

پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ (پی پی پی) منصوبوں کی منظوری کے لیے موجودہ عمل طویل ہے اور اس میں منظوری کی متعدد سطحیں شامل ہیں۔ پی پی پی کی تجاویز کی تشخیص اور منظوری اور نئے بنیادی ڈھانچے کے اثاثوں کی مونیٹائزیشن کی دعوت سمیت ایک نئی پالیسی تشکیل دی جائے گی۔ اس پالیسی کا مقصد منصوبوں کی مالی معاونت اور بنیادی ڈھانچے کے انتظام میں نجی شعبے کی کارکردگی کو آسان بنانے کے لیے منصوبوں کی جلد منظوری کو یقینی بنانا ہے۔

مندرجہ ذیل جدول آج اعلان کردہ اقتصادی امدادی پیکیج کی مالی معلومات کی تفصیل فراہم کرتا ہے:

 

اسکیم

مدت

رقم روپے کروڑ میں

ریمارکس

عالمی وبائی  کے تناظر میں اقتصادی ریلیف

 

کوویڈ سے متاثرہ علاقوں کے لیے قرض کی گارنٹی اسکیم

2021-22

110000

 

ایمرجنسی کریڈٹ لائن گارنٹی اسکیم (ای سی ایل جی ایس)

2021-22

150000

توسیع کے

مائیکرو فنانس اداروں کے لیے کریڈٹ گارنٹی اسکیم

2021-22

7500

 

سیاحوں کے گائیڈز / اسٹیک ہولڈرز کے لیے اسکیم

2021-22

-

قرض کی گارنٹی اسکیم کے تحت احاطہ کرتا ہے

5 لاکھ سیاحوں کو مفت ایک ماہ کا ٹورسٹ ویزا

2021-22

100

 

آتم نربھر بھارت روزگار یوجنا کی توسیع

2021-22

-

 

ڈی اے پی اور پی اینڈ کے کھادوں کے لیے اضافی سبسڈی

2021-22

14775

 

مئی سے نومبر 2021 تک پی ایم جی کے وائی کے تحت مفت اناج کی تقسیم

2021-22

93869

 

صحت

 

صحت عامہ کے لیے نئی اسکیم

2021-22

15000

اسکیم مختص - 23220 کروڑ؛ مرکز کا حصہ۔ 15000 کروڑ

ترقی اور روزگار میں تیزی لانا

 

آب و ہوا سے لچکدار خاص خصوصیات کی اقسام کی حامل فصلوں کو قوم کے نام وقف کرنا

202122

-

 

شمال مشرقی خطے کی زرعی مارکیٹنگ کارپوریشن (نیرماک) کی بحالی

2021-22

77

 

این ای آئی اے کے توسط سے پروجیکٹ کی برآمدات کو فروغ دینا

2021-22 سے 2025-26 تک

33000

 

انشورنس کور کو ایکسپورٹ کرنے میں فروغ دینا

2021-22 سے 2025-26 تک

88000

 

بھارت نیٹ پی پی پی ماڈل کے ذریعے ہر گاؤں میں براڈ بینڈ

2021-22 سے 2022-23 تک

19041

 

بڑے پیمانے پر الیکٹرانک مینوفیکچرنگ کے لیے پی ایل آئی اسکیم کی مدت میں توسیع

 

 

وقت میں توسیع

اصلاحات پر مبنی نتیجہ سے منسلک بجلی کی تقسیم اسکیم (بجٹ کا اعلان)

2021-22 سے 2025-26 تک

97631

اسکیم اخراج - 303058 کروڑ مرکزی شیئر ۔97631 کروڑ

کل

 

628993

 

 

***

U. No. 5988

(ش ح - ع ا - ع ر)

 



(Release ID: 1731057) Visitor Counter : 471