کابینہ

کابینہ نے انٹرنیشنل بگ کیٹ الائنس (آئی بی سی اے ) کے قیام کی منظوری دی

Posted On: 29 FEB 2024 3:33PM by PIB Delhi

وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی صدارت  میں مرکزی کابینہ نے 24- 2023سے 28 – 2027  تک پانچ سال کے لیے 150 کروڑ روپے کے یک مشت بجٹ امداد کے ساتھ ہندوستان میں صدر دفتر کے ساتھ بین الاقوامی بگ کیٹ الائنس (آئی بی سی اے ) کے قیام کو منظوری دی ہے  ۔  

شیروں، دیگر بڑی بلیوں اور خطرے سے دوچار اس کی بہت سی اقسام کے تحفظ میں ہندوستان کے اہم کردار کو تسلیم کرتے ہوئے  وزیر اعظم  نریندر مودی نے عالمی شیروں کے عالمی دن ، 2019 کے موقع پر اپنی تقریر کے دوران ایشیا میں بڑی بلیوں کی اقسام کے غیر قانونی شکار کو روکنے کے لیے عالمی رہنماؤں کے اتحاد پر زور دیا تھا ۔  انہوں نے 9  اپریل 2023 کو ہندوستان کے پروجیکٹ ٹائیگر کے 50 سال کی یاد میں اس  بات کا  اعادہ کیا اور ایک بین الاقوامی بگ کیٹ الائنس کے آغاز کا باضابطہ طور پر اعلان کیا  ، جس کا مقصد بڑی بلیوں اور ان کے پروان چڑھنے والے مناظر کے مستقبل کو محفوظ بنانا ہے ۔  اس سلسلے میں ہندوستان میں تیار کردہ شیر اور دیگر بڑی بلیوں کے تحفظ  سے متعلق بنیادی اور طویل عرصے سے جاری اچھے  طور طریقوں کو بہت سے دیگر  ممالک میں بھی نقل کیا جا سکتا ہے ۔

ان سات بڑی بلیوں میں ٹائیگر، شیر، چیتا، برفانی چیتے، پوما، جیگوار اور چیتا شامل ہیں ۔  ان میں سے پانچ بڑی بلی ٹائیگر، شیر، چیتا، برفانی چیتے اور چیتا بھارت میں پائے جاتے ہیں ۔

بین الاقوامی بگ کیٹ اتحاد  کا تصور بڑی بلیوں کی آبادی والے  96  ممالک ، بڑی بلیوں کے تحفظ میں دلچسپی رکھنے والے غیر رینج  والے ممالک،  بڑی بلیوں کے تحفظ سے متعلق شراکت دار ممالک اور سائنسی تنظیمیں جو کاروبار کے علاوہ بڑی بلیوں کے تحفظ کے شعبے میں کام کر رہی ہیں  ،   گروپس اور کارپوریٹس جو بڑی بلیوں کے  تحفظ کے مقصد میں اپنا تعاون دینے کے لیے تیار ہیں، نیٹ ورکس قائم کرنے اور مربوط انداز میں ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے تیار ہیں،   پر مشتمل کثیر ملکی ، کثیر ایجنسی اتحاد کے طور پر کیا گیا ہے ، تاکہ ایک مشترکہ پلیٹ فارم پر کامیاب طور طریقوں اور عملے کے مرکزی ذخیرے کو لایا جا سکے، جس کی اعانت مالی مدد سے ہو  اور   جس سے بڑی بلی کی آبادی میں کمی کو روکنے اور  لوگوں کے  رویے  میں یکسر تبدیلی لانے کے لیے تحفظ کے ایجنڈے کو مضبوط بنانے کے لیے فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے ۔ یہ    بڑی بلیوں کی آبادی والے ممالک اور دیگر ممالک کو ایک مشترکہ پلیٹ فارم پر لانے کے لیے   بڑی بلی کے ایجنڈے پر قیادت کی پوزیشن میں ایک عملی قدم  ثابت ہو گا  ۔

آئی بی سی اے کا مقصد تحفظ کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے میں باہمی فائدے کے لیے ممالک کے درمیان باہمی تعاون کرنا ہے ۔  آئی بی سی اے کے پاس متعدد شعبوں میں وسیع بنیادوں اور روابط قائم کرنے میں کثیر جہتی نقطہ نظر ہوگا اور معلومات کے تبادلے، صلاحیت سازی، نیٹ ورکنگ، وکالت، مالیات اور وسائل کی حمایت، تحقیق اور تکنیکی مدد، تعلیم اور آگاہی میں مدد ملے گی ۔  پائیدار ترقی اور روزی روٹی کی حفاظت کے لیے بڑی بلیوں کے بختاور کے طور پرہندوستان اور بڑے بلیوں کی آبادی والے ممالک ماحولیاتی لچک اور موسمیاتی تبدیلیوں کو کم کرنے کے لیے بڑی کوششوں کا آغاز کر سکتے ہیں، جبکہ ایک ایسے مستقبل کو ہموار کر سکتے ہیں جہاں قدرتی ماحولیاتی نظام ترقی کرتا رہے اور اقتصادی اور ترقیاتی پالیسیاں میں مرکزیت حاصل کر سکے ۔  

آئی بی سی اے  ، سونے کے معیار کے  بڑے بلیوں کے تحفظ کے  طور طریقوں کے فروغ کے لیے ایک باہمی تعاون کے پلیٹ فارم کے ذریعے ہم آہنگی کا تصور کرتا ہے، تکنیکی معلومات کے مرکزی مشترکہ ذخیرے تک رسائی فراہم کرتا ہے اور فنڈز کے ذخیرے، موجودہ اقسام کے لیے مخصوص بین  حکومتی پلیٹ فارمز، نیٹ ورکس اور تحفظ کے بین الاقوامی اقدامات کو مضبوط کرتا ہے  نیز  تحفظ اور ہمارے ماحولیاتی مستقبل کو محفوظ بنانے اور موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے ۔

آئی بی سی اے کے فریم ورک میں متعدد شعبوں میں وسیع بنیادوں اور روابط قائم کرنے میں کثیر جہتی نقطہ نظر شامل ہوگا اور  معلومات کے اشتراک، صلاحیت  سازی ، نیٹ ورکنگ، وکالت، مالیات اور وسائل کی حمایت، تحقیق اور تکنیکی مدد، ناکامیوں کے خلاف انشورنس، تعلیم اور آگاہی میں مدد ملے گی ۔  مختلف ممالک کے برانڈ ایمبیسیڈر اس تصور کو آگے بڑھانے میں زیادہ کردار ادا کریں گے اور نوجوانوں  اور مقامی برادریوں سمیت عوام کے درمیان  بڑی بلیوں کے تحفظ سے متعلق مہم کو یقینی بنانے کے لیے حوصلہ افزائی کریں گے جو اس پورے عمل میں اہم شراکت دار ہیں  ۔  ایک باہمی تعاون پر مبنی نقطہ نظر اور اقدامات کے ذریعے ملک کی آب و ہوا کی قیادت کا کردار آئی بی سی اے  پلیٹ فارم کے ذریعے بہتر سبز معیشت کے منصوبوں کا باعث بنے گا ۔  اس طرح، بگ کیٹ الائنس کے اراکین میں محرک شراکت داروں کے تحفظ اور خوشحالی سے متعلق نقطۂ نظر بدل سکتا ہے  ۔

بین الاقوامی بگ کیٹ الائنس حیاتیاتی تنوع کی پالیسیوں کو پائیدار ترقیاتی اہداف (ایس ڈی جیز ) کے ساتھ مربوط کرنے کی اہمیت کو تسلیم کرتا ہے تاکہ مجموعی اور جامع تحفظ کے نتائج حاصل کیے جاسکیں ۔  مذکورہ بالا پالیسی اقدامات کے حامی ہیں جو حیاتیاتی تنوع کے تحفظ کی کوششوں کو مقامی ضروریات کے ساتھ ہم آہنگ کرتے ہیں اور آئی بی سی اے  کے رکن ممالک کے اندر اقوام متحدہ کے پائیدار ترقیاتی اہداف کے حصول میں تعاون کرتے ہیں ۔  حیاتیاتی تنوع کو  شعبہ جاتی  پالیسیوں اور ترقیاتی منصوبہ بندی کے عمل میں ضم کرنے کے لیے تمام شعبوں بشمول حیاتیاتی تنوع کو مرکزی دھارے میں لانا؛زراعت، جنگلات، سیاحت، اور بنیادی ڈھانچے کی ترقی؛ پائیدار زمین کے استعمال کے طریقوں، رہائش گاہ کی بحالی کے اقدامات، اور ماحولیاتی نظام پر مبنی طریقوں کو فروغ دینا جو حیاتیاتی تنوع کے تحفظ کی حمایت کرتے ہیں اور  آب و ہوا کی تبدیلی، خوراک کی یقینی فراہمی ، صاف پانی اور غربت میں کمی سے متعلق پائیدار ترقیاتی اہداف میں تعاون کرتے ہیں ۔  

آئی بی سی اے  گورننس ممبران کی اسمبلی، قائمہ کمیٹی اور ایک سکریٹریٹ پر مشتمل ہے جس کا ہیڈ کوارٹر ہندوستان میں ہے ۔  معاہدے کا فریم ورک (قانون) بڑے پیمانے پر  بین الاقوامی شمسی اتحاد (آئی ایس اے ) کی طرز پر تیار کیا گیا ہے اور اسے انٹرنیشنل اسٹیئرنگ کمیٹی (آئی ایس سی) کے ذریعے حتمی شکل دی جائے گی ۔  میزبان ملک کا معاہدہ آئی ایس اے  اور حکومت ہند کے خطوط پر تیار کیا گیا ہے ۔  بانی رکن ممالک کے نامزد قومی اہم نکات کے ساتھ  قائمہ کمیٹی تشکیل دی جائے گی ۔  ماحولیات ، جنگلات اور آب و ہوا کی تبدیلی کی وزارت  (ایم او ای ایف سی سی ) کی طرف سے ڈی جی کی تقرری آئی بی سی اے  سکریٹریٹ کے عبوری سربراہ کے طور پر ، جب تک کہ آئی بی سی اے  اسمبلی اجلاس کے دوران اپنے ڈی جی  کا تقرر نہیں کرتا ہے ،   وزارتی سطح پر آئی بی سی اے  اسمبلی کی صدارت صدر، ایچ ایم ایف سی سی ، حکومت ہند کریں گے ۔

آئی بی سی اے نے  پانچ سال (24 – 2023  سے 28 – 2027 ) کے لیے  1.150 کروڑ روپے حکومت ہند کی ابتدائی امداد حاصل کی ہے ۔   اضافہ شدہ سرمایہ کے لیے   دو طرفہ اور کثیر جہتی ایجنسیوں کی طرف سے تعاون؛ دیگر مناسب اداروں اور عوامی شعبے کی تنظیموں، قومی اور بین الاقوامی مالیاتی اداروں اور عطیہ دہندگان سے مالی معاونت کو مزید تلاش کیا جائے گا ۔

یہ اتحاد قدرتی وسائل کے پائیدار استعمال کو یقینی بناتا ہے اور  آب و ہوا کی تبدیلی سے پیدا ہونے والے چیلنجوں کو کم کرتا ہے ۔  بڑی بلیوں اور ان  کی پناہ گاہوں کی حفاظت کرکے آئی بی سی اے  قدرتی آب و ہوا کے موافقت، پانی اور خوراک کی حفاظت اور ان ماحولیاتی نظاموں پر انحصار کرنے والی ہزاروں  برادریوں کی فلاح و بہبود میں اپنا حصہ ڈالتا ہے ۔  آئی بی سی اے باہمی فائدے کے لیے ممالک کے درمیان تعاون کو فروغ دے گا اور طویل مدتی تحفظ کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے میں بہت زیادہ تعاون کرے گا ۔

*******

ش ح    ۔  م ع   ۔   ت ح

(U:  5518)

 

                          



(Release ID: 2010193) Visitor Counter : 85