وزارت خزانہ
azadi ka amrit mahotsav

مرکزی بجٹ  23-2022 کا خلاصہ

Posted On: 01 FEB 2022 1:19PM by PIB Delhi

رواں سال میں بھارت کی اقتصادی ترقی کا تخمینہ 9.2  فیصد  رہنے کا ہے، جو تمام بڑی معیشتوں میں سب سے زیادہ ہے۔عالمی وبا سے مجموعی طور پر پھر سے ابھرنے اور اس کے منفی  اثرات  سے معیشت کی  بحالی ہمارے ملک کے  پھر سے ابھرنے  کی مضبوط قوت  کی عکاسی  کرتی ہے۔ یہ بات  خزانے اور کارپوریٹ امور کی مرکزی  وزیر محترمہ نرملا سیتا رمن  نے آج پارلیمنٹ میں مرکزی بجٹ  پیش کرتے ہوئے کہی۔

 

Budget-at-a-Glance-English.jpg

 

وزیر خزانہ نے کہا کہ بھارت آزادی کا امرت مہو تسو  کا جشن منا رہا ہے اور یہ  امرت کال  یعنی  بھارت کے آزادی کے 100  سال پورے ہونے میں 25 سال  میں داخل ہو گیا ہے اور حکومت کا مقصد  وزیراعظم کے  ذریعہ یوم آزادی  کے خطاب میں  پیش کئے گئے ویژن کو حاصل کرنا ہے اور یہ مندرجہ ذیل ہیں:

  • تمام  مجموعی فلاح پر توجہ اور  مائیکرو اکنامک کی سطح پر  توجہ کے ساتھ میکرو اکنامک کی سطح کی تکمیل کرنا۔
  • ڈیجیٹل معیشت  اور فنٹیک،  ٹیکنالوجی پر مبنی ترقی، توانائی  کی منتقلی اور  آب وہوا سے متعلق ایکشن کو فروغ دینا، اور
  • پرائیویٹ سرمایہ کاری میں اضافے کی مدد کے لئے سرکاری  کیپٹل سرمایہ کاری کے ساتھ پرائیویٹ سرمایہ کاری سے ورچوئل سلسلے پر انحصار کرنا۔

سال 2014  سے حکومت   کی  توجہ کا مرکز  شہریوں، خاص طور پر غریب اور محروم لوگوں کو با اختیار بنانے پر  رہا ہے اور  انہیں ہاؤسنگ، بجلی ، کھانا پکانے کی گیس اور صاف پانی  کی رسائی کے لئے اقدامات کئے گئے ہیں۔ حکومت نے  مالی شمولیت  کو یقینی بنانے  اور  فوائد کی براہ راست منتقلی  کے پروگرام شروع کئے ہیں اور  تمام مواقع  حاصل کرنے کی  غریب کی صلاحیتوں کو مستحکم کرنے کا عہد کیا ہے۔

وزیر خزانہ بتایا کہ  آتم نربھر بھارت کے ویژن کو حاصل کرنے کی خاطر 14  شعبوں میں پیداواریت سے مربوط  ترغیبات پر شاندار رد عمل حاصل ہوا ہے ، جس میں  60 لاکھ  نئے روز گار پیدا کرنے کی صلاحیت  اور  اگلے پانچ برسوں کے دوران  30 لاکھ کروڑ  روپے کی اضافی پیدا وار  کی صلاحیت ہے۔ سرکاری سیکٹر  کی صنعتوں کے لئے نئی پالیسی  کو نافذ کرنے کے معاملے پر  انہوں نے کہا کہ  ایئر انڈیا کی  ملکیت  کی کلیدی  منتقلی کو مکمل کرلیا گیا ہے اور  این آئی این ایل (نیلانچل اسپات نگم لمیٹڈ) کے لئے کلیدی  ساجھیدار  کا انتخاب کر لیا گیا ہے۔ ایل آئی سی کے پبلک ایشو جاری کرنے کی جلد امید ہے اور  دیگر کے لئے بھی 23-2022  میں کام کیا جا ئے گا۔

Quote Covers_M1.jpg

 

محترمہ نرملا سیتا رمن نے  زور دے کر کہا کہ یہ بجٹ  ترقی کو  تیز کرنے کی قوت فراہم کرتا رہے گا۔ اس میں  دو متوازی ٹریک ہیں، (1) امرت کال کے لئے ایک خاکہ، جو  مستقبل پر مبنی اور شمولیت والا ہے، جو  ہمارے نوجوانوں، خواتین، کسانوں، درج فہرست ذاتوں اور  درج فہرست قبائل کو براہ راست  فائدہ پہنچائے گا ،اور  (2) جدید بنیادی ڈھانچے کے لئے بڑی سرکاری سرمایہ کاری ، جو بھارت  کی آزادی کے 100  سال پورے ہونے کے لئے تیار کرنے کے لئے  ہے اور  یہ  پی ایم گتی شکتی کے تحت ہوگا  اور  کثیر ماڈل والے طریقہ کار  کے تال میل سے  فائدہ  حاصل کرے گا۔ اس  متوازی ٹریک پر  آگے بڑھتے ہوئے  انہوں نے  مندرجہ ذیل 4 ترجیحات کو اجاگر کیا:

  • پی ایم گتی شکتی،
  • شمولیت والی ترقی،
  • پیداواریت میں فروغ اور سرمایہ کاری، ابھرتے ہوئے روشن مواقع، توانائی کی منتقلی اور  آب وہوا سے متعلق ایکشن،
  • سرمایہ کاری کے لئے فنڈس کی فراہمی۔

پی ایم گتی شکتی کی وضاحت کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ یہ  اقتصادی فروغ اور  پائیدار ترقی کے لئے یکسر تبدیلی والا ایک طریقہ کار ہے۔ یہ طریقہ کار  7 انجنوں پر مبنی ہے جن میں سڑکیں، ریلویز، ہوائی اڈے، بندر گاہیں،  عوامی ٹرانسپورٹ، آبی شاہراہیں اور لاجسٹک کا بنیادی ڈھانچہ شامل ہیں۔ یہ ساتوں انجن   معیشت کو ایک ساتھ آگے بڑھائیں گے۔ ان انجنوں کو  توانائی  کی ترسیل، آئی ٹی  مواصلات ، بلک پانی اور سیوریج اور  سماجی بنیادی ڈھانچے کے تکمیلی  رول سے  مدد ملے گی اور  آخر میں یہ طریقہ کار  صاف توانائی اور سب کا پریاس -  جو  مرکزی حکومت، ریاستی حکومتوں اور  پرائیویٹ سیکٹر  کی ملی جلی   کوششوں سے تقویت پائے گی – سبھی کے لئے  ، خاص طور پر نوجوانوں  کے لئے  روز گار کے وسیع  مواقع  اور  کاروبار  کے وسیع  مواقع  پیدا ہوں گے۔

 

2 . PM Gatishakti.jpg

 

اسی طرح  ایکسپریس ویز کے لئے پی ایم گتی شکتی ماسٹر پلان عوام اور اشیاء کی تیز تر نقل وحمل میں سہولت پیدا کرنے کی خاطر 23-2022  میں مرتب کیا جائے گا۔ قومی شاہراہوں کے نیٹ ورک میں  23-2022  میں  25  ہزار کلو میٹر  کی توسیع کی جائے گی اور  20   ہزار کروڑ روپے  سرکاری وسائل کی تکمیل کے لئے اختراعی طریقوں سے حاصل کئے جائیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پی پی پی  طریقہ کار کے ذریعہ 4 مقامات پر  کثیر ماڈل والے لاجسٹک پارک کے نفاذ کے لئے کنٹریکٹ 23-2022  میں دیئے جائیں گے۔

وزیر خزانہ نے  کہا کہ ریلوے میں مقامی  کاروبار  اور سپلائی چین  میں مدد کے لئے ‘‘ایک اسٹیشن  ایک شے’’  کے تصور کو  مقبول بنایا جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ  اس کے علاوہ  آتم نربھر بھارت کے حصے کے طور پر 23- 2022 میں  تحفظ اور  صلاحیت سازی میں اضافے کی خاطر ملک میں تیار کردہ عالمی درجہ کی ٹیکنالوجی ‘‘کوچھ’’ کے تحت   دو ہزار کلو میٹر  کا نیٹ ورک تیار کیا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ  کم توانائی سے چلنے والی اور  مسافروں کے لئے زیادہ سہولت والی  400  جدید  وندے بھارت ٹرینیں  تیار کی جائیں گی اور  آئندہ تین برسوں کے دوران  کثیر  رخی  لاجسٹک سہولیات کے لئے 100 پی ایم گتی شکتی کارگو ٹرمنل قائم کئے جائیں گے۔

زراعت  کے بارے میں وزیر خزانہ نے بتایا کہ  پورے ملک میں  کیمیکل سے پاک  قدرتی کھیتی کو فروغ دیا جائے گا اور  پہلے مرحلے میں گنگا دریا  کے آس پاس  5 کلو میٹر  چوڑی راہ داری میں آنے والی کسانوں کی زمینوں پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔ فصلوں کا جائزہ لینے ،  زمینوں کے ریکارڈ  ڈیجیٹل بنانے، کیڑے مار ادویات  اور  تغذیہ بخش ادویات  کا چھڑکاؤ کرنے کے لئے کسان ڈرون کے استعمال کو فروغ دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ  تلہن کی در آمدات کے انحصار کو کم کرنے کی خاطر  تلہن کی گھریلو پیداوار میں اضافہ کرنے کے مقصد  سے ایک معقول اور جامع اسکیم نافذ کی جائے گی۔

Agriculture and food processing.jpg

 

چونکہ سال 2023  کو  باجرہ کا بین الاقوامی سال قرار دیا گیا ہے، حکومت نے  باجرہ کی مصنوعات کو ملکی اور بین الاقوامی سطح پر برانڈنگ کرنے ، اس کی فصل کٹنے کے بعد قدر میں اضافے اور  گھریلو استعمال میں اضافہ کرنے کے لئے مکمل امداد کا اعلان کیا ہے۔

محترمہ نرملا سیتا رمن نے کہا کہ  کین – بیتوا  رابطہ پروجیکٹ کو  44605  کروڑ روپے کی لاگت سے  نافذ کیا جائے گا ۔  اس سے  9.08 لاکھ ہیکٹئر اراضی  کے لئے آب پاشی، 62 لاکھ لوگوں کے لئے پینے کے پانی کی سپلائی ، 103  ایم ڈبلیو پن بجلی اور  27 ایم  ڈبلیو شمسی  بجلی  کے فوائد حاصل ہوں گے۔ اس پروجیکٹ کے لئے بجٹ تخمینہ  22-2021  میں  4300  کروڑ روپے  مختص کئے گئے تھے اور 23-2022  میں  1400 کروڑ روپے مختص کئے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ   پانچ دریاؤں ، دمن  گنگا -  پنجال ،  پرتاپی نرمدا ، گوداوری – کرشنا،  کرشنا – پنار اور پنار -  کاویری کے رابطے کے لئے ڈی پی آر کے  مسودہ  کو قطعی شکل دے دی گئی ہے اور  فیض پانے والی ریاستوں  کے درمیان  اتفاق رائے ہونے کے بعد مرکز  اس کے نفاذ کے لئے امداد فراہم کرے گا۔

وزیر خزانہ نے اس بات کو اجاگر کیا کہ ایمرجنسی  کریڈٹ لائن  گارنٹی اسکیم (ای سی ایل جی ایس) نے  130 لاکھ سے زیادہ  ایم ایس ایم ایز  کو  عالمی وبا کے منفی اثرات  سے نمٹنے  میں مدد کی خاطر  ضروری اضافی قرض  فراہم کیا ہے۔ البتہ انہوں نے کہا کہ  میزبانی  اور اس سے متعلقہ خدمات ، خاص طور پر بہت چھوٹی اور چھوٹی  کمپنیوں کو  عالمی وبا سے پہلے کی سطح پر اپنا کاروبار   پہنچانے میں  مدد کی ضرورت ہے اور اس  پہلو پر غور کرتے ہوئے ای سی ایل جی ایس کو  مارچ 2023  تک  توسیع دی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ اس ضمانت  میں 50  ہزار کروڑ روپے  کا اضافہ کیا جائے گا اور اسے  پانچ لاکھ کروڑ روپے کردیا جائے گا اور یہ اضافی رقم خاص طور پر  میزبانی سے متعلق  کاروبار  کے لئے ہوگی۔

 

7. Accelerating Growth of MSME.jpg

 

اسی طرح بہت چھوٹی اور چھوٹی صنعتوں کے لئے کریڈٹ گارنٹی ٹرسٹ  (سی جی  ٹی ایم ایس ای) اسکیم  کی تجدید کی جائے گی اور اس میں ضروری فنڈ  فراہم کئے جائیں گے اس سے  بہت چھوٹی اور چھوٹی  صنعتوں کے لئے  اضافی  دو لاکھ کروڑ روپے کا قرض فراہم کرنے میں مدد ملے گی، جس سے روز گار کے مواقع میں اضافہ ہوگا۔ انہوں نے بتایا کہ  ایم ایس ایم ای   سیکٹر کو زیادہ لکچدار ، مسابقت والا  اور مؤثر بنانے کی خاطر  پانچ برسوں میں 6  ہزار  کروڑ روپے کے  فنڈ سے  ایم ایس ایم ای   کی کارکردگی  کو بڑھانے اور تیز تر کرنے  (آر اے ایم پی) پروگرام شروع کیا جائے گا۔

 ادیم ، ای- شرم، این سی ایس  اور اسیم  پورٹلوں کو  آپس میں جوڑا جائے گا اور ان کے دائرہ کار کو  وسیع کیا جائے گا۔

ہنر مندی کے فروغ اور معیاری تعلیم  کے موضوع پر  وضاحت کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ   ڈرونس شکتی  کو مختلف مقاصد کے لئے استعمال کرنے اور  ‘‘ڈرون – ایز -  اے -  سروس ’’ (ڈراس) کی سہولت کے لئے  اسٹارٹ اپس کو فروغ دیا جائے گا۔ تمام ریاستوں میں  مخصوص  آئی ٹی آئی میں ہنر مندی کے فروغ کے ضروری کورس  شروع کئے جائیں گے۔سال  23-2022 میں  پیشہ وارانہ کورسوں میں ،  اہم تنقیدی سوچ  کی صلاحیتوں کو فروغ دینے ، تخلیقی صلاحیت کو فروغ دینے کی خاطر  سائنس اور ریاضی میں 750  ورچوئل لیبس اور  آموزش کے ماحول کو فروغ دینے کی خاطر  75  ہنر مندی  کی  ای- لیبس قائم کی جائیں گی۔

انہوں نے کہا کہ  عالمی وبا کی وجہ سے  اسکولوں کے بند ہونے سے  بچوں، خاص طور پر دیہی علاقوں میں اور درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل کے بچوں اور  دیگر کمزور طبقات   کے بچوں کے باضابطہ تعلیم کے تقریبا  دو سال ضائع ہوئے ہیں  اور یہ بچے سرکاری اسکولوں میں پڑھنے والے ہیں، اس لئے اضافی تدریس اور  تعلیم کی ترسیل میں اس لچکدار  نظام قائم کرنے کی خاطر وزیر خزانہ نے بتایا کہ  پی ایم  ای -  ودیا کا ایک کلاس، ایک ٹی وی چینل   کے حساب سے  12  سے 200  ٹی وی چینلوں کی توسیع دی جائے گی اور اس سے تمام ریاستیں  علاقائی زبانوں میں پہلی سے 12 ویں کلاس تک کی اضافی تعلیم فراہم کرسکیں گی۔

پورے ملک کے طلباء  کو  عالمی درجہ کی  معیاری  تعلیم ان کی دہلیز تک  ذاتی آموزش  کے تجربے کے ساتھ  پہنچانے کے لئے  ڈیجیٹل یونیورسٹی قائم کی جائے گی۔ اسے  مختلف بھارتی زبانوں اور آئی سی ٹی  کے مختلف فارمیٹس میں دستیاب کرایا جائے گا۔ یہ یونیورسٹی  نیٹ ورک پر مبنی  ہب – اسپوک  ماڈل پر  قائم کیا جائے گا، جس میں ہب بلڈنگ میں آئی سی ٹی کی جدید مہارت  کو استعمال کیا جائے گا۔ ملک میں  بہترین سرکاری یونیورسٹیاں اور ادارے ہب اسکوپس کے نیٹ ورک کے طور پر اشتراک کریں گے۔

4. Education.jpg

 

آیوشمان بھارت ڈیجیٹل مشن کے تحت  نیشنل ڈیجیٹل ہیلتھ ایکو سسٹم کے لئے ایک  اوپن پلیٹ فارم شروع کیا جائے گا اور یہ  حفظان صحت فراہم کرنے والوں، صحت سہولیات ،  منفرد صحت شناخت،  کنسنٹ فریم ورک اور  صحت کی سہولیات کے لئے  سب کی رسائی  کی ڈیجیٹل رجسٹریوں پر مشتمل ہوگا۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ  چونکہ عالمی وبا نے  ہر عمر کے لوگوں میں ذہنی  صحت کے مسائل  کو نمایا ں کیا  ہے، معیاری  ذہنی صحت کے لئے  مشاورت  اور  دیکھ بھال کی خدمات  تک بہتر رسائی کی خاطر ایک قومی  ٹیلی مینٹل ہیلتھ پرو گرام شروع کیا جائے گا۔ اس میں   ٹیلی مینٹل ہیلتھ کے 23  بہترین کارکردگی کے مراکز  شامل ہوں گے، جب کہ نم ہنس (این آئی ایم ایچ اے این ایس)  با اختیار مرکز ہوگا  اور  بینگلور  کا  انٹرنیشنل انسٹی ٹیوٹ  آف انفارمیشن ٹیکنالوجی  (آئی آئی آئی ٹی بی) تکنیکی مدد فراہم کرے گا۔

HEALTH_M1.jpg

 

محترمہ نرملا سیتا رمن نے  ‘‘ہر گھر، نل سے جل’’ کے لئے 23- 2022  میں 3.8  کروڑ گھروں کا احاطہ کرنے کی خاطر  60  ہزار کروڑ روپے مختص کرنے کا اعلان کیا۔ سردست 8.7  کروڑ  گھروں کا احاطہ کیا جا چکا ہے اور اس میں 5.5  کروڑ  گھروں میں پچھلے دو  برسوں کے دوران ہی  نل سے  پانی  کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔

اسی طرح 23-2022  میں  پی ایم آواس یوجنا کے  شناخت شدہ  اہل  فیض یافتگان  کے لئے  80  لاکھ مکانوں کو مکمل کیا جائے گا، جس میں دیہی اور شہری دونوں شامل ہیں اور اس مقصد کے لئے  48  ہزار کروڑ روپے  مختص کئے گئے ہیں۔

ایک نئی اسکیم،  شمال مشرق کے لئے  وزیراعظم کا ترقیاتی اقدام (پی ایم – ڈی ای وی آئی این ای)، شمال مشرق کی  محسوس کی گئی ضروریات  کی بنیاد پر سماجی ترقی کے پروجیکٹوں کو  پی ایم گتی شکتی کے جذبے سےشمال مشرقی کونسل کے ذریعہ نافذ کیا جائے گا۔ ابتدائی طور پر مختص 1500  کروڑ روپے  نوجوانوں اور خواتین کے لئے  روزی سے جڑی سرگرمیوں کو انجام دینے میں مدد کرے گی اور  مختلف شعبوں کے لئے مختص کئے جائیں گے۔

17. PM's Development Initiative for North East Region (PM-DevINE).jpg

سال 2022   میں  1.5  لاکھ ڈاکخانوں کے  100  فیصد ڈاکخانے  کور بینکنگ نظام  میں شامل ہوجائیں گے اور اس طرح یہ ادارے  مالی شمولیت  کے قابل ہوں گے اور  ان کے   کھاتوں کی  11  نیٹ بینکنگ، موبائل بینکنگ ، اے ٹی ایم تک رسائی ہوگی اور  ڈاکخانوں کے کھاتوں اور بینک کھاتوں کے درمیان  فنڈ  کی آن لائن  منتقلی بھی  ہو سکے گی۔ یہ  دیہی  علاقوں میں خاص طور پر کسانوں اور  بزرگ شہریوں  کے لئے مدد گار ہوں گے اور  وہ  مالی شمولیت  کے حامل ہوں گے۔

آزادی کے 75  سال     کے موقع پر  حکومت نے  شیڈولڈ کمرشیل بینکوں کے ذریعہ  ملک کے 75  اضلاع میں  75  ڈیجیٹل بینکنگ یونٹ قائم کرنے کی تجویز  رکھی ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ ڈیجیٹل بینکنگ کے فوائد صارفین دوست طریقے سے ملک کے  کونے کونے تک پہنچ سکیں۔ 

شہریوں کو ان کے بیرونی  سفر میں سہولت فراہم کرنے کی خاطر  23- 2022  میں  اندرونی طور پر لگائے گئے چِپ اور  مستقبل کی ٹیکنالوجی پر  مبنی ای- پاسپورٹ کا اجراء کیا جائے گا۔

Productivity enhancement and investment (Ease of Doing Business 2.0)_M2.jpg

 

 وزیر خزانہ نے اعلان کیا کہ شہری منصوبہ بندی اور ڈیزائن میں بھارت کے خصوصی علم کو فروغ دینے کی خاطر  اور  ان شعبوں میں مستند تربیت فراہم کرنے کے لئے مختلف  خطوں میں موجودہ پانچ  تعلیمی اداروں کو  بہترین کارکردگی کے مراکز  کے طور پر  نشان زد کیا جائے گا۔ ان مراکز کو  ، ہر ایک کو   250  کروڑ روپے  کافنڈ فراہم کیا جائے گا۔

اینی میشن، ویژوئل افیکٹ، گیمنگ اور کومکس (اے وی جی سی) کا سیکٹر نوجوانوں کو روز گار دینے کی وسیع صلاحیت رکھتا ہے اس  لئے  تمام  فریقوں کے ساتھ  ایک  اے وی جی سی  پروموشن ٹاسک فورس قائم کی جائے گی، جو  اس کے حصول کے طریقہ کار کی سفارش  کرے گی اور  ہماری مارکیٹوں اور عالمی مانگ کو پورا کرنے کے لئے ملک میں صلاحیت سازی  کا  کام انجام دے گی۔

Productivity enhancement and investment (Ease of Doing Business 2.0)_M1.jpg

 

محترمہ نرملا سیتا رمن نے کہا کہ  عام طور پر ٹیلی مواصلات اور خاص طور پر 5 جی ٹیکنالوجی  ترقی میں تیزی لاسکتی ہے اور  روز گار کے مواقع  پیدا کرسکتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ  پرائیویٹ ٹیلی مواصلات فراہم کاروں کے ذریعہ 23- 2022  میں ہی  5  جی موبائل خدمات  کو شروع کرنے میں سہولت فراہم کرنے کی خاطر 2022  میں ضروری اسپیکٹرم کی نیلامی کی جائے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ  پیدا وار سے منسلک ترغیبات کی اسکیم  کے  ایک حصے کے طور پر  5- جی کے لئے ایک مضبوط ماحول تیار کرنے کی خاطر  ڈیزائن  پر منحصر مینو فیکچرنگ کے لئے ایک اسکیم شروع کی جائے گی۔

دفاع کے محاذ پر  حکومت  نے  مسلح افواج کے لئے  سازو سامان میں  در آمدات کو کم کرنے  اور  آتم نربھرتا  کو فروغ دینے  کے اپنے عہد کا اعادہ کیا ہے۔ 23- 2022 میں  کیپٹل خریداری  کے بجٹ کا 68  فیصد  گھریلو  صنعت  کے لئے مخصوص کیا جائے گا، جو  22-2021  میں  58  فیصد تھا۔ دفاع  سے متعلق تحقیق و ترقی  کو، صنعت  ، اسٹارٹ اپ اور تعلیمی اداروں کے لئے کھول دیا جائے گا۔ جس کے لئے  دفاعی آر اینڈ ڈی  کا 25  فیصد  بجٹ مختص  کیا گیا ہے۔

وزیر خزانہ نے تابناک   امکانات  کا حوالہ دیتے ہوئے  کہا کہ  مصنوعی ذہانت ،  جیو اسپیشیل سسٹم اور ڈرونس ، سیمی کنڈکٹر  اور اس کا ایکو سسٹم ، اسپیس اکنامی، جینامکس اور ادویہ سازی ، سبز توانائی  اور صاف  موبلٹی سسٹم میں  وسیع پیمانے پر  پائیدار ترقی  میں تعاون کرنے اور ملک کو جدید بنانے  کے وسیع  مواقع موجود ہیں۔ یہ نوجوانوں کو  روز گار کے مواقع فراہم کرتے ہیں اور بھارتی صنعت کو زیادہ مؤثر اور مسابقتی بناتے ہیں۔

گھریلو مینو فیکچرنگ  میں مدد  کے لئے سال  2030  تک  280  جی ڈبلیو  کی  شمسی  توانائی  کی صلاحیت  کا ہدف  حاصل کرنے کے علاوہ، اعلیٰ صلاحیت والے ماڈیول تیار کرنے کی خاطر 19500 کروڑ روپے کی  پیدا وار سے منسلک ترغیبات  کے فنڈ مختص کیا گیا ہے، جس میں  شمسی پی وی  ماڈیول کو پالی سلیپون سے تیار کرنے کے  پوری طرح مربوط  مینو فیکچرنگ یونٹوں کو ترجیح دی جائے گی۔

 

Transition to Carbon Neutral.jpg

 

وزیر خزانہ نے  اس بات پر زور دیا کہ   سرکاری سرمایہ کاری کو   جاری رکھنا ہوگا تاکہ وہ   23۔2022 میں نجی سرمایہ کاری   اور مانگ  کی قیادت کرے اور اسے فروغ دے اور  اس لئے  مرکزی بجٹ میں  کیپیٹل اخراجات  کے لئے  بجٹ تخمینہ ایک بار پھر  رواں سال کے 5.54 لاکھ کروڑ  سے  35.4 فیصد بڑھ کر  23۔2022  میں  7.50 لاکھ کروڑ روپے  کیا  جارہا ہے۔ اس سے  20۔2019 کے اخراجات سے 2.2 گنا سے زیادہ اضافہ ہوا ہے اور  23۔2022 میں  یہ بجٹ تخمینہ  جی ڈی پی کا 2.9 فیصد ہوگا۔ اس سرمایہ کاری  کے ساتھ   ریاستوں کو  فراہم کرائے جانے والی امداد کے ذریعہ کیپیٹل اثاثے تیار کئے جانے کے لئے  کئے گئے التزام کو ملاکر 23۔2022   میں  مرکزی حکومت  کے موثر کیپٹل اخراجات   10.68 لاکھ کروڑ روپے  ہونے کا تخمینہ ہے جو کہ جی ڈی پی کا تقریباً 4.1 فیصد ہے۔

سال 23۔2022 میں   حکومت کے بازار سے  مجموعی قرضے کے ایک حصے کے طور پر  گرین انفرا اسٹریکچر کے لئے   وسائل پیدا کرنے کے واسطے  سوورین گرین بانڈز  جاری کئے جائیں گے۔ اس سے حاصل ہونے والی رقم سرکاری شعبے کے پروجیکٹوں میں  لگائی جائے گی جس سے معیشت کے  کاربن انحصار کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔

حکومت نے   بلاک چین  اور  دیگر ٹکنالوجیز استعمال کرتے ہوئے ڈیجیٹل روپے شروع کرنے کی تجویز پیش کی ہے جو کہ  زیادہ موثر اور سستے  کرنسی منیجمنٹ سسٹم کے واسطے  23۔2022 سے  ریزرو بینک آف انڈیا کے ذریعہ جاری کئے جائیں گے۔

Central Bank Digital Currency.jpg

 

کو  آپریٹیو  وفاقیت  کے حقیقی جذبے کے اظہار کے طور پر  مرکزی حکومت نے  کیپیٹل سرمایہ کاری کے لئے  ریاستوں کی مالی امداد کی اسکیم کے واسطے  مختص کی جانے والی رقم کو  بجٹ تخمینے میں  10 ہزار کروڑ روپے سے بڑھاکر رواں سال کے لئے   15 ہزار کروڑ روپے کردیا ہے۔ اس کے علاوہ  23۔2022 میں معیشت  میں  مجموعی سرمایہ کاری کو تحریک دینے میں  ریاستوں کی مدد کرنے کے لئے  ایک لاکھ کروڑ روپے مختص کئے گئے ہیں۔ یہ پانچ سالہ  بلا سودی قرض ریاستوں کے لئے قابل قبول  عام قرضوں کے علاوہ ہے۔ اس رقم کو  پی ایم ۔ گتی شکتی سے متعلق کاموں اور ریاستوں کی دیگر پروڈکٹیو کیپیٹل سرمایہ کاری  کے لئے استعمال کیا جائے گا۔

محترمہ نرملا سیتا رمن نے  پندرہویں مالیاتی کمیشن کی سفارشوں کے مطابق  23۔2022 میں  یہ اعلان بھی کیا ہے کہ  ریاستوں کو  جی ایس ڈی پی کے چار فیصد تک  مالیاتی خسارے کی اجازت ہوگی جس کا  0.5 فیصد حصہ بجلی کے شعبے کی اصلاحات کے لئے ہوگا، جس کے لئے  22۔2021 میں شرائط  سے  واقف کرایا جاچکا ہے۔

13. Providing Greater Fiscal Space to States.jpg

 

اپنی بجٹ تقریر کے  حصہ اے کو ختم کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ  رواں سال میں ترمیم شدہ مالیاتی خسارہ  جی ڈی پی کا  تخمیناً 6.9 فیصد ہے جبکہ  بجٹ تخمینے میں  اس کو  6.8 فیصد دکھایا گیا ہے۔ سال 23۔2022 میں مالی خسارہ  جی ڈی پی کا تخمیناً 6.4 فیصد ہے جو کہ   ان کے ذریعہ گزشتہ سال  مالیاتی مضبوطی  کے وسیع راستے   سے متعلق کئے گئے اعلان   کے مطابق ہے، جس میں 26۔2025 تک  مالیاتی خسارے کی سطح  4.5 فیصد سے نیچے پہنچے گی۔ سال 23۔2022  میں مالیاتی خسارے کی سطح کا تعین کرتے ہوئے  انہوں نے   مضبوطی اور پائیداری کے حصول کی خاطر  سرکاری سرمایہ کاری کے ذریعہ ترقی کو فروغ دینے کی اپیل کی۔

Trends-in-Deficit-English.jpg

 

مرکزی بجٹ 23۔2022   مستحکم اور   معقول  ٹیکس کے نظام کی اعلان شدہ  پالیسی کو جاری رکھتے ہوئےایسی مزید اصلاحات  بھی کرنا چاہتا ہے جو  ٹیکس کا ایک قابل اعتماد نظام قائم کرنے کے  وژن کو  آگے بڑھائے ۔ محترمہ نرملا سیتا رمن نے کہا کہ   ٹیکسوں اور  ڈیوٹی سے متعلق  تجاویز  ٹیکس نظام کو مزید آسان بنائیں گی، ٹیکس دہندگان کے ذریعہ رضا کارانہ طریقے سے   ٹیکس ادا کئے جانے کو فروغ دیں گی اور  مقدمات کو  کم کریں گی۔

بلا واسطہ ٹیکس کے معاملےمیں بجٹ  میں ٹیکس دہندگان کو  غلطیوں کو سدھارنے کے لئے    دو سال کے اندر  اپ ڈیٹ شدہ  انکم ٹیکس ریٹرن داخل کرانے کی اجازت دی گئی ہے۔ اس میں معذور افراد کو ٹیکس سے راحت  بھی فراہم کرائی گئی ہے۔ بجٹ میں  امداد باہمی کی تنظیموں کے لئے  کم از کم متبادل ٹیکس کی شرح اور سرچارج  کو بھی کم کیا گیا ہے۔ اسٹارٹ اپس کو  تحریک دیتے ہوئے  اہل اسٹارٹ اپس  کے لئے کمپنی  تشکیل دینے کی مدت کو  مزید ایک سال کے لئے آگے بڑھا دیا گیا ہے۔بجٹ میں  ریاستی حکومت کے ملازمین کو  مرکزی حکومت کے ملازمین کے برابر لانے  کے مقصد سے   این پی ایس کھاتے میں  ملازموں کے  تعاون   پر ٹیکس  میں کٹوتی کی حد  میں اضافے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔ نئی تشکیل شدہ منوفیچرنگ کمپنیوں کو  رعایتی  ٹیکس نظام کے تحت  تحریک دی جائے گی۔  ورچوئل اثاثوں کی منتقلی پر حاصل شدہ آمدنی  پر 30 فیصد  ٹیکس ہوگا۔ بار بار اپیلیں دہرائے جانے سے بچنے کےلئے  مقدموں کے بہتر نظام کی بھی بجٹ میں تجویز پیش کی گئی ہے۔

 

Tax Proposals 2.jpg

 

Tax Proposals.jpg

 

 

بالواسطہ ٹیکس کے معاملے میں مرکزی بجٹ میں  کہا گیا ہے کہ   خصوصی اقتصادی زون   میں  کسٹمز انتظام  پوری طرح آئی ٹی کے ذریعہ چلایا جائے گا۔ اس میں  کیپیٹل سامان اور پروجیکٹ کی درآمدات   پر   رعایتی شرحوں کو آہستہ آہستہ  ختم کرنے اور 7.5 فیصد کی معمولی شرح  لگانے کی بات کہی گئی ہے۔ بجٹ میں  کسٹم سے چھوٹ اور  ٹیرف کو آسان بنانے  کے جائزے  پر زور دیا گیا ہے، جس کے مطابق   350 سے زیادہ  دی جانے والی رعایتوں کو آہستہ آہستہ ختم کرنے کی تجویز ہے۔  اس میں تجویز پیش کی گئی ہے کہ  گھریلو الیکٹرونک مینوفیکچرنگ کے لئے سہولت فراہم کرانے کے  مقصد سے   کسٹم ڈیوٹی کی شرحوں کا گریڈیڈ طریقے سے   تعین کیا جائے گا۔ بھارت میں   تیار کئے جانے والے  زرعی شعبے کے   سامان اور آلات  کو دی جانے والی  چھوٹ کو  معقول بنایا جائے گا۔ اسٹیل اسکریپ پر دی جانے والی  کسٹم ڈیوٹی کی چھوٹ کو آگے بڑھایا   جائے گا۔ غیر بلینڈ شدہ فیول  پر اضافی ایکسائز ڈیوٹی لگائی جائے گی۔

Indirect Tax Proposals.jpg

Indirect Tax Proposals 2.jpg

 

بجٹ میں  اضافی ٹیکس کی ادائیگی سے متعلق   اپ ڈیٹ شدہ   ریٹرن داخل کرانے کے لئے   ٹیکس دہندگان کو   اجازت دینے سے متعلق ایک نئے ضابطے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔ یہ اپ ڈیٹ شدہ ریٹرن   متعلقہ   اسسٹمنٹ کے سال   آخر سے دو سال کے اندر  داخل کرایا جاسکتا ہے۔  محترمہ سیتا رمن نے کہا کہ  اس تجویز کے ساتھ  ٹیکس دہندگان  میں  اعتماد بحال ہوگا جس سے وہ  اس آمدنی کا بھی خود ہی اعلان کرسکیں گے جو  گزشتہ ریٹرن داخل کراتے وقت ان سے چھوٹ گئی تھی۔ یہ رضا کارانہ طریقے سے ٹیکس کی ادائیگی کی سمت میں  ایک مثبت قدم ہے۔

کو آپریٹیو سوسائٹیوں اور کمپنیوں کو  یکساں مواقع فراہم کرانے کے لئے  بجٹ میں  کو آپریٹیو سوسائٹیوں کے لئے   متبادل کم از کم ٹیکس کو کم کرکے   15 فیصد  کئے جانے کی تجویز ہے۔ وزیر خزانہ نے  کو آپریٹیو سوسائٹیوں پر لگنے والے سرچارج کو کم کرکے ایسے معاملوں میں،   12 فیصد  سے 7 فیصد کئے جانے کی تجویز پیش کی ہے، جن کی  کل آمدنی  ایک کروڑ روپے سے زیادہ  اور دس کروڑ روپے تک ہے۔

مختلف طریقے سے اہل شخص  کے والدین یا  سرپرست ایسے شخص کے لئے  بیمے کی اسکیم لے سکتے ہیں۔ موجودہ قانون میں   والدین یا سرپرست سے  کٹوتی کے لئے  یہ ضابطہ ہے کہ   صرف اسی صورت میں ہوگا جبکہ    یک مشت ادائیگی یا   سالانہ  ادائیگی کی رقم سبسکرائبر یعنی  والد یا سرپرستی  کی موت پر  مختلف طریقے سے اہل شخص کو دی جائے گی۔  اب بجٹ میں  سالانہ ادائیگی اور  یک مشت رقم   کو  والدین/ سرپرست کی زندگی میں ہی  والدین / سرپرست کے 60 سال کی عمر کا ہو جانے پر  ان پر  منحصر  مختلف  طور پر اہل شخص  کو ادا کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔

مرکزی حکومت  اپنے ملازم کی تنخواہ کا 14 فیصد حصہ  نیشنل پنشن اسکیم (این پی ایس) ٹیئر ون میں دیتی ہے۔ اس کے لئے  ملازم کی آمدنی کا حساب کرتے ہوئے کٹوتی کرنے کی اجازت ہے لیکن  ریاستی حکومت کے ملازمین کے معاملے میں   تنخواہ کے 10 فیصد کی حد تک ہی ایسی کٹوتی کی اجازت ہے۔ یکساں سلوک فراہم کرانے کے  لئے بجٹ میں   ریاستی حکومت کے ملازمین کو بھی  ٹیکس کٹوتی کی حد کو بڑھاکر   این پی ایس کھاتے میں  ملازم کے تعاون کو 10 فیصد سے بڑھاکر 14 فیصد   کئے جانے   کی بجٹ میں تجویز ہے۔

اکتیس مارچ 2022 سے قبل   قائم ہونے والے اہل اسٹارٹ اپس  کو  ان کے قیام سے   10 برسوں میں سے  مسلسل تین برسوں تک  ایک ٹیکس محرک فراہم کرایا جائے گا۔ کووڈ عالمی وبا کے پیش نظر  بجٹ میں  ایسا محرک فراہم کرانے کے لئے  قیام کی مدت کو  اہل اسٹارٹ اپس کے لئے   ایک مزید سال آگے بڑھاکر 31 مارچ 2023 تک  کیا گیا ہے۔

کچھ گھریلو کمپنیوں کے لئے  ایک عالمی مسابقتی کاروباری ماحول تیار کرنے کی کوشش میں   حکومت نے  نئی تشکیل شدہ  گھریلو مینوفیکچرنگ کمپنیوں کے لئے   15 فیصد کا  رعاتی ٹیکس کا نظام شروع کیا تھا۔  مرکزی بجٹ میں دفعہ 155 بی اے بی  کے تحت مینوفیکچرنگ یا  پروڈکشن شروع کئے جانے کے لئے  آخری تاریخ ایک سال آگے بڑھاکر  31 مارچ 2024 کرنے کی تجویز ہے۔

ورچوئل ڈیجیٹل اثاثوں  پر ٹیکس لگانے کے لئے   بجٹ میں   کسی ورچوئل ڈیجیٹل اثاثے  کو منتقل کئے جانے سے ہونے والی آمدنی پر  30 فیصد  کی شرح  سے  ٹیکس لگانے کا ضابطہ ہے۔ ایسی آمدنی کا حساب لگاتے وقت حصولیابی کی لاگت کو چھوڑکر  کسی خرچ یا الاؤنس کے معاملے میں کوئی کٹوتی نہیں کی جائے گی۔  اس کے علاوہ ورچوئل ڈیجیٹل اثاثے کی منتقلی سے ہونے والے نقصان کو  کسی دیگر آمدنی  سے  پورا نہیں کیا جاسکتا۔  لین دین کی تفصیلات حاصل کرنے کے لئے   ایک معینہ حد کے اوپر  ورچوئل ڈیجیٹل اثاثے کی منتقلی  کے سلسلے میں کی جانے والی ادائیگی پر   رقم کے ایک فیصد کی شرح سے  ٹی ڈی ایس  کا   التزام کیا گیا ہے۔ ورچوئل ڈیجیٹل اثاثے  کے تحفے پر بھی  پانے والےپر  ٹیکس لگانے کی تجویز   پیش کی گئی ہے۔

مقدمے کے  اچھے انتظام   کی پالیسی  کو  آگے بڑھانے کے لئے بجٹ میں  التزام ہے کہ   کسی ٹیکس دہندہ پر  کسی معاملے میں  ہائی کورٹ یا سپریم کورٹ  کے رو برو یکساں معاملے کی کوئی اپیل زیر غور ہونے کی صورت میں  محکمہ کے ذریعہ  اس ٹیکس دہندہ کے معاملے میں   مزید اپیل داخل کرانے کو  ہائی کورٹ یا سپریم کورٹ کے ذریعہ   اس معاملے کا فیصلہ ہونے تک ملتوی کیا جائے گا۔

 بجٹ میں یہ بھی تجویز ہے کہ   غیر مقیم ہندوستانی کی بیرونی ممالک کی آمدنی یا  کسی غیر ملکی بینک کے ذریعہ  حاصل آمدنی  ،  جہاز کو پٹے پر دینے سے ملنے والی رائلٹی یا سود کی آمدنی   آئی ایف ایس سی  میں  پورٹ فولیو منیجمنٹ خدمات  سے موصولہ آمدنی کو  مخصوص حالات میں ٹیکس سے چھوٹ دی جائے گی۔

بجٹ میں یہ وضاحت بھی کی گئی ہے کہ  آمدنی یا منافع پر  کسی بھی سرچارج یا سیس   کو  کاروباری اخراجات میں شامل نہیں کیا جائے گا۔

یقینی صورت حال پیدا کرنے اور   ٹیکس چوری کو روکنے   کے لئے  وزیر خزانہ نے یہ تجویز پیش کی ہے کہ  چھان بین اور   جائزہ لینے کی کارروائیوں میں   ہاتھ آنے والی غیر اعلان شدہ آمدنی کے خلاف  کوئی رعایت یا کسی نقصان کی بات قابل قبول نہیں ہوگی۔

بجٹ میں کہا گیا ہے کہ  خصوصی اقتصادی زون کے کسٹمز انتظام میں اصلاحات کی گئی ہیں اور اب یہ   پوری طرح آئی ٹی سے چلے گا اور زیادہ سہولت فراہم کرانے  اور   جوکھم پر مبنی جانچ  پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے  کسٹمز نیشنل پورٹل پر کام کرے گا۔ اصلاحات  30 ستمبر 2022 تک نافذ کی جائیں گی۔

بجٹ میں  کیپیٹل اشیا اور  پروجیکٹ  کی درآمدات میں  رعایتی شرحوں کو  آہستہ آہستہ ختم کیا جائے گا اور  7.5 فیصد کا کا معمولی  ٹیرف نافذ ہوگا۔ ایسی ایڈوانسڈ مشینریوں ، جو ملک میں تیار نہیں ہوتیں، کے لئے  کچھ رعایتیں جاری رہیں گی۔ کیپیٹل  اشیا کی گھریلو مینوفیکچرنگ کی حوصلہ افزائی کے لئے

خصوصی ڈھلائی، بال اسکرو اور لائنیر موشن گائڈ  جیسے مادخلوں پر  چند رعایتیں شروع کی گئی ہیں۔

تین سو پچاس سے زیادہ رعایتوں کو آہستہ آہستہ ختم کیا جائے گا۔ ان میں  کچھ زرعی  پیداوار، کیمیکلز، کپڑے، طبی آلات اور ادویات اور  میڈیسن پر چھوٹ شامل ہے جن کے لیے کافی گھریلو صلاحیت موجود ہے۔ مزید یہ کہ متعدد رعایتی نرخوں کو مختلف نوٹیفیکیشنز کے ذریعے تجویز کرنے کے بجائے خود کسٹمز ٹیرف شیڈول میں شامل کیا جا رہا ہے۔

الیکٹرانکس کے شعبے میں، کسٹم ڈیوٹی کی شرحوں کی درجہ بندی کی جا رہی ہے تاکہ پہننے کے قابل آلات، قابل سماعت آلات اور الیکٹرانک اسمارٹ میٹرز کی گھریلو مینوفیکچرنگ میں سہولت فراہم کرنے کے لیے شرح کا  گریڈیڈ ڈھانچہ فراہم کیا جا سکے۔ موبائل فون چارجرز کے ٹرانسفارمر کے پرزوں اور موبائل کیمرہ ماڈیول کے کیمرہ لینز اور بعض دیگر اشیاء پر بھی ڈیوٹی میں رعایت دی جارہی ہے۔

جیمز اینڈ جیولری سیکٹر کو فروغ دینے کے لیے کٹ اور پالش شدہ ہیروں اور قیمتی پتھروں پر کسٹم ڈیوٹی کو کم کر کے 5 فیصد کیا جا رہا ہے۔ ای کامرس کے ذریعے جیولری کی برآمد کو آسان بنانے کے لیے اس سال جون تک ایک آسان ریگولیٹری فریم ورک نافذ کیا جائے گا۔ کم قیمت والی امیٹیشن جیولری کی درآمد کو روکنے کے لیے، امیٹیشن جیولری پر کسٹم ڈیوٹی کو اس انداز سے تجویز کیا جا رہا ہے کہ اس کی درآمد پر کم از کم 400 روپے فی کلو  گرام ڈیوٹی ادا کی جائے۔

 کچھ اہم کیمیکلز یعنی میتھانول، ایسیٹک ایسڈ اور پیٹرولیم ریفائننگ کے لیے ہیوی فیڈ اسٹاک پر کسٹم ڈیوٹی کم کی جا رہی ہے، جبکہ سوڈیم سائینائیڈ پر ڈیوٹی بڑھائی جا رہی ہے جس کے لیے مناسب گھریلو صلاحیت موجود ہے۔

 چھتریوں پر ڈیوٹی بڑھا کر 20 فیصد کی جا رہی ہے۔ چھتریوں کے حصوں سے استثنیٰ واپس لیا جا رہا ہے۔ ہندوستان میں تیار ہونے والے زرعی شعبے کے آلات اور  ٹولز پر بھی استثنیٰ کو معقول بنایا جا رہا ہے۔ اسٹیل اسکریپ کو گزشتہ سال دی گئی کسٹم ڈیوٹی کی چھوٹ میں  مزید ایک سال کے لیے توسیع کی جا رہی ہے۔ اسٹینلیس اسٹیل اور کوٹیڈ اسٹیل کے فلیٹ پروڈکٹس، الائے اسٹیل اور ہائی اسپیڈ اسٹیل کی چھڑوں  پر کچھ اینٹی ڈمپنگ اور سی وی ڈی کو منسوخ کیا جا رہا ہے۔

برآمدات کو ترغیب دینے کے لیے زیور، تراشنے، باندھنے  والی اشیا، بٹن، زپر، لائننگ میٹریل، مخصوص چمڑے، فرنیچر فٹنگز  اور پیکیجنگ باکسز جیسی اشیاء پر چھوٹ فراہم کی جا رہی ہے جن کی دستکاری، ٹیکسٹائل اور چمڑے کے ملبوسات، چمڑے کے جوتوں اور دیگر اشیا کے برآمد کنندگان کو ضرورت ہو سکتی ہے۔ جھینگوں کے ایکوا کلچر کے لیے درکار کچھ مادخل  پر ڈیوٹی کم کی جا رہی ہے تاکہ اس کی برآمدات کو فروغ دیا جا سکے۔

ایندھن کی بلینڈنگ اس حکومت کی ترجیح ہے۔ ایندھن کی بلینڈنگ کی کوششوں کی حوصلہ افزائی کرنے کے لیے غیر بلینڈ شدہ ایندھن پر یکم اکتوبر 2022 کے  پہلے دن سے 2 روپے فی لیٹر کی اضافی ایکسائز ڈیوٹی لگائی جائے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ ا گ۔ ن ا۔

U-951



(Release ID: 1794425) Visitor Counter : 828