وزیراعظم کا دفتر

وزیراعظم نے کووڈ صورتحال پر بات چیت کیلئے چھ ریاستوں کے وزرائے اعلی سے بات چیت کی

وزیراعظم نے تعاون، مشترکہ کوششوں اور آپسی تال میل کیلئے ریاستوں کی تعریف کی

وزرائے اعلی نے تمام ممکنہ مدد فراہم کرنے کیلئے وزیراعظم کا شکریہ ادا کیا

مہاراشٹر اور کیرالہ میں کووڈ معاملوں میں اضافہ کا رجحان تشویش کا باعث ہے: وزیراعظم

ٹیسٹ ٹریک، ٹریٹ اور ٹیکہ کا تجربہ کیا گیا ہے اور حکمت عملی ثابت ہوئی ہے: وزیراعظم

ہم نے تیسری لہر کے امکانات کو روکنے کیلئے سرگرم اقدامات کئے ہیں: وزیراعظم

بنیادی ڈھانچہ میں خلا کو،خاص طور پر دیہی علاقوں میں ، پورا کیا گیا: وزیراعظم

کورونا ابھی ختم نہیں ہوا ہے،ان لاکنگ کے بعد کے رویے کی تصویر تشویشناک ہے: وزیراعظم

Posted On: 16 JUL 2021 1:44PM by PIB Delhi

نئی دہلی،16؍جولائی:

وزیراعظم جناب نریندرمودی نے تمل ناڈو، آندھراپردیش، کرناٹک، اڈیشہ، مہاراشٹر اور کیرالہ کے وزرائے اعلی سے کووڈ سے متعلق صورتحال پر بات چیت کی۔ اس میٹنگ میں مرکزی وزیر داخلہ اور وزیر صحت بھی موجود تھے۔ وزرائے اعلی نے کووڈ سے نمٹنے  میں تمام ممکنہ مدد اور تعاون کیلئے وزیراعظم کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے وزیراعظم سے ٹیکہ کاری کی پیش رفت اور ان ریاستوں میں وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کیلئے کئے جارہے اقدامات کے بارے میں بات  کی۔  انہوں نے ٹیکہ کاری حکمت عملی کے بارے میں اپنے ردعمل کا بھی اظہار کیا۔

وزرائے اعلی نے طبی بنیادی ڈھانچے کو فروغ دینے کیلئے اٹھائے جانے والے اقدامات کے بارے میں بھی بات کی اور مستقبل میں کووڈ کے معاملوں میں اضافہ کے امکانات سے نمٹنے کیلئے مشورے بھی دئے۔ انہوں نے کووڈ کے بعد مریضوں کو درپیش مسائل اور اس طرح کے معاملوں میں مدد فراہم کرنے کیلئے کئے جارہے اقدامات پر بھی بات چیت کی ۔انہوں نے یقین دہانی کرائی کہ وہ انفیکشن میں اضافہ کو روکنے کیلئے اپنی پوری کوشش کررہے ہیں۔

مرکزی وزیر داخلہ نے بتایا کہ جولائی  کے مہینے میں کل معاملوں کا 80 فیصد سے زیادہ معاملے چھ ریاستوں سے ہیں جبکہ ان میں سے کچھ ریاستوں میں ٹیسٹ پازیٹیویٹی شرح بہت زیادہ ہے۔ مرکزی داخلہ سکریٹری نے ملک میں کووڈ معاملوں پر تبادلہ خیال کیا اور کووڈ کے زیادہ معاملوں والے اضلاع میں کووڈ کے مناسب طرزعمل اور کورونا کو روکنے کے اقدامات کو تقویت دینے کی ضرورت کے بارے میں بات چیت کی۔ انہوں نے یہ بھی تجویز دی کہ ان اضلاع میں انلاک کا عمل درجہ بند طریقے سے اور منظم انداز میں ہونا چاہئے۔

اپنی اختتامی تقریر میں وزیراعظم نے باہمی تعاون اور کوورنا وبا کے خلاف لڑائی میں ساتھ دینے کیلئے ریاستی سرکاروں کی تعریف کی۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہم سب ایک ایسے مقام پر ہے جہاں تیسری لہر کے خدشات کا اظہار ہمیشہ کیا جاتا ہے۔

ماہرین کی جانب سے کچھ ریاستوں  میں بڑھے ہوئے معاملوں کی تعداد میں گراوٹ کے رجحان کی وجہ سے مثبت اشارے دینے کے باوجود حالات ابھی بھی تشویشناک ہیں۔

وزیر اعظم نے نشاندہی کی کہ گذشتہ ہفتے کے دوران 80 فیصدمعاملے  اور اسی طرح 84 فیصد بدقسمتی سے اموات ان ریاستوں میں ہوئی ہیں جہاں کے نمائندہ اجلاس میں موجود ہیں۔ ابتدائی طور پر ماہرین کا خیال تھا کہ وہ ریاستیں جہاں دوسری لہر کا آغاز ہوا وہاں کے حالات پہلے معمول پر آئیں گے۔ تاہم ، کیرالہ اور مہاراشٹر میں بڑھتی ہوئی تعداد شدید پریشانی کا سبب ہے۔

 

 

وزیر اعظم نے متنبہ کیا کہ دوسری لہر سے پہلے جنوری-فروری میں بھی اسی طرح کے رجحانات دیکھنے میں آئے تھے۔ اسی لئے ، وزیر اعظم نے اصرار کیا ، کہ جن ریاستوں میں معاملات بڑھ رہے ہیں ، ہمیں تیسری لہر کے امکان کو روکنے کے لئے عملی اقدامات کرنا ہوں گے۔

 

 

وزیر اعظم نے  ماہرین کے خیال کی نشاندہی کی  کہ اگر یہ معاملات طویل عرصے تک بڑھتے چلے جاتے ہیں تو ، کورونا وائرس کے تغیر پذیر ہونے کے امکانات بھی بڑھ جائیں گے اور نئی شکلوں کے خطرات بھی بڑھ سکتے ہیں۔ لہذا ، وزیر اعظم نے کہا کہ ہمیں ٹیسٹ ، ٹریک ، ٹریٹ اور ٹیکا (ٹیکہ دینے) کی حکمت عملی کو جاری رکھنے کی ضرورت ہے جبکہ مائیکرو کنٹینمنٹ زون پر خصوصی توجہ دئے جانے کی ضرورت ہے۔ بڑی تعداد والے اضلاع پر توجہ دی جانی چاہئے۔ جناب مودی نے پوری ریاستوں میں جانچ میں اضافہ پر زور دیا۔ ویکسین کو اعلی انفیکشن والے علاقوں کے لئے اسٹریٹجک آلہ قرار دیتے ہوئے وزیراعظم نے ویکسینیشن کے موثر استعمال پر زور دیا وزیر اعظم نے ان ریاستوں کی تعریف کی جو اس بار اپنی  آرٹی-پی سی آر جانچ کی صلاحیت کو بہتر بنانے کے لئے کام  کررہے ہیں۔

وزیر اعظم نے مالی مدد کی بات کی جو میڈیکل انفراسٹرکچر جیسے آئی سی یو بیڈز اور جانچ کی صلاحیت کو بڑھانے کے لئے فراہم کی جارہی ہے۔ حال ہی میں منظور شدہ 23000 روپے کے ایمرجنسی کووڈ رسپانس پیکیج کا ذکر کرتے ہوئے ، وزیر اعظم نے ریاستوں سے کہا کہ وہ فنڈز کو طبی بنیادی ڈھانچے کو مضبوط بنانے کے لئے استعمال کریں۔

وزیر اعظم نے ریاستوں کو خصوصی طور پر دیہی علاقوں میں بنیادی ڈھانچے کے خلا کو پُر کرنے کی تلقین کی۔ انہوں نے آئی ٹی سسٹم ، کنٹرول روم اور کال سنٹرز کو مضبوط بنانے کو بھی کہا  تاکہ شہریوں کووسائل کی رسائی اور صاف شفاف انداز میں اعدادوشمار کی رسائی حاصل ہواور مریضوں کو پریشانی سے بچایا جاسکے۔ جناب مودی نے کہا کہ میٹنگ میں موجود ریاستوں کو مختص 332 پی ایس اے پلانٹوں میں سے 53 پلانٹس نے   کام شروع کردئے ہیں ۔ انہوں نے وزرائے اعلی سے پودوں کی تکمیل میں تیزی لانے کی اپیل کی ۔ وزیر اعظم نے بچوں کو انفکشن سے بچانے اور اس سلسلے میں ہر ممکن انتظام کرنے کی ضرورت کا خصوصی ذکر کیا۔

وزیر اعظم نے یورپ ، امریکہ اور بنگلہ دیش ، انڈونیشیا، تھائی لینڈ اور بہت سے دوسرے ممالک میں کیسوں کی تعداد میں اضافے پر تشویش کے ساتھ ذکر کیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ اس سے ہمیں اور دنیا کو چوکس رہنا چاہئے۔

وزیر اعظم نے اس بات کا اعادہ کیا کہ کورونا ختم نہیں ہوا ہے اور ان تصویروں پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے جو لاک ڈاؤن کے بعد سامنے آرہی ہیں۔ انہوں نے پروٹوکول پر عمل کرنے اور بھیڑ سے بچنے کی ضرورت پر زور دیا کیونکہ اجلاس میں متعدد ریاستوں کی گھنی آبادی والے میٹروپولیٹن شہر ہیں۔ انہوں نے سیاسی جماعتوں ، سماجی تنظیموں اور غیر سرکاری تنظیموں سے بھی لوگوں میں آگاہی پھیلانے کی اپیل کی۔

 

****************

U-6620



(Release ID: 1736170) Visitor Counter : 42