بھاری صنعتوں کی وزارت

بھارت میں آٹو موبائل کے لیے ایشیا کے طویل ترین اور دنیا کے پانچویں طویل ترین ہائی اسپیڈ ٹریک کا افتتاح

مستقبل قریب میں بھارت آٹو مینوفیکچرنگ مرکز بننے کے لیے تیار ہے: جناب پرکاش جاوڈیکر

Posted On: 29 JUN 2021 2:44PM by PIB Delhi

29 جون 2021 :بھاری صنعتوں اور عوامی کاروباری اداروں کے وزیر جناب پرکاش جاوڈیکر نے آج اندور میں این اے ٹی آر اے ایکس ہائی اسپیڈ ٹریک (ایچ ایس ٹی) کا افتتاح کیا جو ایشیا کا سب سے طویل ٹریک ہے۔ این اے ٹی آر اے ایکس کو 1000 ایکڑ اراضی میں تیار کیا گیا ہے۔ یہ دو پہیہ گاڑیوں سے لے کر بھاری ٹریکٹر ٹریلر تک تمام بڑے زمرے کی گاڑیوں کے تیز رفتار جانچ کے لیے موزوں ہے، اور ہر قسم کی تیز رفتار جانچ کا ایک بڑا مرکز بنے گا۔

عالمی معیار کے 11.3 کلومیٹر طویل ہائی اسپیڈ ٹریک کے ای-افتتاح کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے جناب جاوڈیکر نے کہا کہ بھارت آٹو موبائلز اور اسپیئر پارٹس کے لیے مینوفیکچرنگ مرکز بننے والا ہے۔ وزیر موصوف نے کہا کہ ہم تیزی سے 'خود کفیل بھارت' کی طرف بڑھ رہے ہیں اور اس سمت میں ہمہ جہت کوششیں کی جارہی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ان کی وزارت وزیر اعظم کے اس خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کے لیے پرعزم ہے جس کے تحت بھارت آٹو مینوفیکچرنگ کا مرکز بن جائے گا۔ انھوں نے کہا کہ آٹو موبائل اور مینوفیکچرنگ صنعتوں کی توسیع سے نئی ملازمتیں پیدا کرنے میں بھی مدد ملے گی۔

وزیر موصوف نے کہا کہ ریلوے، شاہراہوں اور آبی گزرگاہوں کے شعبے میں کئی پروجیکٹ برسوں سے تعطل کا شکار تھے جو مضبوط سیاسی ارادے کی وجہ سے آج مکمل ہو رہے ہیں۔

ریلوے، شاہراہوں وغیرہ میں بہت سے منصوبے۔ جو برسوں سے سڑ رہے تھے آج مضبوط سیاسی ارادے کی وجہ سے مکمل ہو رہے ہیں۔ آج مکمل ہونے والا اور افتتاح کیا گیا ہائی اسپیڈ ٹریک ایک اور مثال ہے جو ظاہر کرتا ہے کہ مودی حکومت کس طرح کام کرتی ہے۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے بھاری صنعتوں اور عوامی کاروباری اداروں کے وزیر مملکت جناب ارجن رام میگھوال نے کہا کہ حکومت مینوفیکچرنگ اور آٹو موبائل صنعت کو فروغ دے رہی ہے کیوں کہ اس سے ملک کو بڑے پیمانے پر مستحکم بنانے میں مدد ملے گی۔

این اے ٹی آر اے ایکس سینٹر میں زیادہ سے زیادہ رفتار، تیزی، مقررہ رفتار سے ایندھن کی کھپت کی صلاحیت کا جائزہ لینے، ریئل روڈ ڈرائیونگ سیمولیشن کے ذریعے اخراج کی جانچ، لین کی تبدیلی کے دوران گاڑیوں کا استحکام جیسی متعدد جانچ صلاحیتیں موجود ہیں۔ یہ گاڑیوں کی حرکیات کے حوالے سے بھی مرکز فضیلت (سینٹر آف ایکسیلنس) ہے۔

ایچ ایس ٹی کا استعمال بی ایم ڈبلیو، مرسیڈیز، آڈی، فراری، لیمبورگینی، ٹیسلا وغیرہ جیسی اعلیٰ درجے کی کاروں کی زیادہ سے زیادہ تیز رفتار صلاحیت کی پیمائش کے لیے کیا جاتا ہے۔ جن کی پیمائش کسی اور بھارتی ٹیسٹ ٹریک پر نہیں کی جاسکتی۔ مدھیہ پردیش میں واقع ہونے کی وجہ سے یہ زیادہ تر او ای ایم کے لیے قابل رسائی ہے۔ غیر ملکی او ای ایم بھارتی حالات کے لیے پروٹوٹائپ کاروں کی تیاری کے لیے این اے ٹی آر اے ایکس ایچ ایس ٹی کے استعمال پر بھی غور کریں گے۔ فی الحال، غیر ملکی او ای ایمز ہائی اسپیڈ ٹیسٹ کی ضروریات کے لیے بیرون ملک ہائی اسپیڈ ٹریک پر ٹیسٹ کرتے ہیں۔

یہ ہائی اسپیڈ ٹیسٹ کی تمام اقسام کے لیے ایک بڑا مقام ہے، دنیا کے سب سے بڑے ٹریک میں سے ایک ہے۔ یہ ہر طرح کی کلاس گاڑیوں کی ضرورت کو پورا کر سکتا ہے۔ اس ٹریک پر دو پہیوں سے لے کر سب سے بھاری ٹریکٹر ٹریلر تک گاڑیوں کی جانچ کی جاسکتی ہے۔ ٹریک روٹیشن پر گاڑیوں کے اسٹیرنگ کو زیادہ سے زیادہ 375 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے کنٹرول کیا جاسکتا ہے۔ ٹریک گھماؤ پر کم پشتے کا حامل ہےجس کی بنا پر یہ عالمی سطح پر محفوظ ترین ٹیسٹ ٹریک میں سے ایک ہے۔

***

U. No. 6011

(ش ح۔ ع ا۔ ع ر)



(Release ID: 1731349) Visitor Counter : 42