PIB Headquarters

کووڈ-19 سے متعلق پی آئی بی کا یومیہ بلیٹن یا خبرنامہ

Posted On: 18 AUG 2020 6:30PM by PIB Delhi


 

Coat of arms of India PNG images free downloadhttp://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002PP7C.jpg

 

*بھارت نے ایک نئے ریکارڈ کا تجربہ کیا - ایک دن میں تقریبا 9 لاکھ ٹیسٹ کیے گئے ۔

* 57584 میں سے سب سے زیادہ ایک ہی دن کی بازیافت ریکارڈ ۔

* کل بازیافت ایکٹو کیسز سے 13 لاکھ سے زیادہ ہے۔

* کیس اموات کی شرح 1.92فیصد کم ہے۔

* فعال معاملات (673166) کل مثبت معاملات میں سے صرف 24.91فیصد ہیں۔

* ویکسین انتظامیہ سے متعلق قومی ماہر گروپ کی گھریلو ویکسین مینوفیکچرس سے ملاقات ۔

 

کووڈ-19 پر مشتمل پریس ریلیز ، جو 24 گھنٹوں میں جاری کی گئی ہیں، فیلڈ افسران سے حاصل کردہ معلومات اور پی آئی بی کے ذریعہ کئے گئے صحیح تجزیات پر مشتمل ہیں

 

 


http://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image005Y642.jpg

Image

In

 

 

 

 

بھارت نے ایک دن میں تقریباً 9 لاکھ ٹیسٹ کرنے کا نیا ریکارڈ بنایا،ایک دن میں 57937 افراد کی صحت یابی کا بلند ترین ریکارڈ،صحت یابی کی کل تعداد ایکٹیو معاملات سے 13 لاکھ سے بھی زیادہ

نئی دہلی،18اگست 2020۔ بھارت نے یومیہ کووڈ-19 کی جانچ کے معاملے میں ایک نیا ریکارڈ قائم کیا ہے۔ ایک دن کے اندر تقریباً 9 لاکھ (899864) جانچ کئے گئے، جو کہ کسی ایک دن میں کی گئی اب تک کی سب سے زیادہ جانچ ہے۔ اس کے ساتھ ہی کل جانچ کی تعداد 30941264 ہوگئی ہے۔اس بڑے پیمانے پر جانچ کے باوجود، ہفتہ واری قومی اوسط یعنی 8.84 فیصد کے مقابلے پوزیٹیو معاملات کی شرح کم یعنی 8.81 فیصد رہی ہے۔بھارت نے گزشتہ 24 گھنٹوں کے اندر ایک دن میں سب سے زیادہ صحت یابی کا ریکارڈ بھی قائم کیا ہے، یہ تعداد 57937 ہے۔ یہ اسی مدت کے دوران سامنے آئے مصدقہ معاملات کی تعداد (55079) سے کہیں زیادہ ہے۔ مزید مریضوں کے صحت یاب ہونے اور اسپتالوں سے ڈسچارج کئے جانے نیز ہوم آئیسولیشن (ہلکے اور متوسط قسم کے معاملات میں) کے سبب صحت یاب ہونے والے مریضوں کی کل تعداد تقریباً 20 لاکھ (1977779) ہوگئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی صحت یاب ہونے والے مریضوں اور ایکٹیو معاملات کے درمیان فرق آج 13 لاکھ (1304613) سے تجاوز کرگیا ہے۔روزانہ صحت یابی کی شرح میں مسلسل اضافے کی وجہ سے ہندوستان کی صحت یابی کی شرح 73.18 فیصد ہوگئی ہے، جبکہ شرح اموات بھی کم ہوکر 1.92 فیصد ہوگئی ہے۔ ٹیسٹ، ٹریک، ٹریٹ کی حکمت عملی کے سلسلے میں مرکز اور ریاستوں / مرکز کے زیر انتظام علاقوں کی حکومتوں کی مسلسل اور مربوط کوششوں کےنتیجے میں 30 ریاستوں / مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں سی ایف آر قومی اوسط سے بھی کم ہیں۔ بڑے پیمانے پر جانچ کی وجہ سے متاثرین کی ابتدا ہی میں پہچان کرنے اور مریضوں کو الگ کرنے میں مدد ملی ہے۔

تفصیلات کے لیے:

 

ٹیکہ کاری سے متعلق ماہرین کے قومی گروپ نے ٹیکے کے گھریلو مینوفیکچرر سے ملاقات کی

نئی دہلی،17 اگست 2020۔ ٹیکہ کاری سے متعلق ماہرین کے قومی گروپ نے آج ٹیکے کے سرکردہ گھریلو مینوفیکچررس – سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا ، پنے ؛ بھارت بائیوٹیک ، حیدرآباد ؛ زائڈس کیڈیلا، احمد آباد؛ جینوا بائیو فارماسیوٹیکل ، پنے اور بائیو لوجیکل ای، حیدرآباد سے ملاقات کی۔یہ میٹنگ باہمی طور پر فائدے مندر اور نتیجہ خیز رہی۔اس سے ماہرین کے قومی گروپ کو ویکسین کے مختلف مرحلوں کو طے کرنے میں ایک رفتار ملی ہے۔ یہ ویکسین ملک کے مینوفیکچررس تیار کر رہے ہیں، جیساکہ مرکزی حکومت کو اس ویکسین سے کافی امیدیں ہیں۔

تفصیلات کے لیے:

 

ہند –امریکہ ورچوول نیٹ ورک برائے کووڈ-19 کے لئے ایوارڈز کا اعلان

نئی دہلی18 اگست 2020۔ہندوستان اور امریکہ کے محققین پر مشتمل آٹھ ذوقومی ٹیموں کو ہند- امریکہ ورچوول نیٹ ورک کے ذریعہ کووڈ-19 بیماری کے پیتھوجینیسس اور اس سے نمٹنے کے طریقو ں پر جدیدترین تحقیق کے لئے ایوارڈز سےسرفراز کیا گیاہے۔ان کے تحقیق کے شعبوں میں اینٹی وائرل کوٹنگس ، ایمیون ماڈیولیشن ، گندے پانی میں سارس سی او وی -2 کا پتہ چلانے ، بیماری کی دریافت کے میکانزم تیار کرنے ، معکوس جینیاتی حکمت عملی مرتب کرنے اور مختلف متبادل دوائیں تجویز کرنے کی سرگرمیو ں کا احاطہ کیا جائے گا۔ایوارڈز کا اعلان انڈو یو ایس سائنس اینڈ ٹکنالوجی فورم (IUSSTF) نے طبی اور سائنسی برادری کی کووڈ 19 وبائی امراض اور ابھرتے ہوئے عالمی چیلنجوں کے حل تلاش کرنے کی کوششوں کی حمایت میں کیا ہے۔آئی یو ایس ایس ٹی ایف ایک خود مختار باہمی تنظیم ہے جو ہندوستان اور امریکہ کی حکومتوں کے مشترکہ طور پر مالی اعانت فراہم کرتی ہے۔

تفصیلات کے لیے: https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1646582

 

2019 میں مارچ سے جون کی مدت کے مقابلے 2020 کی مدت میں زرعی اشیاءکی بر آمدات میں 23.24 فیصد کا اضافہ

نئی دہلی ،18اگست 2020۔ عالمی تجارتی تنظیم کے تجارتی اعداد وشمار کے مطابق2017 میں دنیا کی زرعی تجارت میں بھارت کی زرعی بر آمدات اور در آمدات کا حصہ بالترتیب 2.27 فیصد اور 1.90 فیصد تھا۔ وبا کی وجہ سے عائد لاک ڈاؤن کے مشکل حالات کے دوران بھارت نے اس بات کا خیال کیا کہ عالمی خوراک کی سپلائی چین میں کوئی رخنہ نہ پڑے، لہذا اس نے بر آمدات کو جاری رکھا۔ مارچ 2020 سے جون 2020 کے درمیان زرعی اشیاءکی بر آمدات25552.7 کروڑ روپے تھی، جبکہ 2019 میں اسی مدت کے دوران یہ بر آمدات 20734.8 کروڑ روپے تھی، جس سے 23.24 فیصد کے زبردست اضافے کا اظہار ہوتا ہے۔بھارت کی زرعی جی ڈی پی کے فیصد کے طور پر زرعی بر آمدات میں 2017-18 میں 9.4 فیصد سے 19-2018 میں 9.9 فیصد تک اضافہ ہوا۔ جبکہ بھارت کی زرعی جی ڈی پی کے فیصد کے طور پر زرعی در آمدات میں 5.7 فیصد سے 4.9 فیصد تک گراوٹ آئی، جس سے بھارت میں قابل بر آمد اضافی سامان کا پتہ چلتا ہے اور زرعی مصنوعات کی در آمد پر انحصار میں کمی کا اندازہ ہوتا ہے۔

تفصیلات کے لیے: https://pib.gov.in/PressReleseDetail.aspx?PRID=1646632

 

جناب دھرمیندر پردھان نے نقل مکانی کرنے والے مزدوروں کے لئے کم لاگت والی رہائش گاہیں فراہم کرنے کے عمل میں فولاد کی صنعت کے قائدین کو حکومت کے ساتھ اشتراک کرنے کی تلقین کی

نئی دہلی ،18اگست2020۔ فولاد اور پیٹرولیم ، نیز قدرتی گیس کے مرکزی وزیر جناب دھرمیندر پردھان نے فولاد کی صنعت کے قائدین سے اپیل کی ہے کہ وہ نقل مکانی کرکے آنے والے مزدوروں کے لئے کم لاگت والی رہائش گاہیں فراہم کرنے کے عمل میں حکومت کے ساتھ اشتراک کریں۔ آج یہاں منعقدہ ایک ویبینار میں بطور مہمان خصوصی اظہار خیال کرتے ہوئے انہوں نے ہاؤسنگ اور شہری امور کی وزارت کا حوالہ دیا۔ مذکورہ ویبی نار کا موضوع تھا ‘آتم نر بھر بھارت: ہاؤسنگ اور تعمیرات اور ہوابازی کے شعبے میں فولاد کے استعمال کو بڑھاوا دینا’۔وزیر موصوف نے مذکورہ اسکیم کا حوالہ دیتے ہوئے سرکاری دائرہ کار کی صنعتوں اور فولاد کی صنعت کے قائدین سے کہا کہ وہ اس پروجیکٹ میں حکومت کے ساتھ اشتراک کریں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے اس طرح کے ایک لاکھ مکانات فراہم کرنے کا نشانہ مقرر کر رکھا ہے ، تاہم صنعت کو مزید تعداد میں فولاد کے زیادہ سے زیادہ استعمال کے ذریعے مکانا ت تیار کرنے چاہئیں، جو دوسروں کے لئے قابل تقلید مثال ہوگی۔وزیر موصوف نے کہا کہ صنعت کو حکومت کی اس طرح کی فلاحی پہل قدمیوں میں شراکت دار بننا چاہئے ، کیونکہ آتم نر بھر بھارت کا مقصد ملک کے ہر شہری کو پروقار زندگی بسر کرنے کے لائق بنانا ہے۔شری پردھان نے کہا کہ کووڈ بحران کے دوران ، انڈین انڈسٹری اس موقع پر پہنچی اور بڑی تعداد میں پی پی ای کٹس ، ماسک اور وینٹی لیٹر تیار کیے ، اور ہندوستانی دوا ساز صنعت نے 150 ممالک کو دوائیں فراہم کیں۔ اسی طرح کی خطوط پر ، ہندوستان ، جو پہلے ہی دنیا کا دوسرا سب سے بڑا پروڈیوسر ہے ، کو اسٹیل کی ضروریات کے لئے ترجیحی ذریعہ بن کر ابھرنا چاہئے۔

تفصیلات کے لیے

 

فیلڈدفاتر سے ماخوذ

 

*پنجاب: کووڈ کیسوں میں اضافے اور ریاست میں فی لاکھ اموات کی بڑھتی ہوئی تعداد پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے وزیر اعلی پنجاب کیپٹن امریندر سنگھ نے کہا کہ وہ وبائی بیماری کے مزید پھیلاؤکی روک تھام کے لئے سخت اقدامات مسلط کرنے کے مخالف نہیں ہیں۔ اگرچہ انہوں نے لاک ڈاؤن کو مسترد نہیں کیا ، خاص طور پر ایسے علاقوں میں جن میں معاملات میں زیادہ اضافہ ہوتا ہے ، وزیر اعلی نے واضح کیا کہ معاشی سرگرمیوں کو تکلیف نہیں ہونے دی جائے گی۔

 

* ہریانہ: کووڈ19 سے نمٹنے میں ہریانہ کو سب سے آگے رکھنے والے افسران کی اٹل کوششوں کی تعریف کرتے ہوئے ، ہریانہ کے چیف سکریٹری نے تمام ڈپٹی کمشنرز کو 4 Ts - ٹریسنگ ، ٹریکنگ ، جانچ اور علاج پر دباؤ ڈالنے کی ہدایت کی ہے۔ کے طور پرکووڈ19 کے پھیلاؤ پر ایک ٹیب رکھنے کے لئے. چیف سکریٹری نے یہ بھی بتایا کہ چیف منسٹر نے واضح ہدایات دی ہیں کہ کووڈ19 کے پھیلاؤکو روکنا ہوگا، لہذا کووڈ19 کے معاملات پر ٹیب رکھنے کے لئے ون ٹو ون مانیٹرنگ کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کمیونٹی ہیلتھ سینٹرز (سی ایچ سی) اور پرائمری ہیلتھ سینٹرز (پی ایچ سی) میں قائم تمام روگسوچک مریضوں کو فلو کونوں میں بھیجا جانا چاہئے اور بیماری (آئی ایل آئی) جیسے تمام انفلوئنزا اور شدید شدید سانس کی بیماریوں کے لگنے (ساری) کیسز کے بغیر ٹیسٹ کیا جانا چاہئے۔

 

* کیرالہ: ریاستی حکومت نے کووڈ۔19 کی وجہ سے بڑے پیمانے پر متاثر سیاحت کے شعبے کو استحکام دینے کے لیے 455  کروڑ روپے کی قرض اسکیم کا اعلان کیا ہے۔ قابو پانا وزیر سیاحت نے کہا کہ اس اسکیم کے مطابق کاروباری افراد 500 روپے تک کا فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔ پچیس لاکھ سود سبسڈی کے ساتھ۔ سہ پہر تک 36 کیسوں کا مثبت تجربہ کیا گیا ہے، جن میں تھروواننتا پورم کی سنٹرل جیل میں 6 نئے مقدمات شامل ہیں، جن کی تعداد 486 ہوگئی ہے۔ دریں اثنا ، محکمہ صحت نے کوٹائیم ، پالککڈ اور کنور میں رابطے کی منتقلی کے معاملات میں مزید نگرانی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ یہ اضلاع عروج پر ہیں۔ ملا پورم ، کساراگوڈ ، تھروواننتا پورم ، اور ارناکولم اضلاع میں انفیکشن کی اعلی شرح بتائی جارہی ہے، کیرالہ میں کووڈ 19 کے دو مزید اموات کی اطلاع ملی ہے۔ اس کے ساتھ ہی ہلاکتوں کی تعداد بڑھ کر 171 ہوگئی۔ گذشتہ روز ریاست میں مجموعی طور پر 1725 واقعات کی تصدیق ہوگئی۔ اس وقت مختلف اضلاع میں 15890 مریض زیر علاج ہیں اور 1.64 لاکھ افراد نگرانی میں ہیں۔

 

* تمل ناڈو: مدراس ہائیکورٹ نے تھوتھوکڑی میں سٹرلائٹ تانبے کے بو آلودگی پلانٹ کو دوبارہ کھولنے کی اجازت دینے سے انکار کردیا اور ویدتا لمیٹڈ کے ذریعہ دائر تمام درخواستوں کو خارج کردیا۔ چونکہ اے اینڈ این جزائر کووڈ -19 سے ٹکرا رہے ہیں ، ہفتہ وار مسافر بردار بحری جہاز ایم وی نیکوبار اور ایم وی نانکووری نے جزیرے اور چنئی بندرگاہ کے مابین اپنی خدمات معطل کردی ہیں۔ اس کے نتیجے میں ٹیسٹنگ کٹس کی بھی کمی ہے۔ اتوار کے روز گورنمنٹ راجاجی اسپتال (جی آر ایچ) نے اپنے نوعیت کے پہل میں ، کووڈ۔19 سے صحت یاب ہونے والے مریضوں کے علاج اور نگرانی کے لئے آؤٹ پیشنٹ سینٹر ، اپنے ’پوسٹ کوڈ ویلینس سنٹر‘ کی رونمائی کردی۔ بت بنانے والوں کی ایک ایسوسی ایشن نے مدینہ ہائیکورٹ میں رجوع کیا ہے، جس میں ونیاکر بتوں کی تنصیب پر پابندی کے ریاستی حکومت کے فیصلے کو چیلنج کیا گیا ہے۔

 

* کرناٹک: میڈیکل ایجوکیشن کے وزیر ڈاکٹر کے کے سدھاکر نے کووڈ 19 مریضوں کے بنیادی ڈھانچے اور علاج معالجے کا جائزہ لینے کے لئے آج کیمپیوڈا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز کا دورہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ریاست ریاست بھر کے تمام طبی اسپتالوں میں آکسیجن پلانٹس لگانے کے لئے اقدامات کررہی ہے۔ بلاری کے قریب بھوک سے گھریلو تنہائی کے تحت بزرگ کووڈ 19 کے مریض کی موت کے بعد تحقیقات کا حکم دیا گیا۔ کرناٹک میں کووڈ 19 کی ہلاکتوں نے پیر کے روز 4ہزار کا ہندسہ عبور کیا، جس میں 115 اموات ہوئیں ، جس کی کل تعداد 4062 ہوگئی۔

 

* آندھرا پردیش: ریاستی محکمہ صحت نے حال ہی میں کرشنا ، اننتا پور اور مشرقی گوداوری اضلاع میں سیرو سروے کیا تھا تاکہ منتخب نمونے سے متاثرہ کورونا وائرس کا پتہ لگایا جاسکے۔ ضلع کرشنا میں مطالعہ کیا گیا نمونوں میں سے تقریبا 20 فیصد غیر متلاشی تھے اور انھیں کوئی اندازہ نہیں تھا کہ وہ انفکشن ہوئے ہیں۔ گنٹور ضلع کے نرسراپیٹ میں 200 بستروں پر مشتمل اس اسپتال کا افتتاح کیا گیا۔ اسپتال میں 150 بیڈ آکسیجن کی سہولت سے لیس ہیں اور 90 بستر وینٹی لیٹرس سے لیس ہیں۔ گونٹکلو ریلوے ڈویڑنل ہسپتال مریضوں کو بہتر خدمات کی فراہمی کے لئے کوویڈ کیئر سنٹر قائم کیا گیا ہے۔

 

* تلنگانہ: ریاست میں طوفانی بارشوں کے ساتھ ہی سیلاب کا انتباہ وزیراعلیٰ کے سی آر نے صورتحال کا جائزہ لیا۔1302 نئے معاملات ، 2070 بازیافت اور 08 اموات کی اطلاع 24 گھنٹوں میں ملی۔ 1682 مقدمات میں سے 235 مقدمات جی ایچ ایم سی سے رپورٹ ہوئے۔ کل معاملات: 93937؛ فعال مقدمات: 21024؛ اموات: 711؛ ڈسچارجز: 72202۔ ہیلتھ بلیٹن کے مطابق ، پیر کی رات تک ، سرکاری اور نجی تدریسی اسپتالوں میں مشترکہ کوڈ 19 مریضوں کے لئے 17807 خالی بستر دستیاب تھے۔

 

*اروناچل پردیش: اروناچل پردیش میں ، 40 افراد نے کووڈ19 کا مثبت تجربہ کیا ، گذشتہ روز اسپتالوں سے خارج 85 مریضوں کو بازیاب کرایا گیا۔

 

*آسام: آسام میں 2792 مزید افراد نے گذشتہ روز کووڈ19 کے لئے مثبت جانچ کی اور 1519 بازیاب ہوئے ، مجموعی طور پر 79667 اور فعال مریض 22733 ہیں۔

 

* میگھالیہ: صدرجمہوریہ ہند جناب رام ناتھ کووند نے گوا کے گورنرجناب ستیہ پال ملک کو میگھالیہ کے نئے گورنر کی حیثیت سے مقررکیا۔

 

* منی پور: منی پور میں ، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 118 افراد نے کووڈ19 کا مثبت تجربہ کیا، جن کی مجموعی تعداد 4687 اور فعال 1936 ہوگئی۔ ریاست میں مرنے والوں کی تعداد 17 ہوگئی ، 48 سال کی عمر میں مرد مریض اس بیماری میں دم توڑ گیا۔

 

* میزورم: میزورم میں ، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 26 نئے کووڈ19 مثبت واقعات کا پتہ چلا ، کل معاملات 815 ہو گئے ، 372 خارج ہوئے اور فعال مقدمات 443۔ آئزول میں کل لاک ڈاؤن کی سخت تعمیل۔

 

* ناگالینڈ: کووڈ19 ہسپتال دیماپور میں ایک ڈاکٹر کرونا وائرس کے لئے مثبت ٹیسٹ کر رہا ہے۔ آسام رائفلز ، جولکی ٹیننگ میں آزیلونگ کورنٹائن سینٹر کے قیدیوں کو پانی کی فراہمی اور ضروری اشیاءفراہم کرتا ہے۔

 

* سکم : سکم میں 20 نئے کووڈ 19 مثبت کیس رجسٹرڈ ہوئے ، کل کیس 485 ہو گئے ، ہیلتھ ڈی جی کم سکریٹری کو آگاہ کیا۔ نمو کو بحال کرنے اور کووڈ 19 کے اثر کو کم کرنے کے لئے ریاستی معیشت پر ، اسٹیٹ بینک آف سکیم (SBS) نے اہل ایس بی ایس صارفین کے لئے ایک قرض اسکیم شروع کی ہے۔ ریاستی حکومت اپنے کوڈ کے ساتھ کام کررہی ہے۔ بحالی لون اسکیم 50 لاکھ روپے تک ورکنگ کیپیٹل ٹرم لون مہیا کرے گی تاکہ چھوٹے اور درمیانے کاروباری یونٹ اپنی لیکویڈیٹی سے مماثلت حاصل کرسکیں۔

 

* مہاراشٹر: پونے میں ایک سیرولوجیکل سروے کے نتائج نے اشارہ کیا ہے کہ 50 فیصد سے زیادہ آبادی پہلے ہی ناول کورونا وائرس سے متاثر ہوسکتی ہے۔ یہ دہلی اور ممبئی جیسے کچھ دوسرے شہروں میں کئے گئے اسی طرح کے سیرولوجیکل سروے کے نتائج کے مقابلے میں نمایاں حد تک ہے۔ لیکن سائنس دانوں نے ان نتائج کی ترجمانی کے خلاف انتباہ کیا ہے کہ یہ اشارہ ہے کہ پونے کی نصف آبادی کورونا وائرس سے محفوظ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ تمام اینٹی باڈیز حفاظتی نہیں ہیں۔ یہ صرف غیرجانبدار اینٹی باڈیز ہی ہے، جو انسان کو اس مرض سے محفوظ رکھ سکتی ہے۔ پونے ، جس میں کل 1.32 لاکھ واقعات درج ہیں ، ممبئی کو پیچھے چھوڑتے ہوئے مہاراشٹر میں نیا کووڈ ہاٹ اسپاٹ بن گیا ہے۔

 

* گجرات: احمدآباد کے باشندوں نے عوامی مقامات پر ماسک نہ پہننے یا معاشرتی فاصلاتی اصولوں کی خلاف ورزی کرنے پر جرمانے میں اب تک 3.75 کروڑ روپئے کی رقم وصول کی ہے۔ احمد آباد میونسپل کارپوریشن (اے ایم سی) ، اس بات کو یقینی بنانے کے لئے کہ لوگ کوڈ 19 کے پھیلاؤکو روکنے کے لئے ماسک پہنیں ، اس جرمانہ عائد ہونے والے ہر شخص کو پانچ ماسک کا پیکٹ دینے کی نئی پالیسی اپنائی ہے۔ پیر کو گجرات میں 1033 نئے کویوڈ کیس رپورٹ ہوئے، جن میں سے 145 احمد آباد سے ہیں۔ فعال مقدمات کی تعداد 14435 ہے۔

 

* راجستھان: جمعہ کے روز ودھان سبھا اجلاس میں شرکت کرنے والے پھلوڈی کے ایم ایل اے پبرم وشنوئی نے کووڈ -19 مثبت کا تجربہ کیا ہے۔ ایم ایل اے نے ان تمام لوگوں سے اپیل کی ہے جو اس کے ساتھ رابطے میں آئے تھے اور خود ان کی جانچ کروائیں۔ وشنوئی جمعہ کو اسمبلی اجلاس میں شرکت کے لئے گئے تھے اور انہوں نے اسمبلی میں بہت سے ارکان اسمبلی سے ملاقات کی۔ راجستھان میں پیر کو 694 کووڈ کیس اور 10 اموات کی اطلاع ملی۔

 

* گوا: کووڈ کی بگڑتی ہوئی صورتحال نے ریاستی الیکشن کمیشن کو 11 میونسپل کونسلوں کے انتخابات ملتوی کرنے پر مجبور کردیا۔ ایئر پورٹ اتھارٹی آف انڈیا کے مطابق ، کووڈ 19 کے بڑھتے ہوئے واقعات کے باوجود ، رواں سال اپریل کے مقابلہ میں گذشتہ ماہ گوا ہوائی اڈے پر پروازوں کی نقل و حرکت میں 12 بار اضافہ ہوا۔ گوا میں اب تک 11994 کووڈ کیس رجسٹر ہوئے ہیں، جن میں سے 3825 سرگرم مقدمات ہیں۔

http://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image007F9TS.jpg

http://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image008BVL9.jpg

***

 

 

U-4671



(Release ID: 1647294) Visitor Counter : 12