وزیراعظم کا دفتر

عہدے پر رہتے ہوئے دوسرے سال میں وزیراعظم نے پہلی کابینہ میٹنگ کی صدارت کی

ایم ایس ایم ای شعبے ، پھیری لگا کر سودا فروخت کرنے والوں اور کاشت کاروں کے لیے تاریخی فیصلے لیے گئے

14 برسوں کے بعد پہلی مرتبہ ایم ایس ایم ای کی تعریف بدلی گئی

چھوٹی، بہت چھوٹی اوراوسط درجے کی صنعتی اکائیوں کی تعریف کے تحت 50 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری اور 250 کروڑ روپے کے ٹرن اوور کی توسیع فراہم کی گئی

خصوصی، بہت چھوٹی قرض سہولت اسکیم، ‘وزیراعظم کی سواندھی’ کے توسط سے پھیری لگا کر سودا فروخت کرنے والوں کو قابل استطاعت قرض فراہم کرنے کی گنجائش نکالی گئی

خریف سیزن 2020-21 کے لیے حکومت نے پیداوار کی لاگت کی کم از کم ڈیڑھ گنے کی سطح پر کم از کم امدادی قیمتیں مقرر کرنے کا اپنا وعدہ پورا کیا

زراعت اور معاون سرگرمیوں کے لیے مختصر مدتی قرضے کی ادائیگی کی تاریخوں میں توسیع، کاشت کاروں کو سود میں بھی رعایت ملے گی اور قرض کی بروقت ادائیگی پر ترغیب کی سہولت بھی حاصل ہوگی

ناداروں کی نگہداشت حکومت کی توجہ کے تحت سرفہرست حیثیت رکھتی ہے

Posted On: 01 JUN 2020 5:31PM by PIB Delhi

مرکزی کابینہ کی میٹنگ وزیراعظم جناب نریندر مودی کی صدارت میں یکم جون 2020 کو منعقد ہوئی۔ مرکزی حکومت کے ذریعے اپنے عہدے پر رہتے ہوئے دوسرے سال میں کابینہ کی یہ پہلی میٹنگ تھی۔

میٹنگ کے دوران ایسے تاریخی فیصلے لیے گئے، جو بھارت کے محنت کش کاشت کاروں، ایم ایس ایم ای کے شعبے اور پھیری لگا کر سودا فروخت کرنے والوں کی زندگیوں پر تغیراتی اثرات مرتب کریں گے۔

ایم ایس ایم ای کی مدد

بہت چھوٹی، چھوٹی اور اوسط درجے کی صنعتی اکائیوں کو عام طور پر ایم ایس ایم ای کے طور پر جانا جاتا ہے اور یہ بھارتی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہیں۔ ملک کے مختلف حصوں میں خاموشی سے کام کرنے والی 6 کروڑ سے زائد ایم ایس ایم ای کی اکائیاں، مضبوط اور خودکفیل بھارت کی تعمیر میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ کووڈ-19 وبائی مرض کے پس منظر میں وزیراعظم جناب نریندر مودی نے تعمیر قوم کے کام میں ایم ایس ایم ای کے کردار کا فوری طور پر اعتراف کیا تھا۔ یہی وجہ ہے کہ آتم نربھر بھارت ابھیان کے تحت کیے گئے اعلانات میں ایم ایس ایم ای کو ایک اہم مقام حاصل ہوا۔

اس پیکیج کے تحت ایم ایس ایم ای کے شعبے کو نہ صرف یہ کی خاطر خواہ تخصیص حاصل ہوئی ہے، بلکہ اسے معیشت کے احیا سے متعلق اقدامات کے نفاذ میں بھی ترجیج دی گئی ہے۔متعدد کلیدی اعلانات کے نفاذ کے سلسلے میں پہلے ہی عمل شروع کیا جاچکا ہے۔آج حکومت ہند نے آتم نربھر بھارت پیکیج کے تحت دیگر اعلانات کے موثر نفاذ کا لائحہ عمل بھی طے کردیا ہے۔

پھیری لگا کر سودا بیچنے والوں کی امداد

ہاؤسنگ اور شہری امور کی وزارت نے ایک خصوصی بہت چھوٹی – قرض سہولت اسکیم- پی ایم سواندھی- وزیراعظم کی پھیری لگا کر سودابیچنے والوں کے لیے آتم نربھر ندھی کی اسکیم شروع کی ہے، تاکہ اسٹریٹ ونڈروں کو قابل استطاعت قرض فراہم کی جاسکے۔ یہ اسکیم انہیں اپنا کام شروع کرنے اور اپنی روزی روٹی کمانے کے لحاظ سے بہت مددگار ثابت ہوگی۔

ونڈروں، ہاکروں، ٹھیلے والوں، ریہڑی والوں، ریہڑی پر پھل بیچنے والوں سمیت 50 لاکھ افراد، جو مختلف شعبوں میں مصروف عمل ہیں، انہیں اس اسکیم سے فائدہ ہوگا۔

بھارت کی تاریخ میں پہلی مرتبہ پھیری لگا کر سودا بیچنے والوں کو، خواہ ان کا تعلق شہرسے ہو یا گاؤں سے، شہری استفادہ کنندگان میں شامل کیا گیا ہے۔

جے کسان کے جذبے کو پھر سے جگانا

2020-21 کے خریف سیزن کے لیے حکومت نے اپنا وعدہ پورا کرتے ہوئے پیداوار کی لاگت کا ڈیڑھ گنا، یعنی کم از کم امدادی قیمتوں کا تعین لاگت کے ڈیڑھ گنے کی سطح پر کیا ہے۔ 2020-21 کی خریف کی سیزن کی 14 فصلوں کے سلسلے میں کم از کم امدادی قیمتوں کا اعلان کردیا گیا ہے، جو سی اے سی پی کی سفارشات پر منحصر ہیں۔ ان 14 فصلوں کی لاگت کے لحاظ سے  منفعت کی فیصد 50 فیصد سے 83 فیصد کے درمیان ہیں۔

ناداروں پر توجہ مرکوز کرنا حکومت کی ترجیح

نادار اور خستہ حال افراد وزیراعظم کی قیادت میں حکومت کی اعلی ترین ترجیح ہیں۔ کورونا وائرس وبائی مرض کے دوران لاک ڈاؤن کے پہلے دن سے لے کر اب تک حکومت غریب ترین افراد کے تئیں حساس رہی ہے۔ لاک ڈاؤن کے اعلان کے دو دنوں کے اندر 26 مارچ 2020 کو، پردھان منتری غریب کلیان یوجنا پیکیج کے اعلان میں بھی یہی امر پوشیدہ تھا۔

تقریبا80 کروڑ افراد کو خوراک سلامتی کے تحت لانے سے لے کر 20 کروڑ خواتین کے کھاتوں میں براہ راست فائدہ منتقلی، معمر شہریوں کے ہاتھ میں پیسہ پہنچانے سے لے کر غریب بیواؤں اور نادار دیویانگوں  کی مدد،  کاشت کاروں کو پی ایم کسان کی قسطیں فراہم کرانا، جیسے اقدامات کا اعلان کیا گیا ہے۔ ان سے سماج کے بہت سے خستہ حال طبقات پر احاطہ کیا گیا۔ اگر حکومت کی جانب سے فوری طور پر دخل اندازی نہ کی گئی ہوتی ،تو ان افراد کو بڑی پریشانیاں لاحق ہوتیں۔

یہ محض اعلانات نہیں تھے، چند دنوں کے اندر کروڑوں لوگوں تک نقد یا جنس کی شکل میں امداد فراہم کی گئی۔ ہر قدم پر حکومت ہند نے سماج کے کمزور ترین طبقات کی امداد کے لیے رحم دلی اور ذمہ داری کا ثبوت دیا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 م ن۔ ت ع۔

U-2951



(Release ID: 1628579) Visitor Counter : 40