کیمیکلز اور فرٹیلائزر کی وزارت

این پی پی اے کا رقیق طبی آکسیجن اور طبی آکسیجن سلنڈروں کی قیمتیں مقرر کرنے میں شامل ہوئی

Posted On: 26 SEP 2020 12:31PM by PIB Delhi
  1. ملک میں کوویڈ 19  کے موجودہ حالات کے نتیجے میں طبی آکسیجن (ایم او) کی ڈیمانڈ میں اضافہ ہوا ہے لہذا اس کی دستیابی انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔ متعدد ریاستیں اور مرکز کے زیر انتظام علاقے طبی آکسیجن کےلئے دیگر ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں پر انحصار کررہے ہیں۔
  2. طبی آکسیجن کی ڈیمانڈ میں چار گنا اضافہ ہوا ہے،جو پہلے 750 ایم ٹی فی دن سے اب 2800 ایم ٹی فی دن تک بڑھ گئی ہے۔ اس سے پروڈکشن اور سپلائی کی چین کی قیمت میں ہر سطح پر دباؤ آگیا۔ طبی آکسیجن اور فلرز کے مینوفیکچروں نے گیس والے طبی آکسیجن کی طے شدہ قیمت میں تین گنا تک اضافے کے لئے حکومت کے سامنے نمائندگی کی ہے۔
  3. حکومت خاص طور پر وبائی امراض کے وقت طبی آکسیجن کی بلا تعطل فراہمی کے لئے پرعزم ہے۔آکسیجن انہیلیشن (میڈیسنل گیس) ایک طے شدہ تشکیل ہے ، جو ضروری دوائیوں کی قومی فہرست (این ایل ای ایم ) کے تحت شامل ہے۔ این پی پی اے کے ذریعہ مقرر اس کی موجودہ طے شدہ قیمت  17.49 روپے/ سی یو ایم ہے۔ تاہم ،رقیق طبی آکسیجن پر قیمتوں میں اضافے کی عدم موجودگی کی وجہ سے ، مینوفیکچررز نے فلرز کی قیمتوں میں اضافہ کیا ہے۔کووڈ کے دوران ، سلنڈروں کے ذریعے طبی آکسیجن کی فراہمی 10 فیصد سے بڑھ کر کل کھپت کے 50 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ملک بھر میں طبی آکسیجن کی مستقل دستیابی کے لئے اس مقصد پر قیمتوں کا ضابطہ لازمی ہے۔
  4. آکسیجن کی قیمتوں سمیت دستیابی سے متعلق معاملہ بااختیار گروپ 2 ، جی او آئی کے مستقل غور و فکر میں رہا ہے۔بااختیار گروپ 2 نے این پی پی اے کو مشورہ دیا ہے کہ رقیق آکسیجن کی فیکٹری کی سابقہ قیمت پر قابو پانے پر غور کرے تاکہ مناسب قیمتوں پر فلرز کو اس کی فراہمی کو یقینی بنایا جاسکے۔اس نے این پی پی اے سے یہ بھی اپیل کی ہے کہ سلنڈروں میں آکسیجن کی سابقہ فیکٹری قیمت کے لئے مقررہ  قیمت پر غور کیا جائے تاکہ مناسب قیمتوں پر فلرز سے آکسیجن سلنڈروں کی فراہمی کو یقینی بنایا جاسکے۔
  5. صورتحال سے موثر انداز میں نمٹنے کے لئے ، وزارت صحت اور خاندانی بہبود (ایم او ایچ اینڈ ایف ڈبلیو) ، جی او آئی نے 23.09.2020 کے اپنے خط کے ذریعے ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ ، 2005 کے سیکشن 10 (2) (ایل) کے تحت اختیارات کے وفد کو این پی پی اے کو سونپ دیا ہےتاکہ وہ سلنڈروں میں ایل ایم او اور طبی آکسیجن کی دستیابی اور قیمتوں کو فوری طور پر ریگولیٹ کرنے کے لئے تمام ضروری اقدامات کرسکے۔

اتھارٹی نے اس معاملے پر 25.09.2020 کو ہونے والی اپنی غیر معمولی میٹنگ میں غور کیا۔ وبائی امراض کی وجہ سے پیدا ہونے والی عارضی صورتحال سے نمٹنے کے لئے ڈی پی سی او کے پیرا 19 ، 13 کے تحت اور ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ 2005 کے سیکشن 10 (20) (ایل) کے تحت غیر معمولی طاقتوں کو عوامی مفاد میں استعمال کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اسی کے مطابق یہ فیصلہ کیا گیا ہے

:ریاستی سطح پر ، چھ ماہ کے لئے نقل و حمل کی لاگت کے تعین کے تحت ،فلز کےلئے میڈیکل آکسیجن سلنڈر کی سابقہ فیکٹری قیمت کو مزید محدود کرنے کے لئے 17.49 / سی یوایم کی محدود قیمت کے دباؤ میں 25.71 / سی یوایم خصوصاً جی ایس ٹی ۔

  1. آکسیجن کی خریداری کے لئے ریاستی حکومتوں کے موجودہ شرحوں کے معاہدے ، مثلاً قابل اطلاق ، صارفین کے مفاد میں جاری رہیں گے۔

ایل ایم او اور آکسیجن گیس سلنڈروں کی سابقہ فیکٹری کی محدود قیمت گھریلو پیداوار میں فافذ ہوگی۔

مذکورہ بالا اقدامات اسپتال کی سطح پر اور آکسیجن سلنڈروں کے ذریعے خاص طور پر دور دراز اور اندرونی اضلاع میں صارفین کو مناسب قیمت پر طبی آکسیجن کی دستیابی کو یقینی بنائیں گے۔

*********

نیشنل فارماسیوٹیکل پرائسنگ اتھارٹی

دواسازی کا محکمہ

کیمیکل اور کھاد کی وزارت

حکومت ہند

26 ستمبر 2020

**********

م ن ۔ا م  

5881:U

 



(Release ID: 1659477) Visitor Counter : 52