وزارت خزانہ

جی ایس ٹی کی ماہ ستمبر 2022 میں 1,47,686 کروڑ روپے کی مجموعی آمدنی


لگاتار سات مہینے جی ایس ٹی کی ماہانہ آمدنی 1.4 لاکھ کروڑ سے زیادہ ہے

ماہ ستمبر 2022 کی جی ایس ٹی کی آمدنی 2021 میں اسی مہینے کی متعلقہ آمدنی سے 26 فیصد زیادہ

ماہ ستمبر میں ایک اور سنگ میل اس وقت عبور کیا گیا جب این آئی سی کے ذریعے چلائے جانے والے جی ایس ٹی پورٹل پورٹل پر کسی خلل کے بغیر 30 ستمبر 2022 کو 1.1 کروڑ سے زیادہ ای وے بلز اور ای انوائسز (72.94 لاکھ ای انوائسز اور 37.74 لاکھ ای وے بلز) تیار کئے گئے

Posted On: 01 OCT 2022 12:59PM by PIB Delhi

ماہ ستمبر 2022  میں جی ایس ٹی کی مجموعی آمدنی 1,47,686 کروڑ  روپےرہی۔ اس میں سے جی ایس ٹی 25,271 کروڑ روپے ہے، ایس جی ایس ٹی 31,813 کروڑ روپے ہے، آئی جی ایس ٹی 80,464 کروڑ  روپے ہے (بشمول درآمداتی اشیا سے 41,215 کروڑ روپے کی آمدنی)  اور محصول 10,137 کروڑ روپے (بشمول درآمداتی اشیا سے 856 کروڑ روپے کی آمدنی)۔

 

حکومت نے باقاعدہ تصفیہ کے طور پر آئی ایس جی ایس ٹی سے  31,880 کروڑ برائے جی ایس ٹی اور 27,403 کروڑ روپے برائے ایس جی ایس ٹی طے کئے۔ باقاعدہ تصفیہ کے بعد  ماہ ستمبر 2022  میں مرکز اور ریاستوں کی کل آمدنی سی جی ایس ٹی کے لئے  57,151 کروڑ روپے اور  ایس جی ایس ٹی  کے لئے 59,216 کروڑ روپے ہے۔

 

ماہ ستمبر 2022  کی آمدنی پچھلے سال کے اسی مہینے میں جی ایس ٹی کی آمدنی سے 26 فیصد زیادہ ہے۔ متعلقہ ماہ کے دوران اشیا کی درآمد سے حاصل ہونے والی آمدنی 39 فیصد زیادہ رہی اور گھریلو لین دین سے حاصل ہونے والی آمدنی (بشمول خدمات کی درآمد) گزشتہ سال کے اسی ماہ کے دوران ان ذرائع سے حاصل ہونے والی آمدنی سے 22 فیصد زیادہ رہی۔

 

یہ آٹھواں مہینہ ہے اور لگاتار ساتویں مہینہ جس میں ماہانہ جی ایس ٹی کی آمدنی  1.4 لاکھ کروڑ روپے کے ہدف سے زیادہ رہی۔ ماہ ستمبر 2022 تک جی ایس ٹی کی اس آمدنی میں پچھلے سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 27 فیصد کا اضافہ ہوا ہے جو کہ بہت زیادہ تیزی کا مظہر ہے۔ ماہ اگست 2022 کے دوران 7.7 کروڑ ای وے بل تیار کئے گئے، جو جولائی 2022 کے 7.5 کروڑ روپے سے کچھ زیادہ ہی رہے۔

 

اس مہینے میں 20 ستمبر کو ایک دن میں 49,453 کروڑ روپے کی دوسری سب سے زیادہ آمدنی دیکھی گئی۔ دوسرے نمبر پر 20 جولائی 2022 کو سب سے زیادہ 8.77 لاکھ چالان فائل کئے گئے اور 9.58 لاکھ چالان کے ذریعے57,846 کروڑ روپے وصول ہوئے جس کا تعلق سال کے آخر کی آمدنی سے ہے۔ اس سے واضح طور پر ظاہر ہوتا ہے کہ جی ایس ٹی این کے زیر انتظام جی ایس ٹی پورٹل مکمل اور بے خلل طور پر طور پر مستحکم ہو چکا ہے۔ ماہ ستمبر میں ایک اور سنگ میل اس وقت عبور کیا گیا جب این آئی سی کے ذریعے چلائے جانے والے جی ایس ٹی پورٹل پورٹل پر کسی خلل کے بغیر 30 ستمبر 2022  کو 1.1 کروڑ سے زیادہ ای وے بلز اور ای انوائسز (72.94 لاکھ ای انوائسز اور 37.74 لاکھ ای وے بلز) تیار کئے گئے۔

 

درج ذیل چارٹ میں  رواں سال کے دوران ماہانہ مجموعی جی ایس ٹی آمدنی میں رجحانات کو دیکھا جا سکتا ہے۔ جدول میں ستمبر 2021 کے مقابلے ماہ ستمبر 2022  کے دوران ہر ریاست میں جمع کئے جانے والے جی ایس ٹی کے ریاستی اعداد و شمار دکھائے گئے ہیں۔

image001M34Y.png

ستمبر 2022 کے دوران جی ایس ٹی محصولات میں ریاست وار اضافہ

ریاستیں

ستمبر 21

ستمبر 22

نمو

جموں و کشمیر

377

428

13%

ہماچل پردیش

680

712

5%

پنجاب

1,402

1,710

22%

چنڈی گڑھ

152

206

35%

اتراکھنڈ

1,131

1,300

15%

ہریانہ

5,577

7,403

33%

دلی

3,605

4,741

32%

راجستھان

2,959

3,307

12%

اترپردیش

5,692

7,004

23%

بہار

876

1,466

67%

سکم

260

285

9%

اروناچل پردیش

55

64

16%

ناگالینڈ

30

49

61%

منی پور

33

38

17%

میزورم

20

24

22%

تریپورہ

50

65

29%

میگھالیہ

120

161

35%

آسام

968

1,157

20%

مغربی بنگال

3,778

4,804

27%

جھارکھنڈ

2,198

2,463

12%

اڈیشہ

3,326

3,765

13%

چھتیس گڑھ

2,233

2,269

2%

مدھیہ پردیش

2,329

2,711

16%

گجرات

7,780

9,020

16%

دمن اور دیو

0

0

-38%

دادر اور نگر حویلی

304

312

3%

مہاراشٹر

16,584

21,403

29%

کرناٹک

7,783

9,760

25%

گوا

319

429

35%

لکش دیپ

0

3

731%

کیرالہ

1,764

2,246

27%

تمل ناڈو

7,842

8,637

10%

پڈوچیری

160

188

18%

انڈمان اور نکوبار

20

33

69%

تلنگانہ

3,494

3,915

12%

آندھرا پردیش

2,595

3,132

21%

لداخ

15

19

27%

دیگر خطے

132

202

53%

مرکز کے زیر انتظام

191

182

-5%

میزان

86,832

1,05,615

22%

**********

ش ح۔ ع س۔ ک ا



(Release ID: 1864195) Visitor Counter : 135