زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

زراعت اور کسانوں کی بہبود کے مرکزی وزیر نے ملک میں گیارہویں زراعت مردم شماری کا افتتاح کیا

وزیراعظم کی توجہ چھوٹے کسانوں کو منظم کرکے کسانوں کی آمدنی بڑھانے اور انھیں بااختیار بنانے پر مرکوز ہے: جناب نریندر سنگھ تومر

پہلی بار اسمارٹ فونز اور ٹیبلٹس پر زرعی کمپیوٹیشن کے لیے ڈیٹا اکٹھا کیا جائے گا

Posted On: 28 JUL 2022 4:49PM by PIB Delhi

نئی دہلی، 28 جولائی 2022 :

ملک میں آج گیارہویں زرعی مردم شماری (2021-22) کا افتتاح زراعت اور کسانوں کی بہبود کے مرکزی وزیر جناب نریندر سنگھ تومر نے کیا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے جناب تومر نے کہا کہ اس مردم شماری سے بھارت جیسے وسیع اور زرعی ملک میں بہت بڑے فوائد حاصل ہوں گے۔ جناب تومر نے کہا کہ وزیراعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں کسانوں کی آمدنی بڑھانے پر زور دیا جارہا ہے۔ اس کے علاوہ ان کے معیار زندگی کو اونچا اٹھانے، چھوٹے کسانوں کو بااختیار بنانے، انھیں منافع بخش فصلوں کی طرف راغب کرنے اور عالمی معیار کے مساوی پیداوار کے معیار کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001XUHA.jpg

پروگرام کے دوران جناب تومر نے زرعی مردم شماری کے لیے مبارکباد پیش کی اور کہا کہ زراعت کا شعبہ وزیر اعظم مودی کے ٹھوس اقدامات کا ثمرہ ہے، ملک تیزی سے ڈیجیٹل زراعت کی طرف بڑھ رہا ہے۔ یہ وقت اس کمپیوٹیشن میں ٹیکنالوجی کا بھرپور استعمال کرنے کا ہے۔ انھوں نے کہا کہ زرعی مردم شماری کے بارے میں وسیع تر تناظر میں سوچا جانا چاہیے۔ زرعی کمپیوٹیشن فصلوں کی نقشہ سازی میں بھی حصہ ڈال سکتی ہے تاکہ ملک کو اس کے فوائد حاصل ہوں۔ جناب تومر نے مرکزی محکموں، ریاستی حکومتوں اور متعلقہ اداروں سے کہا کہ وہ اس مردم شماری کو پوری لگن کے ساتھ انجام دیں۔

اس موقع پر جناب تومر نے ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے استعمال کے لیے مردم شماری کے لیے کام کاج کے متعلق رہنما خطوط کی ہینڈ بک جاری کی اور ڈیٹا کلیکشن پورٹل/ایپ کا آغاز کیا۔ مرکزی وزرائے مملکت برائے زراعت و کسان بہبود، محترمہ شوبھا کرندلاجے اور جناب کیلاش چودھری، زرعی سکریٹری جناب منوج آہوجا، ایڈیشنل سکریٹری اور مالیاتی مشیر جناب سنجیو کمار اور ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے افسران اس پروگرام میں شریک تھے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002YK8Q.jpg

زرعی کی مردم شماری ہر 5 سال بعد کی جاتی ہے جو کورونا وبا کی وجہ سے تاخیر کے بعد اب کی جارہی ہے۔ زرعی مردم شماری کا فیلڈ ورک اگست 2022 میں شروع ہوگا۔ زرعی مردم شماری نسبتا چھوٹی سطح پر مختلف زرعی پیرامیٹرز پر معلومات کا بنیادی ذریعہ ہے، جیسے آپریشنل ہولڈنگ کی تعداد اور رقبہ، ان کا سائز، طبقاتی لحاظ سے تقسیم، زمین کا استعمال، پٹے داری اور فصلوں کا نمونہ وغیرہ۔ یہ پہلا موقع ہے جب زرعی مردم شماری کے لیے ڈیٹا اکٹھا کرنے کا کام اسمارٹ فونز اور ٹیبلٹس پر کیا جائے گا تاکہ ڈیٹا بروقت دستیاب ہو۔ زیادہ تر ریاستوں نے اپنے اراضی کے ریکارڈ اور سروے کو ڈیجیٹلائز کیا ہے جس سے زرعی مردم شماری کے اعداد و شمار جمع کرنے میں مزید تیزی آئے گی۔ ڈیجیٹلائزڈ لینڈ ریکارڈ کے استعمال اور ڈیٹا اکٹھا کرنے کے لیے موبائل ایپس کے استعمال سے ملک میں آپریشنل ہولڈنگ کا ڈیٹا بیس تشکیل دیا جا سکے گا۔

تکنیکی اجلاس کے دوران زرعی مردم شماری کے نفاذ کے طریقہ کار اور ویب پورٹل اور موبائل ایپ کی نمایاں خصوصیات کا ڈیمو دکھایا گیا۔ پریزینٹیشن میں نمایاں نئی پہل میں لینڈ ٹائٹل ریکارڈ اور سروے رپورٹ جیسے ڈیجیٹل لینڈ ریکارڈ کا استعمال، سمارٹ فون/ٹیبلٹ کا استعمال کرتے ہوئے ایپ/سافٹ ویئر کے ذریعے ڈیٹا اکٹھا کرنا، پہلے مرحلے کے دوران غیر زمینی ریکارڈ والی ریاستوں کے تمام دیہاتوں کی مکمل شمارندگی نیز پیش رفت اور پروسیسنگ کی ریئل ٹائم نگرانی شامل ہیں۔

***

(ش ح - ع ا - ع ر)

U. No. 8319



(Release ID: 1845949) Visitor Counter : 35