صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت

مرکزی وزارت صحت نے ہلکے اور بغیر علامات والے کووڈ-19 معاملوں کی گھریلو علیحدگی کے لیے نظر ثانی شدہ رہنما خطوط جاری کیے

Posted On: 30 APR 2021 12:02PM by PIB Delhi

ریاستی/ مرکز زیر انتظام حکومتوں کے ساتھ قریبی ہم آہنگی اور باہمی تعاون کے ساتھ حکومت ہند کووڈ-19 کے ردعمل اور انتظام کی قیادت کر رہی ہے۔ کووڈ-19 کے تدارک، روک تھام اور انتظام کے لیے متعدد منصوبہ بند اور پیمانہ بند اقدامات کیے گئے ہیں۔ وزارت صحت اور خاندانی بہبود نے آج 2 جولائی 2020 کو اس عنوان پر جاری کردہ سابقہ رہنما خطوط کی جگہ نظر ثانی شدہ رہنما اصول جاری کیے۔

نظر ثانی شدہ رہنما خطوط کے مطابق، جن مریضوں کو طبی طور پر معتدل / بغیر علامات کے تشخیص کیا گیا ہے انھیں گھریلو علیحدگی کی تجویز کی گئی ہے۔

 

بغیر علامات والے کووڈ-19 معاملے

بغیر علامات والے معاملے لیباریٹری سے تصدیق شدہ معاملے ہیں جو کسی بھی علامات کا تجربہ نہیں کرتے اور جن کی آکسیجن کی سیرابی کمرے کے درجہ حرارت پر 94 فیصد سے زیادہ ہوتی ہے۔ طبی طور پر تشخیص شدہ معتدل معاملوں میں وہ مریض شامل ہیں جنھیں سانس کی تنگی کے بغیر اوپری سانس کی نلی کی علامات (اور/یا بخار) ہوتی ہیں اور جن کی آکسیجن کی سیرابی کمرے کے درجہ حرارت پر 94 فیصد سے زیادہ ہوتی ہے۔

 

1۔ گھریلو علیحدگی کے لیے اہل مریض

 

i۔ علاج کرنے والے میڈیکل افسر کے ذریعہ مریض کو طبی طور پر ہلکے / بغیر علامت والے معاملے کے طور پر تشخیص کیا جانا چاہیے۔

ii۔ اس طرح کے معاملات میں ان کی رہائش گاہ پر خود کو الگ تھلگ رکھنے اور خاندانی رابطوں کو قرنطینہ کرنے کی مطلوبہ سہولت ہونی چاہیے۔

iii۔ ایک نگہداشت دہندہ 24x7 دیکھ بھال فراہم کرنے کے لیے دستیاب ہونا چاہیے۔ گھریلو علیحدگی کی پوری مدت کے لیے نگہداشت دہندہ اور ہسپتال کے درمیان مواصلاتی رابطہ اولین شرط ہے۔

iv۔ ایسے بزرگ مریض جن کی عمر 60 سال سے زیادہ ہے اور جو ہائی بلڈ پریشر، ذیابیطس، دل کی بیماری، دائمی پھیپھڑوں / جگر / گردوں کی بیماری، دماغی عروقی بیماری وغیرہ میں مبتلا ہیں ان کے معالج کے ذریعہ مناسب تشخیص کے بعد صرف گھریلو علیحدگی کی اجازت ہوگی۔

v۔ مدافعتی سمجھوتہ کرنے والی حالت (ایچ آئی وی، ٹرانسپلانٹ وصول کنندگان، کینسر تھراپی وغیرہ) سے دوچار مریضوں کو گھریلو علیحدگی کی سفارش نہیں کی جاتی ہے اور علاج کرنے والے میڈیکل افسر کے ذریعہ مناسب تشخیص کے بعد انھیں گھریلو علیحدگی کی اجازت ہوگی۔

vi۔ نگہداشت دہندہ اور اس طرح کے معاملات کے تمام قریبی رابطوں کو پروٹوکول کے مطابق اور علاج کرنے والے میڈیکل افیسر کے مشورے کے مطابق ہائڈروکسائکلوروکوئن پروفیلیکسس لینا چاہیے۔

vii۔ اس کے علاوہ دیگر ممبروں کے لیے گھریلو قرنطینہ سے متعلق https://www.mohfw.gov.in/pdf/Guidelinesforhomequarantine.pdf پر دستیاب ہدایات پر بھی عمل کیا جانا ضروری ہے۔

 

2۔ مریض کے لیے ہدایات

 

i۔ مریض کو اپنے آپ کو گھر کے دیگر افراد سے الگ رکھنا چاہیے، شناخت شدہ کمرے میں رہنا چاہیے اور گھر میں موجود دوسرے لوگوں سے، خاص طور پر بزرگوں اور ہائی بلڈ پریشر، دل کی بیماری، گردوں کی بیماری وغیرہ میں مبتلا افراد سے دور رہنا چاہیے۔

ii۔ مریض کو اچھے ہوا دار کمرے میں رکھنا چاہیے اور تازہ ہوا کو اندر آنے کے لیے کھڑکیوں کو کھلا رکھنا چاہیے۔

iii۔ مریض کو ہر وقت تین پرت والے میڈیکل ماسک کا استعمال کرنا چاہیے۔ اگر وہ گیلے ہو جائیں یا نم معلوم ہوں تو استعمال کے 8 گھنٹے یا اس سے پہلے ماسک کو تلف کر دیں۔ نگہداشت دہندہ کے کمرے میں داخل ہونے کی صورت میں، نگہداشت دہندہ اور مریض دونوں این 95 ماسک کے استعمال پر غور کر سکتے ہیں۔

iv۔ ماسک کو صرف 1 فیصد سوڈیم ہائپوکلورائٹ سے جراثیم کش کرنے کے بعد ہی ضائع کرنا چاہیے۔

v۔ مناسب ہائیڈریشن برقرار رکھنے کے لیے مریض کو آرام کرنا چاہیے اور بہت زیادہ سیال پینا چاہیے۔

vi۔ ہر وقت سانس لینے کے آداب پر عمل کریں۔

vii۔ کم از کم 40 سیکنڈ تک صابن اور پانی سے بار بار ہاتھ دھوئیں یا الکحل پر مبنی سینیٹائزر سے صاف کریں۔

viii۔ گھر کے دوسرے لوگوں کے ساتھ ذاتی اشیاء کا اشتراک نہ کریں۔

ix۔ کمرے میں اکثر چھوئی جانے والی سطحوں (میز، دروازے کی کنڈی، ہینڈل، وغیرہ) کی 1 فیصد ہائپوکلورائٹ محلول کے ساتھ صفائی کو یقینی بنائیں۔

x۔ پلس آکسی میٹر کے ساتھ خون آکسیجن سیرابی کی خود نگرانی کا سختی سے مشورہ دیا جاتا ہے۔

xi۔ مریض روزانہ درجہ حرارت کی نگرانی کے ساتھ اپنی صحت کی خود نگرانی کرے گا اور اگر درج ذیل کے مطابق علامات میں کوئی خرابی نظر آتی ہے تو فوری طور پر اس کی اطلاع دے گا۔

 

نگرانی چارٹ

 

علامات کا دن اور وقت

درجہ حرارت

دل کی شرح (پلس آکسی میٹر سے)

SpO2% (پلس آکسی میٹر سے)

احساس: (بہتر/ یکساں/ بدتر)

سانس: (بہتر/ یکساں/ بدتر)

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

3۔ نگہداشت دہندگان کے لیے ہدایات

 

i۔ ماسک

  • نگہداشت کرنے والے کو تین پرت والا میڈیکل ماسک پہننا چاہیے۔ بیمار شخص کے ساتھ ایک ہی کمرے میں ہونے پر N95 ماسک پر غور کیا جا سکتا ہے۔
  • استعمال کے دوران ماسک کے اگلے حصے کو چھونا نہیں چاہیے۔
  • اگر ماسک گیلا یا رطوبتوں سے گندا ہو جائے، تو اسے فوری طور پر تبدیل کرنا چاہیے۔
  • استعمال کے بعد ماسک کو تلف کر دیں اور ماسک کو ضائع کرنے کے بعد ہاتھ کی صفائی کریں۔
  • اسے اپنے چہرے، ناک یا منہ کو چھونے سے گریز کرنا چاہیے۔

 

ii۔ ہاتھوں کی حفظان صحت

  • بیمار شخص یا اس کے فوری ماحول سے رابطہ کے بعد ہاتھ کی حفظان صحت کو یقینی بنائیں۔
  • کھانا تیار کرنے سے پہلے، کھانے سے پہلے، بیت الخلا استعمال کرنے کے بعد اور جب بھی ہاتھ گندے لگتے ہوں تو ہاتھ کی حفظان صحت پر عمل کیا جانا چاہیے۔
  • کم سے کم 40 سیکنڈ تک ہاتھ دھونے کے لیے صابن اور پانی کا استعمال کریں۔ اگر ہاتھ گندے نہ لگ رہے ہوں، تو الکحل پر مبنی ہینڈ رب کا استعمال کیا جا سکتا ہے۔
  • صابن اور پانی کے استعمال کے بعد، ہاتھوں کو خشک کرنے کے لیے قابل تلف کاغذی تولیوں کا استعمال ضروری ہے۔ اگر دستیاب نہ ہو، تو صاف ستھرے کپڑے کے تولیوں استعمال کریں اور گیلا ہونے پر انھیں تبدیل کریں۔
  • دستانے ہٹانے سے پہلے اور بعد میں ہاتھوں کی حفظان صحت پر عمل کریں۔

 

iii۔ مریض/مریض کے ماحول کے تئیں ایکسپوژر

  • مریض کے جسمانی سیالوں، بالخصوص زبانی یا سانس کی رطوبت سے براہ راست رابطے سے گریز کریں۔ مریض کو سنبھالتے وقت قابل تلف دستانے استعمال کریں۔
  • اس کے فوری ماحول میں ممکنہ طور پر آلودہ اشیاء کی زد میں آنے سے پرہیز کریں (جیسے سگریٹ، کھانے کے برتن، رکابیوں، مشروبات، استعمال شدہ تولیے یا بستر کے کپڑے وغیرہ کا اشتراک کرنے سے پرہیز کریں)۔
  • مریض کو اس کے کمرے میں کھانا فراہم کیا جانا چاہیے۔ مریض کے استعمال شدہ برتنوں اور رکابیوں کو دستانے پہن کر صابن/ ڈٹرجنٹ اور پانی سے صاف کرنا چاہیے۔ برتن اور رکابیوں کو دوبارہ استعمال کیا جا سکتا ہے۔
  • دستانے اتارنے یا استعمال شدہ اشیا سے نمٹنے کے بعد ہاتھ صاف کریں۔ مریض کے ذریعہ استعمال کی جانے والی سطحوں، لباس یا کپڑے کی صفائی کرتے وقت یا ان سے نمٹنے کے دوران تین پرت والے میڈیکل ماسک اور قابل تلف دستانے استعمال کریں۔
  • دستانے ہٹانے سے پہلے اور بعد میں ہاتھوں کی حفظان صحت پر عمل کریں۔

 

iv۔ بایو میڈیکل فضلہ کو ضائع کرنا

 

گھروں میں انفیکشن کے مزید پھیلاؤ کو روکنے کے لیے مؤثر طور پر فضلہ کو ضائع کرنے کو یقینی بنایا جانا چاہیے۔ فضلہ (ماسک، قابل تلف اشیا، کھانے کے پیکٹ وغیرہ) کو سی پی سی بی کے رہنما خطوط کے مطابق ضائع کرنا چاہیے (جو یہاں دستیاب ہے: http://cpcbenvis.nic.in/pdf/1595918059_mediaphoto2009.pdf)

 

4۔ ہلکی/ غیر علامتی بیماری والے مریضوں کے لیے گھریلو علیحدگی میں علاج

 

i۔ مریضوں کو معالج کے ساتھ رابطے میں رہنا چاہیے اور کسی بھی خرابی کی صورت میں فوری طور پر اس کی اطلاع دینا چاہیے۔

ii۔ معالج سے مشورے کے بعد دیگر بیماریوں کے لیے دوائیں جاری رکھیں۔

iii۔ ہدایت کے مطابق، مریضوں کو بخار، ناک بہنے اور کھانسی جیسی علامتوں کے انتظام پر عمل کرنا چاہیے۔

iv۔ مریض کو دن میں دو بار گرم پانی کے غرارے یا بھاپ لینا چاہیے۔

v۔ اگر دن میں چار بار پیراسیٹامول 650mg کی زیادہ سے زیادہ خوراک سے بخار قابو میں نہیں آتا ہے، تو معالج ڈاکٹر سے رابطہ کریں جو غیر اسٹیرائڈ سوجن مخالف (NSAID) دیگر ادویات (جیسے دن میں دو بار ٹیبلیٹ نیپروکسین 250mg) لینے کا مشورہ دے سکتا ہے۔

vi۔ ٹیبلیٹ آئورمیکٹین (200mcg/kg دن میں ایک بار، خالی پیٹ) 3 سے 5 تک لینے پر غور کریں۔

vii۔ اگر علامات (بخار اور/یا کھانسی) بیماری شروع ہونے کے بعد 5 دن سے زیادہ تک رہتی ہیں تو استنشاقی بوڈیسونائیڈ (5 سے 7 دنوں تک دن میں دو بار 800mcg کی خوراک میں انہیلر کے ذریعہ دی جاتی ہے) دیا جانا چاہیے۔

viii۔ ریمڈیسویر یا کوئی بھی دوسری تفتیشی تھراپی دینے کا فیصلہ طبی پیشہ ور افراد کو ہی لینا چاہیے اور صرف اسپتال کی ترتیب میں ہی دیا جانا چاہیے۔ گھر پر ریمیڈیوسیر خریدنے یا اس کا انتظام کرنے کی کوشش نہ کریں۔

ix۔ معمولی بیماری میں بذریعہ منہ اسٹیرائیڈز کی نشاندہی نہیں کی جاتی ہے۔ اگر علامات 7 دن سے زیادہ برقرار رہتی ہیں (مستقل بخار، بڑھتی ہوئی کھانسی وغیرہ) تو کم مقدار میں منہ کے ذریعہ اسٹیرائیڈز سے علاج کے لیے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔

x۔ آکسیجن کی سیرابی کم ہونے یا سانس کی تنگی کی صورت میں، مریض کو اسپتال میں داخل کرنے کی ضرورت ہوگی اور ان کے معالج ڈاکٹر / نگرانی ٹیم سے فوری مشورہ کرنا چاہیے۔

 

5۔  طبی امداد کب طلب کریں

 

مریض/ نگہداشت دہندہ اپنی صحت کی نگرانی کرتے رہیں گے۔ اگر سنگین نشانیاں یا علامات پیدا ہوں تو فوری طور پر طبی امداد کی جستجو کی جانی چاہیے۔ ان میں شامل ہو سکتا ہے-

 

i۔ سانس لینے میں دشواری

ii۔ آکسیجن سیرابی میں گراوٹ (کمرے کے درجہ حرارت میں SpO2 94 فیصد سے کم ہو جانا)

iii۔ سینے میں مستقل درد/ دباؤ

iv۔ ذہنی الجھن

 

6۔ گھریلو علیحدگی کب ختم کریں

 

گھریلو علیحدگی میں رہنے والے مریض علامات شروع ہونے کے بعد (یا غیر علاماتی معاملوں میں نمونہ لینے کی تاریخ کے بعد) سے کم از کم 10 دنوں کے بعد اور 3 دنوں تک بخار نہ آنے پر علیحدگی ختم کر دیں گے۔

 

گھریلو علیحدگی کی مدت ختم ہونے کے بعد ٹیسٹ کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔

 

7۔ ریاست/ضلع کے صحت کے ذمہ داروں کا کردار

 

i۔ ریاستوں/ اضلاع کو گھر میں الگ تھلگ رہنے والے تمام معاملات کی نگرانی کرنی چاہیے۔

ii۔ روزانہ کی بنیاد پر مریض کا فالو اپ کرنے کے لیے ایک کال سینٹر کے ساتھ ذاتی دورے کے ذریعہ فیلڈ عملہ/ نگرانی ٹیموں کے ذریعہ گھریلو علیحدگی میں رہنے والے لوگوں کی صحت کی حالت کی نگرانی کی جانی چاہیے۔

iii۔ فیلڈ عملہ/ کال سینٹر کے ذریعہ ہر معاملے کی طبی حالت (جسمانی درجہ حرارت، نبض کی شرح اور آکسیجن سیرابی) ریکارڈ کی جانی چاہیے۔ فیلڈ عملہ مریض کو ان پیرامیٹرز کی پیمائش پر رہنمائی کرے گا اور ہدایات (مریضوں اور ان کی دیکھ بھال کرنے والوں کے لیے) فراہم کرے گا۔ گھریلو علیحدگی میں رہنے والوں کو روزانہ نگرانی کرنے کے اس طریقہ کار پر سختی سے عمل کیا جائے گا۔

iv۔ گھریلو علیحدگی کے تحت مریضوں کے بارے میں تفصیلات کووڈ-19 پورٹل اور سہولت ایپ (بطور صارف DSO کے ساتھ) پر اپ ڈیٹ ہونی چاہیے۔ ریاست اور ضلع کے سینیر عہدیداروں کو ریکارڈوں کی تازہ کاری کی نگرانی کرنی چاہیے۔

v۔ خلاف ورزی یا علاج کی ضرورت کی صورت میں مریض کو منتقل کرنے کا ایک طریقہ کار قائم کرنا اور اس پر عمل درآمد کرنا ضروری ہے۔ اس کے لیے مخصوص ایمبولینسوں کا انتظام کیا جائے گا۔ کمیونٹی میں اس کے لیے وسیع پیمانے پر تشہیر بھی کی جائے گی۔

vi۔ پروٹوکول کے مطابق فیلڈ اسٹاف کے ذریعہ کنبہ کے تمام افراد اور قریبی رابطوں کی نگرانی اور جانچ کی جائے گی۔

                                          **************

ش ح۔ ف ش ع-م ف   

U: 4095



(Release ID: 1715289) Visitor Counter : 160