سائنس اور ٹیکنالوجی کی وزارت

چاول میں بیماریوں کے باعث ہونے والے فصلوں کے نقصان کو کم کرنے کے لئے ایک ویکسین کی جانب قدم بڑھاتے ہوئے

ڈاکٹر تائی لوانیا او ران کی ٹیم بیماری کو کنٹرول کرنے کی ایسی نئی حکمت عملیاں  تیار کررہی ہیں جنہیں  ایسے ویکسین کے طور پر استعمال کیا جاسکتا ہے جو چاول میں قوت مدافعت کے نظام کو فعال بنائےگی

Posted On: 04 OCT 2020 6:18PM by PIB Delhi

نئی دہلی،  05 اکتوبر 2020:  ہم چاول کے مدافعتی نظام  کو مستحکم کرنے کی خاطر ایک ویکسین جلد ہی تیار کرسکتے ہیں۔ ایک سائنسداں نے ،ژو (ژین تھومونس  اوریزیپواوریزائی ) نامی بکٹیریم کے ذریعہ ایک طریقہ کار کا پتہ لگایا ہے جس کے باعث   چاول میں کیڑے پتیوں  کو کھاتے ہیں جس سے چاول کے پیڑ خراب ہوجاتے ہیں او ران میں بیماری لگ جاتی ہے۔

حکومت ہند کی سائنس  اور ٹکنالوجی کے محکمے کے قائم کردہ   ایوارڈ ،ڈی ایس ٹی –انسپائر فیکلٹی فیلوشپ ایوارڈ یافتہ  ڈاکٹر تائی لوانیا حیدرآبادکی عثمانیہ یونیورسٹی میں پودوں کی مولی کولر حیاتیاتی مرکز(سی پی ایم بی) مرکزمیں اپنے تحقیقی گروپ کے ساتھ کام کررہی ہیں۔وہ چند ایسے چھوٹے کیمیاوی مرکبات کی شناخت اور انہیں فروغ دینے کی کوشش کررہی ہیں جو یاتو ژوبکٹیریم سے یا پھر متاثر ہ چاول سے حاصل کئے جاتے ہیں۔

یہ ٹیم بیماری کو کنٹرول کرنے کی نئی حکمت عملیوں کو فروغ دے رہی ہے جسے ایسی ویکسین کے طور پر استعمال کیا جاسکتا ہے جو  چاول میں  مدافعتی نظام کو فعال کرے گا اور چاولو ں کے پودوں کو کیڑے مکوڑوں سے ہونے والی بیماریوں سے تحفظ فراہم کرے گی۔

ژین تھومونس  اوریزیپواوریزائی یا عام طورپر ژو انفیکشن کے نام سے معروف یہ بیماری دنیا بھر میں  چاول کی کھیتی کی فصل کو بہت زیادہ نقصان پہنچاتی ہے۔ژوکےذریعہ کشیدہ نقصان کو کم کرنے کی ایک اکائی یعنی سیلولیز کے ساتھ چاول کے علاج  سے چاول میں مدافعتی عمل ظاہر ہوتا ہے اور ژو کے ذریعہ ہونے والے نقصانات سے حفاظت فراہم کرتا ہے۔ڈاکٹر لوانیا کی زیر قیادت ٹیم نے ژو کے ذریعہ کشیدہ نقصان کوکم کرنے کی پودے کی اکائی پرحیاتیاتی وکیمیائی او ر کارگر مطالعات کئے ہیں جن سے  ان طریقہ کار وں کی وضاحت سامنے آئی ہے ،جس سے ژو چاول کےپودوںمیں بیماری کے اثرات  چھوڑتا ہے او ر جس کے باعث فصل بیماری کاشکار ہوتی ہے۔

ڈاکٹر لوانیا نے  اپنے پی ایچ  ڈی کے کام سے حاصل شدہ  تحریک استعما ل کرتے ہوئے اپنے گروپ کےساتھ ژو بکٹیریم اور متاثرہ چاولوں کے پیڑپودوں سے حاصل ہونے والے مولیکیولس کو ختم کردیا ہے جس سے انہیں ویکسین تیار کرنے  کی امید نظر آئی ہے۔

اس وقت ڈاکٹر لوانیا کا گروپ ژوکے ذریعہ سیلولیس  پروٹین پر کام کررہا ہے ۔یہ سیلولیس پروٹین  ایک پیچیدہ ویکسین کی خصوصیات رکھتا ہے  اور یہ چاول کی مدافعتی اظہار سے ایک خاص نتیجہ اخذکرتا ہے۔اس پروٹین کے ساتھ چاول کے پودوں کا  پہلےسے علاج کرنے سے چاولوں کو ژو انفیکشن سے متاثر ہونے کےخلاف مدافعت حاصل ہوتی ہے۔

اس بات کا مطالعہ کرنے کے لئے کہ کس طرح یہ پروٹین  چاول کے مدافعتی نظام کو بہتر بناتا ہے، ان کا گروپ  اس بات کی ٹیسٹنگ کررہا ہے کہ اس پروٹین سے کوئی بھی ظاہرہ سطح کے مدافعتی نظام  کو ظاہر کرتی ہے  جس کے باعث  مدافعتی جوابدہی  فعال ہوتی ہے۔وہ  یہ بھی معلوم کرنے کی کوشش کررہے ہیں کہ  چاول کو ہونے والے وہ نقصانات جو اس  سیلولیس پروٹین کی حرکت کے نتیجے میں ہوتے ہیں، کیا ان سے چاول کو مدافعت حاصل ہوتی ہے۔ جب ایک مرتبہ اس کی شناخت ہوجائے گی تو اسے چاول کے مدافعتی نظام کو فعال کرنے اور چاول کو لگنے والے  مختلف طرح کے کیڑوں اور بیماریوں کی روک تھام کے لئے ایک ویکسین کے طور پر استعمال کیا جاسکتا ہے۔

ابھی تک مدافعت  ’’ آر ‘‘ کومتعارف   کرکے،چاولوں کے پودوں کی مدافعت کو بہتر  کرنے کے لئے  یہ اس بیماری کو کنٹرول کرنے کا بہترین طریقہ رہا ہے جس میں   نباتاتی تولید  اور  نسلی تیاری کی تیکنک شامل ہے جو کہ بہت زیادہ محنت طلب ہیں اور ان میں بہت زیادہ  وقت خرچ ہوتا ہے۔’’ آر ‘‘جینس  صرف نسلی مخصوص مدافعت فراہم کرتا ہے جس سے ژوکے صرف مخصوص بیماریاں  ہی روکی جاسکتی ہیں لیکن اس کام میں  جس مدافعتی نظام کی شناخت کی جائے گی و ہ وسیع تناظری  قوت مدافعت فراہم کرے گا جو نہ صرف  ژو بلکہ دیگر کیڑے مکوڑوں اور بیماریو ں کے خلاف بھی موثر ثابت ہوگا۔

ڈاکٹر لوانیا کے مطابق اس مطالعے سے چاول کے دفاعی نظام کے کلیدی  نتائج سامنے آئیں گے اور یہ پودوں سے متعلق کیڑے مکوڑوں  کے بنیادی پہلوؤ ں کے بارے میں نئی معلومات فراہم کرے گی جس کے باعث ایسی فصل کے لئے نقصان کم کرنے کے نئے طریقے وضع ہوں گے ،جس  پر کم سے کم دنیا کی نصف آبادی کا انحصار ہے۔

Lavanya.jpg

[مزیر تفصیلات کے لئے ڈاکٹر تائی لوانیا سے  (tayi.lavanya3@gmail.com) رابطہ کیا جاسکتا ہے

.

 

 

*************

  م ن۔اع ۔رم

U- 6055



(Release ID: 1661714) Visitor Counter : 7