بجلی کی وزارت

بجلی  اور نئی اور قابل تجدید توانائی کےمرکزی وزیر نے الیکٹرک گاڑیوں کو اپنانے  اورمستقبل  میں ان کے استعمال سے متعلق ڈیٹا کے لیے ڈیش بورڈ کا آغاز کیا


مستقبل الیکٹرک گاڑیوں پر مبنی ہے ، ڈیزل اور پیٹرول کی ایس یو وی   گاڑیاں تاریخ بن جائیں گی: بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے وزیر آر کے سنگھ

ای وی –ریڈی انڈیا   ڈیش بورڈ نے 2022 اور 2030 کے درمیان الیکٹرک گاڑیوں میں 45.5% مرکب سالانہ شرح نمو کی پیش گوئی کی ہے؛ 2030 تک ہندوستان میں 1.6 کروڑ ای وی ز کی سالانہ فروخت

Posted On: 16 OCT 2023 4:58PM by PIB Delhi

بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے مرکزی وزیر جناب آر کے سنگھ نے آج نئی دہلی میں ایک بالکل نیا ای وی ریڈی انڈیا ڈیش بورڈ (ای وی ریڈی انڈیا ڈاٹ او آرجی) کا آغاز کیا۔ تھنک ٹینک او ایم آئی  فاؤنڈیشن میں پالیسی اور صنعت کے ماہرین کی طرف سے تیار کیا گیا، ڈیش بورڈ ایک مفت ڈیجیٹل پلیٹ فارم ہے جو قریب قریب الیکٹرک گاڑیوں  کو اپنانے اور مستقبل میں ان کے استعمال ، متعلقہ بیٹری کی طلب، چارجنگ کثافت، اور مارکیٹ کی ترقی کے رجحانات پر مرکوز ہے۔ توقع ہے کہ ڈیش بورڈ سامعین، صنعت، پالیسی سازوں اور الیکٹرک گاڑیوں کے اختتامی صارفین کے لیے زیادہ سے زیادہ شمولیت کی سہولت فراہم کرے گا۔ ڈیٹا اور مصنوعی ذہانت  کی طاقت سے فائدہ اٹھاتے ہوئے  ہندوستان کے بڑے پیمانے پر بڑھتے ہوئے برقی نقل و حرکت کے حصے پر میکرو اکنامک ڈیٹا اور تجزیہ کی ضرورت کو پورا کرنے کی کوشش کرنا اس پلیٹ فارم کا مقصد  ہے۔ ای وی ریڈی انڈیا ڈیش بورڈ نے کیلنڈر سال 2022 اور کلینڈر سال  2030 کے درمیان الیکٹرک گاڑیوں میں 45.5% مرکب سالانہ  ترقی کی شرح  (سی اے جی آر ) کی پیشن گوئی کی ہے، جو کہ 2022 میں 6,90,550 دو پہیا الیکٹرک گاڑیوں (ای 2ڈبلیوز) کی فروخت سے  2030 میں 1,39,36,691 دوپہیا الیکٹرک گاڑیوں کی سالانہ فروخت تک  بڑھے گی۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001HG1G.jpg

 

تقریب میں ڈیش بورڈ پر ایک کتابچہ جاری کیا گیا ہے۔ اس  تک یہاں رسائی حاصل کی جا سکتی ہے۔ لانچ کی تقریب یہاں دیکھی جا سکتی ہے۔

مستقبل الیکٹرک  گاڑیوں پر مبنی ہے، اسے کوئی نہیں روک سکتا، ڈیزل اور پیٹرول کی ایس یو وی گاڑیاں تاریخ بن جائیں گی

ڈیش بورڈ کے آغاز کی  تقریب میں مرکزی اور ریاستی حکومتوں، صنعت، عالمی بینک اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے نمائندوں سے خطاب کرتے ہوئے بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی  کے مرکزی وزیر نے زور دے کر کہا کہ مستقبل  کا انحصار الیکٹرک گاڑیوں پر ہوگا ۔ ‘‘مستقبل الیکٹرک گاڑیوں پر مبنی  ہے۔ اس کو کوئی نہیں روک سکتا۔ اسٹوریج کی قیمت کم ہو جائے گی، اور ایک بار اس کے نیچے آنے کے بعد، ڈیزل اور پیٹرول ایس یو وی گاڑیاں  تاریخ بن جائیں گی۔ ہمارے پاس بجلی ہوگی، جو دنیا کی سب سے بڑی معیشتوں میں سے ایک کے طور پر ہمارے سفر کے لیے موزوں ہے۔’’

جناب سنگھ نے کہا کہ بھارت  کے لیے ایک ملک کے طور پر برقی نقل و حرکت کی طرف جانا بالکل ضروری ہے۔ "ہم پانچویں سب سے بڑی معیشت سے تیسری بڑی معیشت پر جانا چاہتے ہیں اورا سٹریٹجک معاملات میں اپنا بوجھ بڑھانا چاہتے ہیں۔ اس کے لیے توانائی کی آزادی کی ضرورت ہے، جو الیکٹرک گاڑیوں کی بنیادی وجہ ہے۔

"کاربن کے اخراج کو کم کرنے کے لیے ٹرانسپورٹ کو ڈی کاربونائز کرنا بے حد  ضروری ہے"

مرکزی وزیر برائے بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی نے ٹرانسپورٹ سیکٹر کو ڈیکاربونائز کرنے کی اہمیت پر زور دیا اور کہا کہ ہمارے اخراج میں ٹرانسپورٹ کا حصہ 18% ہے، جو صنعت سے بالکل نیچے ہے اور حکومت الیکٹرک گاڑیوں  کو فعال طور پر فروغ دے رہی ہے۔ "ہمارے وزیر اعظم نے شمسی توانائی کو  15 روپے فی یونٹ پر خریدا  جب وہ گجرات کے وزیر اعلیٰ تھے۔ بہت سے لوگوں نے ان پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ تھرمل بجلی4.50 فی یونٹ کے طورپر  10 روپے میں ملتی ہے۔  لیکن انہوں نے کہا کہ جب تک وہ اس شرح پر نہیں خریدیں گے، قیمت کم نہیں ہوگی۔ اور آج شمسی توانائی  کی قیمت میں کمی آئی ہے۔ الیکٹرک گاڑیوں کے لیے ہماری کوشش کے پیچھے یہی مقصد ہے۔" وزیر نے یاد دلایا کہ حکومت نے پہلی بار الیکٹرک  گاڑیوں کو چارج کرنے کے لیے اپریل 2018 میں رہنما خطوط تیار کیے تھے،  اس سے بہت پہلے کہ کسی نے الیکٹرک گاڑیوں  کے بارے میں بات کرنا بھی  شروع  نہیں کی تھی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002LB09.jpg https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003VOH8.jpg

وزیر موصوف نے بتایا کہ چارجنگ اسٹیشنوں کی جگہ اور ان کی دستیابی کے سلسلے میں معلومات فراہم کرنے کےلئے  حکومت نے ایک ڈیش بورڈ (https://evyatra.beeindia.gov.in/) شروع کیا ہے ۔ یہ ڈیش بورڈ آپ کو منزل تک پہنچنے سے پہلے چارجنگ کی جگہ بک کرنے کے قابل بناتا ہے۔

‘‘ حجم بڑھانے اور اسٹوریج کی لاگت کو کم کرنے کے لیےہم بیٹریوں کے لیے ایک اور پی ایل آئی کے منصوبے کو متعارف کرارہے ہیں’’

الیکٹرک گاڑیوں کو اپنانے میں رکاوٹوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے، وزیر نے کہا کہ ایک رکاوٹ قیمت ہے، جو  اسٹوریج کی لاگت کی وجہ سے بڑھتی  ہے۔ "ہم بیٹریوں کی تیاری کے لیے پروڈکشن سے منسلک ترغیب کے ساتھ آئے ہیں، ہم ایک اور پی ایل آئی کو متعارف کرانے جارہے ہیں۔ ہمیں اسٹوریج کی قیمت کم کرنے کی ضرورت ہے۔ مغرب کاربن کے اخراج کو کم کرنے کی اہمیت کے بارے میں بات کرتا رہا، لیکن انہوں نے اسٹوریج  کی لاگت کو کم کرنے کے بارے میں کچھ نہیں کیا۔ اسٹوریج کی قیمت صرف اس صورت میں کم ہو گی جب ہم حجم میں اضافہ کریں گے، اور اسی وجہ سے ہم مینوفیکچرنگ، صلاحیت اور حجم کو بڑھانے کے لیے ایک اور پی ایل آئی  لے کر آ رہے ہیں۔"

"سپلائی چین کے مسائل اسٹریٹجک مسائل ہیں، لیتھیم سے ہٹ کر دیگر کیمسٹریوں کی طرف جانے کی ضرورت ہے"

وزیر نے نشاندہی کی کہ الیکٹرک گاڑیوں کو اپنانے میں دوسری رکاوٹ لیتھیم کے وسائل ہیں۔ "لیتھیم کے 80% ذخائر ایک ملک میں بندھے ہوئے ہیں، اور 88% لیتھیم پروسیسنگ ایک ملک میں ہے۔ سپلائی چین کے مسائل اب سامنے آ چکے ہیں۔ لیتھیم سے دوسری کیمسٹریوں، جیسے سوڈیم آئن میں منتقل ہونے کی ضرورت ہے۔ متبادل کیمسٹری سپلائی چین کی حفاظت کے لیے بالکل ضروری ہیں۔ اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ سپلائی چین کے مسائل فطرت میں اسٹریٹجک ہیں، جناب  سنگھ نے صنعت سے کہا کہ وہ متبادل کیمسٹری میں تحقیق میں سرمایہ کاری کرے۔

"بڑھتی ہوئی معیشت اور موسمیاتی کارروائی کے لیے الیکٹرک گاڑیاں اہم"

جناب سنگھ نے اس بات پر زور دیا کہ برقی گاڑیوں کو اپنانا ہندوستان جیسی بڑھتی ہوئی معیشت کے ساتھ ساتھ آب و ہوا کی کارروائی کے لیے بھی اہم ہے۔ "موسمیاتی تبدیلی کے سلسلے میں جاری بحث  کو تبدیل کرنا اور اسے حقیقی بنانا ضروری ہے۔ آب و ہوا کی کارروائیوں پر بات چیت اور تبادلہ خیال ترقی یافتہ ممالک کی طرف سے شروع کیا گیا ہے، جو منافقت کے سوا کچھ نہیں ہے۔ ہمارا فی کس اخراج عالمی اوسط کا ایک تہائی ہے، جبکہ ترقی یافتہ ممالک کا اخراج عالمی اوسط سے تین گنا ہے۔ ہم کرہ ارض پر کاربن ڈائی آکسائیڈ کے صرف 4% بوجھ کے ذمہ دار ہیں حالانکہ ہماری آبادی 17% ہے۔ لہذا، ہم نے فی کس کی بنیاد پر کم سے کم مقدار میں کاربن کا اضافہ کیا ہے اور ہم فی کس کی بنیاد پر سب سے کم ممکنہ شرح پر اضافہ کر رہے ہیں۔

وزیر نے اس بات کا اعادہ کیا کہ کاربن کے اخراج کا کوئی بھی اندازہ  قطعی طور پر نہیں بلکہ فی کس بنیاد پر ہونا چاہیے۔اس کے علاوہ ، ہندوستان واحد بڑی معیشت ہے جس کی توانائی کی منتقلی کے اقدامات عالمی درجہ حرارت میں ذیلی دو ڈگری سیلسیس کے اضافے کے ساتھ موافق ہیں۔ ہم واحد بڑی معیشت ہیں جس نے اپنے تمام این ڈی سی  وعدوں کو پہلے ہی پورا کر لیا ہے۔ کسی دوسرے ملک میں قابل تجدید توانائی کی صلاحیت اتنی تیزی سے نہیں بڑھی ہے۔ ہم نے 11 سال پہلے 2019 میں اخراج کی شدت کو کم کرنے کا این ڈی سی  حاصل کیا تھا۔ لہذا، گلاسگو میں، ہم نے کہا کہ ہمارے پاس اپنی بجلی کی 50% صلاحیت غیر جیواشم ایندھن کے ذرائع سے آئے گی۔ ہم نے عہد کیا کہ ہم اپنے اخراج کی شدت کو 45 فیصد تک کم کریں گے۔ جناب سنگھ نے کہا کہ الیکٹرک گاڑیوں کی منتقلی سے ہمارے اخراج میں کمی آئے گی۔ "یہ ایک حکومت کے طور پر ہمارے لیے اہم ہے کیونکہ ہم اپنے سیارے کی قدر کرتے ہیں، یہ ہماری ثقافت میں ہے۔ ہم کارروائی کر رہے ہیں کیونکہ ہم ماحول پر یقین رکھتے ہیں۔

ای وی ریڈی انڈیا ڈیش بورڈ

او ایم آئی  فاؤنڈیشن کے مطابق، ای وی ریڈی انڈیا ڈیش بورڈ ہندوستان میں واحد ڈیش بورڈ ہے جو تمام ریاستوں اور تلنگانہ میں گاڑیوں کی فروخت کے اعداد و شمار کو مرتب کرتا ہے، اس کے ساتھ چارجنگ انفراسٹرکچر، طلب کے رجحانات اور ملکیت کی کل لاگت کا موازنہ کرنے کے ساتھ ساتھ یہ ای وی  خریداروں کے لیے بھی مفید ہے۔ اس کے علاوہ ، یہ الیکٹرک گاڑیوں  کے لیے موجودہ سرمایہ کاری کے ماحول کا پتہ لگاتا ہے، اور ملک کے لیے مارکیٹ کی ترقی اور الیکٹرک گاڑیوں کے  ہاٹ اسپاٹ کے بارے میں پیشن گوئی کرتا ہے۔ یہ اخراج سے گریز کی مزید پیمائش کرتا ہے، جس کا مقصد ہندوستان کے نیٹ زیرو کے سفر کو تیز کرنا ہے۔

فاؤنڈیشن نے کہا ہے کہ ڈیش بورڈ نے 2030 تک ہندوستان میں سالانہ  1.6 کروڑ الیکٹرک گاڑیاں شروع کرنے  کا  تخمینہ لگایا ہے۔ "اس کے ساتھ، یہ مہاراشٹر اور دہلی کا بھی حوالہ دیتا ہے جو ہندوستان میں سب سے زیادہ چارجنگ اسٹیشنوں کے ساتھ کام کر رہے ہیں (بالترتیب 2531 اور 1815)۔ تمل ناڈو ملک کے ای2ڈبلیو  مینوفیکچرنگ مرکز کے طور پر ابھرتا ہے، ای 3ڈبلیو مینوفیکچرنگ میں تلنگانہ سرفہرست ہے، ای 4ڈبلیو  مینوفیکچرنگ میں مہاراشٹرا، بیٹری مینوفیکچرنگ میں گجرات، اور آر اینڈ ڈی  میں کرناٹک سرفہرست ہے۔ چنڈی گڑھ نے سب سے کم پبلک چارجنگ سپلائی ٹیرف آئی این آر  3.6/کے ڈبلیو ایچ  پر رپورٹ کیا، جو کہ آئی این آر  13.74/کے ڈبلیو ایچ  کی قومی اوسط کے مقابلے میں 73% کم ہے۔ ڈیش بورڈ نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ ہندوستان نے 2023 میں اب تک تخمینی طور پر 5.18 ملین ٹن سی او 2 کے اخراج سے گریز کیا ہے، جو لکشدیپ جزیروں کے مجموعی رقبے کا دوگنا تک احاطہ کرنے  والے 85.47 ملین درختوں کے پودے کے برابر ہے۔

او ایم آئی  فاؤنڈیشن کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر، ایشوریہ رمن نے مزید کہا: " ای وی ریڈی انڈیا ایک ڈیش بورڈ ہے جو سب کے لیے ہے اور سب کے لیے مفت ہے۔ یہ ان تمام لوگوں کے لیے ہے جو ہندوستان کے ای وی  سفر کا حصہ بننا چاہتے ہیں۔ او ایم آئی  فاؤنڈیشن کے لیے یہ ایک سنگ میل ہے ، کیونکہ یہ وسیع تحقیق، شماریاتی تجزیہ، اور ہمارے اندرون خانہ ماہرین کی انتھک لگن کا نتیجہ ہے۔ پلیٹ فارم کا مقصد علم کو بڑھانا، ایکو سسٹم کے وسیع تعاون کو فروغ دینا اور موثر پالیسی سازی کو فروغ دینا ہے – جیسا کہ ہم اس ڈیش بورڈ کو مزید جامع اور بصیرت انگیز بنانا جاری رکھتے ہیں۔ یہ پائیدار نقل و حرکت میں ہندوستان کو ایک رہنما کے طور پر پوزیشن دینے میں ہماری شراکت ہے۔"

ای وی ریڈی انڈیا ڈیش بورڈ کی اہم خصوصیات:

  1. پالیسی سازوں اور صنعت کے لیے، ڈیش بورڈ گاڑیوں والی تمام 34 ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں، اور اضافی تلنگانہ کے لیے فروخت کا مجموعی ڈیٹا پیش کرتا ہے۔ ڈیٹا کو اپنانے کی شرحوں اور وقت کی مدت، شکل کے عوامل، ریاستوں اور مزید کے ذریعہ پیش کردہ رجحانات کی آسانی سے سمجھنے کے لیے تصور کیا جاتا ہے۔
  2. ڈیش بورڈ 2030 تک ای وی  کو اپنانے، اور متعلقہ بیٹری کی طلب کے بارے میں پیشن گوئی دکھاتا ہے، جس سے پالیسی سازوں اور صنعت دونوں کو یکساں طور پر حکمت عملی بنانے اور ان کے صاف نقل و حرکت کے اہداف پر عمل درآمد کرنے کی اجازت ملتی ہے۔ پین انڈیا پروجیکشنز کے علاوہ، ڈیش بورڈ اپنی نوعیت کے پہلے انداز میں ریاستی اندازے پیش کرتا ہے۔
  3. آخری صارف کے لیے، یعنی ای وی کے (ممکنہ) خریدار کے لیے، ڈیش بورڈ ای وی کی ملکیت کے مالی فوائد کو ظاہر کرتا ہے، پیشگی اخراجات، آپریٹنگ اور دیکھ بھال کے اخراجات وغیرہ پر ممکنہ بچت بھی اس میں شامل ہے۔ صارف بھی  صرف ایک بٹن کے کلک پر ای وی ماڈلز کی فہرست جو سبسڈی کے اہل ہیں اور اس طرح کی سبسڈی کی مقدار کا جائزہ لے سکتا ہے۔
  4. اس میں تمام پالیسیوں اور ضوابط کا ایک جامع ذخیرہ بھی شامل ہے جس میں ای وی  ماحولیاتی نظام کی تمام ویلیو چینز شامل ہیں۔ پالیسی ماڈیول ریاستوں کو اپنی پالیسیوں کا موازنہ کرنے، ان کے مسابقتی فوائد کی بنیاد پر اپ ڈیٹ کرنے میں مدد کرتا ہے۔
  5. صارفین، صنعت اور پالیسی سازوں کے لیے، ڈیش بورڈ پورے ملک میں چارجنگ اسٹیشنز اور پوائنٹس دونوں کا احاطہ کرنے والے چارجنگ انفراسٹرکچر کا ایک جامع جائزہ پیش کرتا ہے۔ اس کے علاوہ ، ڈیش بورڈ سڑک پر ای ویز  کے حوالے سے چارجنگ پوائنٹس کی کثافت کو ظاہر کرتا ہے۔ یہ ماڈیول چارج کرنے والے ٹیرف کو بھی دکھاتا ہے جو ریاستوں کو دوسروں کے مقابلے میں اپنی شرحوں کو بہتر بنانے کی اجازت دیتا ہے۔
  6. گاڑیوں کی مینوفیکچرنگ، بیٹری ٹکنالوجی، بیٹری ری سائیکلنگ یا شہری کان کنی وغیرہ، اور تحقیق اور ترقی جیسی ای وی  ویلیو چینز میں سرمایہ کاری کا سراغ لگا کر اور بینچ مارکنگ کے ذریعے، ڈیش بورڈ ہندوستان کی اقتصادی ترقی اور روزگار کی تخلیق میں شراکت کا نقشہ بناتا ہے۔
  7. اس کے علاوہ ڈیش بورڈ، پورے ملک کی لمبائی اور چوڑائی میں تیز رفتار ای وی  کو اپنانے کی وجہ سے بچ جانے والے اخراج کا پتہ لگا کر نیٹ زیرو  کاربن اخراج  کی طرف ہندوستان کے سفر کی پیمائش کرتا ہے۔
  8. آخر میں، ڈیش بورڈ ای وی  کو اپنانے اور ای وی  ماحولیاتی نظام کی تمام ویلیو چینز سے متعلق ڈیٹا پر مبنی فیصلہ سازی سے متعلق خبریں اور بلاگز ایک ہی جگہ پر پیش کرتا ہے۔

افتتاحی تقریب  میں "ای وی سیکٹر میں ڈیٹا پر مبنی فیصلہ سازی" کے بارے میں ایک پینل بحث بھی پیش کی گئی۔

https://evreadyindia.org/ پر ڈیش بورڈ تک رسائی حاصل کریں۔

آپ مندرجہ ذیل لنکس پر اس سے متعلق معلومات کا جائزہ لے سکتے  ہیں:

  1. https://powermin.gov.in/en/content/electric-vehicle
  2. Centre sanctions Rs. 800 crores under FAME Scheme Phase II for 7432 public fast charging stations
  3. Three schemes launched and several steps taken by the Centre to promote adoption of electric vehicles in India
  4. ELECTRIC VEHICLES
  5. EVs purchased under FAME INDIA scheme

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ ا م۔

U- 10870



(Release ID: 1968191) Visitor Counter : 95