امور داخلہ کی وزارت

مرکزی وزیر داخلہ اور امدادباہمی کے وزیر، جناب امت شاہ نے آج نئی دہلی میں 'رائزنگ انڈیا: بے مثال ترقی کا امرت کال' پر پی ایچ ڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے 118ویں سالانہ اجلاس سے بطور مہمان خصوصی خطاب کیا


وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے پچھلے 9 سالوں میں ہندوستان کو ہر شعبے میں بدلنے کی کوشش کی ہے اور کامیاب بھی ہوئے ہیں

جناب مودی نے گزشتہ 9 سالوں میں ملک کی معیشت کو ایک نئی سمت اور طاقت دینے کا کام کیا ہے، مودی حکومت کے یہ 9 سال وعدوں، کارکردگی اور نتائج کے رہے ہیں

ہندوستانی تجارت اور صنعت کے حجم اور پیمانے کو تبدیل کرنے کا یہ صحیح وقت ہے

امرت کے دور میں ملکی صنعتوں کو نئی بلندیوں تک لے جانے میں پی ایچ ڈی سی سی آئی کا فیصلہ کن کردار ہے

پی ایچ ڈی سی سی آئی کو ایک ماحولیاتی نظام بنانا ہوگا، تاکہ نوجوانوں، خواتین اور ایم ایس ایم ای کو مودی حکومت کی پالیسیوں کا زیادہ سے زیادہ فائدہ مل سکے

ہندوستان سب سے کم عمر ملک ہے اور اس میں جمہوریت بھی ہے اور جناب مودی کی قیادت میں پالیسی سازی میں وضاحت ہے، امرت کال میں ہندوستان خلا سے لے کر تعلیم تک تمام شعبوں میں پہلے مقام پر پہنچنے والا ہے

جناب وزیر اعظم مودی کی پالیسیوں کے ذریعہ لائی گئی تبدیلیوں کی وجہ سے، آج ہر کوئی ہندوستان کے لمحے کی بات کرتا ہے اور ہندوستان کو پوری دنیا میں ایک ’وائبرنٹ اسپاٹ‘ کے طور پر جانا جاتا ہے

جناب مودی کی قیادت میں، ہندوستان نے گرین ہائیڈروجن سے لے کر ڈرون اور خلا جیسے شعبوں میں اپنی بنیاد مضبوط کی ہے جو اگلے 25 سالوں میں عالمی معیشت پراثراندازہوگی

وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی طرف سے لائی گئی نئی تعلیمی پالیسی اگلے 10 سالوں میں ہندوستان کو دنیا کے تمام طلباء کے لیے بہترین منزل کے طور پر قائم کرے گی

ملک کا ہر کسان اور ہر چھوٹی بڑی صنعت مل کر ٹیم انڈیا بناتی ہے،  صرف ٹیم انڈیا کے ساتھ ہی ہم 2047 تک ترقی یافتہ ہندوستان کے ہدف تک پہنچ پائیں گے

Posted On: 29 SEP 2023 3:56PM by PIB Delhi

مرکزی وزیر داخلہ اور امدادباہمی کے  وزیر جناب امت شاہ نے آج نئی دہلی میں 'رائزنگ انڈیا: بے مثال ترقی کا امرت کال' پر پی ایچ ڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے 118ویں سالانہ اجلاس سے بطور مہمان خصوصی خطاب کیا۔

 اپنے خطاب میں جناب امت شاہ نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں ہندوستان میں منعقدہ جی20 اجلاس کے بعد نہ صرف تجارت اور صنعت بلکہ ملک کے ہر شعبے میں ایک نئی توانائی پیداہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جی 20، چندریان، مشن آدتیہ کی کامیابی اور لوک سبھا اور ریاستی اسمبلیوں میں خواتین کے لیے 33 فیصد ریزرویشن نے پورے ملک میں ایک نئی توانائی پیدا کردی  ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج کا پروگرام امرتکال کی پہل  پر منعقد کیا جا رہا ہے۔ آزادی سے لے کر اب تک ملک نے 75 سال کا سفر طے کیا ہے اور ہر شعبے  میں بے شمار سنگ میل عبور کیے ہیں۔ جناب شاہ نے کہا کہ ان 75 سالوں میں سب سے بڑی کامیابی یہ رہی ہے کہ ہم بحیثیت ملک جمہوریت کی جڑیں گہری کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان نے دنیا کو دکھایا ہے کہ پالیسی کے لحاظ سے حکمرانی ایک مسلسل عمل ہے۔

مرکزی وزیر داخلہ اور امدادباہمی کے  وزیر جناب امت شاہ نے کہا کہ آزادی کا امرت مہوتسو کے جشن کے دوران وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے کہا تھا کہ گزشتہ 75 برسوں کی کامیابیوں کا جشن مناتے ہوئے  یہ ضروری ہے کہ اہداف متعین کئے جائیں اور یہ احساس کیا جائے کہ جب  ہندوستان  آزادی کے 100  منارہا ہوگا  تو 2047 میں ملک کہا ں ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ وزیر اعظم مودی نے 75 سے 100 سال کے سفر کو "امرت کل" قرار دیا ہے، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ یہ وقت ہے کہ فیصلہ کرنے اور انہیں حاصل کرنے کا وقت ہے (سنکلپ سے سدھی)۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہمارا مقصد وزیر اعظم جناب نریندر مودی کے خوابوں کے ہندوستان کی تعمیر کرنا ہے تاکہ جب ملک اپنی آزادی کی صد سالہ جشن منائے تو ہندوستان عالمی سطح پر ہر  شعبے میں آگے بڑھے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان دنیا کا سب سے کم عمر والا اور سب سے زیادہ آبادی والا ملک ہے اور اس کے پاس دنیا میں سب سے زیادہ انجینئر، ڈاکٹر اور ٹیکنوکریٹس ہیں۔ یہ جمہوریت اور ٹیم ورک کے ساتھ ایک ملک ہے اور وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی زیر قیادت میں اچھی پالیسیاں بنائی جا رہی ہیں۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ پی ایچ ڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کو آنے والے سالوں میں ملک کی تجارت اور صنعت کی شکل اور سمت کا تعین کرنے میں اہم رول ادا کرنا چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ آج کے پروگرام کا موضوع عصر حاضر سے بہت مطابقت رکھتا ہے۔ پی ایچ ڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری ملک بھر میں 1.5 لاکھ سے زیادہ چھوٹی اور بڑی صنعتوں کی نمائندگی کرتا ہے اور اسے ایک طرح سے صنعت و تجارت کی آواز سمجھا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے 2047 تک ہندوستان کو ایک مکمل ترقی یافتہ ملک بنانے، 2026 تک ہندوستان کے لیے 5 ٹریلین ڈالر کی معیشت حاصل کرنے اور 2027 تک دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت بننے کے اہداف مقرر کیے ہیں۔ ان تینوں اہداف کو حاصل کرنے کے لیے، صنعت کو ایک اہم کردار ادا کرنے کی ضرورت ہوگی۔ تجارت اور صنعت ملکی معیشت کا مرکز ہیں جہاں سے پوری معیشت کو تقویت ملتی ہے۔ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی پالیسیوں کی وجہ سے لائی گئی تبدیلیوں سے ہر طرف "انڈیاز مومنٹ" کا چرچا ہے، اور ہندوستان کو عالمی سطح پر "وائبرنٹ اسپاٹ" کے طور پر پہچانا جا رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پچھلی سہ ماہی میں، ہماری معیشت نے 7.8 فیصد کی شرح سے ترقی کی، اور ہم 40 ماہ تک مہنگائی کو کم سے کم سطح پر برقرار رکھنے میں بھی کامیاب رہے ہیں۔

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی طرف سے وکالت کردہ "وسودھیو کٹمبکم" کے اصول کے مطابق، ہندوستان تمام شعبوں میں عالمی مسائل کو حل کرنے میں دنیا کی قیادت کر رہا ہے۔ اب دنیا دہشت گردی کے خلاف جنگ، سولر الائنس، گرین انرجی وغیرہ سمیت تمام شعبوں میں ہندوستان کی طرف دیکھ رہی ہے اور ہمارے بہت سے اقدامات آج دنیا کی رہنمائی کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ 9 سالوں میں وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں ہندوستان نے ہر شعبے میں ملک کو تبدیل کرنے کی کوششیں کی ہیں اور کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی حکمرانی کے 9 سال وعدوں، کارکردگی اور نتائج کی نشاندہی کرتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ 2014 میں کیے گئے وعدوں کو پورا کرنے کے لیے مخلصانہ کوششیں کی گئی ہیں جس کے اب شاندار نتائج برآمد ہو رہے ہیں۔ جب کہ ہندوستان 10 سالوں تک دنیا کی 11 ویں سب سے بڑی معیشت رہا، وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں، ہم نے گزشتہ 9 سالوں میں اس جمود کو توڑ کر 5ویں سب سے بڑی معیشت کے طور پر ابھرے ہیں ، اور 2027 تک  ہم دنیا کی تیسری بڑی معیشت بننے کے لیے تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مالی سال 2023-24 کے لئے متوقع جی ڈی پی کی شرح نمو 6.1 فیصد ہے، اور اس کامیابی کے ساتھ، ہندوستان جی 20 ممالک میں سب سے زیادہ شرح نمو کے ساتھ ملک کے طور پر ابھرے گا۔ انہوں نے کہا کہ پیداوار سے منسلک ترغیب (پی ایل آئی) اسکیم نے 14 شعبوں میں "میک ان انڈیا" کے خواب کو حقیقت میں بدل دیا ہے۔ اب، ہندوستان عالمی سطح پر مینوفیکچرنگ کے لیے ایک منافع بخش مقام کے طور پر ابھرا ہے، اور دنیا بھر کی کمپنیاں ہندوستان میں سرمایہ کاری کرنا چاہتی ہیں، جس سے ہمارے لیے بے شمار مواقع پیدا ہوتے ہیں۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ 2004 سے 2014 کے دوران اکثر یہ کہا جاتا تھا کہ ملک پالیسی فالج کا شکار ہو گیا ہے۔ تاہم، پچھلے نو سالوں میں، ہم نے کئی پالیسیاں بنائی ہیں، اور اس کے نتیجے میں، ہم نے اپنی جی ڈی پی کو 2.03 ٹریلین ڈالر سے 3.75 ٹریلین ڈالر تک بڑھانے میں کامیابی حاصل کی ہے۔ 2013-14 میں ہماری فی کس آمدنی روپے تھی۔ 68,000، جو اب بڑھ کر روپے ہو گیا ہے۔ 2022-23 میں 1,80,000 روپے۔ 2014 میں، سرمائے کے اخراجات روپے تھے۔ 3.9 لاکھ کروڑ، اور وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں مرکزی حکومت نے اسے بڑھا کر روپے کر دیا ہے۔ 2023 تک 10 لاکھ کروڑ روپے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایک وفاقی ڈھانچے میں رہتے ہیں، اور جب تک ٹیم انڈیا کے تصور پر عمل نہیں کیا جائے گا، اس ملک کی جامع ترقی ممکن نہیں ہے۔ وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے ٹیم انڈیا کے تصور کو فروغ دیا ہے، اور مرکزی حکومت نے ریاستوں کے لیے مختص رقم کو بڑھا کر روپے سے بڑھا دیا ہے۔ 2004 سے 2014 کے دوران 30 لاکھ کروڑ روپے۔ 2014 سے 2023 تک کے نو سالوں میں 100 لاکھ کروڑ روپے۔ 2004 اور 2014 کے درمیان ٹیکس کی وصولی روپے تھی۔ 19 لاکھ کروڑ، جو اب بڑھ کر روپے ہو گیا ہے۔ 2014 سے 2023 تک کے نو سالوں میں 70 لاکھ کروڑ روپے۔ جب کہ ملک میں آزادی کے 70 سالوں میں صرف 74 ہوائی اڈے تھے، آج 148 آپریشنل ہوائی اڈے ہیں۔ 2004 سے 2014 کے درمیان 610 کلومیٹر ریلوے لائنیں بچھائی گئیں لیکن گزشتہ نو سالوں میں ہم نے 6565 کلومیٹر ریلوے لائنیں بچھائی ہیں۔ 2014 میں ملک میں کل 91 ہزار کلومیٹر طویل قومی شاہراہیں تھیں لیکن گزشتہ نو سالوں میں ہم نے 50 ہزار کلومیٹر طویل قومی شاہراہیں بنائی ہیں۔ آج ملک میں انٹرنیٹ کے بغیر انڈسٹری کا تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔ اس سے پہلے انٹرنیٹ کی فی جی بی قیمت روپے تھی۔ 270، جو اب روپے کی شرح پر دستیاب ہے۔ 10 فی جی بی۔ 2014 میں، ملک میں صرف 4 یونیکورن اسٹارٹ اپ تھے۔ آج، 115 یونی کارن اسٹارٹ اپس کے ساتھ، ہندوستان عالمی سطح پر سب سے آگے ہے۔ 2014 میں 350 اسٹارٹ اپس تھے اور آج ایک لاکھ سے زیادہ اسٹارٹ اپ ہماری معیشت میں اپنا حصہ ڈال رہے ہیں۔ 2004 سے 2014 کے درمیان ملک میں ایف ڈی آئی 45 بلین ڈالر تھی جو اب 85 بلین ڈالر سے تجاوز کر گئی ہے۔

مرکزی وزیر داخلہ اور تعاون کے وزیر نے کہا کہ ہمارے کھلونوں کی برآمد 96 ملین ڈالر تھی، مودی حکومت نے اسے 2022 تک 326 ملین ڈالر تک بڑھانے کا کام کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ کوئی بھی یقین نہیں کر سکتا تھا کہ جی ایس ٹی کبھی لاگو ہو سکتا ہے، لیکن جی ایس ٹی کو لاگو کرنے کا ہمارا خواب پورا ہوا اور ٹیم انڈیا کے نقطہ نظر کی وجہ سے، جی ایس ٹی کونسل میں صرف ایک فیصلہ ووٹنگ کے ذریعے لیا گیا، باقی تمام فیصلے پارٹی سیاست سے قطع نظر، اتفاق رائے سے لیے گئے۔ جناب شاہ نے کہا کہ وزیر اعظم مودی کے ذریعہ تیار کردہ اشتراکی سوچ کے سیاسی کلچر کی وجہ سے اپریل 2023 میں جی ایس ٹی کی وصولی 1.87 لاکھ کروڑ روپے تک پہنچ گئی ہے اور ماہانہ اوسط جی ایس ٹی کی وصولی 1.69 لاکھ کروڑ روپے ہے۔ ہمارے زرمبادلہ کے ذخائر 309 ارب ڈالر تھے جو آج 593 ارب ڈالر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آج ہماری برآمدات میں اضافہ ہوا ہے، کاروبار کرنے میں آسانی کے ذریعے تجارت اور صنعت کے لیے سازگار ماحول پیدا کرنے کے لیے مختلف قوانین کے تحت 39 ہزار سے زائد تعمیل کی ضروریات کو ختم کیا گیا ہے اور 3400 قانونی دفعات کو فوجداری سے دیوانی میں تبدیل کرنے کا کام کیا گیا ہے۔ نریندر مودی حکومت نے کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں تجارت اور صنعت کے لیے اس سے بہتر ماحول نہیں ہو سکتا۔ جناب شاہ نے کہا کہ 2013-14 میں ملک میں 127 کروڑ ڈیجیٹل لین دین ہوئے، جو 2022 میں بڑھ کر 12,735 کروڑ ہو گئے۔ دنیا میں حقیقی وقت کی ڈیجیٹل ادائیگیوں کا 40% حصہ صرف ہندوستان میں ہے۔ 2014 میں ہندوستان میں 50 کروڑ لوگ ایسے تھے جن کے خاندان میں ایک بھی بینک اکاؤنٹ نہیں تھا۔ انہیں بینک اکاؤنٹس فراہم کرکے وزیر اعظم مودی نے 50 کروڑ لوگوں کو ملک کی معیشت سے جوڑنے کا کام کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انفراسٹرکچر پر نظر ڈالیں تو پہلے 11 کلومیٹر سڑک ایک دن میں بنتی تھی، اب 37 کلومیٹر سڑک ایک دن میں بنتی ہے۔ وندے بھارت نے ریل سفر کا پورا تصور بدل دیا، پہلے 3 شہروں میں میٹرو تھی، اب 27 شہروں میں ہے، 10 لاکھ سے زیادہ الیکٹرک گاڑیاں سڑک پر ہیں۔ بھارت نیٹ کے تحت پہلے صرف 30,000 کلومیٹر کیبل بچھائی گئی تھی، مودی جی نے 6,20,000 کلومیٹر آپٹیکل فائبر کیبل بچھا کر ہر پنچایت کو آپٹیکل فائبر فراہم کرنے کا کام کیا ہے۔ پچھلے 8 سالوں میں انٹرنیٹ کنیکشن میں 230 فیصد اضافہ ہوا ہے اور 2027 تک شمال مشرقی آٹھ ریاستوں کے دارالحکومتوں کو ریل، سڑک اور فضائی راستے سے ملک سے جوڑ دیا جائے گا۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ ہم نے لینڈ پورٹ اتھارٹی کو بھی زندہ کیا ہے اور آج لینڈ پورٹ اتھارٹی کے ذریعے ہمارے تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ 42,000 کروڑ روپے کی تجارت کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2004 سے 2014 تک اس ملک کو پالیسی فالج کا سامنا رہا۔ انہوں نے کہا کہ 2014 میں وزیر اعظم بننے کے بعد جناب نریندر مودی نے الیکٹرانکس پر قومی پالیسی، میک ان انڈیا، اسٹارٹ اپ انڈیا، اسکل انڈیا، جی ایس ٹی، ڈیجیٹل انڈیا، UDAN اسکیم، نیشنل کوانٹم مشن، قومی تعلیمی پالیسی سمیت کئی پالیسیاں بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان اگلے 10 سالوں میں دنیا بھر کے تمام طلباء کے لیے بہترین تعلیمی مقام بننے جا رہا ہے۔ جناب شاہ نے کہا کہ آزادی کے بعد یہ پہلی تعلیمی پالیسی ہے جس کی کسی نے مخالفت نہیں کی۔ ہم نے انڈین اسپیس پالیسی میں بنیادی تبدیلیاں کی ہیں، ڈرون پالیسی بنائی ہے، اور آیوشمان بھارت کے ذریعے صحت کے پورے ڈھانچے میں بنیادی تبدیلیاں کی ہیں، ہم نے اسمارٹ سٹی پالیسی کے ذریعے اپنے شہری شعبے کو مضبوط کرنے کے لیے کام کیا ہے، تجارتی کوئلے کی کان کنی کھل گئی ہے۔ ہمارے وسائل کی تلاش کے بہت سے امکانات، گرین انڈیا نیشنل مشن آج پوری دنیا کو اپنی طرف متوجہ کر رہا ہے اور سوچھ بھارت کے ذریعے ہم نے ملک میں 11 کروڑ سے زیادہ بیت الخلاء بنا کر ملک کی صحت میں بہت زیادہ بہتری لائی ہے۔

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ ہندوستان نے ان تمام شعبوں میں اپنا مقام حاصل کر لیا ہے جو اگلے 25 سالوں میں عالمی معیشت پر اثر انداز ہوں گے۔ گرین ہائیڈروجن، سیمی کنڈکٹر، الیکٹرک وہیکل، سولر انرجی، دفاع، ڈرون، اسپیس، مائننگ اور گرین فیول ایتھنول جیسے شعبے اگلے 25 سالوں تک عالمی معیشت کو متاثر کرنے والے ہیں۔ پچھلے 9 سالوں میں مودی حکومت نے ان تمام شعبوں میں کامیابی کے ساتھ بنیاد رکھی ہے اور اب ہمیں ان تمام شعبوں میں کارکردگی دکھا کر دنیا میں اپنا مقام بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم مودی نے آنے والے 25 سالوں میں عالمی معیشت کو متاثر کرنے والے تمام شعبوں میں ہندوستان کی مضبوط بنیاد رکھنے کے وژن کے ساتھ کام کیا ہے۔ جناب شاہ نے کہا کہ اگلے 25 سال ہماری تجارت اور صنعت کے لیے بہت اہم ہیں۔ وقت آگیا ہے کہ ہندوستانی صنعت کے سائز اور پیمانے دونوں کو تبدیل کیا جائے اور پی ایچ ڈی چیمبر آف کامرس کو اس اقدام کی سمت میں سوچنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری کمپنیوں کو ملٹی نیشنل بننے کے لیے کام کرنا ہوگا اور اب وقت کی ضرورت ہے کہ ہندوستانی کمپنیاں ملٹی نیشنل بنیں۔ اس کے ساتھ ہمیں R&D میں سرمایہ کاری بھی بڑھانا ہوگی۔ آج ہم دالوں، دودھ اور جوٹ کی پیداوار میں دنیا میں پہلے نمبر پر ہیں اور اگر کوئی ملک سب سے زیادہ ریلوے انجن تیار کرتا ہے تو وہ ہندوستان ہے۔ اس کے علاوہ آج ہم موبائل ہینڈ سیٹ کی پیداوار، سیمنٹ، سٹیل اور کپاس کی پیداوار میں دنیا میں دوسرے نمبر پر ہیں اور چائے کی پیداوار میں بھی ہم دوسرے نمبر پر پہنچ چکے ہیں۔ ہم اسٹارٹ اپس اور موٹر وہیکلز میں تیسرے نمبر پر پہنچ گئے ہیں۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اگر ہم فیصلہ کرتے ہیں تو ہم ڈیلیور کرتے ہیں۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ ہم نے مہارت کے ساتھ اپنے بینکنگ سیکٹر کو NPA سے باہر لایا ہے۔ روپے کا کریڈٹ گارنٹی فنڈ ٹرسٹ۔ ایم ایس ایم ای کو فروغ دینے کے لیے 9000 کروڑ روپے بھی بنائے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے ٹیم انڈیا کا نقطہ نظر تیار کیا ہے، اور اس کا مطلب حکومت ہند اور ریاستی حکومتیں نہیں ہیں۔ ملک کا ہر کسان اور ہر چھوٹی بڑی صنعت مل کر ٹیم انڈیا بناتی ہے، تب ہی ہم 2047 میں اپنے مقصد تک پہنچ پائیں گے۔انہوں نے کہا کہ آج امرتکال شروع ہو رہا ہے، یہ وقت ہے کہ ایک قرارداد لے کر سڑک بنائیں۔ سنکلپ سے سدھی کے لیے نقشہ، اس لیے یہی وقت ہے، صحیح وقت ہے۔

************

ش ح۔ اک    ۔ م  ص

 (U: 10125 )



(Release ID: 1962197) Visitor Counter : 278