وزیراعظم کا دفتر

وزیر اعظم نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے جےپورمہا کھیل سے خطاب کیا۔


’’جیت تب یقینی ہوتی ہے جب اس میں سیکھناشامل ہو‘‘

’’جب ملک کی سلامتی کی بات آتی ہے تو راجستھان کے نوجوان ہمیشہ دوسروں سے آگے آتے ہیں‘‘

’’جے پور مہا کھیل کی کامیاب تنظیم ہندوستان کی کوششوں کی اگلی اہم کڑی ہے‘‘

’’ملک نئی تعریفیں وضع کر رہا ہےنیز امرت کال میں ایک نئی ترتیب پیدا کر رہا ہے‘‘

’’ملک کے کھیلوں کے بجٹ میں 2014 سے تقریباً تین گنا اضافہ ہوا ہے‘‘

’’ملک میں کھیلوں کی یونیورسٹیاں قائم کی جا رہی ہیں اور کھیل مہاکمبھ جیسے بڑی تقریبات کا انعقاد بھی پیشہ ورانہ انداز میں کیا جا رہا ہے‘‘

’’ہماری حکومت اس بات پر توجہ دے رہی ہے کہ پیسے کی کمی کے باعث کوئی نوجوان پیچھے نہ رہ جائے‘‘

’’تم فٹ رہو گے تب ہی سپر ہٹ ہو گے‘‘

’’راجستھان کا شری انا باجرہ اور شری انا جوار اس مقام کی پہچان ہیں‘‘

’’آج کا نوجوان اپنی کثیر جہتی اور کثیر رخی صلاحیتوں کی وجہ سے صرف ایک میدان تک محدود نہیں رہنا چاہتا‘‘

’’کھیل صرف ایک صنف نہیں بلکہ یہ ایک صنعت ہے‘‘

’’جب دل سے کوشش کی جائے تو نتائج یقینی ہوتے ہیں‘‘

’’ملک کے لیے آئندہ سونے اور چاندی کے تمغے جیتنے والےآپ میں سے ہوں گے‘‘

Posted On: 05 FEB 2023 3:30PM by PIB Delhi

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے جے پور مہا کھیل سے خطاب کیا۔ اس موقع پر انہوں نے کبڈی میچ بھی دیکھا۔ جے پور دیہات سے لوک سبھا کے رکن جناب وردھن سنگھ راٹھور 2017 سے جے پور مہا کھیل کا اہتمام کر رہے ہیں۔
اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے اس میگا مقابلے میں تمغے جیتنے والے کھلاڑیوں، کوچز اور ان کے اہل خانہ کو مبارکباد دی۔ انہوں نے کہا کہ کھلاڑیوں نے کھیلوں کے میدان کو صرف حصہ لینے کے لیے نہیں بلکہ جیتنے اور سیکھنے کے لیے تیار کیا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ’’جیت یقینی ہے جب اس میں سیکھنا شامل ہے‘‘۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کوئی بھی کھلاڑی کھیلوں کے میدان سے خالی ہاتھ نہیں آتا ہے۔

اس مقابلے میں کئی نامور کھلاڑیوں کی موجودگی کو دیکھتے ہوئے، جنہوں نے کھیلوں کے میدان میں ہندوستان کا نام نئی بلندیوں تک پہنچایاہے، وزیر اعظم نے رام سنگھ، ایشین گیمز میڈلسٹ، پیرا ایتھلیٹ دیویندر جھاجھریا، کھیل رتن ایوارڈ یافتہ دھیان چند ، ارجن ایوارڈ یافتہ ساکشی کماری اور دیگر سینئر کھلاڑیوں کا نام لیا۔ وزیر اعظم نے خوشی کا اظہار کیا کہ ہندوستان کے یہ نامور چہرے جے پور مہا کھیل میں نوجوان کھلاڑیوں کی مدد کے لیے آگے آئے ہیں۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ کھیلوں کے مقابلوں اور کھیل مہاکمبھوں کا جو سلسلہ پورے ملک میں منعقد کیا جا رہا ہے، وہ رونما ہونے والی یادگار تبدیلیوں کا عکاس ہے۔ یہ واضح کرتے ہوئے کہ راجستھان کی سرزمین نوجوانوں کے جذبے اور جوش کے لیے جانی جاتی ہے، وزیر اعظم نے کہا کہ تاریخ اس بات کا ثبوت ہے کہ اس سرزمین کے بچوں نے اپنی بہادری سے میدان جنگ کو کھیلوں کے میدانوں میں تبدیل کر دیا ہے۔ ’’جب ملک کی سلامتی کی بات آتی ہے تو راجستھان کے نوجوان ہمیشہ باقیوں سے آگے آتے ہیں‘‘، وزیر اعظم نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے خطے کے نوجوانوں کی ذہنی اور جسمانی صلاحیتوں کو تشکیل دینے کے لیے راجستھان کی کھیلوں کی روایات کو پروان چڑھایا ہے۔ انہوں نے روایتی کھیلوں جیسے دادا، سیٹولیا اور رومال جھپٹا کی مثالیں دیں جو مکر سنکرانتی کے دوران منعقد کیے جاتے ہیں اور سینکڑوں سالوں سے راجستھان کی روایات کا حصہ ہیں۔

راجستھان کے متعدد کھلاڑیوں پر تبصرہ کرتے ہوئے جنہوں نے اپنی کھیلوں کی شراکت سے ترنگے کو نئی بلندیوں تک پہنچایا ہے، وزیر اعظم نے نشاندہی کی کہ جے پور کے لوگوں نے ایک اولمپک میڈلسٹ کو اپنا ممبر پارلیمنٹ منتخب کیا ہے۔ انہوں نے ممبر پارلیمنٹ جناب راجیہ وردھن سنگھ راٹھور کے تعاون کو واضح کیا اور اس بات پر خوشی کا اظہار کیا کہ وہ پارلیمانی کھیلوں کے مقابلوں کی شکل میں اپنی حصہ رسدی کر کے نوجوان نسلوں کو لوٹا رہے ہیں۔ وزیر اعظم نے مزید جامع نتائج کے لیے ایسی کوششوں کو وسعت دینے پر زور دیا اور جے پور مہا کھیل کی کامیاب تنظیم کو ان کوششوں کی اگلی اہم کڑی کے طور پر نوٹ کیا۔ جے پور مہا کھیل کی کامیابی پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے بتایا کہ اس سال مقابلے کے ایڈیشن میں 600 سے زیادہ ٹیموں اور 6,500 نوجوانوں نے حصہ لیا ہے۔ انہوں نے لڑکیوں کی 125 سے زائد ٹیموں کی شرکت کو بھی واضح کیا جو ایک خوشگوار پیغام دیتا ہے۔

وزیر اعظم نے تبصرہ کیا’’آزادی کے امرت کال میں، ملک نئی تعریفیں وضع کر رہا ہے اور ایک نئی ترتیب بنا رہا ہے‘‘۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کھیلوں کو آخرکار سیاست کے بجائے کھلاڑی کے نقطہ نظر سے دیکھا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نوجوانوں کے لیے کچھ بھی ناممکن نہیں اور ہر مقصد اس وقت آسان ہو جاتا ہے جب ان کی صلاحیتوں، عزت نفس، خود انحصاری، سہولتوں اور وسائل کا ادراک ہو جائے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ اس طرح کے نقطہ نظر کی جھلک اس سال کے بجٹ میں بھی دیکھی جا سکتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وزارت کھیل کو اس سال 2500 کروڑروپئے  کا بجٹ مختص کیا گیا ہے جب کہ 2014 سے پہلے 800-850 کروڑ  روپئےکا بجٹ تھا۔ انہوں نے مزید بتایا کہ صرف ’کھیلو انڈیا‘ مہم کے لیے 1000 کروڑ  روپئےسے زیادہ کی رقم مختص کی گئی ہے جسے ملک میں کھیلوں کی سہولیات اور وسائل کی ترقی پر خرچ کیا جائے گا۔

وزیر اعظم نے مشاہدہ کیا کہ ہندوستان کے نوجوانوں میں کھیلوں کے لیے جنون اور ہنر کی کمی نہیں ہے، لیکن یہ حکومت کی جانب سے وسائل اور تعاون کی عدم دستیابی تھی جس نے رکاوٹیں کھڑی کیں۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کھلاڑیوں کو درپیش ان مسائل کو آج حل کیا جا رہا ہے۔ جے پور مہا کھیل کی مثال دیتے ہوئے جو پچھلے 5-6 سالوں سے منعقد کیا جا رہا ہے، وزیر اعظم نے کہا کہ ملک کے ہر حصے میں بی جے پی کے ممبران پارلیمنٹ کے ذریعہ کھیل مہاکمبھ کا انعقاد کیا جا رہا ہے جہاں ہزاروں نوجوانوں کی صلاحیتیں سامنے آرہی ہیں۔

وزیر اعظم نے ان کامیابیوں کا سہرا مرکزی حکومت کو دیا کیونکہ ضلع اور مقامی سطح پر کھیلوں کی سہولیات تیار کی جا رہی ہیں۔ ملک کے سینکڑوں اضلاع میں لاکھوں نوجوانوں کے لیے کھیلوں کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے وزیر اعظم نے راجستھان کی ریاست پر روشنی ڈالی جہاں کئی شہروں میں کھیلوں کے بنیادی ڈھانچے کو تیار کیا جا رہا ہے۔ ’’آج ملک میں کھیلوں کی یونیورسٹیاں قائم کی جا رہی ہیں، اور کھیل مہاکمبھ جیسی بڑی تقریبات کا انعقاد بھی پیشہ ورانہ انداز میں کیا جا رہا ہے‘‘، وزیر اعظم نے نیشنل سپورٹس یونیورسٹی کی طرف توجہ مبذول کراتے ہوئے کہا کہ اس کے لیے اس سال زیادہ سے زیادہ بجٹ مختص کیا گیا ہے۔ انہوں نے اسپورٹس مینجمنٹ اور اسپورٹس ٹیکنالوجی سے متعلق ہر شعبہ سیکھنے کے لیے ماحول پیدا کرنے کی ضرورت پر زور دیا جس سے نوجوانوں کو ان شعبوں میں اپنا کیرئیر بنانے کا موقع ملے گا۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ’’ہماری حکومت اس بات پر توجہ دے رہی ہے کہ پیسے کی کمی کی وجہ سے کوئی نوجوان پیچھے نہ رہ جائے‘‘۔ انہوں نے بتایا کہ مرکزی حکومت اب بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے کھلاڑیوں کو سالانہ 5 لاکھ روپے تک کی امداد دے رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کھیلوں کے بڑے ایوارڈز میں دی جانے والی رقم میں بھی تین گنا تک اضافہ کیا گیا ہے۔ ٹی او پی ایس جیسی اسکیموں کی مثالیں دیتے ہوئے، جو کھلاڑیوں کو برسوں تک اولمپکس کی تیاری کرنے کی اجازت دیتی ہے، وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت اولمپکس جیسے بڑے عالمی مقابلوں میں بھی پوری طاقت کے ساتھ اپنے کھلاڑیوں کے ساتھ کھڑی ہے۔

نہ صرف کھیلوں کے میدان میں بلکہ روزمرہ کی زندگی میں بھی فٹنس برقرار رکھنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ کسی بھی کھلاڑی کے لیے یہ سب سے اہم چیز ہے۔ انہوں نے کہا، ’’آپ فٹ رہیں گے، تب ہی آپ سپر ہٹ ہوں گے‘‘، جیسا کہ انہوں نے کھیلو انڈیا اور فٹ انڈیا جیسی مہموں کا ذکر کیا اور فٹنس میں خوراک اور غذائیت کے کردار پر روشنی ڈالی۔ وزیر اعظم نے اقوام متحدہ کے سال 2023 کو جوار باجرہ کے بین الاقوامی سال کے طور پر منانے کے بارے میں جانکاری دی اور بتایا کہ راجستھان جوار کی ایک بہت ہی بھرپور قسم، سری انا کا گھر ہے۔ ’’راجستھان کے شری انا-باجرا اور شری انا-جوار، اس جگہ کی پہچان ہیں‘‘، وزیر اعظم نے یہاں بنے ہوئے باجرے کے دلیے اور چورما کو یاد کرتے ہوئے تبصرہ کیا۔ انہوں نے تمام نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ نہ صرف شری انا کو اپنی خوراک میں شامل کریں بلکہ اس کے برانڈ ایمبیسیڈر بھی بنیں۔

نوجوانوں کی ہمہ جہتی ترقی کے لیے کام کر رہا ہے اور کہا کہ آج کا نوجوان اپنی کثیر جہتی اور کثیر جہتی صلاحیتوں کی وجہ سے صرف ایک شعبے تک محدود نہیں رہنا چاہتا۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ ایک طرف کھیلوں کا جدید انفراسٹرکچر تیار کیا جا رہا ہے وہیں اس بجٹ میں بچوں اور نوجوانوں کے لیے نیشنل ڈیجیٹل لائبریری کی تجویز بھی دی گئی ہے جہاں شہر سے گاؤں تک ہر سطح پر سائنس، سنسکرت اور تاریخ جیسے ہر موضوع پر کتابیں دستیاب ہوں گی۔

’’کھیل صرف ایک صنف نہیں ہے، بلکہ ایک صنعت ہے‘‘، وزیر اعظم نے تبصرہ  کیا جب انہوں نے لوگوں کی بڑی تعداد کی نشاندہی کی جوایم ایس ایم ایز کے ذریعے روزگار حاصل کر رہے ہیں جو کھیلوں سے متعلق اشیاء اور وسائل بنا رہے ہیں۔ انہوں نے کھیلوں کے شعبے سے متعلق ایم ایس ایم ایز کو مضبوط کرنے کے لیے بجٹ میں کئی اہم اعلانات کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے پی ایم وشوکرما کوشل سمن یعنی پی ایم وکاس یوجنا کی مثال دی جو دستی ہنر اور دستکاروں کے لیے بہت مددگار ثابت ہوگی۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ہمارے نوجوانوں کے لئے پی ایم وشوکرما یوجنا کے ذریعہ دی جانے والی مالی مدد کی مدد سے روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے اور اس طرح ان کے لئے نئی منڈیاں پیدا ہوں گی۔

خطاب کے اختتام پر وزیر اعظم نے ریمارکس دیے کہ ’’جب پوری کوشش کی جاتی ہے تو نتائج یقینی ہوتے ہیں۔‘‘ انہوں نے ٹوکیو اولمپکس اور کامن ویلتھ گیمز کے دوران ملک کی جانب سے کی جانے والی کوششوں پر روشنی ڈالی اور کہا کہ اس کے نتائج سب کو دیکھنا ہے۔ انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ جے پور مہا کھیل کے دوران کی گئی کوششوں کے، مستقبل میں شاندار نتائج برآمد ہوں گے۔ وزیراعظم نے کہا ’’ملک کے لیے اگلے سونے اور چاندی کے تمغے جیتنے والے آپ میں  ہی سے نکلیں گے۔ اگر آپ پرعزم ہیں تو اولمپکس میں بھی ترنگے کی شان میں اضافہ کریں گے۔ آپ جہاں بھی جائیں گے ملک کا نام روشن کریں گے۔ مجھے یقین ہے کہ ہمارے نوجوان ملک کی کامیابی کو بہت آگے لے جائیں گے”۔

اس موقع پر جے پور دیہی سے لوک سبھا کے رکن راجیہ وردھن سنگھ راٹھور بھی موجود تھے۔

پس منظر

اس سال کبڈی مقابلے پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے مہا کھیل کا آغاز قومی یوم یعنی 12 جنوری 2023 کو ہوا۔ اس میں 450 سے زیادہ گرام پنچایتوں، میونسپلٹیوں اور تمام 8 قانون ساز اسمبلی علاقوں کے وارڈوں کے 6400 سے زیادہ نوجوانوں اور کھیلوں کے افراد نے شرکت کی۔ جے پور دیہی لوک سبھا حلقہ۔ مہ خیل کی تنظیم ،جے پور کے نوجوانوں کو اپنی کھیلوں کی صلاحیتوں کو ظاہر کرنے کا موقع فراہم کرتی ہے اور انہیں کھیلوں کو کیریئر کے آپشن کے طور پر اپنانے کی ترغیب دیتی ہے۔۔

*****

U.No.1227

(ش ح - اع - ر ا)   

 



(Release ID: 1896480) Visitor Counter : 167