ماحولیات، جنگلات اور موسمیاتی تبدیلی کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

بھوپیندر یادو نے شیروں کے تحفظ پر چوتھی ایشیا وزارتی کانفرنس میں بھارت کی جانب سے بیان دیا

بنی نوع انسان کے لیے متنوع ماحولی نظام کی خدمات کو برقرار رکھنے کے لیے شیروں کا تحفظ بہت ضروری ہے: جناب بھوپیندر یادو

قدرتی وسائل پر منحصر کمیونٹی، شیروں کے تحفظ کا ایک اہم پہلو؛ بھارت کے ‘ٹائیگر ایجنڈے’ میں‘عوام کا ایجنڈا’ نمایاں مقام رکھتا ہے

Posted On: 21 JAN 2022 3:15PM by PIB Delhi

نئی دہلی:21 جنوری،2022۔ماحولیات، جنگلات اور آب و ہوا کی تبدیلی کے وزیر جناب بھوپیندر یادو نے کہا کہ قدرتی وسائل پر منحصر کمیونٹی شیروں کے تحفظ کا ایک اہم پہلو ہے اور ‘لوگوں کا ایجنڈا’ بھارت کے ‘ٹائیگر ایجنڈے’ میں نمایاں مقام رکھتا ہے۔ وزیر موصوف شیروں کے تحفظ سے متعلق چوتھی ایشیا وزارتی کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے، جو عالمی سطح پرشیروں کی بازیابی پروگرام کی طرف پیش رفت اور شیروں کے تحفظ کے وعدوں کا جائزہ لینے کے لیے ایک اہم پروگرام ہے۔

جناب یادو نے بھارت کی جانب سے بیان دیتے ہوئے ملیشیا کی حکومت اور عالمی ٹائیگر فورم (جی ٹی ایف) کو شیروں کے تحفظ پر چوتھی ایشیا وزارتی کانفرنس کے انعقاد کے لیے مبارکباد دی اور شیروں کی رہائش گاہ میں ‘‘مرکزی ریڑھ کی ہڈی اور زمین کی تزئین کی سطح کی منصوبہ بندی’’ کی شکل میں بنیادی انفراسٹرکچر کے حوالے سے اقدامات کے لیے ایک رول ماڈل بنانے میں ملیشیا کی حکومت کی کوششوں کی تعریف کی۔

وزیر موصوف نے کہا کہ بھارت اس سال کے آخر میں روس کے ولادی ووستوک میں منعقد ہونے والے گلوبل ٹائیگر سمٹ کے لئے نئی دہلی کے اعلامیہ کو حتمی شکل دینے میں ٹائیگر رینج والے ممالک کو سہولت فراہم کرے گا۔ 2010 میں نئی ​​دہلی میں ‘‘پری ٹائیگر سمٹ’’ کا اجلاس منعقد ہوا، جس میں گلوبل ٹائیگر سمٹ کے لیے شیروں کے تحفظ سے متعلق اعلامیہ کے مسودے کو حتمی شکل دی گئی۔

یہ بتاتے ہوئے کہ بھارت نے 2022 کے ہدف سے 4 سال پہلے 2018 میں ہی شیروں کی آبادی کو دوگنا کرنے کا قابل ذکر کارنامہ انجام دیا ہے، جناب یادو نے بتایا کہ بھارت کی ٹائیگر گورننس کی کامیابی کے ماڈل کو اب شیر، ڈولفن جیسے دیگر جنگلی جانوروں چیتا، برفانی چیتے اور دیگر چھوٹی جنگلی بلیوں کے لیے بھی نقل کیا جا رہا ہے، جبکہ بھارت چیتا کو اپنی تاریخی رینج میں متعارف کرانے کی دہلیز پر کھڑا ہے۔

وزیر موصوف نے مزید بتایا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی اہل اور شاندار قیادت میں شیروں کے تحفظ کے لیے مختص بجٹ جو 2014 میں 185 کروڑ روپے تھا وہ 2022 میں  بڑھ کر 300 کروڑ روپے ہو گیا ہے اور بتایا کہ بھارت کے 14 ٹائیگر ریزرو کو پہلے ہی بین الاقوامی سطح پر سی اے/ٹی ایس ایوارڈ دیا جا چکا ہے اور مزید ٹائیگر ریزرو کو سی اے/ٹی ایس ایکریڈیٹیشن کے تحت لانے کے لیے کوششیں جاری ہیں۔

صف اول کے عملے اور کمیونٹی سے بات کرتے ہوئے وزیر موصوف نے کہا کہ ہمارا صف اول کا عملہ شیروں کے تحفظ کا ایک اہم ستون ہے اور اسی لیے ہم نے محنت اور روزگار کی وزارت کی حالیہ پہل ای-شرم کے تحت ہر ٹھیکے پر کام کرنے والے/عارضی ورکر کو 2 لاکھ روپے کا لائف کور دیا ہے، نیز آیوشمان یوجنا کے تحت 5 لاکھ روپے کا ہیلتھ کور بھی دیا ہے۔

جناب یادو نے مزید کہا کہ ‘‘بھارت میں 51 ٹائیگر ریزرو سے تقریباً 4.3 ملین افرادی دن کا روزگار پیدا ہو رہا ہے اور ٹائیگر ریزرو کے بنیادی علاقوں سے رضاکارانہ طور پر گاؤں کی آبادی کی منتقلی کو فروغ دینے کے لیے کمپنسٹری فارسٹیشن فنڈ مینجمنٹ اینڈ پلاننگ اتھارٹی (سی اے ایم پی اے) کے فنڈز کا استعمال کیا جا رہا ہے’’۔

بھارت کے وزیر ماحولیات نے کہا کہ ‘‘ٹائیگرس، ماحولیاتی نظام میں سب سے اوپر، ماحولیاتی عمل کو منظم کرنے اور اسے برقرار رکھنے میں بیحد اہم ہیں۔ اس اعلیٰ گوشت خور جانور کے تحفظ کو یقینی بنانا جنگلاتی ماحولیاتی نظام، حیاتیاتی تنوع کے ساتھ ساتھ پانی اور آب و ہوا کی تبدیلی کی حفاظت کی بھی ضمانت دیتا ہے’’۔

شیروں کے جسم کے اعضاء اور مصنوعات کی بین الاقوامی مانگ کی وجہ سے منظم غیر قانونی شکار میں اضافے، شیروں کے شکار کی کمی اور رہائش گاہ کے نقصان کو شیروں کے تحفظ کے لیے کلیدی چیلنجوں کے طور پر اجاگر کرتے ہوئے جناب یادو نے کہا کہ جنگلی شیر کی حیثیت پوری دنیا میں خطرے سے دوچار ہے اور دنیا بھر میں اس کی حیثیت برقرار ہے۔ مخصوص علاقے کے لحاظ سے مخصوص مسائل جو شیروں کو بھی متاثر کرتے ہیں اور اس وجہ سے یہ صورتحال فعال بین الاقوامی تعاون کے ساتھ ساتھ ہم آہنگی اور فعال انتظام اور منظم بندوبست کا مطالبہ کرتی ہے۔

بھارت میں ٹائیگرز کی سکونت اونچے پہاڑوں، مینگرووز کی دلدلوں، لمبے گھاس کے میدانوں سے لے کر خشک اور نم پرنپاتی جنگلات کے ساتھ ساتھ سدابہار جنگلاتی نظام تک شیروں کی رہائش گاہوں کی وسیع اقسام ہیں۔ اس کی وجہ سے شیر نہ صرف ایک تحفظ کا نشان ہے بلکہ یہ برصغیر پاک و ہند میں ماحولیاتی نظام کی اکثریت کے لیے ایک چھتری کے طور پر بھی ہے۔

بھارت ٹائیگر رینج والے ملکوں - گلوبل ٹائیگر فورم کے بین الحکومتی پلیٹ فارم کے بانی اراکین میں سے ایک ہے، اور گزشتہ برسوں کے دوران عالمی ٹائیگر فورم (جی ٹی ایف) نے حکومت ہند، بھارت میں شیروں کی آبادی والی ریاستوں اور شیروں کی آبادی والے ممالک کے ساتھ مل کر کام کرتے ہوئے متعدد موضوعاتی شعبوں پر اپنے پروگرام کو بڑھایا ہے۔

 

-----------------------

ش ح۔م ع۔ ع ن

U NO: 603



(Release ID: 1791605) Visitor Counter : 105