صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت

کووڈ-19 ٹیکہ کاری کی تازہ جانکاری- 29واں دن

کووڈ-19 کے خلاف 80 لاکھ سے زیادہ مستفدین کو ٹیکہ لگایا جاچکا ہے؛  آج شام 6 بجے تک 84807 مستفدین کو ٹیکہ لگایا گیا

ملک میں آج سے  کووڈ-19 ویکسین کی دوسری خوراک کا آغاز  ؛ 7668 صحت کارکنان  نے پہلےدن  ویکسین کی دوسری خوراک لی

مرکزی صحت سکریٹری نے تمام ریاستوں اورمرکز کے زیر انتظام علاقوں کے ساتھ جاری کووڈ-19ٹیکہ کاری مہم کا جائزہ لیا

ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے ریاست/ ضلع اے ای ایف آئی کمیٹیوں کے ساتھ باقاعدہ میٹنگیں کرنے پر زور دیا، اور ٹیکہ کاری سیشن کے دوران  مستفدین کو  اے ای ایف آئی کے بارے میں  معلومات فرہم کرنے کو کہا

Posted On: 13 FEB 2021 8:11PM by PIB Delhi

ملک بھر میں کووڈ-19 کے خلاف  ٹیکہ لگوانے والے  صحت کارکنان اور فرنٹ لائن اہلکاروں کی مجموعی تعداد آج 80 لاکھ سے تجاوز کرگئی۔

ابتدائی رپورٹ کے مطابق آج شام چھ بجے تک 169215 سیشنز کے ذریعے 8052454 مستفدین کو ٹیکہ لگایا گیا۔ ان میں 5935275 صحت کارکنان (ایچ سی ڈبلیو) اور 2117179 فرنٹ لائن اہلکار (ایف ایل ڈبلیو) شامل ہیں۔

کووڈ-19 ٹیکہ کاری کی دوسری خوراک  کا آغاز،ان مستفدین کے لئے آج سے  ہوگیا، جنھوں نے پہلی خوراک28 دن پہلے لی تھی۔ ہندوستان کے ڈرگ کنٹرولر جنرل (ڈی سی جی آئی) نے دوسری خوراک کے لئے 4 سے 6 ہفتہ کی منظوری دی ہے۔ پہلے دن 7668 صحت کارکنان نے ویکسین کی دوسری خوراک لی۔

ابتدائی اعداد و شمار کے مطابق ملک گیر کووڈ-19 ٹیکہ کاری کے 29ویں  دن (آج شام 6 بجے تک) مجموعی طور پر 84807 مستفدین کو ٹیکہ لگایا گیا۔ آج شام 6.00 بجے تک 4434 سیشن منعقد کئے گئے۔ حتمی رپورٹ آج دیر رات تک مکمل ہوگی۔

آج 34 ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں کووڈ ٹیکہ کاری کی گئی۔

نمبر شمار

ریاستیں/ مرکز کے زیر انتظام علاقے

ٹیکہ لگوانے والے مستفدین

پہلی خوراک

دوسری خوراک

کل خوراک

1

انڈ مان و نکوبار جزائر

3,646

0

3,646

2

آندھرا پردیش

3,54,868

3,434

3,58,302

3

اروناچل پردیش

15,116

0

15,116

4

آسام

1,25,260

198

1,25,458

5

بہار

4,76,076

0

4,76,076

6

چنڈی گڑھ

8,660

143

8803

7

چھتیس گڑھ

2,47,992

29

2,48,021

8

دادر و نگر حویلی

2,914

48

2962

9

دمن اور دیو

1,121

30

1151

10

دہلی

1,79,748

318

1,80,066

11

گوا

12,949

0

12949

12

گجرات

6,76,453

0

6,76,453

13

ہریانہ

1,95,965

325

1,96,290

14

ہماچل پردیش

79,166

0

79,166

15

جموں و کشمیر

1,28,756

807

1,29,563

16

جھارکھنڈ

1,95,291

920

1,96,211

17

کرناٹک

4,95,980

0

4,95,980

18

کیرالہ

3,47,776

0

3,47,776

19

لداخ

2,904

0

2904

20

لکشدیپ

1,776

0

1776

21

مدھیہ پردیش

5,26,783

0

5,26,783

22

مہاراشٹر

6,49,966

0

6,49,966

23

منی پور

19,607

0

19607

24

میگھالیہ

13,084

59

13143

25

میزورم

11,332

0

11332

26

ناگالینڈ

9,476

0

9,476

27

اڈیشہ

4,01,021

0

4,01,021

28

پڈوچیری

5,510

0

5510

29

پنجاب

1,03,687

57

1,03,744

30

راجستھان

6,06,942

0

6,06,942

31

سکم

8,335

0

8335

32

تمل ناڈو

2,27,542

0

2,27,542

33

تلنگانہ

2,78,250

38

2,78,288

34

تریپورہ

68,789

366

69,155

35

اترپردیش

8,58,602

0

8,58,602

36

اتراکھنڈ

1,08,349

0

1,08,349

37

مغربی بنگال

4,95,585

896

4,96,481

38

متفرقات

99,509

0

99,509

میزان

80,44,786

7,668

80,52,454

12 ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں رجسٹرڈ صحت کارکنان میں سے 70 فیصد سے زیادہ کو ٹیکہ لگایا جاچکاہے۔ ان ریاستوں میں بہار،  لکشدیپ، تریپورہ،  اڈیشہ،مدھیہ پردیش، اتراکھنڈ، ہماچل پردیش،چھتیس گڑھ،  کیرالہ،راجستھان،  میزورم اور سکم شامل ہیں۔

 

نمبر شمار

ریاستیں/ مرکز کے زیر انتظام علاقے

کوریج فیصد میں

1.

لکشدیپ

81%

2.

بہار

80.06%

3.

تریپورہ

78.9%

4.

اڈیشہ

76.7%

5.

مدھیہ پردیش

75.8%

6.

اتراکھنڈ

74.8%

7.

ہماچل پردیش

74.5%

8.

چھتیس گڑھ

73%

9.

کیرالہ

71.1%

10.

راجستھان

70.7%

11.

میزورم

70.5%

12.

سکم

70.1%

دوسری جانب،سات ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں، جن میں میگھالیہ، پنجاب، منی پور، تمل ناڈو، چنڈی گڑھ، ناگالینڈ اور پڈوچیری شامل ہیں،میںرجسٹرڈصحت کارکنان  میں 40 فیصد سے بھی کم  ٹیکہ کاری درج ہوئی ہے۔

10 ریاستوں میں سب سے زیادہ ٹیکہ کاری  درج کی گئی ہےجن میں جموں و کشمیر، مغربی بنگال، گجرات، جھارکھنڈ،  آندھرا پردیش، کرناٹک، بہار، اتراکھنڈ، تریپورہ ااور دہلی شامل ہیں ۔

اب تک  کووڈ-19 ویکسین لگوانے کے بعد کل  34 افراد کو اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے،جو مجموعی ٹیکہ کاری کا 0.0004فیصد ہے۔ اسپتال میں داخل ہونے والے 34 معاملوں میں  سے 21 کو علاج کے بعد چھٹی دے دی گئی ہے، جبکہ 11 لوگوں کی موت ہوچکی ہے۔ وہیں دو افراد زیر علاج ہیں۔ گذشتہ 24 گھنٹوں  میں ٹیکہ لگوانے کے بعد کسی بھی شخص کو داخل نہیں کرنا پڑا ہے۔

آج کی تاریخ تک مجموعی طور پر 27 افراد کی موت ہوچکی ہے، جو مجموعی ٹیکہ کاری کا 0.0003فیصد ہے۔ ان میں 11 لوگوں کی اسپتال میں موت ہوئی ہے جبکہ 16 کی موت اسپتال کے باہر ہوئی ہے۔ٹیکہ کاری  کی وجہ سے   کسی سنگین/ شدید ، ٹیکہ کاری کے بعد نامناسب واقعہ(ا ے ای ایف آئی)/ موت کا  ایک بھی معاملہ درج نہیں ہوا ہے۔

گذشتہ 24 گھنٹوں میں تین  نئی اموات درج ہوئی ہیں۔  جس میں سے ٹیکہ کاری کے 9 دنوں  بعد مایوکارڈیئل انفیکشن کی وجہ سے مدھیہ پردیش کے ہردا کے  38 سالہ شخص کی موت ہوئی ہے۔ٹیکہ کاری کے 8 دن بعد ہریانہ میں پانی پت کے رہنے والے ایک اور 35 سالہ شخص کی موت ہوئی ہے جو ایکیوٹ ریسپریٹری ڈسٹریس سینڈروم کے ساتھ نمونیا سے متاثر تھے۔  پوسٹ مارٹم کی رپورٹ کا انتظار ہے۔  راجستھان کے دوسا میں رہنے والے 58 سالہ یک شخص ٹیکہ لگنے کے بعد ڈیوٹی کے دوران گر پڑے اور  اسپتال لانے سے پہلے ان کی موت ہوگئی۔ ان کی پوسٹ مارٹم رپورٹ کا بھی انتظار ہے۔

مرکزی صحت سکریٹری نے آج تمام ریاستوں ور مرکز کے زیر انتظام علاقوںکے ساتھ کووڈ-19 ٹیکہ کاری مہم کی صورتحال اور پیش رفت کا تفصیلی جائزہ لیا۔ انھوں نے سبھی صحت کارکنان اور فرنٹ لائن اہلکاروں سے ویکسین کی پہلی خوراک کے لئے ٹائم لائن پر عمل کرنے پر زور دیا۔ کو-ون ایپ پر دوسری خوراک کی شیڈول بنانے کے لئے  ایس او پی کو ریاستیں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے ساتھ مشترک کیا گیا ہے۔ سکریٹری نے جائزہ میٹنگ کے دوران اسٹاک منیجمنٹ کے مؤثر طریقوں اور اسٹیٹ میڈیا رسپانس سیل کے قیام کی اہمیت پر زور دیا۔

تمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو تحریر کردہ مراسلے میں مرکزی صحت سکریٹری نے بتایا کہ ریپڈ اسسمنٹ سسٹم (آر اے ایس) کے مطابق 97فیصد مستفدین مجموعی طور پر مطمئن  پائے گئے، جبکہ صرف 88.9 فیصد افرد ایسے تھے جنھوں نے ویکسی نیشن کے دوران  ایس ایف آئی کے بارے میں جانکاری دی۔ ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے ریاستوں/ ضلع اے ای ایف آئی کمیٹیوں کے ساتھ باقاعدہ میٹنگیں کرنے پر زور دیا گیا اور  اس امر کو یقینی بنانے کے لئے کہا گیا کہ مستفدین کو ٹیکہ کاری سیشنز میں اے ای ایف آئی کے بارے میں جانکاری فراہم  کرائی جائے۔

کووڈ-19 ٹیکہ کاری کے بعد نگرانی کو  مستحکم کرنے کے لئے صحت سکریٹری نے ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے  اس امر کو بھی یقینی بنانے پر زور دیا کہ ریاستیں اور ضلع سطحوں پر اے ای ایف آئی کے سلسلے میں کمیٹیاں تشکیل  دی جائیں۔  اس سے لوگوں میں ویکسین کے بارے میں اعتماد پید ا ہوگا ۔ ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو صلاح دی گئی ہے کہ ضرورت پڑنے پر مرکزی وزارت صحت  کے ساتھ صورتحال کو مشترک کریں اور راہنمائی حاصل کی جائے۔

*****

ش ح۔ ن ر (14.02.2021)

U NO:

 



(Release ID: 1698027) Visitor Counter : 6