وزارت ماہی پروری، مویشی پروری و ڈیری

پی ایم ایم ایس وائی کے تحت نیشنل پروڈکٹیویٹی کونسل (این پی سی) کے سات بڑے مطالعات


بھارتی  معیشت میں ماہی گیری کے شعبے کی تبدیلی کا حصہ: جناب پرشوتم روپالا

حکومت نے مارچ تک 14659.12 کروڑ روپے کے پروجیکٹوں کو منظوری دی ہے: جناب روپالا

Posted On: 16 MAY 2023 5:26PM by PIB Delhi

پردھان منتری متسیہ سمپدا یوجنا (پی ایم ایم ایس وائی) کے تحت ڈیلیوری ایبلز کو ایک نئی تحریک دینے کے لیے ایک خود مختار ادارہ، نیشنل پروڈکٹیویٹی کونسل (این پی سی) کے ذریعےاقدامات کرنے  کے ساتھ میدانوں کے مطالعات کیے جا رہے ہیں۔ پی ایم ایم ایس وائی کے تحت ان مطالعات کو شروع کرنے کے لیے این پی سی ہیڈکوارٹر، نئی دلی میں منعقد ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے، مرکزی وزیر برائے ماہی پروری، مویشی پروری اور ڈیری، جناب پرشوتم روپالا نے کہا، پی ایم ایم ایس وائی تبدیلی لانے والی اسکیم ثابت ہوئی ہے ۔ متعلقہ فریقوں کے ساتھ حکومت ہند کے اختراعی اور فعال اقدامات سے ایک نیا سمندری انقلاب آ رہا ہے۔ این پی سی کی جانب سے اقدامات کے میدان  کے ایک نئے مطالعہ سے محکمہ کو اپنے ترسیل کے طریقہ کار کو مزید مضبوط بنانے میں مدد ملے گی ۔

جناب روپالا نے بتایا کہ این پی سی کی طرف سے سات شعبوں میں بڑے مطالعات کیے جائیں گے جیسے (i) آندھرا پردیش کے مچھلی کی مارکیٹنگ کے نظام میں بہترین طریقوں کی تشہیر اور ورکشاپ کے ذریعے۔ (ii) گنگا کے بالائی میدان میں پیداوار اور پیداواری صلاحیت کو بڑھانے کے لیے ماہی گیری کے اختراعی طریقوں کی زرعی موسمیاتی زون کے لیے مخصوص نقشہ سازی؛ (iii) اندرون ملک اور سمندری مچھلیوں کے لیے سپلائی چین میں فروخت کنندگان کے ذریعے استعمال کیے جانے والے اسٹوریج کنٹینرز کے ڈیزائن کو بہتر بنانا؛ (iv) غازی پور اور ہاوڑہ مچھلی منڈیوں کے فش مارکیٹنگ کے بنیادی ڈھانچے میں بہتری لانا۔ (v) ورکشاپس کے ذریعے آر اے ایس اور بائیو فلوک ٹیکنالوجیز کی تشخیص اور پھیلاؤ؛ vi) ) پی ایم ایم ایس وائی کے نفاذ کے نگرانی کے طریقہ کار کو مضبوط بنانا اور (vii) اندرون ملک اور سمندری ماہی گیری میں فصل کے بعد ہونے والے نقصانات کا اندازہ لگانا اور ان نقصانات کو کم کرنے کے لیے اقدامات تجویز کرنا۔  این پی سی اس فیلڈ اسٹڈی کو تقریباً نو ماہ میں مکمل کرے گا۔

مرکزی وزیر نے کہا کہ ملک میں ماہی گیری کی بہت زیادہ صلاحیت موجود ہے اور اس کا نامیاتی اور پائیدار طریقے سے فائدہ اٹھانا باقی ہے۔ پردھان منتری متسیا سمپدا یوجنا (پی ایم ایم ایس وائی) ماہی گیری کے شعبے کی صلاحیتوں کو دریافت کرنے کے لیے اس سمت میں ایک قدم ہے۔ ماہی پروری کے شعبے کی اہمیت کو تسلیم کرتے ہوئے، حکومت نے شعوری طور پر پی ایم ایم ایس وائی کو ملک میں ایک پائیدار سمندری معیشت کا انقلاب لانے کے لیے ڈیزائن کیا ہے۔

پیداوار اور پیداواری صلاحیت میں اضافہ کے مقصد کو مدنظر رکھتے ہوئے، پی ایم ایم ایس وائی ماہی گیروں، ماہی پروروں ، نوجوانوں، خواتین، کاروباریوں وغیرہ کے فائدے کے لیے وسیع پیمانے پر سرگرمیاں پیش کرتا ہے۔ اس اسکیم نے کلسٹر کی ترقی، پیمانے کی معیشت، ماہی گیری کے شعبے کی مسابقت میں اضافہ، متعلقہ فریقوں  کے لیے زیادہ آمدنی پیدا کرنے وغیرہ میں سہولت فراہم کی ہے۔ ترقی کی شرح کو تیز کرتے ہوئے اور منظم انداز میں شعبے کو وسعت دیتے ہوئے، پی ایم ایم ایس وائی سے انٹرپرینیورشپ کی ترقی کے لیے ایک سازگار ماحول پیدا ہوا ہے اور نجی شعبے کی شرکت کی حوصلہ افزائی ہوئی ہے۔

حکومت نے ماہی پروری کی صنعت میں مصروف افراد اور گروپوں کو پی ایم ایم ایس وائی کے تحت مالی امداد فراہم کی ہے اور صنعت کو سپورٹ کرنے کے لیے اہم بنیادی ڈھانچہ اور سپلائی چین کی تخلیق کی ہے اور پی ایم ایم ایس وائی کو ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے بہت حوصلہ افزا جواب ملا ہے اور 31.03.2023 تک 14659.12 کروڑ روپے کے پروجیکٹوں کو حکومت نے منظوری دی ہے۔

پی ایم ایم ایس وائی محکمہ ماہی پروری (ڈی او ایف)، مویشی پروری اور دودھ کی پیداوار (ایف اے ایچ ڈی) پر، حکومت ہند کی طرف سے لاگو کی جا رہی ہے۔ پی ایم ایم ایس وائی 20,050 کروڑ روپے کی تخمینہ سرمایہ کاری کے ساتھ ملک میں ماہی گیری کے شعبے کی پائیدار اور ذمہ دارانہ ترقی کے ذریعے سمندری معیشت کا انقلاب لانے کی اسکیم ہے۔ پی ایم ایم ایس وائی مالی سال 21-2020 سے تمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں لاگو کی جا رہی ہے۔ اسے مچھلی کی پیداوار، پیداواری صلاحیت اور معیار سے لے کر ٹیکنالوجی، کٹائی کے بعد کے بنیادی ڈھانچے اور مارکیٹنگ تک ماہی گیری کی ویلیو چین میں خلا کو دور کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے، این پی سی کے ڈائریکٹر جنرل، جناب سندیپ نائک نے کہا کہ بھارت  آبی وسائل پیدا کرنے والا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے اور سب سے اوپر مچھلی برآمد کرنے والے ممالک میں سے ایک ہے۔ بھارت  کی زرعی برآمدات کا تقریباً 17 فیصد حصہ مچھلی اور مچھلی کی مصنوعات سے آتا ہے۔ ماہی گیری کے شعبہ سے  2.8 کروڑ سے زیادہ ماہی گیروں اور کو روزی روٹی فراہم ہوتی  ہے۔ پی ایم ایم ایس وائی ماہی گیروں، ماہی پروروں نوجوانوں، خواتین، کاروباریوں وغیرہ کے فائدے کے لیے وسیع پیمانے پر سرگرمیاں پیش کرتا ہے۔ اس اسکیم نے کلسٹر ڈویلپمنٹ، معیشت، ماہی گیری کے شعبے کی مسابقت کو بڑھانے اور متعلقہ فریقوں  کے لیے زیادہ آمدنی پیدا کرنے میں سہولت فراہم کی ہے۔ ایک منظم انداز میں سیکٹر کی ترقی اور توسیع کو آگے بڑھاتے ہوئے، پی ایم ایم ایس وائی نے انٹرپرینیورشپ کی ترقی اور نجی شعبے کی شرکت کی حوصلہ افزائی کے لیے ایک سازگار ماحول پیدا کیا ہے۔

1958 میں قائم کیا گیا، نیشنل پروڈکٹیویٹی کونسل (این پی سی) ایک خودمختار ادارہ ہے جو صنعت اور اندرونی تجارت کے فروغ (ڈی پی آئی آئی ٹی)، وزارت تجارت اور صنعت، حکومت ہند کے تحت ہے۔ این پی سی کو متعلقہ فریقوں  کے لیے قدر میں اضافے کے لیے پی ایم ایم ایس وائی کے تحت بڑے کام کے مطالعے کی ذمہ داری سونپی گئی ہے۔

این پی سی ہیڈکوارٹر، نئی دلی میں ماہی پروری، مویشی پروری  اور ڈیری کے وزیر جناب پرشوتم روپالا،  جناب جتندرا ناتھ سوین، سکریٹری، فشریز ڈپارٹمنٹ، جناب سندیپ کمار نائک، ڈائریکٹر جنرل، این پی سی اور ڈاکٹر ابھیلکش لکھی، کی موجودگی میں۔ او ایس ڈی، فشریز ڈپارٹمنٹ اور دیگر افسران نے 2015 میں این پی سی کو تفویض کردہ کام کے علاقے کے بڑے مطالعے کا آغاز کیا۔

۔۔۔۔

   

ش ح۔ا س۔  ت ح ۔                                              

16.05.2023

U5190



(Release ID: 1924611) Visitor Counter : 106


Read this release in: English , Hindi , Tamil , Telugu