وزارت خزانہ
azadi ka amrit mahotsav g20-india-2023

‏ ٹیکسٹائل اور زراعت کے علاوہ دیگر اشیا پر بنیادی کسٹم ڈیوٹی کی شرح 21 سے کم کرکے 13 کردی گئی‏


‏الیکٹرک گاڑیوں‏ ‏میں استعمال ہونے والی بیٹریوں کے لیے لیتھیم آئن سیلز کی تیاری کے لیے کیپٹل اشیا اور مشینری کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی سے استثنیٰ

باورچی خانے کی برقی چمنیوں ‏کے لیے ڈیوٹی اسٹرکچر میں ترمیم

ڈینیچرڈ ایتھائل الکوحل کی درآمد کو کسٹم ڈیوٹی‏ ‏سے مستثنیٰ کیا گیا ‏

ایکویٹک فیڈ کے گھریلو مینوفیکچررز کو بڑی راحت

لیبارٹری میں تیار کردہ ہیروں کی تیاری میں استعمال ہونے والے بیجوں پر کوئی کسٹم ڈیوٹی نہیں

 مخصوص سگریٹوں‏ ‏پر نیشنل ڈیزاسٹر کنٹنجنٹ ڈیوٹی (این سی سی ڈی) میں تقریباً 16 فیصد اضافہ‏

Posted On: 01 FEB 2023 12:54PM by PIB Delhi

‏برآمدات کو فروغ دینے، گھریلو مینوفیکچرنگ کو فروغ دینے، گھریلو ویلیو ایڈیشن کو بڑھانے اور سبز توانائی اور نقل و حرکت کی حوصلہ افزائی کرنے کے مقصد سے،  مرکزی وزیر خزانہ اور کارپوریٹ امور محترمہ نرملا سیتارمن نے آج پارلیمنٹ میں مرکزی بجٹ 2023-24 پیش کیا۔ انھوں نے زور دیا کہ ’’کم ٹیکس شرحوں کے ساتھ ایک آسان ٹیکس ڈھانچہ تعمیل کے بوجھ کو کم کرنے اور ٹیکس انتظامیہ کو بہتر بنانے میں مدد کرتا‏‏ ہے۔‘‘‏

‏وزیر خزانہ نے ٹیکسٹائل اور زراعت کے علاوہ دیگر اشیا پر بیسک کسٹم ڈیوٹی (بی سی ڈی) کی شرح 21 سے کم کرکے 13 کرنے کی تجویز پیش کی۔ اس کی وجہ سے کھلونوں، سائیکلوں، آٹوموبائل اور نیفتھا سمیت کچھ اشیا پر بنیادی کسٹم ڈیوٹیز، سیس اور سرچارجز میں معمولی تبدیلی کی ضرورت ہے۔‏

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001TGJB.jpg

‏سبز نقل و حرکت‏

‏مخلوط کمپریسڈ نیچرل گیس پر ٹیکسوں کی پرتوں سے بچنے کے لیے وزیر خزانہ نے اس میں شامل جی ایس ٹی ادا شدہ کمپریسڈ بائیو گیس پر ایکسائز ڈیوٹی سے استثنیٰ دینے کی تجویز پیش کی۔ گرین موبلٹی کو مزید فروغ دینے کے لیے انھوں نے الیکٹرک گاڑیوں میں استعمال ہونے والی بیٹریوں کے لیے لیتھیم آئن سیلز کی تیاری کے لیے درکار کیپیٹل اشیا اور مشینری کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی سے استثنیٰ میں توسیع کا اعلان کیا۔‏

آئی ٹی اور الیکٹرانکس‏

‏محترمہ سیتارمن نے کچھ پرزوں اور کیمرہ لینس جیسے ان پٹ کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی میں راحت دینے اور بیٹریوں کے لیے لیتھیم آئن سیلز پر رعایتی ڈیوٹی کو مزید ایک سال تک جاری رکھنے کی تجویز پیش کی تاکہ موبائل فون کی تیاری میں گھریلو ویلیو ایڈیشن کو مزید گہرا کیا جاسکے۔ موصوفہ نے کہا کہ بھارت میں موبائل فون کی پیداوار 2014-15میں تقریباً 18,900 کروڑ روپے مالیت کے 5.8کروڑ یونٹس سے بڑھ کر گذشتہ مالی سال میں 31,2,75 کروڑ روپے سے زیادہ مالیت کے 31کروڑ یونٹس تک پہنچ گئی ہے۔‏

‏انھوں نے ٹی وی پینلز کے اوپن سیلز کے حصوں پر بی سی ڈی کو کم کرکے 2.5 فیصد کرنے کی تجویز بھی پیش کی تاکہ ٹیلی ویژن کی تیاری میں ویلیو ایڈیشن کو فروغ دیا جاسکے۔‏

برقی‏ آلات

‏وزیر خزانہ نے باورچی خانے کی برقی چمنی پر بی سی ڈی کو 7.5 فیصد سے بڑھا کر 15 فیصد اور ہیٹ کوائلز پر 20 فیصد سے کم کرکے 15 فیصد کرنے کی تجویز پیش کی۔ اس تبدیلی سے ڈیوٹی ڈھانچے کے انورژن میں بہتری آئے گی اور برقی باورچی خانے کی چمنیوں کی مینوفیکچرنگ کی حوصلہ افزائی ہوگی۔‏

‏کیمیکل اور پیٹرو کیمیکل‏

‏ایتھنول بلینڈنگ پروگرام کی حمایت کرنے اور توانائی کی منتقلی کے لیے بھارت کی کوششوں کو آسان بنانے کے لیے، وزیر موصوف نے بی سی ڈی کو ڈینیچرڈ ایتھائل الکوحل پر استثنیٰ دینے کی تجویز پیش کی۔ انھوں نے گھریلو فلورو کیمیکلز کی صنعت کو مسابقتی بنانے کے لیے ایسڈ گریڈ فلورسپار پر بی سی ڈی کو 5 فیصد سے کم کرکے 2.5 فیصد کرنے کا بھی اعلان کیا۔ ایپیکولورہائیڈرن کی تیاری میں استعمال کے لیے خام گلیسرین پر بی سی ڈی کو بھی 7.5٪ سے کم کرکے 2.5٪ کرنے کی تجویز دی گئی ۔‏

سمندری مصنوعات‏

‏وزیر خزانہ نے سمندری مصنوعات کی برآمدی مسابقت کو بڑھانے کے لیے جھینگے فیڈ کی گھریلو تیاری کے لیے کلیدی ان پٹ پر بی سی ڈی کو کم کرنے کی تجویز پیش کی۔ انھوں نے کہا کہ گذشتہ مالی سال میں سمندری مصنوعات کی برآمدات میں سب سے زیادہ اضافہ درج کیا گیا ہے جس سے ملک کی ساحلی ریاستوں کے کاشتکاروں کو فائدہ ہوا ہے۔‏

لیب میں تیار کردہ ہیرے‏

‏بجٹ میں لیب گرون ڈائمنڈز کی مینوفیکچرنگ میں استعمال ہونے والے بیجوں پر بی سی ڈی کو موجودہ 5 فیصد سے ختم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ قدرتی ہیروں کی صنعت کو کاٹنے اور پالش کرنے میں عالمی ٹرن اوور میں بھارت کا حصہ تقریباً تین چوتھائی ہے۔ قدرتی ہیروں کے ذخائر میں کمی کی بنا پر صنعت لیب میں تیارکردہ ہیروں کی طرف بڑھ رہی ہے۔‏

قیمتی دھاتیں‏

‏وفاقی وزیر نے ڈیوٹی کے فرق کو بڑھانے کے لیے سونے اور پلاٹینم کی ڈور اور سلاخوں سے بنی اشیا پر ڈیوٹی بڑھانے کی تجویز پیش کی۔ رواں مالی سال کے اوائل میں سونے اور پلاٹینم کی ڈور اور سلاخوں پر کسٹم ڈیوٹی میں اضافہ کیا گیا تھا۔ انھوں نے چاندی کے ڈور، سلاخوں اور اشیا پر درآمدی ڈیوٹی بڑھانے کی تجویز بھی پیش کی تاکہ انھیں سونے اور پلاٹینم سے ہم آہنگ کیا جاسکے۔‏

دھاتیں‏

‏سٹیل سیکٹر کے لیے خام مال کی دستیابی کو آسان بنانے کے لیے وزیر خزانہ نے سی آر جی او اسٹیل، فیرس سکریپ اور نکل کیتھوڈ کی تیاری کے لیے خام مال پر بی سی ڈی سے استثنیٰ جاری رکھنے کی تجویز پیش کی۔ انھوں نے تانبے کے اسکریپ پر 2.5 فیصد کی رعایتی بی سی ڈی کو جاری رکھنے کی بھی تجویز پیش کی تاکہ ثانوی تانبے کے پروڈیوسروں کے لیے خام مال کی دستیابی کو یقینی بنایا جاسکے جو بنیادی طور پر ایم ایس ایم ای سیکٹر میں ہیں۔‏

کمپاؤنڈڈ ربڑ

‏محترمہ سیتارمن نے کمپاؤنڈڈ ربڑ پر بی سی ڈی کی شرح کو 10 فیصد سے بڑھا کر  25 فیصد یا 30 روپے فی کلو گرام کرنے کی تجویز پیش کی، جو لیٹیکس کے علاوہ قدرتی ربڑ کے مساوی ہے۔‏

سگریٹ‏

‏وزیر خزانہ نے مخصوص سگریٹوں پر نیشنل ڈیزاسٹر کنٹنجنٹ ڈیوٹی (این سی سی ڈی) میں تقریباً 16 فیصد اضافے کی تجویز پیش کی۔ آخری بار اس پر تین سال پہلے نظر ثانی کی گئی تھی۔‏

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002KVEF.jpg

جی ایس ٹی قوانین میں قانونی تبدیلیاں‏

‏سی جی ایس ٹی ایکٹ کی دفعہ 132 اور 138 میں ترمیم کی تجویز حسب ذیل ہے:‏

  • ‏جی ایس ٹی کے تحت مقدمہ چلانے کے لیے ٹیکس کی کم از کم حد ایک کروڑ روپے سے بڑھا کر 2 کروڑ روپے کی جائے، سوائے اشیا یا خدمات کی فراہمی یا دونوں کی فراہمی کے بغیر انوائسز جاری کرنے کے جرم کے۔‏
  • ‏کمپاؤنڈنگ کی رقم کو ٹیکس کی رقم کے 50٪ سے 150٪ کی موجودہ حد سے کم کرکے 25٪ سے 100٪ کی حد تک کم کی جائے۔‏
  • ‏سی جی ایس ٹی ایکٹ، 1 کی دفعہ 132 کی ذیلی دفعہ (2017) کی شق (جی)، (جے) اور (کے) کے تحت بیان کردہ کچھ عدم تعمیل کو غیر مجرمانہ قرار دیا جائے۔‏
  • ‏کسی بھی افسر کو اس کے فرائض کی انجام دہی میں رکاوٹ ڈالنا یا روکنا؛‏
  • ‏جان بوجھ کر مادی شواہد کو مسخ کرنا۔‏
  • ‏معلومات کی فراہمی میں ناکامی۔‏

‏محترمہ سیتارمن نے سی جی ایس ٹی ایکٹ، 37 کی دفعہ 39، 44، 52 اور 2017 میں ترمیم کرنے کی بھی تجویز پیش کی تاکہ متعلقہ ریٹرن / اسٹیٹمنٹ داخل کرنے کی مقررہ تاریخ سے زیادہ سے زیادہ ‏‏تین سال‏‏ کی مدت تک ریٹرن / اسٹیٹمنٹ داخل کرنے کو محدود کیا جاسکے۔‏

***

(ش ح – ع ا)

U. No. 1065



(Release ID: 1895364) Visitor Counter : 183