وزارت خزانہ

سماجی شعبے میں حکومت کے اخراجات میں خاطر خواہ اضافہ


سماجی شعبے کے اخراجات میں مالی سال2016 میں 9 اعشاریہ ایک لاکھ کروڑسے بڑھ کر مالی سال 2023 میں 21 اعشاریہ صفرتین لاکھ کروڑکا اضافہ

06-2025 اور 2006 اور 20-2019 کے 41 اعشاریہ 5 کروڑ لوگ غربت سے نکلے

Posted On: 31 JAN 2023 1:39PM by PIB Delhi

آج پارلیمنٹ میں خزانہ اور کارپوریٹ امور کی مرکزی وزیر محترمہ نرملاسیتارمن کی طرف سے پیش کیے گئے 23-2022 کے اقتصادی سروے میں بتایا گیا ہے کہ دنیا عالمی وبا کے اثرات سے نکل رہی ہے اور اس جاری جنگ سے باہر آرہی ہے۔جب کہ ہندوستان امرت کال میں داخل ہونے کے لیے تیار ہیں۔یہ ایک ایسا دور ہے جہاںمعاشی ترقی کوسماجی بہبودکاتعاون حاصل ہے ۔ جہاں ہندوستان آج  اس بات کے تئیں عہد بند ہے کہ کوئی پیچھے نہ رہ جائے اور اس بات کو یقینی بنایا گیا ہے کہ اس کی ترقی کے اثرات اور فائدے اس کی متنوع اور وسیع آبادی تک پہنچیں جو بے شمار ثقافتوں، زبانوں اور جغرافیوں سے ماورا ہیں، جو ملک کی اصل دولت ہیں۔

اقتصادی سروے میں مزید کہا گیا ہے کہ عصری منظر نامے میں سماجی بہبود پر توجہ دینا سب سے زیادہ موزوں ہے کیونکہ ہندوستان نے اقوام متحدہ کے ایس ڈی جیز 2030 کو اپنایا ہے، جو کہ جامع، دور رس، اور لوگوں پر مرکوز عالمگیر اور تغیراتی مقاصد اور اہداف کا مجموعہ ہیں۔  ان 17 اہداف میں سےبیشترکا تعلق افراد کی سماجی بہبود سے ہے، جن کا حل مندرجہ ذیل ہے: "ہم نے اب اور 2030 کے درمیان ہر جگہ غربت اور بھوک کو ختم کرنے کا عزم کیا ہے۔دنیا کےممالک کے اندر اور ان کے درمیان عدم مساوات کا مقابلہ کرنا، پرامن، انصاف پسند اور جامع معاشروں کی تعمیر کے لیے؛ انسانی حقوق کا تحفظ اور صنفی مساوات اور خواتین اور لڑکیوں کو بااختیار بنانے کے لیے اور کرہ ارض اور اس کے قدرتی وسائل کے پائیدار تحفظ کو یقینی بنانا بھی شامل ہے۔ ہم قومی ترقی اور صلاحیتوں کی مختلف سطحوں کو مدنظر رکھتے ہوئے پائیدار، جامع اور پائیدار اقتصادی ترقی، مشترکہ خوشحالی اور سب کے لیے اچھے کام کے لیے حالات پیدا کرنے کا بھی عزم رکھتے ہیں۔

سماجی شعبے کے اخراجات

سماجی خدمات پر حکومت کے اخراجات میں مالی سال 2016 کے بعد سے رجحان میں اضافہ دیکھا گیا ہے، جس میں ملک کے شہریوں کی سماجی بہبود کے بہت سے پہلوؤں پر توجہ دی گئی ہے۔ مالی سال 2018 سے مالی سال 2020 تک حکومت کے کل اخراجات میں سماجی خدمات پر اخراجات کا حصہ تقریباً 25 فیصد رہا ہے۔ مالی سال 2023 (بی ای) میں یہ بڑھ کر 26.6 فیصد ہو گیا۔ اقتصادی سروے کے مطابق، سماجی خدمات کے اخراجات میں مالی سال 2020 کے مقابلے میں مالی سال 2021 میں 8.4 فیصد اور مالی سال 2021 کے مقابلے میں مالی سال 2022 میں 31.4 فیصد کا مزید اضافہ دیکھا گیا، جو کہ وبائی سال تھے، جس کے لیے خاص طور پر صحت اور تعلیم کے شعبوں میں اضافی اخراجات کی ضرورت تھی۔جب کہ مرکز اور ریاستی حکومتوں کے سماجی شعبے کے اخراجات16-2015 میں 9.15 لاکھ کروڑ تھے، یہ مالی سال 2023 میں مسلسل بڑھ کر 21.3 لاکھ کروڑ ہو گئے۔

اقتصادی سروے کے مطابق، سماجی خدمات پر کل اخراجات میں صحت پر خرچ کا حصہ، مالی سال 2019 میں 21 فیصد سے بڑھ کر مالی سال 2023میں 26 فیصد ہو گیا ہے۔ پندرہویں مالیاتی کمیشن نے اپنی رپورٹ میں سفارش کی تھی کہ یونین اور ریاستوں کے صحت عامہ کے اخراجات کو 2025 تک جی ڈی پی(مجموعی گھریلو پیداوار) کے 2.5 فیصد تک پہنچنے کے لیے ترقی پسند انداز میں بڑھایا جائے (ایف ایف سی رپورٹ، پیرا 9.41، iii)۔ اس مقصد کو مدنظر رکھتے ہوئے، صحت کے شعبے پر مرکزی اور ریاستی حکومتوں کا بجٹ خرچ مالی سال 2023 میں مجموعی گھریلو پیداوار (جی ڈی پی) کے 2.1 فیصد اورمالی سال 2022 میں 2.2 فیصد تک پہنچ گیا، جبکہ مالی سال 2021 میں یہ 1.6 فیصد تھا۔

غربت

غربت کو بنیادی طور پرمالیہ کی کمی کے لحاظ سے ماپاجاتا ہے، جو ایک شاندار زندگی گزارنے کا ذریعہ ہے۔ تاہم، تشریح کی جائے تو  وسیع اثرات ہوتے ہیں اور ایک ہی وقت میں متعدد نقصانات کا باعث بنتے ہیں۔ جیسے ناقص صحت یا غذائیت کی کمی، صفائی ستھرائی کی کمی، پینے کے صاف پانی یا بجلی، تعلیم کا ناقص معیار وغیرہ۔ لہٰذا کثیر جہتی غربت کے اقدامات کا استعمال ایک زیادہ جامع تصویر پیش کرنے کے لیے کیا جاتا ہے۔

ایم پی آئی  سے متعلق یو این ڈی پی کی 2022 کی رپورٹ اکتوبر 2022 میں جاری کی گئی تھی اور اس میں 111 ترقی پذیر ممالک شامل ہیں۔ جہاں تک ہندوستان کا تعلق ہےتو21-2019 کے سروے کے اعداد و شمار استعمال کیے گئے ہیں۔ ان تخمینوں کی بنیاد پر، ہندوستان میں 16.4 فیصد آبادی (2020 میں 228.9 ملین لوگ) کی وجوہات کی بنا پر غریبی میں زندگی گزارتے ہیں جبکہ اضافی 18.7 فیصدآبادی کوکئی لحاظ سے غربت (2020 میں 260.9 ملین افراد) کے زمرے میں رکھا گیا ہے۔

رپورٹ کے نتائج بتاتے ہیں کہ ہندوستان میں06-2005 اور 21-2019 کے درمیان 41.5 کروڑ لوگ غربت سے نکل گئے۔ یہ واضح طور پر ظاہر کرتا ہے کہ 2030 تک ہرعمر کے مردوں، عورتوں اور بچوں کی تعداد کو جو غربت میں زندگی گزار رہے ہیں آدھا کرکے ایس ڈی جی کے1.2کے اہداف  کوحاصل کرنا ممکن ہے۔

سماجی خدمات کی فراہمی کے لیے آدھار:

ریاست کی طرف سے سماجی خدمات کی فراہمی کے لیے آدھار ایک ضروری ذریعہ ہے۔ 318 مرکزی اسکیمیں اور 720 سے زیادہ ریاستی ڈی بی ٹی اسکیمیں آدھار ایکٹ، 2016 کے زمرے 7 کے تحت نوٹی فائی کی گئی ہیں  اور مختلف اقدامات جیسے ڈائریکٹ بینیفٹ ٹرانسفر، آدھار قابل ادائیگی کے نظام،جے اے ایم  (جن دھن، آدھار، اور موبائل) تثلیث، ون نیشن ون۔ راشن کارڈ، کو-ون،  مالی خدمات ،سبسڈی اور فوائد کی نشانہ بندکی فراہمی  کے لیے ک آدھاراستعمال کرتے ہیں ۔

اقتصادی سروے کے مطابق، 135.2 کروڑ آدھار اندراجات ہوئے ہیں، 75.3 کروڑ لوگوں نے راشن حاصل کرنے کے لیے اپنے آدھار کو راشن کارڈ کے ساتھ جوڑ لیا ہے۔اس میں  مزید بتایا گیا ہے کہ ایل پی جی سبسڈی کے لیے 27.9 کروڑ لوگوں نے آدھار کو کھانا پکانے کے گیس کنکشن کے ساتھ منسلک کیا ہے اور 75.4 کروڑ بینک اکاؤنٹس آدھار سے منسلک ہیں، اور 1500 کروڑ سے زیادہ لین دین آدھار سے ہونے والی ادائیگی کے نظام (اے ای پی ایس) کے ذریعے ہوئے ہیں۔

معیشت کی مجموعی ترقی کے ساتھ، معیارِ زندگی کا تصور وسیع ہو گیا ہے، جس میں آمدنی کے روایتی میٹرکس (جو خوراک اور رہائش جیسی بنیادی ضروریات کی دستیابی کا تعین کرتے ہیں) اور تعلیم کی سطح کے مقابلے میں بہت زیادہ عناصر کو شامل کیا گیا ہے۔ اب اس میں پینے کے صاف پانی تک رسائی، صفائی ستھرائی، روزگار کے امکانات، صحت کی دیکھ بھال، سماجی تحفظ، رابطے وغیرہ شامل ہیں۔ یہ سب مل کر معیار زندگی کا تعین کرتے ہیں۔ اس لیے سماجی زندگی پر توجہ مرکوز کرنے کا مقصد "سب کا ساتھ، سب کا وکاس اور سب کا وشواس" کے وژن کو حاصل کرنا ہے۔

*************

( ش ح ۔ ح ا۔ج ا(

U. No. 1034



(Release ID: 1895027) Visitor Counter : 245