صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav g20-india-2023

صحت اور خاندانی بہبود کے مرکزی وزیر،  ڈاکٹر منسکھ مانڈاویا نے ورچوئل طریقے سے قومی یوم انسداد جذام سے خطاب کیا


’’مکمل حکومت، مکمل معاشرے کی حمایت، تال میل اور تعاون کے ساتھ ایس ڈی جی سے تین سال پہلے ہی، 2027 تک جذام سے پاک بھارت کی ہدف حاصل کر سکتے ہیں‘‘

جذام کا پروگرام، جلد پتہ لگانے، معذوری اور جسمانی نقص کو روکھنے کے لیے مفت علاج اور موجودہ جسمانی نقص والے لوگوں کی طبی بحالی پر توجہ مرکوز کرنا ہے : ڈاکٹر بھارتی پروین پوار

جسمانی نقص دور کرنے کی خاطر سرجری کے لیے مریضوں کے فلاحی الاؤنس کو 8000 روپے سے بڑھا کر 12000 روپے کیا گیا: : ڈاکٹر بھارتی پروین پوار

جذام کے پھیلنے کی شرح 10 ہزار آبادی پر 0.69 (15-2014) سے کم ہوکر 0.45 (22-2021) ہو گئی ہے

 سالانہ نئے مریضوں کی شرح فی ایک لاکھ آبادی پر 9.73 (15-2014) سے کم ہوکر 5.52 (22-2021) ہوگئی ہے

ہمیں جذام سے متعلق بدنامی کے بارے میں بیداری پیدا کرنےکی ضرورت ہے: ڈاکٹر بھارتی پروین پوار

Posted On: 30 JAN 2023 3:23PM by PIB Delhi

نئی دلی،30 جنوری، 2023 / ’’بھارت ترقی کر رہا ہے اور جذام کے نئے کیسز ہر سال کم ہو رہے ہیں۔  تمام  حکومت، پورے معاشرے کی حمایت، ہم آہنگی اور تعاون کے ساتھ، ہم ایس ڈی جی سے تین سال پہلے، 2027 تک جذام مکت بھارت کا ہدف حاصل کر سکتے ہیں۔‘‘ یہ بات صحت اور خاندانی بہبود کے مرکزی وزیر ڈاکٹر منسکھ مانڈاویا نے آج یہاں قومی یوم جذام کے خلاف منعقدہ تقریب میں اپنے ویڈیو خطاب کے دوران کہی۔ اس سال کا موضوع ’’آئیے جذام کے مرض سے لڑیں اور جذام کو ایک تاریخ بنائیں‘‘۔

جذام سے متاثرہ لوگوں کے لیے مہاتما گاندھی کی مستقل فکر کا اعادہ کرتے ہوئے، مرکزی وزیر صحت نے کہا کہ جذام کے علاج کے لیے تشویش اور عزم کی جڑیں ہماری تاریخ میں موجود ہیں۔  ’’ان کا وژن نہ صرف ان کا علاج کرنا تھا بلکہ انہیں ہمارے معاشرے میں مرکزی دھارے میں لانا بھی تھا۔ قومی جذام کے خاتمے کے پروگرام کے تحت اس ملک سے جذام کے خاتمے کے لیے ہماری کوششیں ان کے وژن کو خراج تحسین ہے۔ ہم 2005 میں قومی سطح پر فی 10,000 آبادی پر 1 کیس کے پھیلاؤ کی شرح حاصل کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔ وقت کا تقاضا ہے کہ جذام کے خاتمے کے لیے مسلسل کوششیں کی جائیں۔ یہ ایک قابل علاج بیماری ہے، تاہم اگر ابتدائی مرحلے میں اس کا پتہ نہ لگایا جائے اور اس کا علاج نہ کیا جائے تو یہ متاثرہ شخص میں مستقل معذوری اور بگاڑ کا باعث بن سکتی ہے۔ جو کمیونٹی میں ایسے افراد اور ان کے خاندان کے افراد کے خلاف امتیازی سلوک کا باعث بن سکتا ہے‘‘۔

انہوں نے مزید کہا ’’وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی دور اندیش قیادت میں، ہم نے بیماری کی نشوونما کو روکنے کے لیے جامع اقدامات اپنائے ہیں۔ سال 2016 سے، جذام کے کیس کا پتہ لگانے کی مہم (ایل سی ڈی سی) کے تحت فعال طور پر کیسز کا پتہ لگانے کے لیے نئی کوششیں کی گئیں‘‘ ۔

جذام کے خاتمے کے قومی پروگرام کی کوششوں پر زور دیتے ہوئے، مرکزی وزیر مملکت ڈاکٹر بھارتی پروین پوار نے کہا، ’’ہمارا ملک کا جذام پروگرام جلد از جلد کیسوں کا پتہ لگانے اور ان کا علاج کرنے کی کوشش کرتا ہے، معذوری کی نشوونما کو روکنے کے لیے مفت علاج فراہم کرتا ہے اور خرابی، موجودہ خرابیوں والے افراد کی طبی بحالی۔ مریضوں کو ان کی تعمیر نو کی سرجری کے لیے ویلفیئر الاؤنس 8,000 روپے سے بڑھا کر 12,000 روپے کردیا گیا ہے‘‘۔

پروگرام کی کامیابیوں پر روشنی ڈالتے ہوئے، انہوں نے یہ بھی بتایا کہ جذام کے پھیلاؤ کی شرح 15-2014 میں 0.69 فی 10,000 آبادی سے کم ہو کر 22-2021 میں 0.45 رہ گئی ہے۔ مزید، سالانہ نئے کیسز کا پتہ لگانے کی شرح فی 100,000 آبادی میں 15-2014 میں 9.73 سے کم ہو کر 22-2021 میں 5.52 رہ گئی ہے۔  انہوں نے مزید کہا’’یہ پروگرام بیداری پھیلانے اور بیماری سے منسلک بدنما داغ کو کم کرنے کے لیے بھی کام کرتا ہے۔ آشا پر مبنی سرویلنس برائے جذام کے مشتبہ افراد (اے بی ایس یو ایل ایس) کو متعارف کراتے ہوئے نگرانی کو بھی مضبوط کیا گیا جہاں نچلی سطح کے کارکنان مشتبہ افراد کی جانچ اور رپورٹنگ میں مسلسل مصروف رہتے ہیں۔ فوکسڈ لیپروسی کمپین (ایف ایل سی) کے تحت ان علاقوں پر خصوصی زور دیا گیا جہاں تک رسائی مشکل تھی یا جن میں بچوں کے کیسز اور معذوری کے کیسز تھے۔ 2015 سے، این ایل ا ی کے تحت مسلسل کوششوں سے، ہم جذام کی وجہ سے معذوری کے بہت سے کیسز کو روکنے میں کامیاب رہے ہیں‘‘۔ انہوں جذام سے جڑے بدنما داغ کے بارے میں بیداری پھیلانے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

جذام کے خاتمے کے 2027 کے ہدف پر زور دیتے ہوئے، جناب۔ ایس گوپال کرشنن، خصوصی سکریٹری، مرکزی وزارت صحت اور خاندانی بہبود نے نوٹ کیا کہ 2027 کا آخری میل ہدف اب تک حاصل کیے گئے ہدف سے زیادہ سخت ہوگا۔ لیکن تجربات، پوری حکومت اور پورے معاشرے کے نقطہ نظر، نئی حکمت عملیوں اور نکوستھ 2.0 پورٹل کے ساتھ، ہم اسے حاصل کر سکتے ہیں۔

نیشنل اسٹریٹجک پلان اور روڈ میپ برائے جذام (27-2023) اور جذام میں اینٹی مائکروبیل ریزسٹنس (اے ایم آر) سرویلنس کے لیے نیشنل گائیڈ لائنز بھی اس تقریب کے دوران نیکشٹھ2.0 پورٹل کے آغاز کے ساتھ جاری کی گئیں۔ حکمت عملی اور روڈ میپ جذام کے خلاف مہم کو آگے بڑھانے، ٹرانسمیشن کو روکنے، کیس کا پتہ لگانے کی کوششوں کو تیز کرنے اور ایک مضبوط نگرانی کے بنیادی ڈھانچے کو برقرار رکھنے میں مدد کرے گا۔ چونکہ بھارت جذام کے خاتمے کی طرف بڑھ رہا ہے، اس نظام کو تیار کرنے کے لیے مضبوط اے ایم آر نگرانی کے نظام کی ضرورت ہے۔ یہ رہنما خطوط جذام کے مریضوں میں اے ایم آر نگرانی کے لیے ایک مضبوط نگرانی کے نظام کو تیار کرنے اور اسے برقرار رکھنے میں تکنیکی رہنمائی فراہم کریں گے۔ نیکشٹھ 2.0 قومی جذام کے خاتمے کے پروگرام (این ایل ای پی) کے تحت جذام کے معاملات کے انتظام کے لیے ایک مربوط پورٹل ہے۔ یہ مرکز، ریاست اور ضلع کی سطحوں پر اشارے کی شکل میں ڈیٹا کی موثر ریکارڈنگ، تجزیہ اور رپورٹنگ میں مدد کرے گا۔

ڈاکٹر بھارتی پروین پوار نے ملک گیر بیداری مہم کے ایک حصے کے طور پر جذام کے ساتھ جڑے بدنما مسائل کو حل کرنے کے لیے ایک ویڈیو بھی لانچ کیا۔

محترمہ رولی سنگھ، ایم او ایچ ایف ڈبلیو، اے ایس ایند ایم ڈی (این ایچ ایم)، جناب راجیو مانجھی، جوائنٹ سکریٹری جذام، پروفیسر (ڈاکٹر) اتل گوئل، ڈی جی ایچ ایس، ڈاکٹر روڈریکو ایچ آفرین، بھارت میں ڈبلیو ایچ او کے نمائندے، ڈاکٹر سدرسن منڈل، ڈی ڈی جی سمیت دیگر معززین اور عہدیدار اس تقریب میں موجود تھے۔

.................

ش ح ۔ وا ۔ اع

U – 956



(Release ID: 1894764) Visitor Counter : 104