صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت

بھارت نے بچوں کی شرح اموات میں کمی لانے میں اہم کامیابیاں حاصل کی ہیں


مسلسل گراوٹ کے رجحان کے بعد ایم آر ، یو 5 ایم آر اور این ایم آر میں مزید کمی آئی ہے

بھارت وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت کے تحت مخصوص اقدامات ، مرکز – ریاست کی مضبوط ساجھیداری اور صحت ورکروں کی محنت کے ساتھ بچوں کی شرح اموات کے ایس ڈی جی 2030 کے اہداف کو پورا کرنے کے لئے تیار ہے: ڈاکٹر منسکھ مانڈویا

Posted On: 23 SEP 2022 2:39PM by PIB Delhi

ایک اہم سنگ میل طے کرتے ہوئے ، بھارت نے بچوں کی شرح اموات کو کم  کرنے میں تاریخی کامیابی حاصل کی ہے۔ رجسٹرار جنرل آف انڈیا ( آر جی آئی ) کے ذریعہ 22 ستمبر ، 2022 ء کو جاری کردہ نمونہ رجسٹریشن سسٹم ( ایس آر ایس ) کی  اعداد و شمار پر مبنی رپورٹ 2020 کے مطابق، ملک 2014 ء کے بعد سے 2030 ء تک پائیدار ترقیاتی اہداف ( ایس ڈی جی ) کو حاصل کرنے کی سمت میں آئی ایم آر ، یو 5 ایم آر  اور این ایم آر میں مسلسل کمی کا مشاہدہ کر  رہا ہے۔

صحت اور خاندانی بہبود کے مرکزی وزیر ڈاکٹر منسکھ مانڈویا نے ، اس کامیابی پر قوم کو مبارکباد پیش کی اور بچوں کی شرح اموات کو کم کرنے کے لئے انتھک محنت کرنے کے لئے تمام صحت کارکنوں، دیکھ بھال کرنے والوں اور کمیونٹی کے اراکین کا شکریہ ادا کیا۔  انہوں نے کہا کہ ’’ 2014 ء کے بعد سے مسلسل کمی ہو رہی ہے ، جیسا کہ ایس آر ایس 2020 میں انکشاف کیا گیا ہے۔  انہوں نے کہا کہ بھارت ، وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں مخصوص اقدامات ، مرکز – ریاست کی مضبوط ساجھیداری اور صحت ورکروں کی محنت کے ساتھ بچوں کی شرح اموات کے ایس ڈی جی 2030 کے اہداف کو پورا کرنے کے لئے تیار ہے ۔

.

علامت

ایس آر ایس 2014

ایس آر ایس 2019

ایس آر ایس 2020

Crude Birth Rate (CBR)

21.0

19.7

19.5

Total Fertility Rate

2.3

2.1

2.0

Early Neonatal Mortality Rate (ENMR) – 0- 7 days

20

16

15

Neonatal Mortality Rate (NMR)

26

22

20

Infant Mortality Rate (IMR)

39

30

28

Under 5 Mortality Rate (U5MR)

45

35

32

 

مسلسل گراوٹ کے رجحان کے بعد آئی ایم آر ، یو 5 ایم آر اور این ایم آر میں مزید کمی آئی ہے:

  • ملک کے لئے 5 سال سے کم عمر  کے بچوں کی شرح اموات ( یو 5 ایم آر ) نے 2019 ء سے 3 پوائنٹس (سالانہ کمی کی شرح: 8.6 فی صد ) کی نمایاں کمی ظاہر کی ہے (2019 ء میں 1000 زندہ بچوں کی پیدائش   میں 35 بچوں کی اموات کے مقابلے 2020 ء میں 1000 بچوں کی پیدائش میں 32 بچوں کی اموات ) ۔ اس شرح میں شہری علاقوں میں 21 سے لے کر دیہی علاقوں میں 36 اموات تک کا فرق ہے ۔
  • خواتین کے لئے یو 5 ایم آر  مرد (31) سے زیادہ (33) ہے۔ اسی مدت کے دوران مردوں کے یو 5 ایم آر  میں 4 پوائنٹس اور خواتین یو 5 ایم آر میں 3 پوائنٹس کی کمی واقع ہوئی ہے۔
  • یو 5 ایم آر  کی سب سے زیادہ کمی ریاست اتر پردیش (5 پوائنٹس) اور کرناٹک (5 پوائنٹس) میں دیکھی گئی ہے۔

image002-000038DM.jpg

  • نومولود بچوں کی شرح اموات ( آئی ایم آر ) میں بھی 2 پوائنٹ کی کمی درج کی گئی ہے ، جو 2019 ء میں فی 1000 پر 30 کے مقابلے 2020 ء میں فی 1000 پر 28 ہو گئی ہے (شرح میں سالانہ کمی: 6.7 فی صد )۔
  •  دیہی-شہری فرق کم ہوکر 12 پوائنٹس ہو گیا ہے (شہری - 19، دیہی-31) ۔
  • سال  2020 ء میں صنفی شرح میں کوئی فرق نہیں پایا گیا (مرد -28 ، خواتین – 28 )۔

image003-00004PUN.jpg

  • زچگی کے بعد شرح اموات میں بھی 2 پوائنٹ کی کمی آئی ہے ، جو 2019 ء میں فی 1000 بچوں کی پیدائش پر 22 تھی ، جو 2020 ء میں فی  1000 زندہ بچوں کی پیدائش پر کم ہوکر 20 ہو گئی ہے ( کمی کی سالانہ شرح: 9.1 فی صد ) ۔  یہ شہری علاقوں میں 12 سے لے کر دیہی علاقوں میں 23 تک ہے۔

image004-0000Q7E6.jpg

ایس آر ایس 2020 کی رپورٹ کے مطابق

  • 6 ریاستوں / مرکز کے زیر انتظام علاقوں نے این ایم آر کے لئے ایس ڈی جی ہدف پہلے ہی حاصل کر لیا ہے  ( 2030 تک 12 یا اس سے کم ) : کیرالہ (4)، دلّی (9)، تمل ناڈو (9)، مہاراشٹر (11)، جموں و کشمیر (12) اور پنجاب (12)۔
  • 11 ریاستوں / مرکز کے زیر انتظام علاقوں نے یو 5 ایم آر کے لئے ایس ڈی جی کا ہدف پہلے ہی حاصل کر لیا ہے ( 2030 تک 25 یا اس سے کم ) : کیرالہ (8)، تمل ناڈو (13)، دلّی (14)، مہاراشٹر (18)، جموں و کشمیر (17)، کرناٹک (21)، پنجاب (22)، مغربی بنگال (22)، تلنگانہ (23)، گجرات (24) اور ہماچل پردیش (24)۔

image005-0000YII4.jpg

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

( ش ح ۔ و ا ۔ ع ا )

U. No. 10598



(Release ID: 1861829) Visitor Counter : 170