وزارت سیاحت

ریاستی وزرائے سیاحت کی تین روزہ قومی کانفرنس ہماچل پردیش کے دھرم شالہ میں آج شروع ہو گئی


قومی سیاحتی پالیسی آئندہ بجٹ اجلاس سے قبل لائی جائے گی: جناب جی کشن ریڈی

جی-20 دنیا کے سامنے ملک کی سیاحت کی صلاحیت کو ظاہر کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم فراہم کرے گا: جناب کشن ریڈی

Posted On: 18 SEP 2022 7:23PM by PIB Delhi

ہماچل پردیش کے دھرم شالہ میں ریاستی وزرائے سیاحت کی تین روزہ قومی کانفرنس کا آغاز آج ایک پریس کانفرنس سے ہوا جس کی صدارت جناب جی کشن ریڈی نے کی۔ ریاستی سیاحت کے وزراء کی قومی کانفرنس کا مقصد سیاحت کی ترقی اور نمو پر ہندوستان کی تمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے متنوع خیال اور نقطہ نظر کو سامنے لانا اور ریاستوں کے ساتھ اسکیموں، پالیسیوں اور قومی سطح پر اٹھائے جانے والے اقدامات پر براہ راست بات چیت کرنا ہے۔ ہندوستان میں سیاحت کی مجموعی بہتری کے لیے نیشنل کانفرنس کا مقصد بہترین طریقوں، کامیاب منصوبوں، اور سیاحتی مصنوعات کے مواقع کے اشتراک کے لیے ایک پلیٹ فارم بننا ہے۔ پریس کانفرنس کے دوران وزیر سیاحت جناب اجئے بھٹ اور وزیر سیاحت شریپد نائک، چیئرمین فیتھ جناب نکول آنند، ڈی جی ٹورزم جناب جی کملا وردھنا راؤ بھی موجود تھے۔

پریس کانفرنس کے دوران سیاحت، ثقافت اور شمال مشرقی ریاستوں کے مرکزی وزیر نے کہا کہ گزشتہ 75 سالوں میں ہندوستان سیاحت، روحانیت، تبدیلی، ثقافت اور تنوع کا مترادف بن گیا ہے۔ ریکارڈ توڑ توسیع کا جشن منانا بڑے فخر کی بات ہے، جس سے ہندوستان دنیا کی 5ویں بڑی معیشت بن گیا ہے۔ اس طرح سیاحت کے شعبے کو بنیادی تشویش کے طور پر قائم کرتے ہوئے وزارت سیاحت نے مختلف اقدامات کئے ہیں اور ایک چار گنا ترقیاتی حکمت عملی اپنائی ہے جس میں ہوائی، ریل اور سڑکوں کے ذریعے کنیکٹویٹی کو بہتر بنانے، سیاحت کے بنیادی ڈھانچے اور منحصر خدمات کو بڑھانے، برانڈنگ کو ہموار کرنے پر توجہ دی گئی ہے اور ثقافت اور ورثے کو فروغ دینا اور اس کی نمائش کرنا ہے۔

وزیر اعظم کے ذریعہ دیے گئے ’وکاس بھی وارثت بھی‘ کے نعرے کو اجاگر کرتے ہوئے جناب کشن ریڈی نے کہا کہ مشاورت اور غور و خوض کے وسیع عمل کے بعد بجٹ اجلاس سے قبل قومی سیاحتی پالیسی کو سامنے لایا جائے گا۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ مختلف ٹورسٹ سرکٹس کو فروغ دیا جا رہا ہے اور جلد ہی ایک نیا ’امبیڈکر سرکٹ‘ شروع کیا جائے گا۔ جناب جی کشن ریڈی نے وضاحت کی کہ سیاحتی سرکٹس کی ترقی کے ایکشن پلان کے تحت ہمالیہ سرکٹ کو بھی فروغ دیا جائے گا۔

مرکزی وزیر سیاحت نے مزید کہا کہ ریاستی وزرائے سیاحت کی قومی کانفرنس ہندوستان کی جی 25 صدارت کے موجودہ تناظر میں بھی اہم ہے۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ جی-20 ہندوستان کی سیاحت کی صلاحیت کو دنیا کے سامنے دکھانے کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر استعمال کیا جائےگا۔

فضائی کنیکٹویٹی کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے ایس جی کشن ریڈی نے کہا کہ ملک میں ہوائی اڈوں کی تعداد 2014 میں 74 سے بڑھ کر اب 140 ہو گئی ہے، اور 2025 تک ہوائی اڈوں کی تعداد 220 تک بڑھانے کی تجویز ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ سیاحت کو فروغ دینے کے لیے بھارت نژاد برادری اور این آر آئیز کو جوڑنے کے وزیر اعظم کے وژن کی حوصلہ افزائی کی جائے گی اور ہر ایک ہندوستانی پر زور دیا جائے گا کہ وہ ہمارے وزیر اعظم کے وژن کے مطابق کم از کم 5 غیر ملکیوں کو ہندوستان آنے کی ترغیب دے۔

انہوں نے کہا کہ سیاحت کے شعبے کو دی جانے والی مالی امداد، جو کووڈ 19 کی وجہ سے سب سے زیادہ متاثر ہے، 31 مارچ 2023 تک جاری رہے گی۔

سیاحت کے شعبے نے 2018 میں  16.91 لاکھ کروڑ روپے ( 240 بلین امریکی ڈالر) یا ہندوستان کے جی ڈی پی کا 9.2 فیصد پیدا کیا اور اس نے تقریباً 42.67 ملین ملازمتوں یا کل روزگار کے 8.1 فیصد کو سہارا دیا۔

کانفرنس کو سیاحت کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی، ثقافتی، روحانی اور ورثے کی سیاحت، ہمالیائی ریاستوں میں سیاحت، ذمہ دار اور پائیدار سیاحت، سیاحتی مقامات کی مارکیٹنگ اور فروغ کے لیے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کا کردار ہوم اسٹے کی ابھرتی ہوئی اہمیت پر موضوعاتی اجلاسوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ ہندوستانی مہمان نوازی کا شعبہ، آیوروید، تندرستی اور طبی قدر کا سفر، اور آخر میں جنگلات اور جنگلی حیات کی سیاحت پر منحصر ہے۔

وزارت نے ملک بھر میں سیاحت کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے لیے 7000 کروڑ روپے کی منظوری دی ہے۔ 30 ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں سودیش درشن اسکیم کے تحت مختلف موضوعات پر سیاحتی بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کے لیے متعدد 76 پروجیکٹوں کو منظوری دی گئی ہے۔ پرشاد اسکیم کا مقصد روحانی مقامات کے آس پاس سیاحتی سہولیات کو مضبوط بنانا ہے، جس کے تحت 24 ریاستوں میں 39 پروجیکٹوں کو منظوری دی گئی ہے۔ ان سیاحوں، زیارت گاہوں اور ورثے کے مقامات/شہروں میں بنیادی ڈھانچے کی ترقی صفائی، سلامتی، عالمی رسائی، خدمات کی فراہمی، مہارت کی ترقی اور مقامی برادری کی روزی روٹی پر مرکوز ہے۔ وزارت نے حال ہی میں سودیش درشن اسکیم 2.0 کا آغاز کیا ہے جس کا مقصد سیاحتی اور منزل پر مبنی نقطہ نظر کے بعد پائیدار اور ذمہ دار منزلوں کو تیار کرنا ہے۔ یہ پچھلی اسکیموں کی ترقی ہے اور اس کا مقصد سیاحت اور اس سے منسلک بنیادی ڈھانچے، سیاحتی خدمات، انسانی سرمائے کی ترقی، منزل کا انتظام اور پالیسی اور ادارہ جاتی اصلاحات کے تعاون سے فروغ دینے والے پائیدار اور ذمہ دار سیاحتی مقامات کی ترقی کے لیے ایک جامع مشن کے طور پر تیار کرنا ہے۔

نیشنل کانفرنس کا مقصد بھی سیاحت کے لیے ایک مشترکہ وژن بنانا ہے اور اس کی ترقی کے ساتھ ساتھ ہم 2047 میں ہندوستان کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ آئندہ 25 سال امرت کال ہونے کے ناطے، کانفرنس کا مقصد ریاستی اور مرکزی حکومتوں کے درمیان مشترکہ بات چیت شروع کرنا ہے۔ سال 2047 میں ہندوستان میں سیاحت کے لیے وژن مرتب کرنا۔

جناب اجے بھٹ، عزت مآب وزیر مملکت برائے سیاحت اور دفاع اور جناب شریپد نائک، عزت مآب وزیر مملکت برائے سیاحت اور بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں کے ساتھ۔ اس تقریب میں راکیش کمار ورما، ایڈیشنل سکریٹری (سیاحت) اور دیگر سینئر معززین بھی موجود تھے۔

پریس کانفرنس کے بعد تقریب میں ہماچل پردیش کے وزیر اعلیٰ جناب جئے رام ٹھاکر، نے بھی شرکت کی۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

ش ح۔ م ع۔ع ن

 (U: 10396)



(Release ID: 1860464) Visitor Counter : 119