امور داخلہ کی وزارت

مرکزی وزیر داخلہ و تعاون جناب امت شاہ نے آج نئی دہلی میں ملک کے سیاحت اور ثقافت کے وزرا کی کانفرنس "امرت سماگم" کا افتتاح کیا

Posted On: 12 APR 2022 6:54PM by PIB Delhi

نئی دہلی، 12 اپریل 2022:

آزادی کا امرت مہوتسو کے دوران وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے اس کے قومی جشن کا تصور کیا ہے اور اسے ایک کثیر المقاصد جشن ہونا چاہیے۔

وزیر اعظم نے آزادی کا امرت مہوتسو سے اگلے 25 سال کی مدت تک یعنی آزادی کے سو سال کی تکمیل تک آزادی کے امرت مہوتسو کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ اگلے 25 سال بھارت کے 130 کروڑ عوام کی اجتماعی کوششوں اور بھارت کو دنیا میں سرفہرست دیکھنے کا دور ہے، وزیر اعظم نے اس دور کو امرت کال کا نام دیا ہے۔

گرام پنچایتوں، پارلیمنٹ اور تمام سرکاری محکموں کو ملک کی ترقی کے لیے کام کرنا چاہیے کیونکہ امرت کل کے 25 سال ترقی کے اس عزم کو پورا کرنے کا دور ہے۔

12 مارچ 2021 کو وزیراعظم جناب نریندر مودی نے کاشی گاندھی آشرم سے آزادی کا امرت مہوتسو کا آغاز کیا، اس کے بعد ملک بھر میں 25 ہزار سے زائد پروگرام منعقد کیے گئے ہیں۔

آزادی کے بعد 75 سالوں میں قوم نے بہت سی کامیابیاں حاصل کیں اور ہم بھارت کو سرفہرست ممالک میں شامل کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔

ہم نے مشترکہ کوششوں سے تمام شعبوں میں بہت سے ریکارڈ بنائے ہیں، ہم اپنی تاریخ اور ثقافت کے تحفظ اور فروغ میں کامیاب رہے ہیں۔

آزادی کا امرت مہوتسو کو پانچ زمروں میں منانے کا تصور کیا گیا ہے – تحریک آزادی، آئیڈیا @75، کامیابیاں @75، ایکشن @75 اور عزم @75

ہم نے اس بات کو یقینی بنایا ہے کہ ہر گاؤں اور ریاست کی شرکت میں اضافہ کیا جائے، بڑے پیمانے پر شرکت کو یقینی بنایا جائے، خاص طور پر نوجوانوں کو، ان کی توانائی ہماری آزادی کے صد سالہ سال میں بھارت کو سرفہرست لانے میں مفید ثابت ہوگی۔

جو قوم زندہ رہنا چاہتی ہے، اسے آگے بڑھنا ہوگا اور وزیر اعظم نے ملک کے لیے اپنے عظیم وژن کے ساتھ اس سنکلپ یاترا کا تصور پیش کیا ہے اور ہم میں سے ہر ایک کو پارٹی سیاست سے بالاتر ہو کر سنکلپ یاترا میں حصہ لینا چاہیے تاکہ اسے کامیاب بنایا جاسکے۔

اگر سب سے کم عمر خود کو تحریک آزادی سے وابستہ کرتا ہے تو ان کی زندگی قومی ترقی کے لیے وقف ہو جاتی ہے، یہ نوجوان نسل کو تحریک آزادی سے آگاہ کرنے اور اسے ملک سے جوڑنے کا سنہری موقع ہے۔

میرا گاؤں، میری دھروہر ایک ایسا ہی پروگرام ہے جس کا مقصد ملک بھر میں 6.5 لاکھ ورچوئل عجائب گھر تعمیر کرنا ہے، جسے تمام اضلاع سے جوڑا جائے گا

اب سے پروگرام کے اختتام تک ہمیں عوامی بیداری اور عوامی شرکت بڑھانے کے لیے کام کرنا ہوگا

آنے والے دنوں میں ہر گھر جھنڈا، بین الاقوامی یوگ ڈے، ڈیجیٹل ڈسٹرکٹ ریپوزٹری، سوتنتر سور اور میرا گاؤں، میری دھروہر جیسے پروگرام عوامی شرکت کو یقینی بنائیں گے

میں سب سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ ہر گھر جھنڈا، بین الاقوامی یوگ ڈے، ڈیجیٹل ڈسٹرکٹ ریپوزٹری، سوتنتر سور اور میرا گاؤں، میری دھروہر جیسے پروگراموں کے بارے میں معلومات کو عام کریں تاکہ یہ ریاستوں میں کامیاب ہوں۔

اگر 130 کروڑ شہری دلتوں، غریبوں، دیہاتوں میں رہنے والے کم پڑھے لکھے افراد کی جانب سے عزم کریں تو 130 کروڑ قراردادوں کا یہ اجتماعی تعاون قوم کو عظیم بنانے کے لیے ایک بہت بڑا قدم ہوسکتا ہے۔

مرکزی وزیر داخلہ اور تعاون کے وزیر جناب امت شاہ نے آج نئی دہلی میں منعقدہ ملک کے سیاحت اور ثقافت کے وزرا کی کانفرنس "امرت سماگم" کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر شمال مشرقی خطے کی ثقافت، سیاحت اور ترقی کے مرکزی وزیر جناب جی کشن ریڈی، پارلیمانی امور و ثقافت کے وزیر مملکت جناب ارجن رام میگھوال، وزیر مملکت برائے امور خارجہ و ثقافت محترمہ میناکشی لیکھی اور وزیر مملکت برائے دفاع و سیاحت جناب اجے بھٹ نیز بہت سے معززین موجود تھے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001WMUP.jpg

اس موقع پر اپنے خطاب میں مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ شاید ایک نسل کے بعد کسی کے مقدر میں ایسا وقت آتا ہے کہ ہم آزادی کا امرت مہوتسو منا سکتے ہیں۔ ہم سب خوش قسمت ہیں کہ امرت مہوتسو کے سال میں ہم سب کا کوئی نہ کوئی فرض ہے جس کے ساتھ ہم سب کو وابستہ ہونے کا اعزاز حاصل ہوا ہے۔ آزادی کے بعد 75 سالوں میں قوم نے بہت سی کامیابیاں حاصل کی ہیں اور ہم بھارت کو اہم  ممالک میں شامل کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔ ہم نے مشترکہ کوششوں سے تمام شعبوں میں بہت سے ریکارڈ بنائے ہیں، ہم اپنی تاریخ اور ثقافت کے تحفظ اور فروغ میں کامیاب رہے ہیں۔ آزادی کا امرت مہوتسو میں وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے قومی جشن کا تصور کیا تھا اور یہ ایک کثیر المقاصد جشن ہونا چاہیے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002SXSL.jpg

جناب امت شاہ نے کہا کہ آزادی کا امرت مہوتسو کے ذریعے ہماری نئی نسل کو 1857 سے 1947 تک 90 سال تک کی تحریک آزادی کے مجاہدین کی قربانیوں کے بارے میں معلومات حاصل کرنی چاہئیں۔ اس کے ساتھ ساتھ وزیر اعظم نے آزادی کا امرت مہوتسو سے آزادی کے سو سال تک 25 سال کی مدت کے دوران آزادی کا امرت مہوتسو کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ اگلے 25 سال بھارت کے 130 کروڑ عوام کی اجتماعی کوششوں اور بھارت کو دنیا میں سرفہرست دیکھنے کا دور ہے، وزیر اعظم نے اس دور کو امرت کال کا نام دیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ انہوں نے آزادی کا امرت مہوتسو کو سنکلپ ورش کے طور پر منانے کا بھی فیصلہ کیا ہے اور ملک کے عوام سے مطالبہ کیا ہے کہ آزادی کا امرت مہوتسو کے سال میں ہمیں ذاتی طور پر کچھ قرارداد لینی چاہیے جس سے بھارت کو مدد ملے گی۔ گرام پنچایتوں، پارلیمنٹ اور تمام سرکاری محکموں کو ملک کی ترقی کے لیے کام کرنا چاہیے کیونکہ امرت کال کے 25 سال ترقی کے اس عزم کو پورا کرنے کا دور ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003IAYJ.jpg

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ 12 مارچ 2021 کو وزیراعظم جناب نریندر مودی نے کاشی گاندھی آشرم سے آزادی کا امرت مہوتسو کا آغاز کیا تھا جس کے بعد ملک بھر میں 25 ہزار سے زائد پروگرام منعقد کیے گئے ہیں۔ اس دور میں کوویڈ-19 کی دوسری اور تیسری لہر کی وجہ سے مشکل صورتحال پیدا ہو چکی تھی اور بہت سے پروگرام ہائبرڈ موڈ میں کرنے پڑے تھے اور اس کی وجہ سے عوامی شرکت اتنی نہیں ہو سکتی تھی جتنی ہونی چاہیے تھی۔ لیکن اب جب کہ ملک کوویڈ-19 کی گرفت سے باہر آ رہا ہے، اس بقیہ وقت میں ہمیں آزادی کا امرت مہوتسو کو عوامی شرکت کے ساتھ منانا چاہیے۔ اس دو روزہ کانفرنس کے دوران ہمیں فیصلہ کرنا ہے کہ کس طرح ہر گاؤں، تحصیل، ضلع اور ریاست آزادی کا امرت مہوتسو میں شرکت کریں اور اس کے لیے پروگرام بنائیں اور انہیں کامیاب بنائیں۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ آزادی کا امرت مہوتسو پانچ زمروں یعنی تحریک آزادی، آئیڈیا @75، کامیابیاں @75، ایکشن @75 اور عزم @75 کے طور پر منایا جائے گا۔ ان پانچ زمروں میں ہمیں آنے والے اوقات کے لیے منصوبہ بندی کرنی چاہیے۔ میں ریاست کے تمام وزرا اور عہدیداروں سے درخواست کرنا چاہوں گا کہ وہ اس کوشش میں ہر گاؤں اور ریاست کی شرکت بڑھائی جائیں، بڑے پیمانے پر شرکت کو یقینی بنایا جائے، خاص طور پر نوجوانوں کو، ان کی توانائی ہماری آزادی کے سو سال میں بھارت کو سرفہرست لانے میں مفید ثابت ہوگی۔ جس قوم کو زندہ رہنا ہے، اسے آگے بڑھنا ہوگا۔ وزیر اعظم نے ملک کے لیے اپنے عظیم وژن کے ساتھ اس سنکلپ یاترا کا تصور پیش کیا ہے۔ ہم میں سے ہر ایک کو پارٹی سیاست سے بالاتر ہو کر سنکلپ یاترا میں حصہ لینا چاہیے تاکہ اسے کامیاب بنایا جاسکے۔

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ آزادی کی لڑائی کئی طریقوں سے انگریزوں کے خلاف لڑی گئی اور 1857 سے 1947 تک کی آزادی کی لڑائی کو ایک بار پھر آنے والی نسل کے ذہنوں کو بیدار کرنا چاہیے۔ صرف تاریخ ہی یہ معلومات نوجوان نسل کو نہیں دے سکتی۔ بہادر ہیروز کے بہت سے واقعات اور کرداروں کو ان کی نفسیات کی سطح پر زندہ کرنا ہوگا، پھر وہ خود کو آزادی کی لڑائی سے وابستہ کریں گے۔ اگر سب سے کم عمر خود کو تحریک آزادی سے وابستہ کرتا ہے تو ان کی زندگی قومی ترقی کے لیے وقف ہو جاتی ہے، یہ نوجوان نسل کو تحریک آزادی سے آگاہ کرنے اور اسے ملک سے جوڑنے کا سنہری موقع ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اس نئی نسل کے ذہن میں حب الوطنی کا جذبہ پیدا کرنے کے لیے ایسی نئی نسل پیدا کرنے کا یہ ایک بہترین موقع ہے اور اس کی بنیاد پر وہ ملک کے لیے پوری زندگی کام کرتے رہیں گے۔ اس کے لیے ملک کے وزیر اعظم نے ہم سب پر زور دیا ہے کہ وہ عوام کی وسیع شرکت کے ساتھ امرت مہوتسو منائیں۔ قومی ترانے کا پروگرام ہو، رنگولی بنانے کا پروگرام ہو، تحریک آزادی کے گم نام ہیروز پر تحقیق و تصںیف کے پروگرام ہوں، میرا گاؤں میری دھروہر  پروگرام ہو۔ میرا گاؤں، میری دھروہر ایک ایسا ہی پروگرام ہے جس کا مقصد ملک بھر میں 6.5 لاکھ ورچوئل عجائب گھر تعمیر کرنا ہے، جسے تمام اضلاع سے جوڑا جائے گا۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ اس طرح کے بہت سے پروگرام ہوئے ہیں۔ وزیر اعظم سوتنتر سور کو پوسٹ کارڈ لکھے گئے جن میں انگریزوں کی ممنوعہ نظمیں مرتب کی گئیں، وندے بھارت ڈانس فیسٹیول ہوا، 1857 کی پہلی آزادی کی لڑائی کی یاد میں ایک پروگرام ہوا، ان تمام پروگراموں نے شعور بیدار کیا ہے۔ اب سے پروگرام کے اختتام تک ہمیں عوامی بیداری اور عوامی شرکت کو بڑھانے کے لیے کام کرنا ہوگا۔ مجموعی طور پر ایک سال میں 25,000 پروگرام منعقد کیے گئے لیکن ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں 7,200 پروگرام منعقد کیے گئے۔ اس تعداد میں اضافہ کرنا ہوگا اور ہمیں آزادی کا امرت مہوتسو کو پوری حکومت کے اپروچ سے کامیاب بنانا ہوگا۔

مرکزی وزیر داخلہ اور تعاون کے وزیر نے کہا کہ آنے والے دنوں میں ہر گھر جھنڈا، بین الاقوامی یوگ ڈے، ڈیجیٹل ضلعی ذخیرہ، سوتنتر سور اور میرا گاؤں، میری دھروہر جیسے پروگرام عوامی شرکت کو یقینی بنائیں گے۔ ریاستی حکومتوں اور پنچایت، میونسپل کارپوریشن، ضلع پنچایت، تحصیل پنچایت کی شرکت کے بغیر ہر گھر جھنڈا پروگرام کامیاب نہیں ہوسکتا۔ یہ ہر اسکول کی شرکت کے بغیر کامیاب نہیں ہوسکتا اور ہمیں اسے آگے بڑھانا ہوگا۔ میں سب سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ ہر گھر جھنڈا، بین الاقوامی یوگ ڈے، ڈیجیٹل ضلعی رپوزٹری، سوتنتر سور اور میرا گاؤں، میری دھروہر جیسے پروگراموں کے بارے میں معلومات کو عام کریں تاکہ وہ ریاستوں میں کامیاب ہوں۔ تحریک آزادی سے وابستہ مقامات کی شناخت نئے سرے سے دستیاب کرائی جائے، ایک بھی گاؤں ایسا نہیں ہے جس نے تحریک آزادی کے لیے کچھ نہ کچھ نہ کیا ہو، ایک بھی ضلع ایسا نہ ہو جہاں کوئی بڑا واقعہ پیش نہ آیا ہو۔ کیا ہم ان واقعات، ان کی یاد کو بحال کر سکتے ہیں، کیا ہم اسکول کے بچوں کو مجاہدین آزادی، ان کے دیہاتوں کے گھروں تک لے جانے کا پروگرام بنا سکتے ہیں؟ مجھے یقین ہے کہ ایسا کرنے سے ایک حیرت انگیز حب الوطنی بیدار ہوگی اور بچے اور ہماری نئی نسل اس سے وابستہ ہوگی۔ کالجوں کو بھی تیار کیا جائے اور 75 کالجوں کا کیپسول بنا کر ملک بھر میں تحریک آزادی سے وابستہ تمام یادگاری مقامات کی شان میں اضافہ کیا جائے اور انہیں عوام کی یاد میں دوبارہ زندہ کیا جائے۔ ہم اس طرح کے پروگرام کرکے بہت فائدہ اٹھائیں گے۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ آزادی کی لڑائی میں صحافت کے ذریعے بھی بہت سے لوگوں نے ملک کی خدمت کی ہے۔ اگر ہم صحافت کے طلبہ کو تحریک آزادی میں صحافت کے کردار پر ساتھ لیں تو بہت کام کیا جا سکتا ہے۔ تھیٹریکل اور موسیقی میں دلچسپی رکھنے والے لوگ اس وقت تحریک آزادی سے جڑے ہوئے تھے اور بہت سے لوگوں کو آرٹ کا استعمال کرتے ہوئے تحریک آزادی سے جوڑنے کی کوشش کی گئی تھی، ہمیں اسے آگے بڑھانا چاہیے۔ فنون لطیفہ کے طلبہ کو بھی شامل کرکے ایک نئے شعور کو بیدار کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم مودی نے تحریک آزادی کے تمام مجاہدین آزادی کو خراج عقیدت پیش کرنے اور ان کی یاد کو بحال کرنے پر زیادہ زور دیا ہے۔ آج یہاں موجود ریاستوں کے وزرائے ثقافت اور سیاحت سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ اس موضوع کو اپنی اپنی ریاستوں میں پہنچانے کی کوشش کریں۔ قرارداد آزادی کا امرت مہوتسو کی روح ہے، مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ اگر 130 کروڑ شہری ایک چھوٹی سی انفرادی قرارداد بھی لیں تو ایک بہت بڑی توانائی پیدا کی جاسکتی ہے۔ اگر 130 کروڑ شہری دلتوں، غریبوں، دیہات میں رہنے والے کم پڑھے لکھے افراد کی جانب سے عزم کریں تو 130 کروڑ قراردادوں کا یہ اجتماعی تعاون قوم کو عظیم بنانے کے لیے ایک بہت بڑا قدم ہوسکتا ہے۔ یہ بات زیادہ اہم نظر نہیں آتی لیکن اگر 130 کروڑ لوگ ایسا کرتے ہیں تو اس کی طاقت بہت بڑی ہو جائے گی اور مجھے یقین ہے کہ امرت مہوتسو، امرت دور کا وقت اور آزادی کا صد سالہ سال، بھارت کو عظیم بنانے، بھارت کو دنیا میں سرفہرست مقام پر لے جانے کا وقت ہے اور اب وقت آگیا ہے کہ بھارت کو 'وشو گرو' بنایا جائے۔ وزیر اعظم مودی نے ہم سب سے یہی توقع کی ہے۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ اس دو روزہ سیمینار کے دوران ہمیں امرت مہوتسو کے تحت ریاستوں میں کچھ جگہیں اس طرح بنانی چاہئیں کہ وہ لوگوں کے لیے شعور کا مرکز بن جائیں۔ ایسی قراردادیں پھیلائیں جو بہت سے لوگوں کو متاثر کریں جیسے میں تعلیم یافتہ ہوں اور میں بالغ ناخواندہ افراد کو پڑھاوں گا۔ انہوں نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ آپ یہاں سے اس قسم کا ایکشن پلان بنائیں گے تاکہ ایسی قراردادیں پیش کی جا سکیں جو شعور، حب الوطنی اور ترقی کو پھیلانے کا کام کریں۔ ایک بار پھر میں آپ سب سے درخواست کرنا چاہوں گا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے تصور کیا ہے کہ آزادی کا امرت مہوتسو سے آزادی کے صد سالہ سال تک کا یہ امرت دور، جو قراردادوں کو پورا کرنے کا وقت ہے، ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ ہم بھارت کو عظیم بنانے کے اس سفر سے جڑے رہیں۔ کوویڈ-19 کا وقت آیا اور بھگوان کی کرپا اور حکومت ہند اور ریاستی حکومتوں کی کوششوں سے ہم اس سے باہر آئے ہیں، اب ہمیں ایک بار پھر اس سفر کو ایک نئی توانائی کے ساتھ آگے بڑھانا چاہیے۔

***

(ش ح - ع ا- ع ر)

U. No. 4102

 



(Release ID: 1816195) Visitor Counter : 158


Read this release in: English , Marathi , Manipuri , Tamil