جدید اور قابل تجدید توانائی کی وزارت

بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے وزیر نے دنیا سے اپیل کی ہے کہ وہ شمسی اور قابل تجدید توانائی استعمال کرنے والے تمام لوگوں کو توانائی تک رسائی کےلئے مل کر کام کریں

جناب آر کے سنگھ نے کہا،’’توانائی تک رسائی کا  مسئلہ حل کرنا بہت اہم ہے۔آئی ایس اےدنیا بھر میں 800ملین افراد  تک توانائی کی رسائی کو ممکن بنا سکتا ہے، جن کے پاس  توانائی تک  رسائی نہیں ہے‘‘

جناب سنگھ نے بین الاقوامی شمسی اتحاد کی چوتھی جنرل اسمبلی کا افتتاح کیا

اس مباحثے میں 106 ممالک حصہ لے رہے ہیں

Posted On: 20 OCT 2021 4:59PM by PIB Delhi

نئی دہلی  ، 20اکتوبر،2021

بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے مرکزی وزیر اور بین الاقوامی شمسی اتحاد کے صدر جناب آر کے سنگھ نے تمام اراکین ،دستخط کنندہ ممالک ،ممکنہ رکن ممالک ،شراکت دار تنظیموں اورخصوصی طورپر مدعو کی گئیں تنظیموں کا  بین الاقوامی شمسی اتحاد کی چوتھی جنرل اسمبلی میں خیر مقدم کیا۔انہوں نے تمام وفد سےکووڈ-19وبا سے متاثرین کےلئے ایک منٹ کےلئے خاموشی سے دعا کرنے کی اپیل کی۔

 آئی ایس اے  کی جنرل اسمبلی  کی افتتاحی تقریب سے اپنے افتتاحی خطاب میں ،جہاں 106ممالک مباحثے میں حصہ لے رہے ہیں،جناب سنگھ نے کہا کہ قابل تجدید توانائی کو اپنانے کے عمل نے   گزشتہ دہائی کے بعد سے اہم رفتار حاصل کی ہے۔ شمسی توانائی ، خاص طور پر ، اب پائیدار توانائی تک عالمگیر رسائی حاصل کرنے کا سب سے قابل عمل متبادل ہے کیونکہ اس کی سستی اور آف گرڈ حل کی سہولت ہے۔ ہمارے توانائی کے شعبوں کو تیزی سے ڈی کاربونائز کرنا ہمارے لیے سب سے قابل عمل متبادل  ہے۔ بھارت نے گزشتہ چند برسوں میں شمسی توانائی کے شعبے میں تیزی سے پیش رفت کی ہے اور تیزی سے صلاحیت میں اضافہ بھارت کے صاف اوریہ سستی توانائی کے عزم کا ثبوت ہے۔بھارت نےسال  2030 تک قابل تجدید توانائی کے 450گیگاواٹ تک پہنچانے کا ہدف رکھا ہے۔ہمارے پاس 154 گیگاواٹ نصب غیر جیواشم پیدا کرنے کی گنجائش ہےاور مزید67گیگا واٹ زیر تعمیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی غیرجیواشم ایندھن پر مبنی صلاحیت ہندوستان کے این ڈی سی کے تحت 40 فیصد ہدف کو عبور کرنے کی راہ پر ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ توانائی تک رسائی کے مسئلے کو حل کرنا بہت ضروری ہے۔آئی ایس اے دنیا بھر میں 800ملین افراد کے لیے توانائی تک رسائی کو فعال کر سکتا ہے جن کے پاس توانائی کی رسائی نہیں ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ بین الاقوامی شمسی اتحاد عالمی برادری کو اکٹھا کرنے ، ہماری کوششوں کو ہم آہنگ کرنے ، اس طرح کی رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے ہماری تکمیل کو بڑھانے کے لیے قائم کیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایس اے سب کو توانائی تک رسائی فراہم کرنے میں بنیادیکردار ادا کر سکتا ہے۔

جناب سنگھ نے دنیا پر زور دیا کہ وہ مل کر کام کریں اور آئی ایس اے کو شمسی اور قابل تجدید توانائی استعمال کرنے والےتمام لوگوں  کے لیے توانائی تک رسائی کو ممکن  بنائیں۔

صدر جناب سنگھ نے شریک صدر کو اپنے افتتاحی کلمات پیش کرنے کی دعوت دی۔ اس کے بعد صدر ، جناب سنگھ نے ایچ ای،جناب جان کیری ، خصوصی صدارتی ایلچی برائے موسمیاتی تبدیلی ،  متحدہ امریکہ ، کو آئی ایس اے اسمبلی سے اپنا خصوصیخطاب کرنے کےلئے مدعو کیا۔

سکریٹری کیری نے بین الاقوامی شمسی اتحاد اور ہندوستان ، فرانس اور آئی ایس اے اسمبلی کے رکن ممالک کی قیادت کو ان کے اشتراک سے سراہا کہ وہ صاف ستھری توانائی کی منتقلی کو آگے بڑھا رہے ہیں۔ بھارت ایک قریبی شراکت دار ہے اور امریکہ 2030 تک قابل تجدید توانائی 450 گیگاواٹ تک پہنچنے کے ہندوستان کے ہدف کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔ ہمیںیقین ہے کہ یہ بالکل قابل عمل ہے اور کیاجائے گا۔ بھارت 100 گیگاواٹ قابل تجدید ذرائع تک پہنچ کر ابھرتی ہوئی معیشتوں کے لیے مثال قائم کر چکا ہے۔ بھارت نے اپنی کم لاگت والی سولر نیلامیوں اور ٹرانسمیشن گرڈز اور بڑے پیمانے پر سولر پارٹس پروگرام اور دیگر جدید پالیسی ٹولز سے جو کچھ دکھایا وہ پوری دنیا میں نقل کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایس اے گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کو کم کرنے کے لیے اہم ہے اور اسے رکن ممالک کے ساتھ شمسی توانائی کینمو کو تیز کرنے کا موقع ملتا ہے جو دنیا کی مضبوط ترین سورج کی روشنی سے نوازے جاتے ہیں۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/IMG_20211020_161128AHVO.jpg

بھارت اور امریکہ کے تعلقات پر بات کرتے ہوئے اور بھارت کو ’’شمسی توانائی کے لیے ایک’ریڈ ہاٹ انویسٹمنٹ ڈیسٹی نیشن ‘ ‘‘قرار دیتے ہوئے وزیر خارجہ کیری نے کہا کہ بھارت سے امریکہ میں شمسی توانائی کو تعینات کرنے والے سرکردہ ممالک قابل تجدید کے وقفے کو متوازن کرنے کے لیے توانائی کے ذخیرے کی ضرورت کو دیکھ رہے ہیں۔ توانائی شمسی توانائی کی مکمل قیمت کو استعمال کرنے کے لیے ممالک کو اسٹوریج ، گرڈ انفراسٹرکچر اور ڈیمانڈ اور سپلائی دونوں میں لچک پیدا کرنے کی ضرورت ہوگی۔ اور شمسی توانائی کو معیشت کے ان حصوں سے جوڑنے کے لیے جو فی الحال بجلی استعمال نہیں کرتے ، ممالک کو الیکٹرک گاڑیوں اور ہائیڈروجن جیسے صاف ایندھن میں سرمایہ کاری کرنی چاہیے جو شمسی توانائی کے ذریعے پیدا کی جا سکتی ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/IMG_20211020_161113YT7I.jpg

یورپی گرین ڈیل کے لیےیورپی کمیشن کے ایگزیکٹو نائب صدر جناب فرانس  ٹمرمنس نے آئی ایس اے اسمبلی کے افتتاحی سیشن میں شرکت کی اور اس اقدام کے لیےیورپییونین کی حمایت کی تصدیق کی۔ انہوں نے یورپییونین کی مالی اعانت سے تقریباً ایک  ملینیورو مالیت کے ایک منصوبے کے فوری آغاز کا بھی اعلان کیا ، جس کا مقصد بین الاقوامی شمسی اتحاد کے ساتھ یورپییونین ، یورپییونین کے رکن ممالک ، اور یورپییونین کی تعلیمی ، کاروباری اور مالیاتی برادریوں کی شمولیت کو مزید مضبوط بنانا ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/IMG_20211020_154831ZINS.jpg

***************

 

ش ح ۔ا م۔

U:12038

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 



(Release ID: 1765259) Visitor Counter : 46