زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت

کسانوں کی یونینوں کے نمائندگان سے وگیان بھون نئی دلی میں دوستانہ اورکھلے ماحول میں گفت وشنید

کسانو ں کے ساتھ بات چیت کے لئے اگلی میٹنگ پانچ دسمبرکو ہوگی : جناب نریندرسنگھ تومر:

Posted On: 03 DEC 2020 9:57PM by PIB Delhi


http://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0016NWA.jpg

نئی دہلی،  04 دسمبر 2020 –کسانوں کی 40 یونینوں کے نمائندگان   نےجنہیں مرکزی وزیرزراعت نے بات چیت کے لئے موعو کیا تھا، آج وگیان بھون میں جناب نریندر سنگھ ، وزیر زراعت  ، پیوش گوئل ، وزیر خوراک ،صارفین امور عوامی نظام تقسیم ، ریلوے اور تجارت ، نیز جناب سوم پرکاش تجارت کے وزیر مملکت   کے ساتھ گفت وشنید میں حصہ لیا۔یہ گفت وشنید کا چوتھا دور تھا ،جو  دوستانہ او رکھلے ماحول میں چلا۔ یونینوں نے 5 دسمبرکو اگلی میٹنگ میں حصہ لینے سے اتفاق کیا ہے۔

http://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002B9YD.jpg

بات چیت کے آغاز میں  مرکزی وزیر زراعت نے کسانوں کی بہبود کے تئیں حکومت کی عہد بستگی  کا اعادہ کیا۔ انہوں نے  یونینو کے نمائندگان سے درخواست کی کہ وہ اپنا نقطہ نظر پیش کریں اور متنازعہ مسائل کو اجاگر کریں ۔کسانوں کی یونینوں کے نمائندگان نے تین قوانین  کے آئینی جواز  پر سوال اٹھائے ۔کسانوں نے ایے پی ایم سی کے معاملے کو اٹھایا ۔ انہوں نے کہا کہ  اے پی ایم سی ، نجی منڈیوں  اور تجارتی احاطوں   کے درمیان منصفانہ روش اختیار کی جانی چاہئے ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اے پی ایم سی کے باہر  تجارت کے  لئے مناسب  رجسٹریشن کی ضرورت ہے ۔ کسانوں کی یونینوں نے    یہ بھی درخواست کی کہ ایم ایس پی  نظام کو  قانونی درجہ دیا جائے۔ نئے زرعی قوانین میں  تنازعوں کے حل کے نظام کے تعلق سے یونیوں نے کہا کہ ایک متبادل تنازعہ نمٹانے کے نظا م کی ضرورت  ہے۔اس کے علاوہ اس میٹنگ میں ٹھیکے پر زراعت کے لئے رجسٹریشن کی ضرورت کے مسئلے کو بھی اٹھایا گیا۔

زراعت  اور  کسانوں کی بہبود کے سکریٹری جناب سنجے اگروال نے زرعی قوانین کا تفصیلی تعارف  کرایا ، وزارت زراعت کے ذریعہ کسانوں کی بہبود کے لئے کئے گئے اقدامات   نیز لاک ڈاؤن کےدوران زراعت کو فائدہ پہنچانے والے اقدامات کی تفصیل بتائی ،جن سے رسد  کے سلسلے کو فعال رکھا گیا۔ انہوں نے کہا کہ  زرعی قوانین کو کسانوں کی بہبود  کو نظر  میں رکھ کر ہی وضع کیا گیا ہے۔

زراعت کے وزیر جناب تومر نے  یونینوں کو یقین دہانی کرائی کہ کم از کم امدادی قیمت  باقی رکھی جائے گی۔چنانچہ  کسانوں کو  اس بات کی فکر نہیں کرنی چاہئے کہ یہ ختم ہوجائے گی۔انہوں  نے کسانوں کی تنظیموں کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے اپنے خدشات کا اظہار کیا۔وزیر موصوف نے کسانوں کو یقین دہانی  کرائی کہ ان کے ساتھ بات چیت کاسلسلہ  جاری رکھا جائے گا۔

*************

 

  م ن۔ع ا ۔رم

04-12-2020

U- 7798



(Release ID: 1678244) Visitor Counter : 105