جل شکتی وزارت

جل جیون مشن اروناچل پردیش کے دور دراز واقع مائمی گاؤں تک پہنچا- مارچ 2021 تک ‘ہر گھر جل’ پہنچانے کے ہدف میں گاوں کی کمیونٹی شراکت داری پُرجوش رہی

Posted On: 05 NOV 2020 3:29PM by PIB Delhi

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001NZLM.jpg

سرسبز سبز دھان کے کھیتوں کے بیچ ایک چھوٹی سی ندی کے کنارے ایک پرسکون گاوں مائمی آباد ہے۔ یہ گاوں اروناچل پردیش کے مشرقی حصے میں نامسائی ضلع کے چوکھام بلاک کے تحت ضلعی ہیڈکوارٹر سے تقریبا 40 کلومیٹر دور واقع ہے۔ مائمی گاؤں میں تقریبا 42 گھرانے آباد ہیں۔ سبھی گاوں والے امن پسند اور بدھ مت کے پیروکار ہیں۔ زراعت ان کا بنیادی پیشہ ہے ، حالانکہ ان میں سے کچھ سرکاری خدمات اور دوسرے کاروبار میں ہیں۔ عوام خوش ہیں اور زندگی کا لطف اٹھاتے ہیں۔ تاہم ، یہاں کے لوگوں کے لئے پینے کے صاف پانی کی کمی برسوں سے ایک بڑا مسئلہ رہا ہے۔

گھر کی خواتین کو اس چھوٹی سی ندی سے پانی لانا پڑتا ہے۔ حالانکہ ان کے گھر اس ندی سے تقریبا 300 میٹر کے فاصلے پر ہی ہیں۔ اسے پینے اور کھانا پکانے ، نہانے اور کپڑے دھونے کے لئے صاف پانی کی ضرورت ہوتی ہے۔ گھر کے صحن میں ایک ہینڈ پمپ ہے ، لیکن اس کا پانی آلودہ ہے۔ اس سے بدبو آرہی ہے اور اس پانی سے کپڑے دھونے سے کپڑے لال رنگ کے ہو جاتے ہیں۔ لہذا اس پانی کا استعمال صفائی ستھرائی

اور ٹوائلٹ فلشنگ جیسے کاموں کے لئے ہی کیا جاتا ہے۔ کبھی کبھی کوئی خاتون جب ندی سے پانی نہیں لا پاتی ہے تو اس کی بیٹیاں یہ کام کرتی ہیں۔ مانسون کے دوران ندی اوور فلو ہو جاتی ہے اور اس میں مٹی مل جاتی ہے جس کے سبب پانی میں گندگی بڑھ جاتی ہے۔ تب گاوں کے لوگ اپنے پینے کی پانی کی ضرورت کم کھدائی کئے گئے کنوئیں سے پورا کرنے کے لئے مجبور ہوتے ہیں۔ اس وجہ سے ان کے بچے بیمار ہو جاتے ہیں اور اپنے ششماہی اسکول امتحان میں شامل نہیں ہو پاتے ہیں۔ ڈاکٹر نے کہا کہ یہ آلودہ پانی انہیں بیمار کررہا ہے۔ مائمی گاوں کے یہ ہر گھر کی کہانی ہے۔ یہاں لوگوں کو ندی اور ہینڈ پمپ کے آلودہ پانی پر منحصر رہنا پڑتا ہے۔ خواتین کو اپنی روزمرہ پانی کی ضرورتوں کے لئے پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

ایک گرام سبھا میٹنگ میں گاوں والوں کو فلیگ شپ پروگرام جل جیون مشن کے بارے میں بتایا گیا۔ پبلک ہیلتھ انجینئرنگ اینڈ واٹر سپلائی ڈیپارٹمنٹ، اروناچل پردیش کے افسران نے انہیں اس پروگرام سے باخبر کیا۔ ہر گھر جل کے خیال سے ان کی آنکھوں میں خوشیوں کے آنسو آگئے۔ یہ سب ان کے خواب سچ ہونے جیسا تھا۔ گاؤں کے لوگوں کے ساتھ کمیونٹی شراکت داری کا تصور بہت اچھا رہا۔ وہ مشن کا حصہ بننے سے بہت زیادہ خوش ہیں۔ جے جے ایم کے ہدف کو عملی جامہ پہنانے کی سمت میں گرام سبھا نے ایک قدم آگے بڑھایا اور ولیج ایکشن پلان ( وی اے پی) پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

گاوں کے ہر گھر تک ایچ ڈی پی ای پائپ نیٹ ورک کے ساتھ گہرے بورویل سے لے کر شمسی توانائی پر مبنی واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ لگانے کو گرام سبھا نے منظور کیا تھا۔ دیہاتیوں نے محکمہ کی مدد سے پائپ نیٹ ورک کا نقشہ بھی تیار کیا۔ ویلج واٹر اینڈ سینی ٹیشن کمیٹی (وی ڈبلیو ایس سی) بھی تشکیل دی گئی۔ وی ڈبلیو ایس سی کے رول ، ذمہ داریوں اور فرائض کے بارے میں بھی بتایا گیا۔ گاؤں کے سبھی طبقوں کے لوگوں کو اس کمیٹی میں شامل کیا گیا۔ اس میں گاوں برھا (گاؤں کے بزرگ) ، آنگن واڑی اور آشا کارکنان اور اسکول کے اساتذہ شامل کئے گئے۔ وی ڈبلیو ایس سی میں 50٪ خواتین رکن ہیں جو جے جے ایم کی کامیابی کا ایک کلیدی پہلو ہے۔

مائمی گاؤں کو پانی کی فراہمی کے لئے اسکیم کو ریاستی سطح کی اسکیم منظوری کمیٹی (ایس ایل ایس ایس سی) نے منظور کیا ہے اور اسے مارچ 2021 تک مکمل کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔ دیہاتیوں نے محنت کی شکل میں 5 فیصد کی حصہ داری میں اپنا تعاون دیناشروع کردیا ہے۔

مرکزی حکومت کے فلیگ شپ پروگرام جیول جیون مشن کے تحت ریاستوں کے ساتھ شراکت داری میں 2024 تک ملک کے ہر دیہی گھر کو نل کے پانی کے کنکشن فراہم کرنے کے مقصد پر عملدرآمد کیا جا رہا ہے۔ مشن کا مقصد مستقل اور طویل مدتی بنیاد پر روزانہ 55 لیٹر (ایل پی سی ڈی) کی خدمت کی سطح پر ہر دیہی کنبے کو پینے کے پانی کی دستیابی کو یقینی بنانا ہے تاکہ دیہی علاقوں میں رہنے والے لوگوں کی زندگی میں بہتری لائی جاسکے۔

                                          **************

 

م ن۔ ن ا۔ م ف

U: 6977



(Release ID: 1670530) Visitor Counter : 8