بجلی کی وزارت

ملک میں موسم گرما میں بجلی کی طلب کو پورا کرنے کے لیے حکومت کی جانب سے اقدامات کیے جا رہے ہیں


اضافی بجلی انرجی ایکسچینج میں فروخت کے لیے پیش کی جائے گی۔ پاور پلانٹس کی مینٹیننس کو مان سون سیزن میں منتقل کیا جائے گا

Posted On: 02 APR 2024 7:43PM by PIB Delhi

حکومت آئندہ موسم گرما میں بجلی کی طلب کو پورا کرنے کو یقینی بنانے کے لیے تمام ضروری اقدامات کر رہی ہے۔ اس کو یقینی بنانے کے لیے، بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے مرکزی وزیر جناب آر کے سنگھ نے موسم گرما کے دوران زیرو لوڈ شیڈنگ کو یقینی بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کئی میٹنگیں کیں۔

اس سال مارچ کے تیسرے ہفتے میں وزارت میں منعقدہ ایک میٹنگ میں اس بات پر زور دیا گیا کہ تمام اسٹیک ہولڈرز کی طرف سے مناسب پیشگی منصوبہ بندی کی جانی چاہیے، تاکہ ایسی صورتحال کو روکا جا سکے جس میں ایک ریاست کے پاس اضافی بجلی ہو جبکہ دوسری ریاست کو بجلی کی قلت کا سامنا ہو۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001O7RI.jpg

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002KXFJ.jpg

 

تھرمل پاور پلانٹس کی جزوی بندش کو کم کیا جا رہا ہے۔

آج 2 اپریل 2024 کو ایک اور میٹنگ ہوئی ہے جس میں بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے مرکزی وزیر نے جزوی بندش کا سامنا کرنے والے تمام تھرمل پاور پلانٹس کی بجلی کی صلاحیت کی صورتحال کا جائزہ لیا، جس کا مقصد بار پر تھرمل صلاحیت کی زیادہ سے زیادہ دستیابی کو یقینی بنانا تھا۔ بتایا گیا کہ جزوی بندش کے تحت گنجائش کی مقدار میں کمی آئی ہے اور انہیں مزید کم کرنے کے لیے اقدامات تجویز کیے گئے ہیں۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003UZBJ.jpg

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image004AH1I.jpg

 

غیر آپریشنل تھرمل پاور کی صلاحیت کا جائزہ

وزیر نے آج جنریشن کمپنیوں کے ساتھ ایک میٹنگ بھی کی اور 5.2 گیگا واٹ غیر آپریشنل تھرمل صلاحیت کی صورتحال کا جائزہ لیا۔

پاور پلانٹس کی مینٹیننس کو مان سون سیزن میں منتقل کیا جائے گا۔

وزیر نے اپریل کے مہینے میں 1.7 گیگا واٹ اور جون کے مہینے میں 6 گیگاواٹ سے 9 گیگا واٹ کے منصوبہ بند مینٹیننس کے کام کا جائزہ لینے کی ہدایت دی ہے۔ یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ تھرمل یونٹس کی منصوبہ بند بندش کو مان سون کے موسم میں شیڈول/شفٹ کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

نئی صلاحیت کے اضافے کو تیز کیا جائے گا۔

ان کے علاوہ کوئلہ، ہائیڈرو، نیوکلیئر، سولر اور ونڈ میں صلاحیت میں اضافے کی نگرانی کی جائے گی، تاکہ ان کے کام کو تیز کیا جا سکے۔

کیپٹیو جنریٹنگ اسٹیشنوں کے ساتھ اضافی بجلی استعمال کی جائے گی۔

یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ کسی بھی اضافی بجلی کو استعمال کرنے کے امکان کو تلاش کیا جائے جو کیپٹیو جنریٹنگ اسٹیشنوں کے ساتھ دستیاب ہو سکتی ہے۔

سرپلس پاور انرجی ایکسچینج میں فروخت کے لیے پیش کی جائے گی۔

اس بات کی بھی نشاندہی کی گئی کہ تمام تھرمل جنریٹنگ اسٹیشنوں کو پاور ایکسچینجز میں اپنی غیر مطلوبہ / فاضل بجلی کی پیشکش کرنی چاہیے، جیسا کہ حال ہی میں مطلع کردہ قوانین کے ذریعے لازمی قرار دیا گیا ہے۔ یہ ہدایت کی گئی ہے کہ تعمیل کی باقاعدگی سے نگرانی کی جائے اور ہدایات کی خلاف ورزی پر نوٹس جاری کیے جائیں۔

کوئلے پر مبنی تمام تھرمل پاور پلانٹس کے لیے یکساں تکنیکی کم از کم 55 فیصد یونٹ صلاحیت کی لوڈنگ

این ٹی پی سی نے مختلف ڈسکام کے ذریعہ ناقابل عمل پاور شیڈولنگ کا مسئلہ اٹھایا۔ وزیر نے ہدایت دی کہ تمام کوئلے پر مبنی پاور جنریٹروں کے لیے یونٹ کی صلاحیت کے 55% کی یکساں تکنیکی کم از کم لوڈنگ کو لازمی قرار دیا جائے جیسا کہ بین ریاستی بجلی پیدا کرنے والے اسٹیشنوں اور علاقائی لوڈ ڈسپیچ مراکز کے لیے لاگو کیا گیا ہے۔ اس کا مقصد نظام الاوقات جاری کرتے وقت تکنیکی کم از کم حالات کو یقینی بنانا اور گرڈ کی حفاظت اور وشوسنییتا کو یقینی بنانا ہے۔

گیس پر مبنی صلاحیت کے آپریشنلائزیشن کا جائزہ لیا جائے گا، سیکشن 11 کی ہدایات کی جانچ کی ضرورت ہے۔

وزیر توانائی نے ہدایت کی ہے کہ گرمی کے موسم میں گیس پر مبنی پاور پراجیکٹس کے آپریشنلائزیشن کا جائزہ لینے کے لیے گیس پر مبنی پاور پراجیکٹس کے تمام ڈویلپرز کے ساتھ بھی ایک میٹنگ منعقد کی جائے۔ وزارت اس بات کا جائزہ لے گی کہ آیا بجلی ایکٹ، 2003 کے سیکشن 11 کے تحت ہدایات، جس کے تحت مناسب حکومت یہ بتا سکتی ہے کہ پیداوار کرنے والی کمپنی، غیر معمولی حالات میں اس حکومت کی ہدایات کے مطابق کسی بھی پیداواری اسٹیشن کو چلائے گی اور اس کی دیکھ بھال کرے گی۔ گیس پر مبنی پاور پلانٹس کو جاری کیا جاتا ہے، اسی طرح کی خطوط پر جو درآمدی کوئلے پر مبنی پاور پلانٹس کے لیے کیا جاتا ہے، تاکہ آئندہ موسم گرما کے دوران ان کے آپریشنل ہونے کو یقینی بنایا جا سکے۔

درآمدی کوئلے پر مبنی پاور پلانٹس کے لیے سیکشن 11 کی ہدایات ستمبر 2024 تک بڑھا دی جائیں گی۔

یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ درآمدی کوئلے پر مبنی پاور پلانٹس کے ذریعے فراہم کی جانے والی توانائی پر غور کرتے ہوئے، سیکشن 11 کے تحت ہدایات کو 30 ستمبر 2024 تک بڑھایا جا سکتا ہے۔

مرکزی پاور سکریٹری جناب پنکج اگروال؛ مرکزی وزیر کی صدارت میں ہونے والی میٹنگوں میں سی ای اے، این ٹی پی سی، گرڈ انڈیا، جینکوس، پی ایف سی اور این وی وی این کے سینئر افسران بحث کا حصہ تھے۔

پس منظر

آنے والے موسم گرما کے موسم کے لیے، انڈین میٹرولوجیکل ڈپارٹمنٹ (آئی ایم ڈی ) نے شمال مغربی، شمال مشرقی، وسطی اور جزیرہ نما ہندوستان کے کچھ الگ تھلگ علاقوں کو چھوڑ کر پورے ملک میں معمول سے زیادہ اور کم سے کم درجہ حرارت کی پیش گوئی کی ہے۔ اس وجہ سے بجلی کی طلب بھی پچھلے سالوں کے مقابلے زیادہ ہو گی، جو کہ حالیہ مہینوں میں شمسی اور غیر شمسی اوقات دونوں کے دوران زیادہ مانگ کے بڑھتے ہوئے رجحان سے بھی ظاہر ہوتی ہے۔

توانائی کی چوٹی کی طلب 2022-23 میں 2,15,888 میگاواٹ سے 2023-24 میں 12.7 فیصد بڑھ کر 2,43,271 میگاواٹ ہوگئی، جب کہ چوٹی کی طلب 2022-23 میں 2,10,725 میگاواٹ سے 13.924-2023 میں فیصد بڑھ گئی۔

سال 2022-23 کے مقابلہ میں، 2023-24 میں توانائی کی ضرورت میں 7.5 فیصد اضافہ ہوا اور توانائی کی دستیابی میں 7.8 فیصد اضافہ ہوا، جس کے نتیجے میں توانائی کی کل کمی 23-2022 میں 0.5 فیصد سے کم ہو کر 2023-24 میں 0.2 فیصد ہو گئی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0054Y0Y.jpg

کل پیدا ہونے والی بجلی 2022-23 میں 1,621 بلین یونٹ سے 7.1 فیصد بڑھ کر 2023-24 میں 1,736 بلین یونٹ ہو گئی۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0060NJB.jpg

 

صرف کوئلے پر مبنی بجلی کے حوالے سے، 2023-24 میں پیدا ہونے والی کل توانائی میں 2022-23 کے مقابلے میں 10.0 فیصد اضافہ ہوا۔ اس میں سے گھریلو کوئلے پر مبنی پاور پلانٹس سے پیدا ہونے والی توانائی میں 6.5 فیصد اضافہ ہوا جبکہ درآمدی کوئلے پر مبنی پاور پلانٹس سے پیدا ہونے والی توانائی میں 104.0 فیصد تک اضافہ ہوا۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image00714X5.jpg

*************

ش ح ۔ا م۔م ص۔

U:6417

 



(Release ID: 2016990) Visitor Counter : 46