ماحولیات، جنگلات اور موسمیاتی تبدیلی کی وزارت

جناب بھوپیندر یادو نے کہا ہے کہ ہندوستان کی جی-20 صدارت کے تحت، ’گرین گروتھ‘ کا تصور ایک ترجیحی علاقہ ہے، جو اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ ہندوستانی پالیسی سازی کے عمل میں پائیدار ترقی کو کتنی دور اندیشی سے مرکزی دھارے میں لایا جا رہا ہے


فطرت کے ساتھ ہم آہنگی کے ساتھ رہنا روایتی طور پر ہندوستانی اخلاقیات سے جڑا رہا ہے اور یہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی طرف سے دیئے گئے لائف کے اصول میں جھلکتا ہے: جناب یادو

Posted On: 22 FEB 2023 5:50PM by PIB Delhi

ماحولیات، جنگلات اور موسمیاتی تبدیلی کے مرکزی وزیر جناب بھوپیندر یادو نے آج نئی دہلی میں منعقدہ عالمی پائیدار ترقی سمٹ 2023 کے افتتاحی اجلاس میں پائیدار ترقی اور موسمیاتی لچک کو مرکزی دھارے میں لانے کے لیے بصیرت مند قیادت کے موضوع پر کلیدی خطبہ دیا۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001D2IK.jpg

گیانا کے نائب صدر عالی جناب ڈاکٹر بھرت جگدیو، موسمیاتی تبدیلی اور سی او پی - کوپ 28 کے کے خصوصی ایلچی اور متحدہ عرب امارات کے نامزد صدر عالی جناب ڈاکٹر سلطان الجابر،ٹیری (ٹی ای آر آئی) کے چیئرمین جناب نتن دیسائی اور ٹیری کی ڈائریکٹر جنرل محترمہ ویبھا دھونن بھی موجود تھیں۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002K33A.jpg

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے جناب بھوپیندر یادو نے کہا کہ گزشتہ سال کے تھیم اور بحث کے تسلسل میں، اس سال چوٹی کانفرنس ’’مین اسٹریمنگ سسٹین ایبل ڈیولپمنٹ اینڈ کلائمیٹ ریزیلینس فار کلیکٹو ایکشن‘‘ پر مبنی ہے، اور جو اس وقت ہورہی ہے جب ہندوستان نے جی20 کی صدارت سنبھالی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب دنیا آب و ہوا کی کارروائی، ماحولیاتی تحفظ اور پائیدار ترقی سے متعلق مسائل سے نمٹ رہی ہے، وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی دور اندیش قیادت میں ہندوستان دنیا بھر کے ممالک کے لیے ایک تحریک بن کر ابھر رہا ہے، خاص طور پر بنیادی حقیقت یہ ہے کہ کس طرح معاشی ترقی اور ماحولیات کا تحفظ ساتھ ساتھ چل سکتے ہیں۔

جناب یادو نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کے ماحولیاتی خرابی کو دور کرکے ماحولیاتی ہم آہنگی لانے کا وژن زمینی سطح پر ظاہر ہو رہا ہے۔ پروجیکٹ چیتا کا کامیاب نفاذ ایسی مثالوں میں سے ایک ہے۔ انہوں نے کہا کہ جنوبی افریقہ سے چیتوں کی دوسری کھیپ کو 18 فروری 2023 کو مدھیہ پردیش کے کونو نیشنل پارک میں کامیابی کے ساتھ لایا گیا ہے۔

اپنے خطاب میں جناب یادو نے کہا کہ آب و ہوا کی تبدیلی، حیاتیاتی تنوع کے نقصان اور زمینی انحطاط کا مقابلہ کرنا تمام سیاسی حدود سے بالاتر ہے اور اس لیے یہ ایک مشترکہ عالمی چیلنج ہے۔ شواہد پر مبنی پالیسی سازی اور عمل درآمد کے ذریعے، ملکی اور بین الاقوامی سطح پر، کئی مواقع پر، ہندوستان نے یہ ظاہر کیا ہے کہ وہ کبھی بھی مسئلے کا حصہ نہیں رہا ہے، بلکہ حل کا حصہ بننے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے۔

اس ماہ کے شروع میں پارلیمنٹ میں پیش کیے گئے مرکزی بجٹ 2023-2024 کی دفعات پر روشنی ڈالتے ہوئے، جناب یادو نے کہا کہ اس میں کئی شعبوں میں ’گرین گروتھ‘ کا تصور کیا گیا ہے، جس کا بنیادی خیال یہ ہے کہ مستقبل کی تمام ترقی لازمی طور پر سبز (گرین) ہونی چاہیے۔ جناب یادو نے کہا کہ ’’مرکزی بجٹ میں ’گرین گروتھ‘ کے تصور کو ترجیحی علاقہ قرار دیے جانے سے اس بات کی تصدیق ہوتی ہے کہ کس طرح پائیدار ترقی کو ایک بصیرت مندانہ نقطہ نظر کے ذریعے ہندوستانی پالیسی سازی کے عمل میں مرکزی دھارے میں شامل کیا گیا ہے۔‘‘

موسمیاتی تبدیلیوں کا مقابلہ کرنے کے لئے ہندوستان کے عزم کے بارے میں، جناب یادو نے کہا کہ ہندوستان نے شرم الشیخ میں سی او پی - کوپ27 میں پہلے ہی اپنی طویل مدتی کم اخراج کی حکمت عملی کی دستاویز پیش کر دی ہے، جو سی بی ڈی آر – آر سی کے اصولوں کے ساتھ ساتھ دو اہم ستونوں، موسمیاتی انصاف اور پائیدار طرز زندگی پر مبنی ہے۔  اس کے ساتھ، ہندوستان ان منتخب 58 ممالک کی فہرست میں شامل ہو گیا ہے جنہوں نے اپنے نئے یا اپ ڈیٹ شدہ ایل ٹی- ایل ای ڈی ایس - لیڈس جمع کرائے ہیں۔

مرکزی وزیر ماحولیات نے کہا کہ نہ صرف مقامی طور پر بلکہ بین الاقوامی فورمز پر بھی، خاص طور پر آب و ہوا کی لچک پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے، ہندوستان نے بالخصوص چھوٹے جزیرے کی ترقی پذیر ریاستوں کے لیے قدرے اضافی معلومات فراہم کر کے خاص طور پر مدد کی ہے، جو خاص طور پر بڑھتے ہوئے سطح سمندر کے تئیں حساس ہیں۔ سی ڈی آر آئی  یا کولیشن فار ڈیزاسٹر ریزیلینٹ انفرااسٹرکچر اس کی تعمیر اور پرورش کر رہا ہے۔ ہندوستان نے سی ڈی آر آئی یا کولیشن فار ڈیزاسٹر ریزیلینٹ انفرا اسٹرکچر بنایا اور اس کی پرورش کی ہے۔ ہندوستان انفرااسٹرکچر میں جدت اور لچک کو فروغ دینے کے لیے مختلف حصص دار اداروں اور افراد کو شامل کرنے کے لیے ٹھوس کوششیں کر رہا ہے۔

ایسا ہی ایک اقدام ’’ڈی آر آئی کنیکٹ‘‘ہے جو بنیادی ڈھانچے کے شعبوں میں مصروف حصص داروں کے لیے ایک ویب پر مبنی پلیٹ فارم ہوگا۔ اس پلیٹ فارم کا تصور کولیشن ممبرشپ کی اجتماعی حکمت عملی کو بروئے کار لانے کے لیے نئے علم کی تعمیر کے لیے عمل پر مبنی سیکھنے اور لچکدار انفرااسٹرکچر اور آفات سے بچنے والے انفرااسٹرکچر پر جدت طرازی کے ماحول کو فروغ دینے اور چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے قابل عمل حل تیار کرنے کے لیے لیا گیا ہے۔

جناب یادو نے زور دے کر کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی موجودگی میں کوپ 26 کے دوران کیے گئے اعلانات کے تناظر میں، سی ڈی آر آئی کے ایک جزو کے طور پر آئی آر آئی ایس یا انفرااسٹرکچر فار ریزیلینٹ آئی لینڈ اسٹیٹ چھوٹے جزیرہ جاتی ترقی پذیر ممالک کے لیے لچکدار، پائیدار اور شمولیت پر مبنی بنیادی ڈھانچے کے ایک منظم نقطہ نظر کے ذریعے پائیدار ترقی کے حصول میں اہم رہا ہے۔ جناب یادو نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کے ذریعہ شروع کی گئی وائس آف گلوبل ساؤتھ سمٹ، جس میں 10 سیشنوں میں 134 ممالک کی شرکت دیکھنے میں آئی، نے گلوبل ساؤتھ کو ترقی پذیر دنیا کے اہم خدشات پر تبادلہ خیال کرنے کا ایک پلیٹ فارم فراہم کیا۔ یہ گلوبل ساؤتھ کے لیے ایک نمایاں آواز بننے میں ہندوستان کی قیادت کا ایک اور ثبوت ہے۔

سیشن کے ذیلی تھیم پر حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے، جس میں ہندوستان کی قومی ترقی کی رفتار میں پائیدار ترقی کو مرکزی دھارے میں لانے پر توجہ دی گئی ہے، جناب یادو نے کہا کہ ہندوستان کے جی20 کی صدارت سنبھالنے کے ساتھ، خاص طور پر اقوام متحدہ کے اہم کام نے دہائی میں پائیدار ترقی کے بارے میں گفت و شنید  نے دنیا کی توجہ اس طرف مبذول کرائی ہے۔

جناب یادو نے کہا کہ فطرت کے ساتھ ہم آہنگی میں رہنا روایتی طور پر ہندوستانی اخلاقیات سے جڑا ہوا ہے اور یہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کے ذریعہ وضع کردہ لائف (ایل آئی ایف ای) یعنی ماحولیات کے لئے طرز زندگی کے منتر سے ظاہر ہوتا ہے۔ ایک پائیدار طرز زندگی کی قیادت کرنے کے لیے انفرادی رویے کو فروغ دینے پر توجہ مرکوز کرنے والے منتر کو عالمی رہنماؤں اور دنیا بھر کے سرکردہ ماہرین کی طرف سے توجہ اور تعریف ملی ہے اور اسے کوپ 27 میں شرم الشیخ کے نفاذ کے منصوبے کے متن کے سرورق پر نمایاں کیا گیا ہے۔ طرز زندگی نے عالمی رہنماؤں اور سرکردہ ماہرین کی توجہ اور تعریف حاصل کی ہے۔ دنیا بھر میں اور کوپ 27 میں شرم الشیخ کے نفاذ کے منصوبے کے کور فیصلے کا متن شامل ہے۔ عالمی برادری کے لیے ’ون ورڈ ماس موومنٹ‘ – ’’لائف اسٹائل فار انوائرمنٹ‘‘، جس کی عکاسی ہندوستان کے اپ ڈیٹ کردہ این ڈی سی میں ہوتی ہے، اب روایات اور تحفظ اور اعتدال کی اقدار پر مبنی صحت مند اور پائیدار زندگی گزارنے کے طریقے کو فروغ دینے میں اہم مدد کر رہی ہے، جو پائیدار پیداوار اور کھپت پر بنیادی طور پر ایس ڈی جی 12 کے بنیادی حصے میں ہے۔

پائیدار ترقی کو قابل عمل بنانے کے اہم پہلو پر گفتگو کرتے ہوئے، جناب یادو نے کہا کہ سرکلر اکانومی ایک نیا نمونہ پیش کرتی ہے جو مصنوعات اور عمل کے جامع نظریہ کی ضرورت پر زور دیتی ہے۔ یہ پائیدار ترقی کی طرف لے جاتا ہے جو خود کفیل ہندوستان کی کلید ہے۔ جناب یادو نے کہا کہ حکومت ملک کو سرکلر اکانومی کی طرف لے جانے کے لیے سرگرمی سے پالیسیاں بنا رہی ہے اور پروجیکٹوں کو فروغ دے رہی ہے۔ ہندوستان پہلے ہی اس سلسلے میں مختلف قوانین کا اعلان کر چکا ہے، جیسے کہ پلاسٹک ویسٹ مینجمنٹ رولز، ای ویسٹ مینجمنٹ رولز، کنسٹرکشن اینڈ ڈیمولیشن ویسٹ مینجمنٹ رولز، میٹل ری سائیکلنگ پالیسی وغیرہ۔

بنگلورو میں 9-11 فروری 2023 کو منعقد ہونے والی جی 20 ماحولیات اور موسمیاتی پائیداری ورکنگ گروپ کی پہلی میٹنگ کے بارے میں بات کرتے ہوئے، جناب یادو نے کہا کہ ورکنگ گروپ کی میٹنگ میں بنیادی طور پر پائیدار ترقی کے موضوعات پر وسیع پیمانے پر بات چیت ہوئی۔ تین روزہ بحث کے دوران بحث کے موضوعات یہ تھے:

1. زمین کے انحطاط (ڈی گریڈیشن) کو روکنا، ماحولیاتی نظام کی بحالی کو تیز کرنا اور حیاتیاتی تنوع کی افزودگی

2. پائیدار اور آب و ہوا سے مزاحم نیلگوں معیشت کو فروغ دینا

3. وسائل کی کارکردگی اور سرکلر اکانومی کی حوصلہ افزائی کرنا

ان موضوعات کے علاوہ، جناب یادو نے کہا کہ جی 20 ممالک کے مندوبین نے موسمیاتی کارروائی کو تیز کرنے، سائنس اور خلا اور ماحولیات کے تحفظ میں مشن لائف کے رول پر بھی غور و خوض کیا۔

جناب یادو نے زور دے کر کہا کہ دنیا میں سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی معیشت ہونے کے باوجود، ہندوستان آب و ہوا کی تبدیلی، حیاتیاتی تنوع کے نقصان اور آلودگی کی شکل میں تین سیارہ جاتی بحران سے نمٹنے کے لیے ملکی اور بین الاقوامی سطح پر بڑے قدم اٹھا رہا ہے۔ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی باصلاحیت قیادت میں ہندوستان نے 75 رامسر ویٹ لینڈ سائٹس، 33  ایلیفینٹ ریزرو، 53  ٹائیگر ریزرو، بارہ بلیو فلیگ بیچز حاصل کیے ہیں۔ ایک بار استعمال ہونے والی پلاسٹک پر پابندی کو کامیابی کے ساتھ نافذ کیا ہے، اپنے این ڈی سی کو اپ ڈیٹ کیا ہے، کامیابی کے ساتھ دو ممالک سے لائے گئے چیتوں کو متعارف کرایا ہے اور  شرم الشیخ میں کوپ 27 اور مونٹریال میں سی بی ڈی کوپ 15 کے موقع پر مضبوط اور جرأت مندانہ قیادت کا مظاہرہ کیا ہے۔ یہ مثالیں اس حقیقت کی گواہی دیتی ہیں کہ ہندوستان کی ترقی کی رفتار اور پالیسی سازی کے عمل نے پائیدار ترقی اور آب و ہوا کی لچک کو مرکزی دھارے میں لانے کا کام کیا ہے۔

مرکزی وزیر ماحولیات نے کہا کہ پچھلی دو دہائیوں سے عالمی پائیدار ترقی سمٹ زندگی کے سرکاری اور نجی شعبے کے تمام حصص داروں کو شامل کرنے میں کامیاب رہی ہے اور اس وجہ سے پائیدار ترقی کے موضوع پر بات چیت میں سب سے آگے رہی ہے۔ جناب یادو نے اپنے خطاب کا اختتام وزیر اعظم جناب نریندر مودی کا حوالہ دیتے ہوئے کیا جنہوں نے پائیدار ترقی کے خیال کو بہت مؤثر طریقے سے پیش کیا ہے:

’’غریبوں تک توانائی کی مساوی رسائی ہماری ماحولیاتی پالیسی کی بنیاد رہی ہے، ہندوستانی ہمیشہ فطرت کے ساتھ ہم آہنگی میں رہتے ہیں۔ ہماری ثقافت، رسوم و رواج، روزمرہ کے طور طریقے اور فصل کاٹنے سے متعلق بہت سے تہوار فطرت کے ساتھ ہمارے مضبوط رشتے کو ظاہر کرتے ہیں۔ ری ڈیوز (کمی لانا)، ری یوز (دوبارہ استعمال)، ری سائیکل ، ری کور (بازیابی) ، ری ڈیزائن اور ری مینوفیکچر ہندوستان کے ثقافتی اقدار کا حصہ رہے ہیں۔ ہندوستان موسم دوست پالیسیوں اور طریقوں کے لئے کام کرتا رہے گا جیسا کہ ہم نے ہمیشہ کیا ہے۔‘‘ -  جناب نریندر مودی

جناب یادو نے اس موقع پر ’’قومی شاہراہوں کی تعمیر اور آپریشن کے دوران قابل اجتناب کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج کا جائزہ‘‘ کے موضوع پر رپورٹ بھی جاری کی۔ رپورٹ میں قومی شاہراہوں کی تعمیر میں فی کلومیٹر قابل اجتناب کاربن ڈائی آکسائیڈ کی مقدار کا اندازہ لگایا گیا ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003DE57.jpg

 

*****

ش ح۔ م م۔ م ر

U-NO.1963



(Release ID: 1901582) Visitor Counter : 184


Read this release in: English , Hindi , Punjabi , Telugu