زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت

مرکزی وزارتوں، ریاستی حکومتوں اور ہندوستانی سفارت خانوں کے ذریعے مرکوز توجہ کی سرگرمیوں کے ساتھ، جوار کے بین الاقوامی سال (آئی وائی ایم2023(کا آغاز

Posted On: 01 JAN 2023 11:48AM by PIB Delhi
  • ڈی اےاورایف ڈبلیوکا مقصد جوار کی کاشت اور استعمال کو بڑے پیمانے پر فروغ دینا اور اسے آئی وائی ایم کے ذریعے پوری دنیا تک پہنچانا ہے۔
  • مرکزی وزارتوں، ریاستوں اور ہندوستانی سفارت خانوں نے 2023 میں آئی وائی ایم کو فروغ دینے اور جوار باجرے کے فوائد کے بارے میں بیداری بڑھانے کے لیے مختلف سرگرمیاں انجام دینے کے لیے مکوز توجہ کے ساتھ ایک مہینے کا وقت رکھا ہے۔
  • جنوری 2023 کھیل اور نوجوانوں کے امور کی وزارت، حکومت ہند اور ریاست چھتیس گڑھ، میزورم اور راجستھان کے لیے آئی وائی ایم کے لیے تقریبات/سرگرمیوں کے انعقاد کے لیے مرکوز مہینہ ہے۔

وزیر اعظم کی سربراہی میں حکومت ہند نے جوار کے بین الاقوامی سال(آئی وائی ایم)2023 کی تجویز کو اسپانسر کیا جسے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی (یو این جی اے)نے قبول کر لیا۔ یہ اعلان حکومت ہند کے لیے آئی وائی ایم کو منانے میں سب سے آگے رہنے کے لیے اہم رہا ہے۔ ہندوستان کے وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے بھی آئی وائی ایم 2023 کو ایک 'عوامی تحریک' بنانے کے ساتھ ساتھ ہندوستان کو 'جواروں کے لیے عالمی مرکز' کے طور پر پوزیشن دینے کے لیے اپنے وژن کا اشتراک کیا ہے۔

وادی سندھ کی تہذیب کے دوران اس کی کھپت کے کئی شواہد کے ساتھ ہندوستان میں پالی جانے والی پہلی فصلوں میں ’جوار‘ تھیں۔ اس وقت 130 سے زائد ممالک میں کاشت کی جا رہی ہے، جوار ایشیا اور افریقہ کے نصف ارب سے زیادہ لوگوں کے لیے روایتی خوراک سمجھے جاتے ہیں۔ ہندوستان میں، باجرا بنیادی طور پر خریف کی فصل ہے، جس میں دیگر اسی طرح کی چیزوں کے مقابلے میں کم پانی اور زرعی آدانوں کی ضرورت ہوتی ہے۔ جوار روزی روٹی پیدا کرنے، کسانوں کی آمدنی بڑھانے اور پوری دنیا میں خوراک اور غذائی تحفظ کو یقینی بنانے کی اپنی بے پناہ صلاحیت کی وجہ سے اہم ہیں۔

جوار کی بے پناہ صلاحیت کو تسلیم کرتے ہوئے، جو اقوام متحدہ کے کئی پائیدار ترقیاتی اہداف (ایس ڈی جیز)کے ساتھ بھی ہم آہنگ ہے، حکومت ہند(جی او آئی نے جوار کو ترجیح دی ہے۔ اپریل 2018 میں، باجرے کو’’نیوٹری سیریلز‘‘ کے نام سے دوبارہ برانڈ کیا گیا، جس کے بعد سال 2018 کو جوار کا قومی سال قرار دیا گیا، جس کا مقصد بڑے پیمانے پر فروغ اور مانگ پیدا کرنا ہے۔ 2021-2026 کے درمیان پیشن گوئی کی مدت کے دوران عالمی باجرا مارکیٹ میں 4.5 فیصدکا سی اے جی آر رجسٹر کرنے کا امکان ہے۔

مورخہ6 دسمبر 2022 کو، اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن (ایف اے او)نے جوار کے بین الاقوامی سال - 2023 کے لیے روم، اٹلی میں ایک افتتاحی تقریب کا اہتمام کیا۔ اس تقریب میں ہندوستان کے اعلیٰ سرکاری عہدیداروں کے وفد نے شرکت کی۔ اس سلسلے میں اگلا، ’جوار کا بین الاقوامی سال (آئی وائی ایم2023 کے سال بھر کے جشن سے پہلے، محکمہ زراعت اور کسانوں کی بہبود نے پارلیمنٹ ہاؤس میں اراکین پارلیمنٹ کے لیے ایک خصوصی ’جوار ظہرانے‘ کا اہتمام کیا۔

زراعت اور کسانوں کی بہبود کے محکمے نے اس مقصد کو حاصل کرنے کے لیے ایک فعال ملٹی اسٹیک ہولڈر کی شمولیت کا طریقہ اختیار کیا ہے (تمام مرکزی حکومت کی وزارتوں، ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں، کسانوں، اسٹارٹ اپس، برآمد کنندگان، خوردہ کاروباروں، ہوٹلوں، ہندوستانی سفارت خانوں وغیرہ کو شامل کرنا)۔ ا ٓئی وائی ایم 2023 اور ہندوستانی باجرا کو عالمی سطح پر لے جانا۔ وزارتوں، ریاستوں اور ہندوستانی سفارت خانوں کو 2023 میں آئی وائی ایم کے فروغ کے لیے مختلف سرگرمیاں انجام دینے اور صارفین، کاشتکار اور آب و ہوا کے لیے باجرے کے فوائد کے بارے میں بیداری بڑھانے کے لیے توجہ مرکوز کرنے والے مہینے مختص کیے گئے ہیں۔

مرکزی وزارتوں کے درمیان، جنوری 2023 کے مہینے کے لیے آئی وائی ایم سے متعلق سرگرمیاں، کھیل اور نوجوانوں کے امور کی وزارت، حکومت ہند کے ذریعے شروع کی جائیں گی۔ وزارت نے جنوری میں 15 دنوں کے دوران 15 سرگرمیوں کی منصوبہ بندی کی ہے جس میں ویڈیو پیغامات کے ذریعے کھلاڑیوں، غذائیت کے ماہرین اور فٹنس ماہرین کو شامل کرنا، معروف غذائی ماہرین، غذائی ماہرین اور اشرافیہ کے کھلاڑیوں کے ساتھ جوار پر ویبینار کا انعقاد، فٹ انڈیا ایپ کے ذریعے پروموشن بڑھانا وغیرہ شامل ہیں۔ دوسری وزارتیں جنہوں نے جنوری میں پروگراموں کا منصوبہ بنایا ہے وہ ہیں فوڈ پروسیسنگ انڈسٹریز کی وزارت جو آندھرا پردیش، بہار اور مدھیہ پردیش میں میلٹ فیئر-کم-نمائشیں منعقد کرے گی۔ ایف ایس ایس اے آئی پنجاب، کیرالہ اور تمل ناڈو وغیرہ میں ایٹ رائٹ میلوں کا اہتمام کرے گا۔

ریاستوں کے حوالے سے، چھتیس گڑھ، میزورم اور راجستھان کو آئی وائی ایم کی حساسیت اور فروغ کے لیے مخصوص سرگرمیاں انجام دینے کے لیے جنوری کا مہینہ مختص کیا گیا ہے۔ ریاستیں باجرا پر مبنی سرگرمیاں منعقد کریں گی جن میں مہوتسو/ میلے اور فوڈ فیسٹیول، کسانوں کی تربیت، بیداری مہم، ورکشاپس/ سیمینار، ریاست کے مختلف اہم مقامات پر ذخیرہ اندوزی اور تشہیری مواد کی تقسیم وغیرہ شامل ہیں۔ جنوری کے مہینے میں اسی طرح کی سرگرمیوں میں مہاراشٹر، اتراکھنڈ اور پنجاب شامل ہیں۔

جنوری 2023 کے دوران، ایگریکلچرل اینڈ پروسیسڈ فوڈ پروڈکٹس ایکسپورٹ ڈیولپمنٹ اتھارٹی (اے پی ای ڈی اے) اور ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیوبلجیم میں ہونے والے تجارتی شو میں شرکت کریں گے جس میں ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیو، اے پی ای ڈی اے، اسٹارٹ اپس، ایکسپورٹرز اور فارمر پروڈیوسر آرگنائزیشنز (ایف پی اوز) کے نمائندوں کے ساتھ ملٹی اسٹیک ہولڈر وفد آر ٹی ای اور آر ٹی سی باجرا پر مبنی مصنوعات جو ہندوستانی کمپنیوں کے ذریعہ مارکیٹ کی گئی ہیں، بی2 بی، بی 2 جی تعاملات وغیرہ کے ذریعے ہندوستانی باجرا کے تنوع کو ظاہر کرے گا۔

مزید برآں، 140 سے زیادہ ممالک میں ہندوستان کے سفارت خانے 2023 کے دوران آئی وائی ایم کے جشن میں شرکت کریں گے جس میں نمائش، سیمینارز، مذاکروں، پینل مباحثوں وغیرہ کے ذریعے ہندوستانی تارکین وطن کو شامل کرکے آئی وائی ایم پر ضمنی تقریبات کا انعقاد کیا جائے گا۔ جنوری میں آذربائیجان میں ہندوستان کا سفارت خانہ اور بیلاروس میں ہندوستان کا سفارت خانہ مقامی چیمبرز، فوڈ بلاگرز، کھانے پینے کی اشیاء کے درآمد کنندگان اور مقامی ریستوراں وغیرہ کی شرکت سے بی 2 بی میٹنگ جیسی سرگرمیاں انجام دے گا۔ یوم جمہوریہ کی تقریبات کے حصہ کے طور پر پیش کیا جائے گا۔ ابوجا میں ہندوستان کے ہائی کمیشن اور لاگوس میں ہندوستان کے قونصلیٹ جنرل نے، آئی وائی ایم کے فروغ کے ایک حصے کے طور پر، جنوری 2023 میں ملٹس فوڈ فیسٹیول اور ملیٹس فوڈ کی تیاری کے مقابلے کا منصوبہ بنایا ہے۔ ملیٹس فوڈ فیسٹیول ہائی کمیشن کے احاطے میں منعقد کیا جائے گا۔ اور نائیجیریا کے معززین اور ہندوستانی برادری سمیت مدعو افراد کے ساتھ تیاری کے لیے اسٹال فراہم کریں۔

اس کوشش کے لیے، ایک باہمی تعاون کے ذریعے، ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیوبین الاقوامی تنظیموں، اکیڈمیا، ہوٹلز، میڈیا، ہندوستانی ڈائاسپورا، اسٹارٹ اپ کمیونٹیز، سول سوسائٹی، اور ملیٹس ویلیو چین میں شامل دیگر تمام افراد سے آگے آنے اور ہاتھ ملانے کی اپیل کرتا ہے۔ جوار کے بین الاقوامی سال - 2023 کے عظیم الشان جشن کے ذریعے’میریکل ملیٹس‘کی بھولی ہوئی شان کو زندہ کرنا۔

باجرا بھی جی-20میٹنگوں کا ایک لازمی حصہ ہیں اور مندوبین کو چکھنے، کسانوں سے ملاقات اور اسٹارٹ اپس اور ایف پی اوز کے ساتھ انٹرایکٹو سیشنز کے ذریعے جوار کا حقیقی تجربہ فراہم کیا جائے گا۔

جوار کے بین الاقوامی سال 2023 کی تقریبات میں حکومت کے پورے طرز عمل کا جذبہ حقیقی معنوں میں دیکھا جا رہا ہے۔

*****

(ش ح - اع - ر ا) 

U.No.04



(Release ID: 1887893) Visitor Counter : 211