ٹیکسٹائلز کی وزارت

قومی ٹیکنیکل ٹیکسٹائل مشن کے تحت ٹیکنیکل ٹیکسٹائل ‘‘پروٹیک’’ پر قومی کانفرنس کا انعقاد


مرکز عالمی مواقع تلاش کرنے اور ملکی اور بین الاقوامی مارکیٹ کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے تکنیکی ٹیکسٹائل کی مقامی تیاری کو فروغ دینے کے لیے پرعزم ہے

پروٹیک مصنوعات کی عالمی مانگ اور استعمال میں اضافے کے پیش نظر، ٹیکنالوجی کی دیسی ساخت اور طاق پروٹیک آئٹمز میں معیارات کے نفاذ پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے: سکریٹری ٹیکسٹائل

Posted On: 16 NOV 2022 5:57PM by PIB Delhi

ٹیکسٹائل کی وزارت نے ناردرن انڈیا ٹیکسٹائل ریسرچ ایسوسی ایشن(این آئی ٹی آر اے) اور انڈین ٹیکنیکل ٹیکسٹائل ایسوسی ایشن (آئی ٹی ٹی اے) کے ساتھ شراکت میں آج یہاں ایک پورے دن کے پروگرام "نیشنل کنکلیو آن ٹیکنیکل ٹیکسٹائل – پروٹیک" کا انعقاد کیا۔ مہمانِ خصوصی محترمہ رچنا شاہ، سکریٹری، وزارت ٹیکسٹائل، حکومت ہند نے کنکلیو کا افتتاح کیا۔

ٹیکسٹائل کی وزارت کے سکریٹری نے حفاظتی ٹیکسٹائل مصنوعات کی وسیع رینج پر مشتمل کمپنیوں کی نمائش کا بھی افتتاح کیا۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0019HE4.jpg https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002FUVK.jpg

کنکلیو میں تین پینل مباحثے ہوئے جن میں ہندوستان میں حفاظتی ٹیکسٹائل مصنوعات کے مقامی بنانے کے امکانات، ہندوستانی حفاظتی ٹیکسٹائل کو اپنانے کے بارے میں صارفین کے تجربے اور توقعات اور ہندوستان میں حفاظتی ٹیکسٹائل کی مارکیٹ کو فروغ دینے اور برآمد کے مواقع کے ساتھ ساتھ عالمی بہترین طور طریقوں کا احاطہ کیا گیا۔ کنکلیو میں تقریباً 450 شرکاء نے شرکت کی جن میں مرکزی حکومت، ہندوستانی افواج، محققین، کاروباری افراد اور تکنیکی ٹیکسٹائل خاص طور پر پروٹیک سے متعلقہ پیشہ ور افراد اور نمائندے شامل تھے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے محترمہ رچنا شاہ، سکریٹری، ٹیکسٹائل کی وزارت، حکومت ہند نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ ہندوستان کی ٹیکسٹائل صنعت ہندوستانی معیشت اور ہندوستان کی برآمدات میں ایک بڑا حصہ دار ہے۔ ٹیکنیکل ٹیکسٹائل ایک طلوع ہونے والی صنعت ہے جس کی سالانہ شرح نمو 10 فیصد ہے۔ تاہم یہ سیکٹر اب بھی سائز میں چھوٹا ہے اور ہندوستان کے لیے عالمی میدان میں نمایاں کھلاڑی بننے کے کافی مواقع موجود ہیں۔

تکنیکی ٹیکسٹائل کے شعبے میں متحرک اور توانائی کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان مینوفیکچرنگ اور برآمدات کے لیے ایک طاقتور مقام کے طور پر ابھرنے کے لیے تیار ہے۔ تاہم وقت کا تقاضا ہے کہ مصنوعات کے تنوع، ڈیزائن، جمالیات کے ساتھ ساتھ اس میں شامل افرادی قوت کے لیے تربیت کی ضرورت پر توجہ دی جائے۔

انہوں نے این ٹی ٹی ایم کے تحت ٹیکسٹائل کی وزارت کی جانب سے تکنیکی ٹیکسٹائل اشیاء کے معیارات کو قائم رکھنے اور ان پر عمل درآمد کرنے اور بین الاقوامی معیارات کے مساوی معیار کی مصنوعات کی پیداوار اور مارکیٹنگ کے لیے مشترکہ کوششوں پر روشنی ڈالی۔

انہوں نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ تکنیکی ٹیکسٹائل کی سب سے نمایاں ایپلی کیشن حفاظتی حصے میں ہے، جو تحفظ کے شعبوں میں اس کی فعال کارکردگی کے لیے استعمال ہوتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پروٹیک مصنوعات کی عالمی مانگ اور استعمال میں اضافے کے پیش نظر ٹیکنالوجی کو مقامی بنانے اور طاق پروٹیک آئٹمز میں معیارات کے نفاذ پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے۔

محترمہ روپ راشی، ٹیکسٹائل کمشنر، ٹیکسٹائل کی وزارت، حکومت ہند نے اپنے خطاب میں کہا کہ اس شعبے میں نتائج پر مبنی آر اینڈ ڈی پر توجہ دینے کی ضرورت ہے اور ٹیکسٹائل کی وزارت کی طرف سے آر اینڈ ڈی پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت ہے۔ این ٹی ٹی ایم کے جزو میں آنے والے سالوں میں زبردست ترقی متوقع ہے۔ انہوں نے اس شعبے میں قرض امداد، سبسڈی میں تعاون، سرمایہ کاری کی آمد کو آسان بنانے کے حوالے سے دیگر مسائل کے حل کے لیے حکومت کی کوششوں کے بارے میں آگاہ کیا۔ انہوں نے ذکر کیا کہ ٹیکنیکل ٹیکسٹائل انڈسٹری صنعت 4.0 کے ہندوستان کے وژن کو پورا کرنے کے لئے ایک محرک ثابت ہوگی۔

جناب راجیو سکسینہ، جوائنٹ سکریٹری، ٹیکسٹائل کی وزارت، حکومت ہند نے ہندوستانی تکنیکی ٹیکسٹائل مارکیٹ، خاص طور پر پروٹیک کی اسناد کو کنکلیو کے معزز حاضرین کے سامنے پیش کیا۔ انہوں نے نیشنل ٹیکنیکل ٹیکسٹائل مشن(این ٹی ٹی ایم) اور اس کے اجزاء بشمول تحقیق، ترقی اور اختراع، ہنر، تربیت اور تعلیم کے فروغ، مارکیٹ کی ترقی اور برآمدات کے فروغ پر زور دیا۔

انہوں نے مشن کے تحت شروع کیے گئے مختلف اقدامات جیسے مخصوص اور اسٹریٹجک پروٹیک علاقوں میں تحقیق و ترقی کے پروجیکٹس کی حمایت، 12 پروٹیک آئٹمز پرکیو سی اوز اور دیگر امور پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت جلد ہی ٹیکنیکل ٹیکسٹائل کے شعبے میں تعلیمی ایکو سسٹم اور ہنر مند افرادی قوت کی تشکیل میں معاونت کے لیے رہنما خطوط لے کر آ رہی ہے جس میں ٹیکنیکل ٹیکسٹائل میں نئے کورسز اور لیبارٹری کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے ساتھ ساتھ ٹیکنیکل ٹیکسٹائل کی ترقی کو فروغ دیا جائے گا۔

جناب راج کمار جین، چیئرمین، نیترا نے کہا کہ تکنیکی ٹیکسٹائل کی مارکیٹ پھیل رہی ہے کیونکہ مصنوعات کو مختلف صنعتوں جیسے حفاظتی لباس، زراعت، وغیرہ میں استعمال کرنے والوں کی مسلسل بڑھتی ہوئی تعداد کے ذریعے استعمال کیا جا رہا ہے۔ مزید برآں قابل استعمال آمدنی میں اضافے کے ساتھ مستقبل قریب میں خوردہ گھرانوں میں تکنیکی ٹیکسٹائل کی کھپت میں بھی اضافہ متوقع ہے۔ انہوں نے تکنیکی ٹیکسٹائل کی ترقی اور فروغ کے لیے بہت سی اسکیمیں مثلاً پی ایل آئی اسکیم، پی ایم دوسترا، نیشنل ٹیکنیکل ٹیکسٹائل مشن وغیرہ شروع کرنے کے لیے ٹیکسٹائل کی وزارت کی تعریف کی۔ یہ ملک کی مانگ کو بھی پورا کرتا ہے۔

جناب امیت اگروال، چیئرمین، آئی ٹی ٹی اے نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ حفاظتی ٹیکسٹائل نہ صرف آگ کے حالات میں استعمال ہوتے ہیں، بلکہ توانائی کی ترسیل، تابکاری سے متعلق توانائی سے متعلق بہت سی خطرناک سرگرمیوں میں وسیع پیمانے پر استعمال ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ خطرات کے بڑھتے ہوئے ایکسپوزر اور غیر منظم شعبے میں تقریبا اسی کے مساوی پانچ کروڑ لوگوں کی موجودگی کی وجہ سے ہندوستان میں حفاظتی ٹیکسٹائل کی بہت بڑی صلاحیت موجود ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان کو تکنیکی ٹیکسٹائل اشیاء کے معیار کو بڑھانے پر توجہ دینی چاہیے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ صارف صنعت کی طرف سے تکنیکی ٹیکسٹائل کے استعمال کے لیے لازمی طور پر ہندوستان میں تکنیکی ٹیکسٹائل کی ترقی کو فروغ دے گا۔

ڈاکٹر ارندم باسو، ڈائرکٹر جنرل، این آئ ٹی آر اے نے تکنیکی ٹیکسٹائل، خاص طور پر حفاظتی ٹیکسٹائل کے میدان میں ناردرن انڈیا ٹیکسٹائل ریسرچ ایسوسی ایشن کی جانب سے شروع کی گئی تحقیقی سہولیات اور پروجیکٹوں کے بارے میں آگاہ کیا۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ م ع۔ع ن

 (U: 12612)



(Release ID: 1876656) Visitor Counter : 141