کامرس اور صنعت کی وزارتہ
azadi ka amrit mahotsav

ہندوستان کی چینی کی برآمدات میں 2013-14 کے بعد سے 291 فیصد اضافہ ہوا

چینی کی برآمدات پہلی بار 10 ملین ٹن سے تجاوز کرگئی

 صرف 2021-22 کے دوران چینی کی برآمدات میں 64.90 فیصد کا اضافہ ہوا ہے

صرف مودی حکومت کی پالیسیاں عالمی منڈیوں سے فائدہ اٹھا کر کسانوں کی آمدنی بڑھانے میں مدد کر رہی ہیں- جناب  پیوش گوئل

Posted On: 18 APR 2022 5:34PM by PIB Delhi

ہندوستان کی چینی کی برآمدات نے مالی سال 2013-14 میں 1,177 ملین ڈالر کے مقابلے میں 291 فیصد کا حیران کن اضافہ درج کیا جو مالی سال 2021-22 کے دوران 4,600 ملین ڈالر تک پہنچ گئی۔ ڈی جی سی آئی اینڈ ایس کے اعداد و شمار کے مطابق، ہندوستان نے دنیا کے 121 ممالک کو چینی برآمد کی ہے۔

2021-22 میں چینی کی برآمد میں پچھلے سال کی نسبت 65 فیصد کا اضافہ ہوا۔ کووڈ 19 وبائی امراض کی وجہ سے لاجسٹک چیلنجوں کے باوجود ترقی ہوئی جس میں مال بردار کی بلند شرح، کنٹینر کی قلت وغیرہ شامل ہیں۔

ایک ٹویٹ میں اس تاریخی کامیابی پر روشنی ڈالتے ہوئے، تجارت اور صنعت، امور صارفین، خوراک اور عوامی تقسیم اور ٹیکسٹائل کے مرکزی وزیر جناب پیوش گوئل نے کہا کہ مودی حکومت کی پالیسیاں کسانوں کو عالمی منڈیوں سے فائدہ اٹھا کر ان کی آمدنی بڑھانے میں مدد کر رہی ہیں۔

ڈی جی سی آئی اینڈ ایس کے اعداد و شمار کے مطابق، ہندوستان نے 2019-20 میں 1965 ملین امریکی ڈالر کی چینی برآمد کی تھی، جو 2020-21 میں بڑھ کر 2790 ملین امریکی ڈالر اور 2021-22 میں 4600 ملین امریکی ڈالر تک پہنچ گئی۔

2021-22 (اپریل-فروری) میں، ہندوستان نے انڈونیشیا کو USD 769 ملین کی چینی برآمد کی ہے، اس کے بعد بنگلہ دیش (561 یو ایس ڈی ملین)، سوڈان (USD 530 ملین) اور متحدہ عرب امارات(270 یو ایس ڈی ملین) ہے۔ بھارت نے صومالیہ، سعودی عرب، ملائیشیا، سری لنکا، افغانستان، عراق، پاکستان، نیپال، چین وغیرہ کو بھی چینی برآمد کی ہے۔ ہندوستانی سویٹنر بھی امریکہ، سنگاپور، عمان، قطر، ترکی، ایران، شام، کینیڈا، آسٹریلیا، جنوبی افریقہ، جرمنی، ۱فرانس، نیوزی لینڈ، ڈنمارک، اسرائیل، روس، مصر، وغیرہ سے درآمد کیا گیا ہے۔

ملک میں چینی کی کل پیداوار کا تقریباً 80 فیصد حصہ اتر پردیش، مہاراشٹرا اور کرناٹک کا ہے۔ گنے کی پیداوار کرنے والی دیگر بڑی ریاستیں آندھرا پردیش، گجرات، مدھیہ پردیش، اوڈیشہ، تمل ناڈو، بہار، ہریانہ اور پنجاب ہیں۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ ہندوستان برازیل کے بعد دنیا کا دوسرا سب سے بڑا چینی پیدا کرنے والا ملک ہے۔ 2010-11 کے بعد سے، ہندوستان نے  آرام سے ملکی ضروریات سے زیادہ مسلسل اضافی چینی پیدا کی ہے۔ ریکارڈ برآمدات چینی پروڈیوسروں کو اپنے ذخیرے کو کم کرنے کے قابل بنائے گی اور گنے کے کاشتکاروں کو بھی فائدہ پہنچے گا، کیونکہ ہندوستانی چینی کی بڑھتی ہوئی مانگ سے ان کی وصولی میں بہتری آنے کا امکان ہے۔ زرعی برآمدات میں نمایاں اضافہ ملک کی زرعی اور پراسیس شدہ خوراک کی مصنوعات کی برآمدات کو بڑھا کر کسانوں کی آمدنی بڑھانے کے لیے حکومت کے عزم کی گواہی کے طور پر بھی دیکھا جاتا ہے۔

برآمد کی جانے والی مصنوعات کے بغیر کسی رکاوٹ کے معیار کی تصدیق یا جانچ کو یقینی بنانے کے لیے، اے پی ای ڈی اے نے مصنوعات اور برآمد کنندگان کی وسیع رینج کو جانچ کی خدمات فراہم کرنے کے لیے ہندوستان بھر میں 220 لیبز کو تسلیم کیا ہے۔

اے پی ای ڈی اے بین الاقوامی تجارتی میلوں میں برآمد کنندگان کی شرکت کا اہتمام کرتا ہے، جو برآمد کنندگان کو اپنی خوراک کی مصنوعات کو عالمی منڈی میں مارکیٹ کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم فراہم کرتا ہے۔ اے پی ای ڈی اے زرعی برآمدات کو فروغ دینے کے لیے آہار، آرگینک ورلڈ کانگریس، بایو فیچر انڈیا وغیرہ جیسے قومی پروگراموں کا بھی اہتمام کرتا ہے۔

2019 میں، اے پی ای ڈی اے  نے برآمد کنندگان کے ایک وفد کی قیادت میں انڈونیشیا میں روڈ شوز کا اہتمام کیا اور متعلقہ حکام سے ملاقاتیں کیں۔ اس کے بعد انڈونیشیا کو برآمدات میں اضافہ ہوا اور آج وہ ہندوستان سے چینی درآمد کرنے والے سب سے بڑے ملک ہیں۔

ٹیبل: چینی کی برآمدات

یونٹ: ملین ڈالر

پروڈکٹ

2019-20

2020-21

2021-22

شوگر

1965

2791

4600

ریکارڈ برآمدات کے بعد بھی، شوگر سیزن 2021-22 (اکتوبر تا ستمبر) کے اختتام پر بند اسٹاک 73 لاکھ ٹن کی آرام دہ سطح پر ہوگا۔ حکومت چینی کی برآمدات میں اضافے کے اس رجحان کو برقرار رکھنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کرتی رہے گی۔

****

U.No:4405

ش ح۔ش ت۔س ا



(Release ID: 1817927) Visitor Counter : 34