زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت

قومی خوردنی تیل پام مشن پر حیدرآباد میں منعقدہ بزنس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جناب تومر نے کہا کہ خوردنی تیل کے سیکٹر میں بھارت کو خود کفیل بنانے کا ہدف ہے


پام آئل کی پیداوار میں تلنگانہ بڑی ریاست بن کر ابھر رہی ہے: مرکزی وزیر زراعت

کسانوں کے ذریعہ تیار کردہ تازہ پھلوں کو پروسیسنگ کمپنیوں کے ذریعہ شفاف اور آسان طریقے سے خریدا جائے گا: جناب تومر

Posted On: 28 DEC 2021 4:15PM by PIB Delhi

نئی دہلی:28 دسمبر،2021۔مرکزی وزیر زراعت جناب نریندر سنگھ تومر نے شمال مشرقی ریاستوں کے علاوہ دیگر ریاستوں کے لیے حیدرآباد میں منعقدہ قومی خوردنی تیل آئل پام مشن پر بزنس کانفرنس کا افتتاح کیا۔ خوردنی تیل سے متعلق نئی شروع کی گئی مرکزی امداد یافتہ اسکیم کے بارے میں معلومات کو وسیع پیمانے پر پھیلانے کے مقصد سے حکومت ملک بھر میں کاروباری سربراہ اجلاس منعقد کر رہی ہے۔ یہ مشن کا اس طرح کا دوسرا سربراہ اجلاس ہے۔ پہلا اجلاس اس سال اکتوبر کے شروع میں شمال مشرقی ریاستوں کے لیے گوہاٹی میں منعقد کیا گیا تھا۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001Q1PT.jpg

کاروباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی وزیر زراعت جناب نریندر سنگھ تومر نے تمام ریاستی حکومتوں کو یقین دلایا کہ خوردنی تیل اور پام آئل کے قومی مشن کے کامیاب نفاذ کے لیے وسائل کی کوئی کمی نہیں ہوگی۔ جناب تومر نے کہا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت ہندوستان کو پام آئل کے میدان میں خود انحصار بنانا چاہتی ہے۔ "اس وقت تقریباً 3 لاکھ ہیکٹیئر اراضی میں کھجور کی کاشت کی جاتی ہے، جب کہ مطالعے سے معلوم ہوا ہے کہ ملک میں تقریباً 28 لاکھ ہیکٹیئر اراضی کھجور کی کاشت کے لیے موزوں ہے۔ جناب تومر نے کہا کہ ہندوستان کو خوردنی تیل کے میدان میں خود کفیل بنانے کے لیے 28 لاکھ ہیکٹیئر اراضی پر کاشت کاری کرنا ہمارا مشن ہے۔

 پام آئل کی پیداوار کو بڑھانے کے لیے تلنگانہ حکومت کی کوششوں کی تعریف کرتے ہوئے جناب تومر نے کہا کہ وہ تلنگانہ کو اس شعبے میں ایک ابھرتی ہوئی قائد ریاست کے طور پر دیکھتے ہیں۔ ریاست میں قدرتی کاشت کاری کے دائرہ کار کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے ریاستی حکومت پر زور دیا کہ وہ پیداوار میں رکاوٹ پیدا کیے بغیر پیداواری لاگت کو کم کرنے کے لیے قدرتی کاشتکاری کو اپنائے اور اسے فروغ دے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002DMRY.jpg

جناب تومر نے خوردنی تیل پر قومی مشن – پام آئل کے تحت پہلی کاروباری کانفرنس کے بعد ہونے والی پیش رفت پر خوشی کا اظہار کیا۔ مرکز نے 9 ریاستی حکومتوں کے ساتھ وائبلٹی گیپ کی ادائیگی کے لیے مفاہمت نامے پر دستخط کیے ہیں۔ مشن کی نئی دفعات کو شامل کرتے ہوئے 11 ریاستوں کے نظرثانی شدہ سالانہ ایکشن پلان کو حتمی شکل دی ہے اور فصل تنوع پروگرام کے ذیلی تھیم کے طور پر اروناچل پردیش میں پام آئل پر قومی ورکشاپ کا انعقاد کیا ہے۔ 11 ریاستوں کے اے اے پی، جن کی مالیت 106.90 کروڑ روپے ہے، 6563 ہیکٹیئر میں رقبہ کی توسیع، 3058 ہیکٹیئر کی دیکھ بھال اور 25197 ہیکٹیئر میں موجودہ اور نئے تیل کے کھجور کے باغات اور 1569 ہیکٹیئر کھجور کے باغات میں ڈرپ اریگیشن کی سہولت کو دوبارہ لگانے کی منظوری دی گئی۔ 4 پروسیسنگ ملیں مشن سے سبسڈی کے ساتھ شمال مشرقی ریاستوں میں قائم کی جائیں گی۔ اس کے علاوہ 3 بیجوں کے باغات اور 39 نرسریاں بنائی جائیں گی تاکہ بیجوں اور پودوں کی دستیابی میں اضافہ ہو۔ معیاری نامیاتی کھاد کی تیاری کے لیے ورمی کمپوسٹ شیڈ (360 نمبر) اور باغیچے کے اوزار کرائے پر دینے کے لیے کسٹم ہائرنگ سنٹرز (18 نمبر) کو بھی رواں سال میں آپریشنل کیا جائے گا۔ مزید برآں بڑی مقدار میں پودے لگانے کے معیاری مواد کی بلاتعطل فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے تیل کے کھجور کے انکرت برآمد کرنے والے بڑے ممالک کے ہندوستانی سفیروں کے ساتھ ایک میٹنگ منعقد کی گئی۔

زراعت اور کسانوں کی بہبود کے مرکزی وزیر مملکت جناب کیلاش چودھری نے کہا کہ‘‘فی الحال ہمیں خوردنی تیل درآمد کرنا پڑتا ہے۔ آج کا بزنس سمٹ اس درآمد کا حل تلاش کرنے کے لیے اہم ثابت ہوگا۔ مشن پر اپنے اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سائنسدانوں کی تحقیق، کسانوں کی محنت اور حکومت کی مدد سے یہ مشن اپنا ہدف حاصل کر لے گا اور ہندوستان کو خود کفیل بنانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ خوردنی تیل کی پیداوار، منافع بخش قیمتیں اور تیل کے بیجوں کی فصلوں کی یقینی خریداری حکومت کی طرف سے کی جا رہی ہے’’۔

زراعت اور اس سے منسلک شعبوں کے تلنگانہ سرکار کے وزیر جناب ایس نرنجن ریڈی نے ریاست میں تیل کھجور کے باغات کو فروغ دینے اور کاشتکاروں کو تیل کھجور کے ایف ایف بی (تازہ پھلوں کے گچھوں) کی زیادہ قیمت فراہم کرنے کے لیے تلنگانہ حکومت کی کوششوں پر روشنی ڈالی۔ تلنگانہ ریاست نے آئل پام کی توسیع کے لیے پرجوش منصوبہ تیار کیا ہے۔ جناب پی پرساد، وزیر زراعت، کیرالہ حکومت نے کہا کہ کیرالہ حکومت ریاست میں تیل کے کھجور کے فروغ پر بھی زور دے رہی ہے۔

اس موقع پر فارمر پروڈیوسنگ آرگنائزیشنز (ایف پی اوز) کے رجسٹریشن سرٹیفکیٹس کی تقسیم بھی کی گئی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003C3F9.jpg

قبل ازیں، سکریٹری زراعت، جناب سنجے اگروال نے حکومت کے وژن کا خاکہ پیش کرتے ہوئے سربراہ اجلاس کی سمت طے کی۔ کسانوں، پروسیسرز اور ریاستی حکومت کو متاثر کرنے والے مسائل کو حل کرنے کے لیے مشن کی منصوبہ بندی بہت ہی احتیاط سے کی گئی ہے۔ کاشتکاروں کو پودے لگانے کے لئے مواد کی فراہمی، پروسیسرز کے ذریعے بروقت خریداری اور ایف ایف بی (تازہ پھلوں کے گچھوں) کی معاوضہ قیمت پر بڑا زور دیا گیا ہے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ زمین اور موسمی حالات کی بنیاد پر ممکنہ خطوں کی وضاحت کی گئی ہے جو ماحولیات کے کسی منفی اثر کے بغیر تیل کے کھجور کی زیادہ پیداوار پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ تیل کی کھجور کے ساتھ دوسری فصلوں کی باہم کاشت مٹی اور پانی کو مزید محفوظ کرے گی اور موسمیاتی تبدیلیوں کو کم کرنے کے لیے زیادہ کاربن کو الگ کرے گی۔

تلنگانہ کے چیف سکریٹری جناب سومیش کمار نے امید ظاہر کی کہ ریاست 3 سے 4 سالوں میں ملک میں سب سے زیادہ تیل پیدا کرنے والے علاقے کے طور پر ابھرے گی۔ انہوں نے اس سلسلے میں ریاستی اقدامات کا خاکہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ نے 26 اضلاع کو آئل پام کی کاشت کے لیے مطلع کیا ہے اور ریاست میں 11 آئل پروسیسرز کام کر رہے ہیں۔ سال 23-2022 کے لیے 5 لاکھ ہیکٹیئر پر پودے لگانے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ 324 لاکھ بیج انکرت کے لیے انڈینٹ رکھا گیا ہے اور بیج کی نرسری کے لیے 1045 ہیکٹر زمین خریدی گئی ہے اور 23 نرسریاں قائم کی گئی ہیں۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image004VI6P.jpg

اس کاروباری سربراہ اجلاس میں زراعت کی وزارت کی جوائنٹ سکریٹری محترمہ شوبھا ٹھاکر، دیگر ریاستوں کے پرنسپل سکریٹریز، ریاستی حکومتوں کے افسران، وزارت زراعت، حکومت ہند، نیتی آیوگ، آئی سی اے آر انسٹی ٹیوٹ، وزارت خارجہ، مختلف ریاستوں کے وائس چانسلرز نے شرکت کی۔ یونیورسٹیوں، ایس بی آئی، نبارڈ، نیفیڈ، سالوینٹ ایکسٹریکشن ایسوسی ایشن (ایس ای اے) کے عہدیداروں، آئل پام انڈسٹری کے سرکردہ پروسیسرز، ترقی پسند کسانوں اور زرعی کاروباری شعبے کے ممکنہ سرمایہ کاروں نے شرکت کی۔

-----------------------

 

ش ح۔م ع۔ ع ن

U NO: 14907



(Release ID: 1785966) Visitor Counter : 220


Read this release in: English , Hindi , Tamil , Telugu