ا قتصادی امور کی کابینہ کمیٹی
azadi ka amrit mahotsav

مرکزی کابینہ نے مارکیٹنگ سیزن 23-2022 کے سلسلے میں ربیع فصلوں کے لیے کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) کو بڑھانے کو منظوری دی

کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) میں اضافہ کا مقصد فصلوں کے تنوع کو فروغ دینا ہے

گیہوں، ریپ سیڈ اور سرسوں کے بعد مسور، چنا، جو اور کسم کے پھولوں کے معاملے میں کسانوں کو ان کی پیداواری لاگت کے مقابلے زیادہ قیمت ملنے کا امکان ہے

تلہن، دال اور موٹے اناج کے حق میں کم از کم امدادی قیمت کا تعین کیا گیا ہے

ربیع فصلوں کی کم از کم امدادی قیمت میں اضافہ سے کسانوں کے لیے منافع بخش قیمت متعین ہوگی

Posted On: 08 SEP 2021 2:33PM by PIB Delhi

وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی صدارت میں اقتصادی امور کی کابینہ کمیٹی نے ربیع مارکیٹنگ سیزن (آر ایم ایس) 23-2022 کے لیے سبھی ربیع فصلوں کی کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) میں اضافہ کرنے کو منظوری دے دی ہے۔

حکومت نے آر ایم ایس 23-2022 کے لیے ربیع فصلوں کی ایم ایس پی میں اضافہ کر دیا ہے، تاکہ کسانوں کو ان کی پیداوار کی منافع بخش قیمت مل سکے۔ پچھلے سال کے ایم ایس پی میں مسور کی دال اور کینولا (ریپ سیڈ) اور سرسوں میں اعلیٰ مکمل اضافہ (ہر ایک کے لیے 400 روپے فی کوئنٹل) کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔ اس کے بعد چنا (130 روپے فی کوئنٹل) کو رکھا گیا ہے۔ پچھلے سال کے مقابلے کسم کے پھول کی قیمت 114 روپے فی کوئنٹل بڑھا دی گئی ہے۔ قیمتوں میں یہ فرق اس لیے رکھا گیا ہے، تاکہ الگ الگ فصلیں بونے کے لیے ترغیب دی جا سکے۔

مارکیٹنگ سیزن 23-2022 کے لیے سبھی ربیع فصلوں کی کم از کم امدادی قیمت (روپے/کوئنٹل میں)

فصل

آر ایم ایس 22-2021 کے لیے ایم ایس پی

آر ایم ایس 23-2022 کے لیے ایم ایس پی

پیداواری لاگت * 23-2022

ایم ایس پی میں اضافہ (مکمل)

لاگت پر منافع (فیصد میں)

گیہوں

1975

2015

1008

40

100

جو

1600

1635

1019

35

60

چنا

5100

5230

3004

130

74

دال (مسور)

5100

5500

3079

400

79

کینولا اور سرسوں

4650

5050

2523

400

100

کسم کے پھول

5327

5441

3627

114

50

*یہاں کل لاگت کا ذکر ہے، جس میں ادا کی جانے والی قیمت شامل ہے، یعنی مزدوروں کی مزدوری، بیل یا مشین کے ذریعے جتائی اور دیگر کام، پٹہ پر لی جانے والی زمین کا کرایہ، بیج، کیمیکل، کھاد، سینچائی کی قیمت، آلات اور کھیت تیار کرنے میں لگنے والا خرچ، سرمایہ پر سود، پمپ سیٹ وغیرہ چلانے پر ڈیزل/ بجلی کا خرچ اس میں شامل ہے۔ اس کے علاوہ دیگر اخراجات اور فیملی کے ذریعے کی جانے والی محنت کی قیمت کو بھی اس میں رکھا گیا ہے۔

آر ایم ایس 23-2022 کے لیے ربیع فصلوں کی ایم ایس پی میں اضافہ مرکزی بجٹ 19-2018 میں کیے گئے اعلان کے مطابق ہے، جس میں کہا گیا کہ ملک بھر کی اوسط پیداوار کو مدنظر رکھتے ہوئے ایم ایس پی میں کم از کم ڈیڑھ گنا اضافہ کیا جانا چاہیے، تاکہ کسانوں کو معقول اور مناسب قیمت مل سکے۔ کسان کھیتی میں جتنا خرچ کرتا ہے، اس کی بنیاد پر ہونے والے منافع کا زیادہ سے زیادہ اندازہ لگایا گیا ہے۔ اس سلسلے میں گیہوں، کینولا اور سرسوس (ہر ایک میں 100 فیصد) منافع ہونے کا امکان ہے۔ اس کے علاوہ دال (79 فیصد)، چنا (74 فیصد)، جو (60 فیصد)، کسم کے پھول (50 فیصد) کی پیداوار میں منافع ہونے کا امکان ہے۔

گزشتہ کچھ برسوں سے تلہن، دال، موٹے اناج کی کم از کم امدادی قیمت میں یکسانیت پیدا کرنے کے لیے مشترکہ طور پر کوششیں کی جاتی رہی ہیں، تاکہ کسان ان فصلوں کی کھیتی زیادہ رقبہ میں کرنے کے لیے آمادہ ہو سکیں۔ اس کے لیے وہ بہتر ٹیکنالوجی اور کھیتی کے طور طریقوں کو اپنائیں، تاکہ مانگ اور سپلائی میں توازن پیدا ہو۔

اس کے ساتھ ہی مرکز کے ذریعے اسپانسرڈ قومی غذائی تیل- پام آئل مشن (این ایم ای او-اوپی) اسکیم کا بھی سرکار نے حال ہی میں اعلان کیا ہے۔ اس اسکیم سے خوردنی تیلوں کی گھریلو پیداوار بڑھے گی اور درآمد پر انحصار کم ہوگا۔ اس اسکیم کے لیے 11040 کروڑ روپے رکھے گئے ہیں، جس سے نہ صرف رقبہ اور اس سیکٹر کی پیداواری صلاحیت بڑھانے میں مدد ملے گی، بلکہ آمدنی بڑھنے سے کسانوں کو فائدہ ہوگا اور اضافی روزگار پیدا ہوں گے۔

’پردھان منتری انّ داتا آئے سنرکشن ابھیان‘ (پی ایم-اے اے ایس ایچ اے) نامی ’امبریلا اسکیم‘ کا اعلان حکومت نے 2018 میں کیا تھا۔ اس اسکیم سے کسانوں کو اپنی پیداوار کے لیے منافع بخش قیمت ملے گی۔ اس امبریلا اسکیم میں تین ذیلی اسکیمیں شامل ہیں، جیسے قیمت کی امدادی اسکیم (پی اے ایس)، قیمت کی کم از کم ادائیگی اسکیم (پی ڈی پی ایس) اور ذاتی خرید اور اسٹاکسٹ اسکیم (پی پی ایس ایس) کو عملی بنیاد پر شامل کیا گیا ہے۔

*****

ش  ح –  ق ت –  ت  ع

U:8785



(Release ID: 1753261) Visitor Counter : 217