سائنس اور ٹیکنالوجی کی وزارت

اے این آر ایف ایکٹ کی دفعات نافذ کی گئیں

Posted On: 06 FEB 2024 4:28PM by PIB Delhi

انوسندھن ریسرچ فاؤنڈیشن (اے این آر ایف) ایکٹ کی دفعات کو 5 فروری 2024 کو حکومت کی جانب سے تحقیق اور اختراع کو فروغ دینے کے عزم ک مطابق لاگو کیا گیا ہے جو ملک کی ترقی اور ترقی کا بنیادی جزو ہے۔

یہ اے این آر ایف قائم کرتا ہے، جو تحقیق و ترقی (آر اینڈ ڈی) کو نمو، ترقی اور فروغ دے گا اور ہندوستان کی یونیورسٹیوں، کالجوں، تحقیقی اداروں، اور تحقیق و ترقی(آر اینڈ ڈی )  کی لیبارٹریوں میں تحقیق اور اختراع کے کلچر کو فروغ دے گا۔

حکومت نے پروفیسر ابھے کرندیکر، سکریٹری، محکمہ سائنس اور ٹیکنالوجی (ڈی ایس ٹی) کو اے این آر ایف کا عبوری چیف ایگزیکٹو آفیسر مقرر کیا ہے۔

اے این آر ایف قدرتی سائنس کے شعبوں میں تحقیق، اختراعات، اور صنعت کاری کے لیے ایک اعلیٰ سطحی اسٹریٹجک سمت فراہم کرنے کے لیے حکومت کا ایک مضبوط اقدام ہے جس میں ریاضی کے علوم، انجینئرنگ اور ٹیکنالوجی، ماحولیاتی اور زمینی علوم، صحت اور زراعت اور اس کا طویل مدتی اثر  اور ہر شہری کے لیے طویل مدتی نتائج شامل ہیں ۔

 سائنس اور ٹیکنالوجی (آزادانہ چارج) پی ایم او، عملہ، عوامی شکایات، پنشن، ایٹمی توانائی اور خلا کی وزیرمملکت، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے آج اپنے ٹویٹ میں کہا ۔ ‘‘ اے این آر ایف ایکٹ کا نفاذ سائنسدانوں، محققین، اختراع کاروں اور اسٹارٹ اپس کے لیے ایک خوش کن خبر ہے۔آزادی کے بعد پہلی بار، عزت مآب وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں، ہندوستان کے پاس اب ایک نیشنل ریسرچ فاؤنڈیشن ہے جسے انوسندھن کہا جاتا ہے’’۔

سکریٹری محکمہ سائنس اور ٹیکنالوجی(ڈی ایس ٹی) پروفیسر ابھے کرندیکر نے کہا۔ ‘‘ اے این آر ایف  ، ڈی ایس ٹی کے ذریعے کام کرتا ہے، جس  کا مقصد صنعت سمیت مختلف ذرائع سے تحقیق و ترقی فنڈنگ ​​کو فروغ دینا، نجی شعبے کی شمولیت کی حوصلہ افزائی کرنا ہے۔ یہ بین الضابطہ تحقیق کو بھی فروغ دے گا، جس کا مقصد ہندوستان کو ترقی یافتہ ممالک کی صف میں شامل کرنا ہے اور امرتکال کے دوران ملک کو ایک عالمی سائنس اور تحقیقی کھلاڑی بنانا ہے،’’

اے این آر ایف ریاستی یونیورسٹیوں اور اداروں کو مؤثر طریقے سے شامل کرے گا اور عزت مآب وزیر اعظم کے وژن کے مطابق ہمیں ترقی یافتہ ممالک کی لیگ میں لے جائے گا جو نئی سرحدوں میں نئی ​​تحقیق کا آغاز کرے گا۔

*************

 

( ش ح ۔ج ق ۔ رض (

U. No.6824



(Release ID: 2020057) Visitor Counter : 17


Read this release in: English , Hindi , Telugu