خواتین اور بچوں کی ترقیات کی وزارت

عالمی مالیاتی فورم کے 15 سے 19 جنوری، 2024 کے دوران دیوس میں چل رہے سالانہ اجلاس میں ہندوستان کی طرف سے ’عالمی بھلائی کے لیے اتحاد-جنسی مساوات کے لیے تعاون‘ کا آغاز کیا گیا


جناب نریندر مودی کا ”خواتین کی قیادت میں ترقی“ کا ایجنڈا ورلڈ اکنامک فورم (ڈبلیو ای ایف) 2024 میں عالمی سطح پر گونج رہا ہے، جسے ڈبلیو ای ایف دنیا بھر میں 10,000 سے زائد کاروباری اداروں کی پرعزم حمایت حاصل ہے

وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی دور اندیش قیادت میں ہندوستان کی جامع اور قابل ذکر ترقی کی کہانی کو سراہتے ہوئے ڈبلیو ای ایف نے حکومت ہند کی ”سب کا ساتھ، سب کا وکاس“ کے فلسفے کی تعریف کی

Posted On: 19 JAN 2024 6:47PM by PIB Delhi

ہندوستان نے 15 سے 19 جنوری 2024 کو سوئٹزرلینڈ کے ڈیووس میں منعقدہ ورلڈ اکنامک فورم (ڈبلیو ای ایف) کی سالانہ میٹنگ میں ”واسودھایو کٹمبکم“ کے اس جذبے کے ساتھ شرکت کی، جو سال کے لیے ڈبلیو ای ایف کے سب سے اہم موضوع ”اعتماد کی تعمیر نو“ کے ساتھ جڑتے ہوئے عالمی تعاون کی طرف سے نشان زد مشترکہ مستقبل کی تشکیل کے لیے تیار ہے۔

ڈبلیو ای ایف 2024 میں، ہندوستانی سرکاری وفد کی قیادت خواتین اور بچوں کی ترقی کی مرکزی وزیر محترمہ اسمرتی زوبن ایرانی، جناب ہردیپ سنگھ پوری، پیٹرولیم اور قدرتی گیس، ہاؤسنگ اور شہری امور کے مرکزی وزیر جناب ہردیپ سنگھ پوری کر رہے ہیں، ساتھ ہی ریلوے کے مرکزی وزیر جناب اشونی وشنو، مواصلات، الیکٹرانکس اور آئی ٹی کے وزیر، جناب آر کے سنگھ، تجارت اور صنعت کی وزارت میں صنعت اور اندرونی تجارت کے فروغ کے محکمے (ڈی پی آئی آئی ٹی) اور حکومت ہند کے دیگر سینئر افسران نے اس میں شرکت کی۔

فورم کی میٹنگ کی ایک خاص بات ڈبلیو ای ایف اور حکومت ہند کے تعاون سے ”صنفی مساوات اور برابری کے لیے عالمی اتحاد“ کے آغاز کا اعلان تھا۔

اس اتحاد کا خیال جی-20 لیڈروں کے اعلامیہ اور خواتین کی زیر قیادت ترقی کے لیے ہندوستان کی مستقل وابستگی سے ابھرا جیسا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے بیان کیا ہے۔

اس نئے اتحاد کا بنیادی اور واضح مقصد خواتین کی صحت، تعلیم اور انٹرپرائز کے شناخت شدہ شعبوں میں عالمی بہترین طریقوں، علم کے اشتراک اور سرمایہ کاری کو ایک ساتھ لانا ہے۔

اتحاد کے آغاز کا اعلان کرتے ہوئے، محترمہ اسمرتی زوبن ایرانی نے کہا، ”ایک ایسی جگہ جہاں پیسے کا بہاؤ سیاست سے متعلق ہے، ہم اس عظیم اتحاد میں صنعت، کاروبار اور انسانیت کی بہترین چیزوں کو ایک ساتھ لانے میں کامیاب رہے“۔ اس کے ساتھ، انہوں نے ہندوستان کی کامیابیوں کے بارے میں بات کی جس میں اس کی شاندار جامع ترقی کی کہانی بھی شامل ہے۔

اس اتحاد کو ماسٹر کارڈ، اوبر، ٹاٹا، ٹی وی ایس، بیئر، گودریج، سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا اور صنعت کے شعبے کے 10,000 سے زیادہ شراکت داروں سمیت صنعتی رہنماؤں کی حمایت حاصل ہوئی ہے۔

محترمہ اسمرتی زوبن ایرانی نے ورلڈ اکنامک فورم (ڈبلیو ای ایف) میں آٹھ سیشنز میں حصہ لیا جن میں ’عالمی نظام میں اعتماد کی بحالی’، ’برکس ان ایکسپینشن’، ’کیا انڈیا اس لمحے سے فائدہ اٹھا سکتا ہے‘ اور ’کنٹری اسٹریٹجی ڈائیلاگ آن انڈیا‘ شامل ہیں۔ ان سیشنوں میں ان کی بامعنی مداخلت صنفی مساوات اور خواتین کی زیر قیادت ترقی پر خصوصی زور دینے کے ساتھ حکومت ہند کی پالیسیوں اور اقدامات پر مرکوز تھی۔

ڈبلیو ای ایف کے علاوہ، مرکزی وزیر نے دنیا بھر کے رہنماؤں کے ساتھ دو طرفہ ملاقاتیں کیں۔ انہوں نے بحرین کے پائیدار ترقی کے وزیر محترم نور علی الخلیف، نائب وزیر اعظم اور نیدرلینڈ کی سماجی امور اور روزگار کی وزیر محترمہ کیرین وین جینپ اور محترمہ کیرولین ایڈسٹڈلر، وفاقی چانسلر جمہوریہ آسٹریا، وفاقی وزیر برائے یورپی یونین اور آئین، محترمہ کیرولین ایڈسٹڈلر کے ساتھ باہمی دلچسپی کے امور اور ممکنہ تعاون پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

*********

ش ح۔ ف ش ع- م ف

U: 3822



(Release ID: 1998033) Visitor Counter : 51


Read this release in: English , Marathi , Hindi , Tamil