زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت

زراعت اور کسانوں کی بہبود کی وزارت نے پکسیل اسپیس انڈیا لمیٹڈ کے ساتھ ایک مفاہمت نامہ پر دستخط کیے


یہ پروجیکٹ پکسیل کے راہ تلاش کرنے والے سیاروں سے ہائپر اسپیکٹرل ڈیٹا کے نمونہ سے فائدہ اٹھانے پر توجہ مرکوز کرتا ہے، تاکہ فصلوں کی پیمائش، فصل کے مرحلہ کے امتیاز، فصل کی صحت کی نگرانی، اور مٹی کے نامیاتی کاربن کی تشخیص پر مرکوز تجزیاتی ماڈل تیار کیے جا سکیں

نوجوان اسٹارٹ اپ کے ساتھ اس قسم کا تعاون جدید سیٹلائٹ امیجنگ ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے اختراعی جغرافیائی حل تیار کرنے میں ایک طویل سفر  طے کرے گا: جناب منوج آہوجہ

Posted On: 26 JUN 2023 6:21PM by PIB Delhi

زراعت اور کسانوں کی بہبود کی وزارت نے پکسیل اسپیس انڈیا پرائیویٹ لمیٹڈ کے ساتھ آج نئی دہلی میں ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیو کے سکریٹری جناب منوج آہوجہ، پرمود کمار مہردا، ایڈیشنل سکریٹری، ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیو اور وزارت کے دیگر سینئر افسران کی موجودگی میں ایک مفاہمت نامہ پر دستخط کیے۔ جناب سی ایس مورتی، ڈائریکٹر، ایم این سی ایف سی نے حکومت ہند کی جانب سے مفاہمت نامہ پر دستخط کیے، جب کہ جناب  ابھیشیک کرشنن، چیف آف اسٹاف نے میسرز پکسیل اسپیس انڈیا پرائیویٹ لمیٹڈ کی نمائندگی کی۔ اس کا مقصد پکسیل کے ہائپر اسپیکٹرل ڈیٹاسیٹ کا استعمال کرتے ہوئے ہندوستانی زرعی ماحولیاتی نظام کے لیے فائدہ مند بنیادوں پر مختلف جغرافیائی حل تیار کرنا ہے۔ یہ پروجیکٹ پکسیل کے راہ تلاش کرنے والے سیاروں سے ہائپر اسپیکٹرل ڈیٹا کے نمونہ کا فائدہ اٹھانے پر توجہ مرکوز کرتا ہے، تاکہ فصلوں کی پیمائش، فصل کے مرحلے کے امتیاز، فصل کی صحت کی نگرانی، اور مٹی کے نامیاتی کاربن کی تشخیص پر مرکوز تجزیاتی ماڈل تیار کیے جا سکیں۔ یہ حکومت کو پکسیل کی طرف سے فراہم کردہ ہائپر اسپیکٹرل ڈیٹا کے ساتھ استعمال کے معاملات تیار کرنے کے قابل بنائے گا۔ ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیو کی جانب سے ایم این سی ایف سی موزوں طریقہ کار کو تیار کرنے اور لاگو کرنے کے لیے پکسیل ٹیم کے ساتھ منسلک کرے گا۔

WhatsApp Image 2023-06-26 at 5.30.59 PM (1).jpeg

ہائپر اسپیکٹرل ریموٹ سینسنگ ٹیکنالوجی میں مصنوعی سیاروں کے ذریعہ تنگ طول موج کے بینڈ میں طیف کی پیمائش شامل ہے اور اس طرح کی پیمائش فصلوں اور مٹی کی صحت کی نگرانی اور جانچ کرنے کے لیے کچھ منفرد اشاریے پیش کرتی ہے۔ یہ زراعت کی نگرانی کے لیے منفرد صلاحیتوں کے ساتھ ایک ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجی ہے۔ کلوروفل کے مواد اور کینوپی نمی کی حالت میں تبدیلیوں کا پتہ لگا کر فصل کی صحت کی نگرانی، ہائپر اسپیکٹرل ڈیٹا کا استعمال کسانوں کے لیے فصل کے خطرے کے انتظام کے حل تلاش کرنے کے لیے فائدہ مند ہوگا۔

مٹی کے غذائی اجزاء کی پیمائش بشمول مٹی کے نامیاتی کاربن کی تشخیص ہائپر اسپیکٹرل ٹیکنالوجی کے اہم استعمال میں سے ایک ہے۔ سینسرز کے ذریعے پیمائش کی جانے والے مٹی کی عکاسی کے مشاہدات مٹی کے نامیاتی کاربن کا تخمینہ لگانے کے لیے زیادہ براہ راست، لاگت سے موثر ڈیٹا سیٹ پیش کرتے ہیں۔ اس سے فصل کے تناؤ کا جلد پتہ لگانے، کیڑوں/بیماریوں یا ہائپر اسپیکٹرل کا استعمال کرتے ہوئے پانی کی وجہ سے فصل کے دباؤ کی درست تشخیص میں بھی مدد ملے گی۔ اعداد و شمار لاکھوں کسانوں کو فائدہ پہنچانے والے حکومت کے موجودہ مشاورتی نظام کو مضبوط کرنے کے متعدد مواقع پیش کرتے ہیں۔

ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیو کے سکریٹری نے بتایا کیا کہ نوجوان اسٹارٹ اپ کمپنی کے ساتھ اس قسم کے تعاون سے جدید سیٹلائٹ امیجنگ ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے جدید جغرافیائی حل تیار کرنے میں بہت مدد ملے گی۔ نئی ٹیکنالوجی دستی سروے اور پیمائش پر انحصار کو کم کرے گی جو وقت طلب اور خامیوں کا شکار ہیں۔

WhatsApp Image 2023-06-26 at 5.30.58 PM.jpegWhatsApp Image 2023-06-26 at 5.30.59 PM.jpeg

*****

ش ح – ق ت – ت ع

U: 6519



(Release ID: 1935477) Visitor Counter : 92