کامرس اور صنعت کی وزارتہ
azadi ka amrit mahotsav g20-india-2023

مئی 2023 میں ہندوستان کی مجموعی برآمدات 60.29 بلین امریکی ڈالر  کے بقدر ہیں


الیکٹرانک سامان کی برآمدات میں مئی 2023 میں 73.96 فیصد کے ساتھ ساتھ اپریل-مئی 2023 میں مجموعی طور پر گزشتہ سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 48.06 فیصد اضافہ ہوا

زرعی برآمدات میں زبردست اضافہ؛ اپریل-مئی 2022 کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 میں مصالحہ جات میں 31.81 فیصد اضافہ ہوا جبکہ چاول کی برآمدات میں اپریل-مئی 2022 کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 میں 19 فیصد اضافہ ہوا

تیل سے تیار ہونے والے کھانوں کی برآمدات میں اپریل-مئی 2022 کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 میں 74.33 فیصد اضافہ ہوا

سفالی (مٹی سے تیار شدہ) مصنوعات اور شیشے کے سامان میں مئی 2023 میں 17.36 فیصد اور گزشتہ سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 میں مجموعی طور پر 17.29 فیصد کے ساتھ متاثر کن اضافہ ہوا

اپریل-مئی 2023 میں تجارتی توازن میں کافی بہتری آئی ہے

اپریل تا مئی 2023 کے لیے مجموعی تجارتی خسارے کا تخمینہ 13.28 بلین امریکی ڈالر ہے جو کہ اپریل تا مئی 2022 کے دوران 20.56 بلین امریکی ڈالر کے خسارے کے مقابلے میں (-) 35.41 فیصد کی کمی کو ظاہر کرتا ہے

اپریل تا مئی 2023 کے دوران تجارتی سامان کا تجارتی خسارہ 37.26 بلین امریکی ڈالر  ہے جب کہ  اس کے مقابلے میں اپریل تا مئی 2022 کے دوران یہ خسارہ 40.48 بلین امریکی ڈالر درج کیا گیا ۔اس طرح

(-) 7.95 فیصد کی کمی درج کی گئی

Posted On: 15 JUN 2023 5:12PM by PIB Delhi

مئی 2023* میں ہندوستان کی مجموعی برآمدات (تجارتی سامان اور خدمات مشترکہ) کا تخمینہ 60.29 بلین امریکی ڈالر ہے، جو مئی 2022 کے مقابلے میں (-) 5.99 فیصد کی منفی نمو کو ظاہر کرتا ہے۔ مئی 2023* میں مجموعی درآمدات کا تخمینہ 70.64 امریکی ڈالر ہے۔ یہ تخمینہ مئی 2022 کے مقابلے میں (-) 7.45 فیصد کی منفی نمو کو ظاہر کرتا ہے۔

جدول 1: *مئی 2023 کے دوران تجارت

 

   

مئی2023

(بلین امریکی ڈالر)

مئی 2022

(بلین امریکی ڈالر)

تجارتی اشیا

برآمدات

34.98

39.00

درآمدات

57.10

61.13

*خدمات

برآمدات

25.30

25.13

درآمدات

13.53

15.20

مجموعی تجارت  (تجارتی اشیا + خدمات)*

برآمدات

60.29

64.13

درآمدات

70.64

76.32

تجارت کاتوازن

-10.35

-12.20

* نوٹ: آر بی آئی کی طرف سے جاری کردہ خدمات کے شعبے کا تازہ ترین ڈیٹا اپریل 2023 کا ہے۔ مئی 2023 کا ڈیٹا ایک تخمینہ ہے، جس میں آر بی آئی  کی طرف سے  بعد میں ہونے والے اجراء کی بنیاد پر نظر ثانی کی جائے گی۔ (ii) سہ ماہی بیلنس آف پیمنٹ ڈیٹا کا استعمال کرتے ہوئے اپریل-مئی 2022 کے ڈیٹا میں تناسب کی بنیاد پر نظر ثانی کی گئی ہے۔

تصویر 1: مئی 2023 کے دوران مجموعی تجارت*

اپریل-مئی 2023 میں ہندوستان کی مجموعی برآمدات (تجارتی سامان اور خدمات مشترکہ) میں اپریل-مئی 2022 کے مقابلے میں منفی نمو کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔ اپریل-مئی 2023 میں مجموعی درآمدات میں(-) 5.48 فیصد کی منفی نمو کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔ اپریل-مئی 2023 میں مجموعی برآمدات  کا تخمینہ اپریل۔ مئی 2022  کے مقابلے میں(-) 9.63 فیصد کی منفی نمو کو ظاہر کرتا ہے۔

جدول 2: *اپریل-مئی 2023 کے دوران تجارت

 

 

اپریل۔ مئی 2023

(بلین امریکی ڈالر)

اپریل۔ مئی 2022  

(بلین امریکی ڈالر)

تجارتی اشیا

برآمدات

69.72

78.70

درآمدات

106.99

119.18

*خدمات

برآمدات

51.14

49.17

درآمدات

27.16

29.25

مجموعی تجارت  (تجارتی اشیا + خدمات)*

برآمدات

120.87

127.88

درآمدات

134.15

148.44

تجارت کاتوازن

-13.28

-20.56

تصویر 2: *اپریل-مئی 2023 کے دوران مجموعی تجارت

تجارتی سامان کی تجارت

  • مئی 2023 میں تجارتی سامان کی برآمدات 34.98 بلین امریکی ڈالر تھیں، جبکہ مئی 2022 میں 39.00 بلین امریکی ڈالر تھی۔
  • مئی 2023 میں تجارتی سامان کی درآمدات 57.10 بلین امریکی ڈالر تھیں، جو مئی 2022 میں 61.13 بلین امریکی ڈالر تھیں۔

تصویر 3: مئی 2023 کے دوران تجارتی سامان کی تجارت

اپریل تا مئی 2023 کی مدت میں تجارتی سامان کی برآمدات 69.72 بلین امریکی ڈالر تھیں جبکہ اپریل تا مئی 2022 کے دوران 78.70 بلین امریکی ڈالر تھیں۔

اپریل تا مئی 2023 کی مدت کے لیے تجارتی سامان کی درآمدات 106.99 بلین امریکی ڈالر تھیں جبکہ اپریل تا مئی 2022 کے دوران 119.18 بلین امریکی ڈالر تھیں۔

اپریل تا مئی 2023 کے لیے تجارتی تجارتی خسارے کا تخمینہ 37.26 بلین امریکی ڈالر تھا جبکہ اپریل تا مئی 2022 کے دوران 40.48 بلین امریکی ڈالر تھا۔

تصویر 4: اپریل-مئی 2023 کے دوران تجارتی سامان کی تجارت

مئی 2023 میں غیر پیٹرولیم اور غیر جواہراتی اور زیورات کی برآمدات 26.22 بلین امریکی ڈالر تھیں، جبکہ مئی 2022 میں یہ 27.30 بلین امریکی ڈالر تھی۔

مئی 2023 میں غیر پیٹرولیم، غیر جواہراتی اور زیورات (سونا، چاندی اور قیمتی دھاتیں) کی درآمدات 35.88 بلین امریکی ڈالر تھیں، جبکہ مئی 2022 میں یہ 35.29 بلین امریکی ڈالر تھی۔

جدول 3: مئی 2023 کے دوران پیٹرولیم اور جواہرات اور زیورات کے علاوہ تجارت

 

مئی 2023

(بلین امریکی ڈالر)

مئی 2022  

(بلین امریکی ڈالر)

غیر پٹرولیم برآمدات

29.04

30.53

غیرپٹرولیم درآمدات

41.48

44.51

غیرپٹرولیم  اور غیر جواہراتی اورزیورات کی برآمدات

26.22

27.30

غیرپٹرولیم  اور غیر جواہراتی اورزیورات کی درآمدات

35.88

35.29

نوٹ: جواہرات اور زیورات کی درآمدات میں سونا، چاندی اور موتی، قیمتی اور نیم قیمتی پتھر شامل ہیں۔

تصویر 5: مئی 2023 کے دوران پیٹرولیم اور جواہرات اور زیورات کے علاوہ تجارت

اپریل تا مئی 2023 کے دوران غیر پیٹرولیم اور غیر جواہراتی اور زیورات کی برآمدات 52.04 بلین امریکی ڈالر تھیں، جو کہ اپریل-مئی 2022 میں 55.67 بلین امریکی ڈالر تھیں۔

غیر پیٹرولیم، غیر جواہراتی اور زیورات (سونا، چاندی اور قیمتی دھاتیں) کی درآمدات اپریل-مئی 2023 میں 71.29 بلین  امریکی ڈالر کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 میں 67.36 بلین امریکی ڈالر تھیں۔

جدول 4: اپریل-مئی 2023 کے دوران پیٹرولیم اور جواہرات اور زیورات کے علاوہ تجارت

 

اپریل۔ مئی 2023

(بلین امریکی ڈالر )

اپریل۔ مئی 2022

(بلین امریکی ڈالر )

غیر پٹرولیم برآمدات

57.29

62.37

غیرپٹرولیم درآمدات

76.19

84.94

غیرپٹرولیم  اور غیر جواہراتی اورزیورات کی برآمدات

52.04

55.67

غیرپٹرولیم  اور غیر جواہراتی اورزیورات کی درآمدات

67.36

71.29

نوٹ: جواہرات اور زیورات کی درآمدات میں سونا، چاندی اور موتی، قیمتی اور نیم قیمتی پتھر شامل ہیں۔

تصویر 6: اپریل-مئی 2023 کے دوران پیٹرولیم اور جواہرات اور زیورات کے علاوہ تجارت

خدمات کی تجارت

  • مئی 2023* کے لیے خدمات کی برآمد کی تخمینی قیمت 25.30 بلین امریکی ڈالر ہے، جبکہ مئی 2022 میں  یہ 25.13 بلین امریکی ڈالر تھی۔
  • مئی 2023* کے لیے خدمات کی درآمد کی تخمینی قیمت  13.53 بلین امریکی ڈالر ہے جو مئی 2022 میں 15.20 بلین امریکی ڈالر تھی۔

تصویر 7: مئی 2023 کے دوران خدمات کی تجارت*

اپریل-مئی 2023* کے لیے خدمات کی برآمد کی تخمینی قیمت 51.14 بلین امریکی ڈالر  ہے جبکہ اپریل-مئی 2022 میں یہ تخمینی قیمت 49.17 بلین امریکی ڈالر تھی۔

اپریل-مئی 2023* کے لیے خدمات کی درآمدات کی تخمینی قیمت 27.16 بلین امریکی ڈالر ہے جو کہ اپریل-مئی 2022 میں 29.25 بلین امریکی ڈالرتھی۔

اپریل-مئی 2023* کے لیے سروسز ٹریڈ سرپلس کا تخمینہ 23.98 بلین امریکی ڈالر ہے جبکہ اپریل-مئی 2022 میں 19.92 بلین امریکی ڈالر تھا۔

تصویر 8: اپریل-مئی 2023 کے دوران خدمات کی تجارت

 سال 2023 -2022 میں بہت مضبوط نمو دیکھنے کے بعد ہندوستان کی تجارتی کارکردگی نے گزشتہ سال کی بلند بنیاد کے مقابلے میں کمی کے رجحانات کو ظاہر کیا ہے کیونکہ 2023 میں عالمی تجارتی سامان کی برآمدات میں ترقی کی رفتار نمایاں طور پر اعتدال پر رہی ، ساتھ ہی جغرافیائی سیاسی تناؤ اور مالیاتی سختی نے کساد بازاری کے خدشات کو جنم دیا ہے اور یہی بات ترقی یافتہ ممالک میں صارفین کے اخراجات میں کمی کا باعث بنی۔

مئی 2023 کے مہینے کے لیے، تجارتی سامان کی برآمدات کے تحت، 30 کلیدی شعبوں میں سے 13 نے مئی 2023 میں گزشتہ سال (مئی 2022) کی اسی مدت کے مقابلے میں مثبت نمو کا مظاہرہ کیا۔ ان میں الیکٹرانک سامان (73.96فیصد)، دیگر اناج (67.96فیصد)، تیل کے کھانے (52.91فیصد)، مصالحے (49.84فیصد)، لوہا (48.26فیصد)، تلہن (25.02فیصد)، پھل اور سبزیاں (19.91فیصد) سفالی  مصنوعات اور شیشے کے سامان (17.36فیصد)، چاول (14.27فیصد)،چائے (8.81فیصد)، کاجو (2.81فیصد)، کافی (1.71فیصد) اور منشیات اور دواسازی (0.78فیصد) شامل ہیں۔  

الیکٹرانک سامان کی برآمدات مئی 2023 کے دوران 73.96 فیصد بڑھ کر 2.42 بلین امریکی ڈالر ہوگئیں جو مئی 2022 میں 1.39 بلین امریکی ڈالر تھیں۔ اپریل سے مئی 2023 کے دوران الیکٹرانک سامان کی برآمدات 4.54 بلین امریکی ڈالر ریکارڈ کی گئیں جو کہ اپریل 2020 میں 3.06 بلین امریکی ڈالر کے مقابلے میں تھیں۔  اس طرح 48.06 فیصد کی نمو درج کی گئی۔

الیکٹرانکس، موبائل مینوفیکچرنگ، فارماسیوٹیکل وغیرہ میں زیادہ سرمایہ کاری کی سہولت فراہم کرنے والی پالیسیوں کو فعال کرنے کے نتیجے میں ان شعبوں میں واضح ترقی ہوئی ہے۔

لوہے پر سے ڈیوٹی ہٹا لئے جانے کا اثر اس شے کی ہندوستان کی برآمدات پر نظر آتا ہے جس نے مئی 2023 کے دوران 2022 کے اسی مہینے کے مقابلے میں 48.26 فیصد کی مثبت نمو کا مظاہرہ کیا ہے۔

مئی 2023 میں ٹیکسٹائل، پلاسٹک اور لینولیم کی برآمدات میں کمی کا سلسلہ جاری رہا کیونکہ بڑی معیشتوں میں کساد بازاری کے اثرات کی وجہ سے مانگ میں کمی تھی۔

ڈبلیو ٹی او کے تجارتی نمو کے تخمینے کو اصلاح کرکے 1.7 فیصد کر دیا گیا ہے جو کہ پہلے  1 فیصد  درج کیا گیا تھا ، یہ توقع ہے کہ جولائی-اگست 2023 کے بعد طلب کی بحالی دیکھنے میں آئے گی۔

تجارتی سامان کی درآمدات کے تحت، مئی 2023 میں 30 کلیدی شعبوں میں سے 16 نے منفی نمو کا مظاہرہ کیا۔ ان میں چاندی (-93.92فیصد) ، سلفر اور  بے تپائے  ہوئے آئرن پائرائٹس (-81.88فیصد)، کپاس کا کچا اور فضلہ (-39.81فیصد)، سونا (-)38.71فیصد)،سبزیوں کا تیل (-33.02فیصد)، موتی، قیمتی اور نیم قیمتی پتھر (-31.62فیصد)، نامیاتی اور غیر نامیاتی کیمیکلز (-20.26فیصد)، کوئلہ، کوک اور بریکیٹس وغیرہ (-16.88فیصد)، نقل و حمل کا سامان (-12.85فیصد)، ٹیکسٹائل یارن فیبرک، تیار شدہ  اشیاء  (-11.93فیصد)، مصنوعی رال، پلاسٹک کامواد، وغیرہ (-9.17فیصد)، گودا اور ویسٹ پیپر (-8.4فیصد)، پروجیکٹ کا سامان (- 6.04فیصد)، پیٹرولیم، خام اور مصنوعات (- 5.97فیصد) ،  لکڑی اور لکڑی کی مصنوعات (-3.4فیصد) اور دھاتی دھاتیں اور دیگر معدنیات (-0.58فیصد) شامل ہیں۔

اپریل-مئی 2023 کے لیے، تجارتی سامان کی برآمدات کے تحت، 30 کلیدی شعبوں میں سے 13 نے اپریل سے مئی 2022 کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 کے دوران مثبت نمو کا مظاہرہ کیا۔ ان میں تیل سے تیار شدہ کھانا (74.33فیصد)، الیکٹرانک سامان (48.06فیصد)، مصالحے 31.81فیصد، تیل کے بیج (20.94فیصد)، چاول (19فیصد)، سرامک مصنوعات اور شیشے کے برتن (17.29فیصد)، پھل اور سبزیاں (14.13فیصد)، دیگر اناج (10.43فیصد)، لوہا (5.24فیصد)، منشیات اور دواسازی (5.11فیصد)، چائے (3.03فیصد)، کافی (2.98فیصد) اور تمباکو (2.01فیصد) شامل ہیں۔

زرعی برآمدات مضبوط رہی ہیں، اور امید افزا نمو درج کر رہی ہیں۔

تجارتی سامان کی درآمدات کے تحت، 30 کلیدی شعبوں میں سے 21 نے اپریل-مئی 2022 کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 میں منفی نمو کا مظاہرہ کیا۔ ان میں چاندی (-74.8فیصد)، سلفر اور غیر روسٹڈ آئرن پائرائٹس (-69.62فیصد)، پروجیکٹ گڈز (-) شامل ہیں۔ 50.54فیصد، سونا (-39.32فیصد)، سبزیوں کا تیل (-35.4فیصد)، کپاس کا خام اور فضلہ (-30.64فیصد)، نامیاتی اور غیر نامیاتی کیمیکلز (-26.05فیصد)، موتی، قیمتی اور نیم قیمتی پتھر (-25.36فیصد) ، کوئلہ، کوک اور  کوئلے کاچورا، وغیرہ (-22.55فیصد)، ٹیکسٹائل یارن فیبرک، تیار شدہ اشیاء  (-14.37فیصد)، کھاد، خام اور تیار شدہ (-14.12فیصد)، ٹرانسپورٹ کا سامان (-13.76فیصد)، دھاتی دھاتیں اور دیگر معدنیات (-13.23فیصد)، پیٹرولیم، خام اور مصنوعات (-10.08فیصد)، دواؤں اور دواسازی کی مصنوعات (-8.78فیصد)، چمڑے اور چمڑے کی مصنوعات (-7.77فیصد)، مصنوعی نباتی گوند، پلاسٹک مواد، وغیرہ۔ (-7.67فیصد)، پھل اور سبزیاں (-6.55فیصد)، لکڑی اور لکڑی کی مصنوعات (-4.62فیصد)، رنگ/ دباغت /رنگنے والے مواد (-2.8فیصد)، کیمیائی مواد اور مصنوعات (-1.81فیصد) شامل ہیں۔

پٹرولیم، خوردنی تیل، کوئلہ، کوک اور کوئلے کا چورا وغیرہ کی درآمدی قدر میں کمی زیادہ تر اشیاء کی قیمتوں میں کمی کی وجہ سے ہوئی ہے۔ سونے کی درآمد میں کمی زیادہ تر درآمدی ڈیوٹی کی وجہ سے ہوئی ہے۔

چاندی کی درآمدات میں 93.92 فیصد  کی کمی واقع ہوئی  جو کہ مئی 2022 میں 0.45 بلین امریکی ڈالر  ریکارڈ کی گئی تھی  مئی 2023 میں گھٹ کر 0.03 بلین امریکی ڈالر ہوگئیں۔

خدمات کی برآمدات مضبوط رہیں اور اپریل-مئی 2022 کے مقابلے میں اپریل-مئی 2023 کے دوران ان کے 4.01  فیصد بڑھنے کا امکان ہے۔

اپریل-مئی 2023 میں ہندوستان کے تجارتی خسارے میں نمایاں کمی ہوئی ہے۔ اپریل-مئی 2023* کے لیے مجموعی تجارتی خسارے کا تخمینہ 13.28 بلین امریکی ڈالر ہے جبکہ اپریل-مئی 2022 کے دوران یہ تخمینہ 20.56 بلین امریکی ڈالرہے۔ اس طرح (-)35.41فیصد کی کمی درج کی گئی ۔ اپریل تا مئی 2023 کے دوران تجارتی اشیاء کا تجارتی خسارہ 37.26 بلین امریکی ڈالر تھا جو اپریل تا مئی 2022 کے دوران 40.48 بلین  امریکی ڈالر ریکارڈ کیا گیاتھا، جس میں (-) 7.95 فیصد کی کمی درج کی گئی۔

فوری تخمینوں کے لیے لنک :

*************

 

 

ش ح۔  س ب ۔ رض

U. No.6195



(Release ID: 1932801) Visitor Counter : 119


Read this release in: Kannada , Tamil , English , Hindi