امور خارجہ کی وزارت

ہندوستان کی جی ٹوینٹی صدارت:تیسری ترقیاتی ورکنگ گروپ میٹنگ


خواتین کی زیر قیادت ترقی پر ضمنی واقعہ: ترقی کے ستون

Posted On: 08 MAY 2023 5:50PM by PIB Delhi

ترقیاتی ورکنگ گروپ (ڈی ڈبلیو جی) کی تیسری میٹنگ کے پہلے دن کا آغاز، خواتین کی زیرقیادت ترقی پر ایک پرکشش اور بصیرت انگیز ضمنی پروگرام کے ساتھ ہوا، جو کہ ہندوستان کے جی20 کی ترجیحی علاقوں میں سے ایک ہے۔ اس تقریب کا انعقاد جی20سیکرٹریٹ نے آبزرور ریسرچ فاؤنڈیشن (او آر ایف) کے اشتراک سے کیا تھا۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/WhatsAppImage2023-05-08at5.43.27PMT7SR.jpeg

گوا میں منعقد ہونے والے اس پروگرام میں اوآر ایف کے صدر سمیر سرن،نیسکوم کے صدردیبجانی گھوش؛ چیف آف جینڈر ایکویلٹی تھیمیٹک گروپ سامنتھا ہنگ ، ایشیائی ترقیاتی بینک؛ ماریا فرنینڈا ایسپینوسا گارسز، ایگزیکٹو ڈائریکٹر، جی ڈبلیو ایل وائسز، اور اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 73ویں اجلاس کی سابق صدر چارو ملہوترا؛ پرائمس پارٹنرز کی منیجنگ ڈائریکٹر؛ بانی اور سی ای او، گرل ہائپ، ویمین ہو کوڈ باراتنگ میا، ؛ سوسن فرگوسن، کنٹری نمائندہ، اقوام متحدہ کی خواتین؛ بانی، ایم ڈی اور سی ای او ایویوم انڈیا ہاؤسنگ فنانس کاجل علمی؛ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف پبلک فنانس اینڈ پالیسی سورنجلی ٹنڈن؛ عالمی تجارت اور سرمایہ کاری کے مطالعہ کے مرکز، برازیل کی سربراہ ویرا ہیلینا تھورسٹنسن اور بھارتی بحریہ کی کمانڈر شازیہ خان، لیفٹیننٹ کمانڈر سواتی بھنڈاری، لیفٹیننٹ کمانڈر تاویشی سنگھ، لیفٹیننٹ کمانڈر دیشا امرتھ، لیفٹیننٹ کمانڈر روپا اور لیفٹیننٹ کمانڈر دلنا ،کے کلیدی خطابات اور مداخلتیں شامل تھیں۔

ضمنی تقریب کا آغاز سمیر سرن کے افتتاحی خطاب سے ہوا، جنہوں نے نہ صرف خواتین کی زیادہ شمولیت اور انہیں بااختیار بنانے کی ضرورت پر بات کی بلکہ اس نئی قیادت سے متعلق بھی بات کی جو آنے والی دہائیوں میں پھیلے گی۔ انہوں نے ذکر کیا کہ یہ ضمنی تقریب، لوگوں کو ایک ایسے مستقبل کے لیے اجتماعی طور پر تیار کرنے کے لیے بلند آواز میں سوچنے کے لیے اکٹھا کرنے کی کوشش ہے، جو ایک ایسا ماحول پیدا کرے گا، جو تبدیلی کے فعال ایجنٹوں کے طور پر خواتین کی مکمل اور موثر شرکت کی اجازت دے گا اور فیصلہ سازوں کے طور پر آگے بڑھائے گا۔

نسلی مساوات کی تعمیر کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے، وزارت خارجہ کے جوائنٹ سکریٹری ناگراج نائیڈو نے اپنے استقبالیہ خطاب میں کہا کہ ہمیں خواتین کی زیرقیادت ترقی کے نقطہ نظر کے ذریعے خواتین کی مکمل صلاحیتوں کو سامنےلاناچاہیے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ خواتین کی مارکیٹوں میں یکساں طور پر حصہ لینے کی صلاحیت؛ پیداواری وسائل تک ان کی رسائی اور ان پر کنٹرول، اچھے کام تک رسائی، اپنے وقت، زندگی اور جسم پر کنٹرول؛ اور بڑھتی ہوئی آواز، ایجنسی اور معاشی فیصلہ سازی میں بامعنی شرکت، نہ صرف پیداواری اور اقتصادی ترقی کو فروغ دیتی ہے، بلکہ اس کی مکمل فردی صلاحیت اور پائیدار ترقی کا ادراک کرتے ہوئے، پرامن معاشروں کے حصول کے لیے ضروری ہے۔

تقریب کا آغاز ’’خواتین اور معیشت: ابھرتے ہوئے شعبے اور کام کا مستقبل‘‘ کے موضوع پراجلاس سے ہوا جس کے بعد ’’یونیفارمڈ سروسز میں خواتین کی قیادت‘‘ کے موضوع پر ایک اسپاٹ لائٹ اجلاس جبکہ دوسرااجلاس ’’ایجنٹس آف چینج: کلائمیٹ ریزیلینس اینڈ فوڈ سسٹم‘‘ کے موضوع پر ہوا۔

’’خواتین اور معیشت: ابھرتے ہوئے شعبے اور کام کا مستقبل‘‘ کے موضوع پر سیشن کا آغاز، نیسکوم کے صدردیبجانی گھوش اور چیف آف جینڈر ایکویلٹی تھیمیٹک گروپ ایشیائی ترقیاتی بینک سامنتھا ہنگ کے خطاب سے ہوا۔ اسکے بعد جی ڈبلیو ایل وائسز کی ایگزیکٹو ڈائریکٹراور اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 73ویں اجلاس کی سابق صدر ماریا فرنینڈا ایسپینوسا گارسزکاخصوصی خطاب ہوا۔بعد از ایں بانی اور سی ای او، گرل ہائپ، ویمین ہو کوڈ باراتنگ میا اور اقوام متحدہ کی خواتین کی کنٹری نمائندہ سوسن فرگوسن، بانی، ایم ڈی اور سی ای او ایویوم انڈیا ہاؤسنگ فنانس کاجل علمی کےمابین ایک پینل مباحثہ ہوا جسکی نظامت پرائمس پارٹنرز کی منیجنگ ڈائریکٹر چارو ملہوترا نے کی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/WhatsAppImage2023-05-08at5.43.28PMZ7DD.jpeg

اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ خواتین کی زیرقیادت ترقی واقعی ایک بہت اہم مسئلہ ہے، ماریا فرنینڈا ایسپینوسا گارسیز نے کہا کہ بیانیہ کو خواتین کی ترقی سے، خواتین کی زیر قیادت ترقی کی طرف منتقل کرنے کے گہرے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ اس کے اصل مرکوز توجہ میں، خواتین کی زیر قیادت ترقی، طاقت کی تقسیم اور مساوات کے بارے میں ہے۔ صنفی مساوات، منصفانہ اور پائیدار دنیا کی تعمیر کے لیے، انہوں نے 5 مسائل پر روشنی ڈالی جنہیں حل کرنے کی ضرورت ہے: نگہداشت کی بلا معاوضہ ذمہ داریوں کی دوبارہ تقسیم، صنفی ڈیجیٹل تقسیم کو بند کرنا، ایس ٹی ای ایم شعبوں میں خواتین کی نمائندگی میں اضافہ اور خواندگی کے فرق کو ختم کرنا، خواتین کی معاشی ترقی کو یقینی بنانا۔ بااختیار بنانا اور سیاست میں زیادہ نمائندگیفراہم کرنا۔

پہلے اجلاس میں کئی اہم موضوعات پر روشنی ڈالی گئی جیسے کہ ایس ٹی ای ایم میں تعلیم تک مساوی رسائی کو یقینی بنانے کے لیے نظام کا از سر نو تصور کرنا اور ڈیجیٹل مہارت کی نشوونما، نگہداشت کے کام کے دوہرے بوجھ کو حل کرنے کے طریقے جو پالیسی کے نقطہ نظر سے خواتین پر ڈالے جاتے ہیں، یہاں تک کہ خواتین رسمی معیشت میں قائدانہ کردار پر قابض ہیں اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ خواتین کو مستقبل کی ملازمتوں کے لیے تربیت دی جاتی ہے، ری اسکلنگ، اپ اسکلنگ، اور صلاحیت سازی کے لیے سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔

’’یونیفارمڈ سروسز میں خواتین کی قیادت‘‘ پر اسپاٹ لائٹ اجلاس نے ہندوستانی بحریہ میں، میڈیکل کور میں خدمات انجام دینے اور پائلٹ کے طور پر، لاجسٹکس اور تعلیم کے انتظام کے ساتھ ساتھ حصہ لینے اور یہاں تک کہ یوم جمہوریہ کی پریڈ میں قیادت تک کے شعبوں میں خواتین پر توجہ مرکوز کی ۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/WhatsAppImage2023-05-08at5.43.28PM(1)DM8W.jpeg

کمانڈر شازیہ خان، لیفٹیننٹ کمانڈر سواتی بھنڈاری، لیفٹیننٹ کمانڈر تاویشی سنگھ، لیفٹیننٹ کمانڈر دیشا امرتھ، لیفٹیننٹ کمانڈر روپا اور لیفٹیننٹ کمانڈر دلنا نے بطور میڈیکل آفیسر، بحری ہوابازی میں، بحریہ کے کنسٹرکٹر کے طور پر اور یوم جمہوریہ کی پریڈ کی قیادت کی۔ سیشن کی نظامت او آر ایف کے صدر سمیر سرن نے کی۔

حتمی اجلاس ’’ایجنٹس آف چینج: کلائمیٹ ریزیلینس اینڈ فوڈ سسٹم‘‘میں نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف پبلک فنانس اینڈ پالیسی کی سورنجلی ٹنڈن اور ہیڈ، سنٹر فار گلوبل ٹریڈ اینڈ انویسٹمنٹ اسٹڈیز، برازیل کی سربراہ ویرا ہیلینا تھورسٹنسن، کے درمیان ایک پینل مباحثہ کےساتھ ہوا۔

اجلاس نے آب و ہوا کی لچک اور خوراک کے لچکدار نظام کی تعمیر کے لیے خواتین کی شرکت اور قیادت کو یقینی بنانے کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔ خواتین کو موسمیاتی بحران کا سامنا کرنا پڑتا ہے، جو صنفی عدم مساوات کو مزید گہرا کرتا ہے، جس سے ان کی روزی روٹی اور صحت خطرے میں پڑتی ہے۔ یہ بہت اہم ہے کہ خواتین کی ترجیحات قومی اور مقامی سطح کی موسمیاتی پالیسیوں کی منصوبہ بندی، ترقی اور فنڈنگ میں نظر آتی ہیں۔ پینلسٹس نے سبز شعبوں میں خواتین کی انٹرپرینیورشپ کو فروغ دینے اور آب و ہوا اور آفات کی لچک میں خواتین پر مرکوز سرمایہ کاری کو مضبوط کرنے کی ضرورت پر تبادلہ خیال کیا۔ ان میں ایسی پالیسی مداخلتیں جو موسمیاتی موافق خوراک کے نظام میں خواتین کی شمولیت اور خوراک کی فراہمی کی زنجیروں کو وسعت دینے اور جوابدہ آب و ہوا اور خوراک کے نظام کے پروگرام اور مداخلت میں مدد کر سکتی ہیں اور جدید فنانسنگ آلات جو صنف کی حمایت کر سکتے ہیں، شامل ہیں۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/WhatsAppImage2023-05-08at5.43.26PM5IV3.jpeg

اختتامی کلمات، وزارت خارجہ کی جوائنٹ سکریٹری اینم گمبھیر نے کہے، جنہوں نے اس بات پر زور دیا کہ خواتین کی بطور لیڈر، صلاحیتوں میں اضافہ تنظیمی کامیابی، قومی خوشحالی اور معیار زندگی کے لیے ایک اہم طویل مدتی سرمایہ کاری ہے اور قیادت کے کردار اورجدت اور انسانی مرکوز حل میں زیادہ خواتین کو شامل کرناہے۔۔

خواتین کی زیرقیادت ترقی کو کئی بین الاقوامی فریم ورکس کی حمایت حاصل ہے، جنمیں اقوام متحدہ کے پائیدار ترقی کے اہداف (ایس ڈی جیز) شامل ہیں۔ صنفی مساوات کے ایس ڈی جی 5 کو حاصل کرنے کے لیے، یہ ضروری ہے کہ خواتین کو معاشی، سماجی، ثقافتی اور سیاسی فیصلہ سازی میں مکمل اور مساوی حصہ حاصل ہو۔

تمام پینل، سب پینلسٹس کے اس عزم کےساتھ اختتام پزیر ہوئے جس میں جی20 ترقیاتی ورکنگ گروپ پر زور دیا گیا کہ وہ ایک قابل عمل نتیجہ کی طرف کام کریں، جو نسل کی مساوات کی تعمیر میں حصہ رسدی کرے اور خواتین کی زیر قیادت ترقی کے نقطہ نظر کے ذریعے، خواتین کی مکمل صلاحیتوں کو اجاگر کرے، جس میں خواتین کی مکمل، مساوی، موثر ہونے اور عالمی چیلنجوں سے مؤثر طریقے سے، فیصلہ کن اور جامع طریقے سے نمٹنے کے لیے فیصلہ ساز کے طور پر بامعنی شرکت کا مطالبہ کیا گیا ہے۔
یہاں مکمل کارروائی دیکھیں۔

جی20 انڈیا کے یوٹیوب چینل کو یہاں فالو کریں۔

*****

U.No.4900

(ش ح - اع - ر ا)   



(Release ID: 1922646) Visitor Counter : 145


Read this release in: English , Hindi , Marathi , Tamil