بجلی کی وزارت

این ٹی پی سی رینیوایبل انرجی لمیٹڈ نے فوجی اداروں میں گرین ہائیڈروجن پروجیکٹوں کے نفاذ کے لیے بھارتی فوج کے ساتھ مفاہمت نامے پر دستخط کیے


ایم او یو کا مقصد جیواشم ایندھن پر فوج کا انحصار کم کرنا ہے

Posted On: 21 MAR 2023 3:02PM by PIB Delhi

این ٹی پی سی آر ای ایل نے بلڈ، اون اینڈ آپریٹ (بی او او) ماڈل پر اپنے اداروں میں گرین ہائیڈروجن پروجیکٹس کے قیام کے لیے بھارتی فوج کے ساتھ ایک مفاہمت نامے پر دستخط کیے ہیں۔ اس کا مقصد پیچیدہ لاجسٹکس کو کم کرنا، فوسل ایندھن پر انحصار اور ڈی کاربونائزیشن کو تیز کرنا ہے۔ ایم او یو پر این ٹی پی سی آر ای ایل کے سی ای او جناب موہت بھارگوا اور کیو ایم جی کے پی وی ایس ایم، اے وی ایس ایم کے لیفٹیننٹ جنرل راجندر دیوان نے دستخط کیے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001EOQ0.jpg

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002H00R.jpg

ایم او یو کے دائرہ کار کے تحت مرحلہ وار بجلی کی فراہمی کے لیے گرین ہائیڈروجن پروجیکٹس کے قیام کے لیے ممکنہ مقامات کی مشترکہ نشاندہی کی جائے گی۔ این ٹی پی سی آر ای ایل بھارتی فوج کے لیے قابل تجدید توانائی کے منصوبوں (شمسی، ہوا وغیرہ) کا ڈیزائن، ترقی اور تنصیب بھی کرے گا۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0032AO7.jpg

یہ مفاہمت نامہ بھارتی فوج کے ذریعے جدید کاری کے لیے ایک جدید نقطہ نظر اور این ٹی پی سی کے ڈی کاربونائزیشن اہداف میں ملک کی مدد کرنے کے عزم کی نشاندہی کرتا ہے۔ یہ معاہدہ اپنی نوعیت کا پہلا معاہدہ ہے اور اس سے سرحدی سلامتی کے ایک نئے دور کا آغاز ہوا ہے جس میں ملک کی دفاعی لائنوں کے لیے توانائی کے تحفظ کی حمایت کی گئی ہے۔

بھارتی فوج کے مختلف مقامات کو آف گرڈ مقامات پر ڈی جی سیٹوں کے ذریعے چلایا جاتا ہے۔ بھارتی فوج، عزت مآب وزیر اعظم کے "پنچ امرت" اور کاربن نیوٹرل لداخ کے وژن کے مطابق، بجلی کی پیداوار اور گرمی کے لیے فوسل ایندھن اور ان کے لاجسٹکس پر انحصار کو کم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

این ٹی پی سی آر ای ایل این ٹی پی سی لمیٹڈ کا مکمل ماتحت ادارہ ہے اور فی الحال اس کے پاس زیر تعمیر 3.6 گیگاواٹ آر ای صلاحیت کا پورٹ فولیو ہے۔ این ٹی پی سی گروپ کے پاس سال 60 تک 2032 گیگاواٹ کی آر ای صلاحیت کا منصوبہ ہے اور فی الحال اس کے پاس 3.2 گیگاواٹ کی نصب شدہ آر ای صلاحیت ہے۔

این ٹی پی سی نے ہائیڈروجن ٹکنالوجی میں متعدد اقدامات کیے ہیں اور پہلے ہی گجرات میں پائپڈ نیچرل گیس پروجیکٹ کے ساتھ ہائیڈروجن ملانے کا کام شروع کیا ہے اور فی الحال ہائیڈروجن پر مبنی نقل و حرکت پروجیکٹ (لداخ اور دہلی میں) اور مدھیہ پردیش میں گرین میتھانول پروجیکٹ پر عمل درآمد کر رہا ہے۔

****

(ش ح – ع ا – ع ر)

U. No. 3059



(Release ID: 1909156) Visitor Counter : 118


Read this release in: English , Hindi , Punjabi , Telugu