سائنس اور ٹیکنالوجی کی وزارت

 مرکزی وزیر ڈاکٹر جتیندر سنگھ کا کہنا ہے کہ ’ہر اسٹارٹ‘، خواتین صنعت کاروں کی حوصلہ افزائی کے لیے ایک پلیٹ فارم  ہے جس کا حال ہی میں افتتاح  کیا گیا تھا


حکومت نے خواتین کی قیادت میں  اسٹارٹ اپس کے لیے ایک سال تک 20,000 روپے ماہانہ بھتہ شروع کیا ہے: ڈاکٹر جتیندر سنگھ

وقت کا تقاضا ہے کہ صنعت کے ساتھ شراکت داری قائم کی جائے اور جدید ٹیکنالوجی اور مصنوعات تیار کرنے اور انہیں کم سے کم وقت میں فراہم کرنے کے لیے اکیڈمی اور صنعت کے درمیان تعلقات کو مضبوط کیا جائے: ڈاکٹر جتیندر سنگھ

ہندوستان تیزی سے اختراعات کی گہوارہ  بن رہا ہے: ڈاکٹر جتیندر سنگھ

Posted On: 17 MAR 2023 3:21PM by PIB Delhi

سائنس اور ٹیکنالوجی مرکزی وزیر مملکت (آزادانہ چارج)،ارضیاتی سائنسز کے  وزیر مملکت (آزادانہ چارج) ، وزیر اعظم کے دفتر(پی ایم او)،عملے، عوامی شکایات، پنشن، ایٹمی توانائی اور خلائی وزیر مملکت، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے آج یہاں بتایا کہ خواتین کے اسٹارٹ اپ کو فروغ دینے اور خواتین کاروباریوں کی حوصلہ افزائی کے لیے ایک نیا بنایا گیا’ہر اسٹارٹ‘ پلیٹ فارم متعارف کرایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نئے پلیٹ فارم کا افتتاح حال ہی میں صدر جمہوریہ ہند نے کیا تھا۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/PHD2BLPX.jpg

 

بھارت اسٹارٹ اپ سمٹ اور ایکسپو 2023 کے مکمل اجلاس سے خطاب کرتے ہوئےوزیرموصوف  نے یہ بھی بتایا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی حکومت نے خواتین کی قیادت والےاسٹارٹ اپ کے لیے ایک سال کے عرصہ تک 20,000 روپے ماہانہ بھتہ بھی متعارف کرایا ہے۔اس اجلاس کا اہتمام کامرس اور صنعت کے  پی ایچ ڈی چیمبرنے کیا تھا۔

ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا کہ انٹرپرینیورشپ ہندوستان کی معیشت اور اخلاقیات میں شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ آزادی کے بعد کے زمانے سے لے کر آج تک جب ہندوستان نے دنیا کو 100 سے زیادہ  یونیکورنز دیے ہیں، ہندوستانی اسٹارٹ اپ ماحولیاتی نظام نے خاصی توجہ حاصل کی ہے، اس طرح یہ عالمی منڈیوں میں سے ایک بن گیا ہے۔

وزیرموصوف نے کہا کہ مستقبل کے رجحانات اسٹارٹ اپس کے لیے بلاک چین،انٹرنیٹ آف تھنگز (آئی او ٹی)، مصنوعی ذہانت (اے آئی) اور مشین لرننگ وغیرہ جیسی ٹیکنالوجیز کے ساتھ اختراع  اورخلل ڈالنے کے مواقع دکھاتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ پالیسی اصلاحات کی نوعیت کے ساتھ جو کہ ہندوستان اس طرف پیش قدمی کرگیا ہے ،اسٹارٹ اپس ایک بڑا رول ادا کرسکتے ہیں۔

صنعت کاروں کے طور پر خواتین کی بڑھتی ہوئی موجودگی پر روشنی ڈالتے ہوئے، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا کہ خواتین کی زیر قیادت کاروباری ادارے ملک میں روزگار کے مواقع پیدا کر کے، آبادیاتی تبدیلیاں لا کر اور خواتین کے بانیوں کی اگلی نسل کو متاثر کر کے معاشرے میں نمایاں کردار ادا کر رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہندوستان میں کم از کم 36 یونیکورنز اور ممکنہ ایک یونیکورنز کی کم از کم ایک خاتون بانی یا شریک بانی ہے۔ حکومت ہندکا اقدام خواتین کی کاروباری صلاحیتوں کے لیے ایک قابل عمل ماحولیاتی نظام کی تشکیل کے لیے پرعزم ہے جس میں پہل، اسکیموں، نیٹ ورکس اور کمیونٹیز اور اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم میں متنوع متعلقہ فریقوں کے درمیان شراکت داری کو فعال کرنا ہے۔

وزیر موصوف نے کہا کہ ہندوستان تیزی سے اختراعات کی گہوارہ بنتا جا رہا ہے۔ یہ علم پر مبنی معاشی نمو کے ماڈل کی طرف منتقل ہو رہا ہے اور محنت کرنے والے، سرمائے پر انحصار کرنے والی، اور مینوفیکچرنگ قوم کے طور پر اپنے فوائد کو نئے سرے سے ایجاد کرنے کا عہد کرتا ہے۔

وبائی امراض کے دوران اسٹارٹ اپس کی طرف سے ادا کیے گئے اہم کردار پر روشنی ڈالتے ہوئے، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا کہ جب دنیا وبائی مرض کے دوران جدوجہد کر رہی تھی، ہندوستانی اسٹارٹ اپس نے نئے معمول کے مطابق ہونے کے لیے گیئرز کو تبدیل کیا، محور کیا اور اس موقع پر اٹھے اور کچھ قابل ذکر جدت اور ترقی کا مظاہرہ کیا۔’’ہندوستان اس رفتار کو آگے بڑھا رہا ہے اور ڈیجیٹل کاروبار اور اسٹارٹ اپس کے لیے عالمی سطح پر سرفہرست ممالک میں شامل ہونے کا خواہشمند ہے‘‘۔

وزیر موصوف نے کہا کہ حکومت کا اسٹارٹ اپ انڈیا ایکشن پلان ملک میں کاروباری ماحولیاتی نظام کو مضبوط بنانے کے لیے ایک بہت اہم قدم ہے۔ ایکشن پلان کا مقصد اقتصادی ترقی اور روزگار پیدا کرنے دونوں کے انجن کے طور پر ہندوستان میں اختراع کو فروغ دینے کے لیے ایک مضبوط ماحولیاتی نظام کی تعمیر کرنا ہے۔

ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے زور دے کر کہا کہ آج ہندوستان 93,000 سے زیادہ ڈی پی آئی آئی ٹی تسلیم شدہ اسٹارٹ اپس اور 108 یونیکورنز کا گھر ہے۔ پچھلے چار سالوں میں، اس تعداد میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے، جس میں ہر سال اضافی ایک یونیکورنز کی تعداد میں 66 فیصد سال بہ سال اضافہ ہو رہا ہے۔ جہاں وبائی امراض کے دوران گھر سے کام نے ہندوستان میں ڈیجیٹل کاروبار کی ترقی کو فروغ دیا،وہیں اس واقعے کے نتیجے میں اسٹارٹ اپ میں تیزی بھی آئی۔

’’ہم آہستہ آہستہ ایک یونیکورنز کی عمر سے ڈیکاکورنز کی عمر میں منتقل ہو رہے ہیں۔ جنوری 2023 تک، دنیا بھر میں 47 کمپنیوں نے ڈیکاکورن کا درجہ حاصل کر لیا ہے۔ فی الحال، ہندوستان کے پاس پانچ اسٹارٹ اپس ہیں۔ وزیر موصوف نے مزید کہا فلپ کارٹ،نائیکا ،بائی جوز، فون پے اورسویگی کو ڈیکاکورن گروپ میں شامل کیا گیا ہے‘‘۔

وزیر موصوف نے کہا کہ وقت کی ضرورت ہے کہ صنعت کے ساتھ شراکت داری قائم کی جائے اور جدید ٹیکنالوجی اور مصنوعات تیار کرنے اور انہیں کم سے کم وقت میں فراہم کرنے کے لیے اکیڈمی اور صنعت کے درمیان تعلقات کو مضبوط کیا جائے۔

انہوں نے مزید کہاکہ’’اسٹارٹ اپس پائیدار ہو جائیں گے اگر صنعت شروع سے ہی مصنوعات کی شناخت کرے اور حکومت کے ساتھ مماثل ایکویٹی میں سرمایہ کاری کرے۔ تب ہی ہم وزیر اعظم کے’’سمرتھ‘‘اور’’آتم نر بھر بھارت‘‘ کے وژن کو سمجھ سکتے ہیں۔ میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ ملک میں اختراعی ماحولیاتی نظام کو فروغ دینے کے لیے اس حکومت کے تحت فنڈز کی کوئی رکاوٹ نہیں ہوگی۔

وزیرموصوف نے مزید کہا کہ پی ایچ ڈی سی سی آئی کے صنعت کاروں کا اس ماحولیاتی نظام میں بہت اہم کردار ہے۔مجھے یقین ہے کہ سب کی اجتماعی کوششوں سے ہم آج کے 108 یونیکورنز سے دوسرے سال میں 200 یونیکورنز تک پہنچنے کے لیے تیار ہیں۔ میں ان نوجوان کاروباریوں کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار کرتا ہوں جو یہاں موجود ہیں اور اپنے تمام ہم وطنوں کے لیے بھی جو ہندوستان کو دنیا کا اسٹارٹ اپ مرکز بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

 

***********

 

ش ح ۔  ح ا ۔ م ش

U. No.2982



(Release ID: 1908713) Visitor Counter : 109