مواصلات اور اطلاعاتی ٹیکنالوجی کی وزارت

ٹرائی نے ’یونیفائیڈ لائسنس کے تحت ڈیجیٹل کنیکٹیویٹی بنیادی ڈھانچہ پرووائیڈر اتھارٹی کے  تعارف‘ پر مشاورتی پیپر جاری کیا

Posted On: 11 FEB 2023 2:37PM by PIB Delhi

ٹیلی کام ریگولیٹری اتھارٹی آف انڈیا (ٹرائی) نے آج ’یونیفائیڈ لائسنس (یو ایل) کے تحت ڈیجیٹل کنیکٹیویٹی بنیادی ڈھانچہ پرووائیڈر اتھارٹی کے تعارف‘ پر مشاورتی پیپر جاری کیا ہے۔

نیشنل ڈیجیٹل کمیونیکیشن پالیسی (این ڈی سی پی - 2018) ڈیجیٹل بنیادی ڈھانچہ پر بہت زیادہ توجہ دیتی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ’’ڈیجیٹل بنیادی ڈھانچہ اور خدمات تیزی سے کلیدی اہل کاروں اور ملک کی ترقی اور بہبود کے اہم عامل کے طور پر ابھر رہے ہیں‘‘۔ این ڈی سی پی - 2018 اپنے ’پروپیل انڈیا‘ مشن کو پورا کرنے کے لیے حکمت عملیوں میں سے ایک کے طور پر ’’مختلف پرتوں (مثلاً، انفراسٹرکچر، نیٹ ورک، خدمات، اور ایپلیکیشنز کی پرت) کو ڈیفرینشل لائسنسنگ کے ذریعے ان بنڈلنگ کو فعال کرنے‘‘ کا بھی تصور پیش کیا گیا ہے۔

ایک مضبوط ڈیجیٹل کنیکٹیویٹی بنیادی ڈھانچہ (ڈی سی آئی) پیداواری صلاحیت میں اضافہ کر کے اور زندگی کے معیار کو بڑھانے والی سہولیات فراہم کر کے دونوں طرح سے اقتصادی ترقی میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ ڈی سی آئی کی ترقی کے تناظر میں، مختلف ممالک نے اپنے ٹیلی کام لائسنسنگ فریم ورک کو وسائل کے استعمال میں اضافہ (بشمول اسپیکٹرم)، لاگت میں کمی، سرمایہ کاری کو راغب کرنے اور انفراسٹرکچر/ نیٹ ورک کی تہہ اور سروس/ ایپلیکیشن کی تہوں کو الگ کر کے سروس ڈیلیوری طبقہ کو مضبوط کرنے کے لیے ہم آہنگ کیا ہے۔ اس طرح کے فریم ورک کا فائدہ یہ ہے کہ وہ لائسنسنگ کے عمل کو آسان بناتے ہیں اور ٹیکنالوجیز کے ہم آہنگی پر غور کرتے ہوئے مارکیٹ کی ترقی اور معاشرے کی سماجی اقتصادی بہبود کی بہتری کے لیے زیادہ سازگار ماحول فراہم کرتے ہیں۔

ڈی سی آئی ڈیجیٹل انڈیا، میک ان انڈیا، آیوشمان بھارت ڈیجیٹل مشن (ا ے بی ڈی ایم ) اور اسمارٹ شہروں کی ترقی کے تحت مختلف سرکاری اسکیموں کے کامیاب نفاذ میں ایک اہم اور سرکردہ کردار ادا کرتا ہے۔ حال ہی میں شروع کیا گیا جی 5 بھارت کو ایک براڈ بینڈ سپر ہائی وے میں بدل دے گا اور ملک کے سماجی و اقتصادی ڈھانچے کو بہتر بنائے گا۔ اس روشنی میں یہ بھی ضروری ہے کہ فعال اور غیر فعال دونوں بنیادی ڈھانچہ کی تخلیق کے لیے کنڈکٹیو لائسنسنگ فریم ورک کے ذریعے نئے کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی کی جائے۔ اس کے نتیجے میں مشترکہ طور پر قابل اشتراک ڈی سی آئی اور نیٹ ورک کے وسائل میں اضافہ، لاگت میں کمی، سرمایہ کاری کو راغب کرنے، سروس ڈیلیوری کے حصے کو مضبوط بنانے، اور انڈسٹری 4.0، انٹرپرائز سیگمنٹ اور دیگر استعمال کے معاملات کے لیے جی 5 سروسز کے پھیلاؤ میں بھی اتپریرک ثابت ہو سکتا ہے۔

حال ہی میں، ٹرائی کو 11.08.2022 کو ڈاٹ کے ذریعے ایک خط موصول ہوا، جس میں لائسنس کی ایک نئی قسم کی تخلیق کے بارے میں سفارشات طلب کی گئی ہیں، یعنی ’ٹیلی کام بنیادی ڈھانچہ لائسنس (ٹی آئی ایل)‘ لائسنس اور اس طرح کے لائسنس کی شرائط و ضوابط، قابل اطلاق لائسنس فیس وغیرہ۔   ٹرائی ایکٹ 1997 کے سیکشن 11(1)(a) کے تحت۔

’یونیفائیڈ لائسنس (یو ایل) کے تحت ڈیجیٹل کنیکٹیویٹی بنیادی ڈھانچہ پرووائیڈر اتھارٹی کے تعارف‘ پر اس کنسلٹیشن پیپر (سی پی) کا مقصد یونیفائیڈ لائسنس کے تحت مجوزہ ڈی سی آئی پی اجازت پر اسٹیک ہولڈرز کی آراء حاصل کرنا ہے۔ مشاورتی کاغذ ٹرائی کی ویب سائٹ www.trai.gov.in پر رکھا گیا ہے۔ مشاورتی کاغذ پر تحریری تبصرے اسٹیک ہولڈرز سے 09 مارچ 2023 تک اور جوابی تبصرے، اگر کوئی ہیں، 23 مارچ 2023 تک طلب کیے جاتے ہیں۔

تبصرے ترجیحی طور پر الیکٹرانک شکل میں advbbpa@trai.gov.in پر بھیجے جا سکتے ہیں جس کی ایک کاپی jtadvbbpa-1@trai.gov.in پر بھیجی جا سکتی ہے۔ کسی بھی وضاحت/معلومات کے لیے، جناب سنجیو کمار شرما، مشیر (براڈ بینڈ اور پالیسی تجزیہ)، ٹرائی سے ٹیلی فون نمبر 23236119+91-11-پر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ ا س۔ ت ح۔

U -1525



(Release ID: 1898331) Visitor Counter : 129


Read this release in: Tamil , English , Hindi , Telugu