الیکٹرانکس اور اطلاعات تکنالوجی کی وزارت

سوشل میڈیا اکاؤنٹس کی لازمی تصدیق

Posted On: 09 DEC 2022 1:54PM by PIB Delhi

عام طور پر پلیٹ فارم کے گمنام استعمال کو صارفین کی پرائیویسی یعنی خلوت کے تحفظ کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ تاہم، احتساب کو یقینی بنانے کے لئے انفارمیشن ٹیکنالوجی (انٹرمیڈئیری گائیڈلائنس اینڈ ڈیجیٹل میڈیا ایتھکس کوڈ) ضوابط مجریہ 2021 (‘‘آئی ٹی رولز’’) نے وساطت کنندگان پر مقرر کردہ ذمہ داریاں عائد کی ہیں جو اہم سوشل میڈیا وساطت کنندگان کے لئے بھی ہیں۔ اس کا مقصد احتیاط سے مشاہدہ کرنا ہے اور اس طرح کی مستعدی کا مشاہدہ کرنے میں ناکام رہنے والوں کو تیسرے فریق کی معلومات یا ڈیٹایا کمیونیکیشن لنک کے لئے ذمہ داری سے مزید مستثنیٰ نہیں رکھا جائے گا۔

حکومت کی پالیسیوں کا مقصد اپنے صارفین کے لئے ایک کھلا، محفوظ اور قابل اعتماد اور جوابدہ انٹرنیٹ کو یقینی بنانا ہے کیونکہ انٹرنیٹ کی توسیع اور زیادہ سے زیادہ ہندوستانیوں کے آن لائن آنے کے ساتھ، صارفین کو سائبر اسپیس کے غلط استعمال سے پیدا ہونے والے ممکنہ نقصان کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

ایک کھلے، محفوظ اور قابل بھروسہ اور جوابدہ انٹرنیٹ کو یقینی بنانے کے مقصد کو حاصل کرنے میں مدد کے لئے مرکزی حکومت نے انفارمیشن ٹکنالوجی (انٹرمیڈئیری گائیڈلائنس اینڈ ڈیجیٹل میڈیا ایتھکس کوڈ) ضوابط مجریہ 2021 ("آئی ٹی رولز") بھی بنائے ہیں۔ یہ قدم انفارمیشنٹیکنالوجی ایکٹ مجریہ 2000 ("آئی ٹی ایکٹ") کے تحت اٹھایا گیا ہے۔

سوشل میڈیا اکاؤنٹس کی درست تصدیق اور ان کی طرف سے پیش کردہ کسی بھی ادا شدہ خدمات کے استعمال کی شرائط کے حوالے سے مطلع کیا جاتا ہے کہ شفافیت کے مفاد میں آئی ٹی قوانین کے تحت سوشل میڈیا انٹرمیڈیری کے لئے مستعدی کے تقاضوں میں اپنی ویب سائٹ اور/یا موبائل ایپ پر نمایاں طور پر شائع کرنا اور صارفین کو اس کے صارف کے معاہدے سے انگریزییا آئین کے آٹھویں شیڈول میں متعین کسی بھی زبان میں مطلع کرنا  شامل ہیں اور یہ سب صارف کی پسند کی زبان میں ہو۔ مزید بر آں ایک سوشل میڈیا انٹرمیڈیری کے حوالے سے جس کے ہندوستان میں 50 لاکھ سے زیادہ رجسٹرڈ صارفین ہیں اس طرح کی ضروریات میں اپنے صارفین کو رضاکارانہ طور پر اپنے اکاؤنٹس کی تصدیق کرنے کے قابل بنانا اور ایسے اکاؤنٹس کو تصدیق کے مرئی نشانات فراہم کرنا بھی شامل ہے۔

جعلی اکاؤنٹس کی وجہ سے ممکنہ نقصان سے نمٹنے کے اقدامات کے حوالے سےیہ مطلع کیا جاتا ہے کہ آئی ٹی ایکٹ کی دفعہ 66 ڈی کسی بھی مواصلاتی آلے یا کمپیوٹر وسائل کے ذریعے نقالی کرکے دھوکہ دہی کی سزا دیتا ہے اور اس کی سزا تین سال تک قید اور ایک لاکھ روپے تک جرمانہ ہے۔ چونکہ یہ جرم قابلِ ادراک جرم ہے اس لیے ریاستی پولیس کے محکمے اس کے سلسلے میں قانون کے مطابق احتیاطی اور تعزیری کارروائی کرتے ہیں۔

جعلی اکاؤنٹس سے لاحق خطرے سے نمٹنے کے ذریعے ایک کھلے، محفوظ اور قابل اعتماد اور جوابدہ انٹرنیٹ کو یقینی بنانے کے مقصد کو حاصل کرنے میں مدد کرنے کے لئے آئی ٹی ضوابط کے تحت انٹرمیڈیری کے لئے مطلوبہ مستعدی میں درج ذیل چیزیں بھی شامل ہیں:

1۔ اس بات کی معقول کوشش کرنی ہے کہ صارفین دوسروں کے درمیان معلومات کی میزبانی، ڈسپلے، اپ لوڈ، ترمیم، شائع، ترسیل، ذخیرہ، اپ ڈیٹیا اشتراک نہ کریں جو مکتوب کو پیغام کی اصلیت کے بارے میں دھوکہ یا گمراہ کرتا ہے یا جان بوجھ کر اور جان بوجھ کر کسی غلط معلومات یا معلومات کو پہنچاتا ہے جو صریح طور پر جھوٹا اور غلط ہے یا فطرت میں گمراہ کن ہے، یا کسی دوسرے شخص کی نقالی کرتا ہے۔

2۔  مذکورہ بالا کی خلاف ورزی کی صورت میں، متعلقہ حکومت یا اس کی تنظیم کی طرف سے شکایتیا عدالتی حکم یا نوٹس کی وصولی پر رضاکارانہ طور پر معلومات کا اشتراک، ذخیرہیا انکشاف نہ کرنے پر۔ ہتک عزت، مفاد عامہ، شائستگی، اخلاق، انفارمیشن ٹیکنالوجی ایکٹ کے مطابق سزا دی جائے گی۔

3۔  قانونی طور پر تسلیم شدہ سرکاری ایجنسی سے آرڈر موصول ہونے پر قانون کے تحت روک تھام کرنا، پتہ لگانا، تفتیشیا قانونی کارروائی میں معلومات یا مدد فراہم کرنا ہوگا۔

4۔  شکایات کے ازالے کی مشینری موجود رہے اور قواعد کی خلاف ورزی کی شکایات  کے 72 گھنٹوں کے اندر معاملہ حل کرنا ہوگا۔

یہ اطلاع الیکٹرانکس اور اطلاعاتی ٹیکنالوجی کے وزیر مملکت جناب راجیو چندر شیکھر نے آج راجیہ سبھا میں ایک سوال کے تحریری جواب میں دی۔

***

ش ح۔ ع س۔ ک ا



(Release ID: 1882206) Visitor Counter : 134


Read this release in: Marathi , English , Manipuri , Tamil