خواتین اور بچوں کی ترقیات کی وزارت

محترمہ اسمرتی زوبن ایرانی نے سی ڈبلیو سی اورڈی سی پی یو سے اپیل کی کہ وہ پورے ملک میں بچوں کے تحفظ کے جے جے  رولز   کو مؤثر طریقے سے نافذ کریں۔ اس بات پر زور دیا کہ بچوں کے تحفظ کے لیے معاشرے کو متحد ہونا چاہیے


این سی پی سی آر نے بچوں کے عالمی دن کے موقع پر ’چیئر پرسنز اور چائلڈ ویلفیئر کمیٹی کے اراکین کے لیے تربیتی ماڈیول‘ اور ’بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے لیے پروٹوکول‘ کا آغاز کیا

Posted On: 20 NOV 2022 6:44PM by PIB Delhi
  • گھر - گو ہوم اینڈ ری یونائٹ(بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے لیے پورٹل) بھی شروع کیا گیا۔
  • تربیتی ماڈیول جووینائل جسٹس ایکٹ میں لائی گئی ترامیم کو نافذ  کرنے میں مدد کریں گے۔
  • پروگرام کا کلیدی مقصد فنکشنل علم کو بڑھانا، سی ڈبلیو سی ممبران اور چیئرپرسن-سی ڈبلیو سی  کی متعلقہ ہنرمندی کو بہتر بنانا ہے۔
  • سی ڈبلیو سی کے تربیتی ماڈیول اور بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے پروٹوکولز، این سی پی سی آر  کا ایم اے ایس آئی  پورٹل، این سی پی سی آر کے بال سوراج پورٹلز کے بارے میں موضوعاتی تکنیکی اجلاس منعقد ہوئے۔

نیشنل کمیشن فار پروٹیکشن آف چائلڈ رائٹس (این سی پی سی آر  ) نے گھر- گو ہوم اینڈ  ری –یونائٹ (بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے لیے پورٹل)  کے ساتھ ’’بچوں کی بہبود کمیٹیوں (سی ڈبلیو سی ) کے لیے تربیتی ماڈیولز، بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے لیے پروٹوکول‘‘ کا آج یہاں بچوں کے عالمی دن (20 نومبر) کے موقع پرآغاز کیا۔ خواتین اور بچوں کی بہبود  کی وزارت کے سکریٹری جناب اندریور پانڈے اس تقریب کے مہمان خصوصی تھے۔ جناب  پریانک قانون گو، چیئرپرسن، این سی پی سی آر اور دیگر معززین بھی اس موقع پر موجود تھے۔

ایک ویڈیو پیغام میں خواتین اور بچوں کی بہبود کی مرکزی وزیر محترمہ اسمرتی زوبن ایرانی نے بچوں کے تحفظ کے حوالے سے اپنی نوعیت کی پہلی قومی سطح کی لانچنگ تقریب کے انعقاد پر این سی پی سی آر کو مبارکباد دی۔ انہوں نے کہا کہ بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے چائلڈ ویلفیئر کمیٹیاں بہت اہم کردار ادا کر رہی ہیں۔ بچوں کے تحفظ کے تئیں حکومت کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے، محترمہ۔ اسمرتی ایرانی نے تمام سی ڈبلیو سی اور ڈی سی پی او سے اپیل کی کہ وہ ملک بھر میں بچوں کے تحفظ کے لیے جے جے  ایکٹ اینڈ رولز 2021 اور 2022 میں  کی گئی ترامیم  کو نافذ کرنے کے لیے اپنی پوری کوشش کریں۔ مزید برآں، انہوں نے پروٹوکول اور ٹریننگ ماڈیولز بنانے میں این سی پی سی آر  کی کوششوں کو سراہا۔ وزیر موصوف نے اس بات پر بھی زور دیا کہ بچوں کے تحفظ کے لیے معاشرے کو متحد ہونا چاہیے۔

Image Image

 

اس موقع پر گفتگو  کرتے ہوئے، جناب  اندیور پانڈے نے کہا کہ ہندوستان کو ملک میں بچوں کے تحفظ کے لیے جووینائل جسٹس رولز میں معیاری پروٹوکول اور یکسانیت کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کووڈ19 کے دوران سی ڈبلیو سی  اور ڈی سی پی یو  کے کام کی بھی تعریف کی۔ ڈیجیٹل انڈیا پروگرام کے بارے میں بات کرتے ہوئے، جناب  پانڈے نے کہا کہ این سی پی سی آر بچوں کی فلاح و بہبود کے لیے مختلف آن لائن پورٹل کے ساتھ آیا ہے۔ این سی پی سی آر نے چائلڈ ویلفیئر کمیٹیوں کے چیئرپرسنز اور ممبران کے لیے ٹریننگ ماڈیولز تیار کیے ہیں جو جووینائل جسٹس ایکٹ میں لائی گئی ترامیم کو نافذ کرنے میں مدد کریں گے۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ پی ایم کیئر فار چلڈرن اسکیم کے تحت، تقریباً 4345 بچوں کی شناخت کی گئی جن کے والدین کووڈ کے دوران  فوت ہوگئے تھے۔انہیں پی ایم کیئر اسکیم کے تحت مدد فراہم کی گئی تھی۔ انہوں نے تاکید کی کہ ہر 3 ماہ بعد ڈی سی پی اوز کے ذریعے ان بچوں کی صورتحال کی نگرانی کی جائے اور اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ انہیں تعلیم اور ان کی باز آبادکاری کے لیے تعاون ملتا رہے ۔ تربیت کی اہمیت کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ملک بھر میں  ٹریننگ  پروٹوکول کے نفاذ میں یکسانیت لائے گی ۔

 

 

Image

 

چیئرپرسن، این سی پی سی آر نے اپنے افتتاحی خطاب میں اس بات پر روشنی ڈالی کہ تمام اتھارٹیز، اسٹیک ہولڈرز، کمیشن اور ڈبلیو سی ڈی کی وزارت کی ایک ہی چھت کے نیچے موجود گی  ہمارے ملک کے بچوں کے تحفظ کے عزم کی نشان دہی کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حقوق اطفال کے عالمی دن کا موضوع ''بچوں کی شمولیت'' ہے اور بچوں کو تعلیم میں شامل کرنا، معاشرے کے مرکزی دھارے میں لانا اور انہیں ان کی ہمہ گیر ترقی کا موقع دینا ضروری ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بچے ہماری آبادی کا 40 فیصد ہیں لیکن ہماری قوم کا مستقبل بنانے کے حوالے سے وہ 100 فیصد ہیں۔ جناب قانون گو نے مزید کہا کہ گھر پورٹل اور وطن واپسی اور بحالی کے پروٹوکولز جنہیں  آج شروع کیا جا رہا ہے، بحالی اور وطن واپسی سے متعلق بچوں کے حقوق کو یقینی بنائے گا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے بچوں کے حقوق سے متعلق مختلف قواعد و ضوابط بنائے ہیں جو  یو این سی آر سی کے التزامات  کے علاوہ ہیں اور ہمارا مقصد بچوں کے بہترین مفاد میں اس ورثہ کو مزید آگے بڑھانا ہے۔

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0051I5X.jpg

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image006SNE2.jpg

 

لانچ ایونٹ کے بعد (i) سی ڈبلیو سی  کے تربیتی ماڈیول پر اورینٹیشن اور بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے پروٹوکولز (ii) این سی پی سی آر کے  ایم اے ایس آئی  پورٹل (iii) این سی پی سی آر  کے بال سوراج پورٹلز پر موضوعاتی تکنیکی سیشن ہوئے۔ دن کی کارروائی سوال و جواب پر اختتام پذیر ہوئی جس میں شرکاء کی طرف سے اٹھائے گئے مختلف مسائل اور شکوک و شبہات کو دورکیا گیا۔

کانفرنس میں چیئرپرسنز سمیت 1200 شرکاء نے شرکت کی جن میں تمام ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے تمام ریاستی کمیشن برائے تحفظ حقوق اطفال (این سی پی سی آر  ) کے ممبران، چیئرپرسنز اورچائلڈ ویلفیئر کمیٹیوں (سی ڈبلیو سی ) کےچیئرپرسنز اور  اراکین،تمام اضلاع سے ڈسٹرکٹ چائلڈ پروٹیکشن یونٹس (ڈی سی پی یو ) کے اہلکار۔ خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت (ڈبلیو سی ڈی ) کے حکام اورسردار ولبھ بھائی پٹیل نیشنل پولیس اکیڈمی (ایس وی پی این پی )، سی اے آر اے  اور این آئی پی سی سی ڈی کے دیگر معززین شامل ہیں ۔

این سی پی سی آر  ایک قانونی ادارہ ہے جو ملک میں بچوں کے حقوق اور دیگر متعلقہ معاملات کے تحفظ کے لیے کمیشن فار پروٹیکشن آف چائلڈ رائٹس (سی پی سی آر) ایکٹ 2005 کے سیکشن 3 کے تحت تشکیل دیا گیا ہے۔ کمیشن کو جووینائل جسٹس (بچوں کی دیکھ بھال اور تحفظ) ایکٹ 2015 اور اس کے ضوابط  ،جنسی جرائم سے بچوں کا تحفظ (پوکسو) ایکٹ، 2012 اور مفت اور لازمی تعلیم کا حق (آر ٹی ای) ایکٹ، 2009کے مناسب اور موثر نفاذ کی نگرانی کرنے کا پابند بنایا گیا ہے۔ ۔

پس منظر

(I) بچوں کی بہبود کمیٹیوں (سی ڈبلیو سی ) کے لیے تربیتی ماڈیول: چائلڈ ویلفیئر کمیٹیوں کے چیئرپرسنز اور ممبران کے لیے تربیتی ماڈیول تیار کیا گیا ہے جس کا مقصد سی ڈبلیو سی  کے کردار اور ذمہ داریوں کو جامع طور پر ایک جگہ پر لانا ہے۔ چائلڈ ویلفیئر کمیٹیاں ضلعی سطح پر کمزور بچوں کی سرپرستی کرتی ہیں اور ان کی دیکھ بھال اور تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے ان پر عائد ذمہ داریاں وسیع ہیں۔ ماڈیول سی ڈبلیو سی   کی تربیت کے لیے 15 دن کا پروگرام ہے۔ اسے 72 گھنٹے سے زائد دورانیے کے 63 سیشنز میں تقسیم کیا گیا ہے۔ شرکاء کو ٹریننگ میں روزانہ اوسطاً 4 گھنٹے 50 منٹ گزارنے ہوں گے۔

پروگرام کا کلیدی مقصد فنکشنل علم کو بڑھانا، سی ڈبلیو سی ممبران اور چیئرپرسن- سی ڈبلیو سی کی متعلقہ مہارتوں کو بہتر بنانا ہے، تاکہ دیکھ بھال اور تحفظ کے محتاج بچوں کے تحفظ اور بحالی،قانونی تنازعات میں گھرے بچوں کے لیے موثر اور بروقت خدمات فراہم کی جا سکیں اور یتیم، لاوارث اور سپرد کئے گئے بچوں کو تحفظ فراہم کیا جا سکے ۔

 سیکھنے  کے متوقع نتائج

پروگرام کا مقصد ذاتی، سماجی، طریقہ کار اور تکنیکی مہارتوں کو بہتر بنانا ہے جیسا کہ جے جے ایکٹ 2015، جے جے رولز 2016، ایکٹ اور رولز  میں بعد میں کی گئی ترامیم، مشن واتسلیہ اور گود لینے کے ضوابط کے تحت ضروری ہے۔ پروگرام کو سی ڈبلیو سی  کے ممبران اور چیئرپرسن کو علم اور ہنر سے آراستہ کرنے میں مدد کرنی چاہئے اور ایک قابل اتھارٹی کے طور پر کام کرنا چاہئے تاکہ وہ بروقت اور بچے کے بہترین مفاد میں اہم فیصلے لے سکیں۔

سہولت کار

سہولت کار یا ریسورس پرسنز موضوع کے ماہر ہونے چاہئیں جو سیشن کے دوران کردار ادا کرنے اور شرکت کے طریقے استعمال کرنے کے قابل ہوں۔ انہیں کیس قوانین (حالیہ برسوں میں سپریم کورٹ اور ہائی کورٹس کے اہم فیصلے) کے ساتھ بچوں کی بہبود کے لیے ملک میں ترقی پسند انہ قانون سازی کی سمجھ ہونی چاہیے اور مختلف کیس اسٹڈیز کا حوالہ دینے کے قابل ہونا چاہیے۔

ماڈیول کی جھلکیاں

-  بات چیت اور سرگرمیوں کے مواقع سمیت انٹرایکٹو تدریس پر مبنی۔

-  کر کے سیکھنے کے اصول کی پیروی کی جاتی ہے اور فیلڈ ٹرپس کو سیکھنے کے تجربے کے ایک حصے کے طور پر شامل کیا جاتا ہے جہاں شرکاء سی سی آئی  کا دورہ کر سکتے ہیں اور ضروری مہارتوں اور قابلیت کو فروغ دینے والی سرگرمیوں میں شامل ہو سکتے ہیں۔

-  ماڈیول حصہ داری پر مبنی طریقے استعمال کرتا ہے جیسے کیس اسٹڈیز اور بحث پر مبنی سیکھنے کا طریقہ جہاں شرکاء تنقیدی سوچ اور ٹیم ورک میں مہارت حاصل کرتے ہیں۔

-  عنوانات کو دن کے حساب سے ترتیب دیا گیا ہے اور اسے جیسا   استعمال کیا جانا ہےاس حساب سےاسے ترتیب دیا گیا ہے ۔

-  ہینڈ آؤٹ اور سرگرمیوں کے لیے مواد اور سہولت کاروں کے لیے نوٹس دن بھر کے اجلاس کی تفصیلات کے ساتھ فراہم کیے گئے ہیں۔

-  ہر دن کے آغاز میں اہم ٹیک ویز کو نمایاں کیا جاتا ہے جس کے بعد پچھلے دن کے تربیتی سیشنوں کی معلومات کی بازیافت کے طور پر اسیسمنٹ  کے لیے سوالات ہوتے ہیں۔

 

ماڈیول کی ساخت

ماڈیول سی ڈبلیو سی  کی تربیت کے لیے 15 دن کا پروگرام ہے۔ اسے 75 گھنٹے سے زیادہ کی مدت کے 66 سیشنز میں تقسیم کیا گیا ہے۔ شرکاء کو تربیت میں روزانہ اوسطاً 5 گھنٹے گزارنے ہوں گے۔ ہر دن/موضوع کے لیے درج ذیل معلومات دی جاتی ہیں۔

- مدت

-  مقصد

-  سیشن کے بارے میں

-  تدریسی طریقہ کار  / تدریسی اوزار

-  سہولت کار کے لیے وسائل کا مواد

-  سرگرمی کا طریقہ کار (جیسا کہ قابل اطلاق ہو )

-  سہولت کار کے لیے نوٹس

-  اہم ٹیک ویز

 

 (II) بچوں کی باز یافت  اور وطن واپسی کے پروٹوکول: حکومت ہند نے ایکٹ اور  رولز  میں تاریخی ترامیم کیں اور جووینائل جسٹس (بچوں کی دیکھ بھال اور تحفظ) ترمیمی ایکٹ، 2021، جووینائل جسٹس (بچوں کی دیکھ بھال اور تحفظ) ایمینڈمنٹ ماڈل رولز2022 اور   گود لینے کے ضوابط،  نافذ کئے 2022۔ ایسی ہی بڑی ترامیم جو لائی گئی ہیں ان میں سے ایک بچوں کی وطن واپسی اور بحالی کا عمل ہے۔ نئی ترامیم اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے کی گئی ہیں کہ دیکھ بھال اور تحفظ کے محتاج بچے کی بحالی قانونی چارہ جوئی کے شکار بچوں سے مختلف ہوگی۔ یہ دیکھا گیا کہ جے جے بی اور سی ڈبلیو سی کے سامنے لائے گئے بہت سے ایسے بچے تھے، جو پہلی نظر میں کسی اور جگہ سے تعلق رکھتے تھے لیکن انہیں وطن واپس لانا مشکل ہو رہا تھا، کیونکہ آبائی جگہ کی تفصیلات معلوم نہ ہو سکیں۔ حکام کی طرف سے. بچوں کو ان کے آبائی مقام پر واپس بھیجنے میں درپیش چیلنجز بنیادی طور پر حکام کے درمیان عدم ہم آہنگی اور نظام کے اندر حکام کے درمیان معلومات کے اشتراک کی کمی کے سبب تھی ۔ وطن واپسی اور بحالی کا پروٹوکول ان چیلنجوں کو ختم کرنے کی کوشش ہے جو حکام کو وطن واپسی میں درپیش ہیں اور زیادہ سے زیادہ تعداد میں بچوں کو ان کے اہل خانہ / رشتہ داروں کے ساتھ ان کے آبائی مقام پر واپس بھیجنا ہے۔

سی ڈبلیو سی ایس مندرجہ ذیل کو ڈیجیٹل طور پر یقینی بنائے گا اور ٹریک کرے گا:

1. بچے کو دوسرے ضلع/ریاست میں منتقل کرنے سے پہلے، سی ڈبلیو سی  اس بات کو یقینی بنائے گا کہ بچے کی تمام ضروری دستاویزات مکمل ہو چکی ہیں۔

2. ڈی سی پی یو  اس بات کو یقینی بنائے گا کہ جرائم کا شکار ہونے کے معاملے میں، بچے کو ضلع/ریاست سے باہر منتقل کرنے سے پہلے تمام دستاویزات/ رسمی کارروائیاں مکمل کر لی گئی ہیں۔

3.   گھرپورٹل کے مرحلہ 2 پر، سی ڈبلیو سی  مطلع کرے گا کہ آیا اس بچے کے لیے تمام ضروری رسمی کارروائیاں اور دستاویزات مکمل کر لی گئی ہیں جسے وطن واپس لایا جانا ہے۔

4. سی ڈبلیو سی  بچے کے کیس کو متعلقہ سی ڈبلیو سی  کو منتقل کرے گا اور گھر  پورٹل پر متعلقہ سی ڈبلیو سی  کو بھی ڈیجیٹل طور پر کیس منتقل کرے گا۔

5. جہاں بچے کے ٹھکانے کا پتہ نہیں ہے، سی ڈبلیو سی  تحقیقات کو مقامی ایس جے پی یو /پولیس/اے ایچ ٹی یو  اسٹیشن کو منتقل کرے گا اور پورٹل پر معلومات کو اپ ڈیٹ کرے گا۔

6. بچے کو دوسرے ضلع/ریاست میں منتقل کرنے سے پہلے، سی ڈبلیو سی اس بات کو یقینی بنائے گا کہ درج ذیل اقدامات کیے گئے ہیں۔

 i.  کیس فائل کھولی جاتی ہے اور بچے کی بنیادی معلومات تیار کی جاتی ہیں۔

ii. کارروائی کا نوٹ، اگر کوئی ہے۔

iii. ہیلتھ اسکریننگ رپورٹ۔

iv. مشاورتی رپورٹ، اگر کوئی ہے۔

v. متعلقہ سی ڈبلیو سی  کو معلومات فراہم کر دی گئی ہیں۔

vi. جس ضلع میں بچہ ملا ہے اس کے ضلع مجسٹریٹ کو معلومات فراہم کر دی گئی ہیں۔

vii. اسکارٹ آرڈر پاس کر دیا گیا ہے (فارم 45) - لڑکی کی صورت میں، اسکارٹ خاتون ہونا چاہیے۔

viii. اگر ایس آئی آر  اور آئی سی پی  تیار کیا گیا تھا، تو ایس آئی آر  اور آئی سی پی  کی کاپی اپ لوڈ کی جائے گی۔

ix.  بچے کے بینک اکاؤنٹس کی حیثیت۔

ix.  معاوضہ، اگر کوئی فراہم کیا جاتا ہے۔

xi. جرم کا شکار ہونے والا بچہ ، بچے کے خلاف ہونے والے جرم کی نوعیت کے لحاظ سے معاوضے کی رقم کا حقدار ہوگا۔

xii. دونوں ڈی سی پی یو  (منتقل شدہ ضلع کا ڈی سی پی یو   اور منتقل شدہ ضلع کا ڈی سی پی یو  ) اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ معاوضے کی رقم متعلقہ ضلع مجسٹریٹ کی رہنمائی میں بچے کے آبائی مقام پر کھولے گئے بچے کے بینک اکاؤنٹ میں جمع کر دی جائے۔

xiii.تاہم، یہ دیکھنا ضروری ہے کہ معاوضے کی رقم وطن واپسی کے بعد بھی بچے کے بینک اکاؤنٹ میں جمع ہو سکتی ہے۔ معاوضے کے مقاصد کے لیے، بچے کو وطن واپس بھیجے جانے سے نہیں روکا جانا چاہیے۔

 

(III)  گھر - گو ہوم اینڈ ری  -یونائٹ (بچوں کی بحالی اور وطن واپسی کے لیے پورٹل: این سی پی سی آر کے ذریعہ تیار کردہ گھر پورٹل نگہداشت اور تحفظ کی ضرورت والے بچوں کے معاملات میں سی ڈبلیو سی اور ڈی سی پی او  کے ترمیم شدہ کرداروں کی نشاندہی کرتا ہے۔

گھر- گو ہوم اینڈ ری  -یونائٹ کی خصوصیات (این سی پی سی آر  کا نامزد پورٹل):

i. ان بچوں کی ڈیجیٹل ٹریکنگ اور نگرانی جو جے جے سسٹم میں ہیں اور انہیں کسی دوسرے ملک/ریاست/ضلع میں واپس بھیجنا ہے۔

ii. ریاست کے متعلقہ جے جے بی /سی ڈبلیو سی  کو بچوں کے معاملات کی ڈیجیٹل منتقلی۔ اس سے بچوں کی جلد وطن واپسی میں مدد ملے گی۔

iii. جہاں مترجم/ترجمان/ماہر کی ضرورت ہو، متعلقہ ریاستی حکومت سے درخواست کی جائے گی۔

iv. سی ڈبلیو سی  اور ڈی سی پی او بچے کے کیس کی پیش رفت کی ڈیجیٹل طور پر نگرانی کرکے بچوں کی مناسب بازیابی  اور بحالی کو یقینی بنا سکتے ہیں۔

v. فارموں میں ایک چیک لسٹ فارمیٹ فراہم کیا جائے گا تاکہ ان بچوں کی شناخت کی جا سکے جن کی وطن واپسی مشکل ہو رہی ہے یا ایسے بچے جنہیں ان کا استحقاقی معاوضہ یا دیگر مالی فوائد نہیں مل رہے ہیں۔

vi. حکومت کی نافذ کردہ اسکیموں کی فہرست فراہم کی جائے گی، تاکہ بحالی کے وقت سی ڈبلیو سی بچے کو اسکیموں سے جوڑ سکیں تاکہ خاندان کو مضبوط کیا جا سکے اور یہ یقینی بنایا جا سکے کہ بچہ اپنے خاندان کے ساتھ رہے۔

 

******

شح۔ مم۔ م ر

U-NO. 12740



(Release ID: 1877609) Visitor Counter : 125


Read this release in: English , Marathi , Hindi