زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

مرکز نے پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور دہلی کی این سی ٹی کی ریاستی حکومتوں سے کہا ہے کہ وہ مستقبل قریب میں صفر پرال جلانے  کے حصول کی  کوشش کریں


زراعت اور کسانوں کی بہبود کے مرکزی وزیر جناب نریندر سنگھ تومر نے دھان کے پرال کو جلانے کے انتظام کے لیے ریاستوں کی تیاریوں کا جائزہ لیا

متعلقہ ریاستوں کو مطلوبہ اہداف کو حاصل کرنے کے لیے اس مالی سال میں انہیں دستیاب 600 کروڑ روپے کا مؤثر طریقے سے استعمال کرنا چاہیے: جناب تومر

وزیرموصوف کا کہنا ہے کہ ریاستوں کو 2.07 لاکھ مشینوں کے موثر استعمال کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے جو پچھلے 4 سالوں کے دوران پہلے سے  ہی فراہم کی جاچکی ہیں

Posted On: 21 SEP 2022 6:42PM by PIB Delhi

زراعت اور کسانوں کی فلاح و بہبود کے مرکزی وزیر جناب نریندر سنگھ تومر نے آج پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور دہلی کی این سی ٹی کی ریاستی حکومتوں سے مطالبہ کیا کہ وہ مستقبل قریب میں صفر پرال جلانے کو حاصل کرنے کے لیے جدوجہد کریں۔ انہوں نے اس عظیم مشن کو حاصل کرنے کے لئے تمام مرکزی مدد کا وعدہ کیا اور مزید کہا کہ یہ ان ریاستوں پر ایک قسم کی لعنت ہے، کیونکہ میڈیا کی منفی تشہیر کی وجہ سے انہیں بہت زیادہ عوامی ناراضگی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

جناب تومر نے کہا کہ اس مالی سال میں ریاستوں کو پہلے ہی 600 کروڑ روپے فراہم کیے جا چکے ہیں اور ان کے پاس 300 کروڑ روپے کی غیر خرچ شدہ رقم ہے، جس کا صحیح استعمال کیا جانا چاہیے۔ مزید یہ کہ ریاستوں کو تقریباً دو لاکھ مشینیں دستیاب کرائی گئی ہیں۔ وزیر موصوف نے کہا کہ مرکز اور متعلقہ ریاستوں کو مشترکہ طور پر ایک طویل مدتی منصوبہ بندی تیار کرنی چاہیے اور ایک مقررہ وقت کے اندر صفر پرال  جلانے کے ہدف کو حاصل کرنے کے لیے کثیر الجہتی سرگرمیاں شروع کرنی چاہئیں۔

6.jpg

جناب تومر پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور دہلی کی این سی ٹی کی ریاستی حکومتوں کے افسران، محکمہ زراعت اور کسانوں کی بہبود( ڈی اے اینڈ ایف ڈبلیو) اور انڈین کونسل آف ایگریکلچرل ریسرچ (آئی سی اے آر) کے افسران کے ساتھ 2022کے سیزن کے دوران پرال  جلانے کے انتظام کے لیے ریاستی حکومتوں کی طرف سے اٹھائے جانے والے اقدامات/ تجویز کردہ اقدامات پر ایک اعلیٰ سطحی جائزہ میٹنگ لے رہے تھے۔

جناب تومر نے ریاستوں کے عہدیداروں سے کہا کہ وہ  آئی ای سی کی سرگرمیوں کو مضبوط اور وسیع کریں تاکہ کسانوں کو آگاہ کیا جا سکے کہ پرال  جلانے سے یوریا کے زیادہ استعمال کی طرح طویل مدت میں زمین کی زرخیزی کو نقصان پہنچتا ہے۔ انہوں نے عہدیداروں پر زور دیا کہ وہ کسانوں کو ان مقامات پر لے جانے کے انتظامات کریں جہاں انڈین کونسل آف ایگریکلچرل ریسرچ (آئی سی اے آر) کے تیار کردہ پوسا  ڈیکمپوزر کو عملی مظاہروں کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔

  یہ بتایا گیا ہے کہ محکمہ زراعت اور کسانوں کی فلاح و بہبود پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور دہلی کی این سی ٹی ریاستوں میں فصلوں کی باقیات کے ان سیٹو مینجمنٹ کے لیے زرعی میکانائزیشن کو فروغ دینے پر مرکزی سیکٹر اسکیم کے نفاذ کو  2023-2022 کے دوران تخمینہ جاتی  700 کروڑ روپے کے ساتھ جاری رکھے ہوئے ہے۔اب  تک  240.00 کروڑروپے،  191.53 کروڑ روپے، 154.29 کروڑ روپے اور14.18 کروڑ روپے۔ کی رقم ، پہلی قسط کے طور پر بالترتیب پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور آئی سی اے آر کو پہلے ہی جاری کی جا چکی ہے۔  رواں سال کے دوران ان ریاستوں میں بڑے پیمانے پر بائیو  ڈیکمپوزر ٹیکنالوجی کے استعمال کو فروغ دینے کے لیے دفعات بھی شامل کی گئی ہیں۔

اس اسکیم کو 2019 -2018 میں متعارف کرایا گیا تھا، جس کا مقصد دہلی اور قومی راجدھانی کے علاقے میں پڑوسی ریاستوں پنجاب، ہریانہ اور اتر پردیش میں پرالی جلانے کی وجہ سے ہونے والی فضائی آلودگی سے نمٹنے اور فصلوں کی باقیات کے  تقا ضے کے مطابق انتظام کے لیے درکار مشینری کو سبسڈی دینا تھا۔  اس اسکیم کے تحت فصلوں کی باقیات کے انتظام کی مشینوں کی خریداری کے لیے مالی امداد انفرادی کسانوں کو لاگت کا 50فیصد اور کسانوں کی کوآپریٹو سوسائیٹیوں، پی ایف اوز اور پنچایتوں کو فصل کی باقیات کے انتظام کے حسب ضرورت ہائرنگ سینٹرز کے قیام کے لیے پروجیکٹ لاگت کا 80فیصد فراہم کی جاتی ہے۔ ریاستوں اور آئی سی اے آر کو کسانوں اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کی بڑے پیمانے پر بیداری کے لیے معلومات، تعلیم اور مواصلات (آئی ای سی) کی سرگرمیاں شروع کرنے کے لیے بھی فنڈز فراہم کیے جاتے ہیں۔

یہ اسکیم مشینوں کے استعمال کو فروغ دیتی ہے جیسے سپر اسٹرا مینجمنٹ سسٹم، ہیپی سیڈر، سپر سیڈر، صفر تک بیج کے ساتھ کھاد کی ڈرل، ملچر، پیڈی اسٹرا ہیلی کاپٹر، ہائیڈرالک طور پر ریورس ایبل مولڈ بورڈ پلاؤ، کراپ ریپرس اور ریپر بائنڈر فصل کی باقیات اور بیلرز اور ریک جو گانٹھوں کی شکل میں بھوسے کے دیگر سابقہ ​​استعمال کے لیے بھوسے کو جمع کرنے کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔ اسکیم کے تحت پروموشن کے لیے 'سمارٹ سیڈر' مشین کو نیا نیا شامل کیا گیا ہے۔

2019-2018 سے 2022 -2021 کی مدت کے دوران، 2440.07 کروڑ کے فنڈز جاری کیے گئے ہیں (ہریانہ693.25 کروڑ روپے، اترپردیش-  533.67 کروڑ روپے، دہلی کے این سی ٹی – 4.52 کروڑ روپے، آئی سی اے آر اور دیگر مرکزی ایجنسیاں 61.01 کروڑ روپے، اور بڑا حصہ ریاست پنجاب کو گیا ہے یعنی 1147.62 کروڑ روپے)۔

ان فنڈز میں سے، پچھلے 4 سالوں کے دوران، پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور دہلی کی این سی ٹی کی ریاستی حکومت نے چھوٹے اور پسماندہ کسانوں کو کرایہ کی بنیاد پرمشینیں اور آلات فراہم کرنے کے لیے فصل کی باقیات کے انتظام کی مشینری کے 38422 سے زیادہ کسٹم ہائرنگ سینٹر قائم کیے ہیں۔ (پنجاب- 24201 نمبر، ہریانہ- 6775 نمبر اور اتر پردیش- 7446 نمبر)۔ ان قائم شدہ  سی ایچ سیز اور ان 4 ریاستوں (پنجاب- 89151 نمبر، ہریانہ- 59107 نمبر، اتر پردیش- 58708 نمبر اور دہلی کے این سی ٹی- 247 نمبر) میں کل 2.07 لاکھ سے زیادہ فصلوں کی باقیات کے انتظام کی مشینیں فراہم کی گئی ہیں) جن میں 3243 سے زیادہ بیلرز اور ریک بھی شامل ہیں۔

انڈین کونسل آف ایگریکلچرل ریسرچ (آئی سی اے آر) کے ذریعہ تیار کردہ پھپھوندی کی پرجاتیوں کا ایک مائکروبیل کنسورشیم (دونوں مائع اور کیپسول کی شکلوں میں) پوسا  ڈیکمپوزر دھان کے بھوسے کے تیزی سے سڑنے کے لیے موثر پایا گیا ہے۔ سال 2021 کے دوران پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش اور دہلی کے این سی ٹی میں تقریباً 5.7 لاکھ ہیکٹر رقبے میں سڑنے والے کا استعمال کیا گیا ہے جو کہ تقریباً 3.5 ملین ٹن بھوسے کے انتظام کے برابر ہے۔ سیٹلائٹ امیجنگ اور مانیٹرنگ کے ذریعے دیکھا گیا کہ ڈکمپوزر اسپرے شدہ پلاٹوں کے 92 فیصد رقبے کو سڑن کے ذریعے کنٹرول کیا گیا ہے اور ان پلاٹوں میں صرف 8 فیصد رقبہ جلایاگیا ہے۔

آنے والے سیزن کے دوران دھان کے پرال کو جلانے پر موثر کنٹرول کے لیے، وزیر نے ہدایت دی کہ ریاستوں کو مائیکرو لیول پر ایک جامع ایکشن پلان تیار کرنا چاہیے، مشینوں کے موثر استعمال کو یقینی بنانے کے لیے ایک میکانزم قائم کرنا چاہیے، بائیو  ڈیکمپوزر کے استعمال کو فروغ دینا چاہیے۔ سی آر ایم مشینوں کے ساتھ اعزازی موڈ، بایوماس پر مبنی پاور پلانٹس، بائیو ایتھانول پلانٹس وغیرہ جیسے ملحقہ صنعتوں سے مانگ کی نقشہ سازی کے ذریعے بھوسے کے سابقہ ​​استعمال کو فروغ دینا اور الیکٹرانک/پرنٹ میڈیا، سوشل میڈیا کے ساتھ ساتھ کسان میلوں، پبلیکیشنز، سیمینارز، ایڈوائزریز کے ذریعے سخت مہمات کے ذریعے کسانوں میں بڑے پیمانے پر آگاہی کے لیے  آئی ای سی  سرگرمیاں شروع کرنا چاہئے۔ اس شعبے میں تمام اسٹیک ہولڈرز کو شامل کرناچاہئے۔ اگر ریاستی سطح پر تمام اقدامات ایک جامع انداز میں کیے جائیں تو آنے والے موسم کے دوران پرالی جلانے پر مؤثر طریقے سے قابو پایا جا سکتا ہے۔

*************

 

ش ح۔  ا ک۔ رض

 

U. No.10551



(Release ID: 1861450) Visitor Counter : 35


Read this release in: English , Hindi , Punjabi