نیتی آیوگ

نیتی آیوگ نےانصاف تک فوری رسائی کے لیے تنازعات کے آن لائن حل پر زور دیا

Posted On: 29 NOV 2021 6:18PM by PIB Delhi

نیتی آیوگ نے ​​آج تنازعات سے بچنے، روک تھام اور آن لائن حل کے بارے میں بتانے کے لئے  ‘ تنازعات کے حل کے مستقبل کا ڈیزائن: ہندوستان کے لیے  او ڈی آر پالیسی پلان’ رپورٹ جاری کی۔ رپورٹ میں بیان کردہ سفارشات کا  پیش کیا جانا  ہر فرد کے لیے انصاف تک موثر رسائی کے لیے آن لائن ڈسپیوٹ ریزولوشن(او ڈی آر) کے ذریعے ٹیکنالوجی اور اختراع کے استعمال میں ہندوستان کو عالمی رہنما بنانے میں مدد کر سکتا ہے۔

یہ رپورٹ 2020 میں نیتی آیوگ او ڈی آر کی طرف سے کووڈ بحران کے عروج کے دوران اور سپریم کورٹ کے جسٹس (ریٹائرڈ) اے کے سیکری کی سربراہی میں تشکیل دی گئی ایک کمیٹی کے ذریعہ بنائے گئے ایکشن پلان کا ثمرہ ہے۔

رپورٹ میں ہندوستان میں او ڈی آر فریم ورک کو اپنانے میں چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے تین سطحوں پر اقدامات کی سفارش کی گئی ہے۔ ساختی سطح پر، یہ ڈیجیٹل خواندگی کو بڑھانے، ڈیجیٹل انفراسٹرکچر تک رسائی کو بہتر بنانے اور او  ڈی آر خدمات کی فراہمی کے لیے پیشہ ور افراد کو غیر جانبدار ہونے کی تربیت دینے کے لیے اقدامات تجویز کرتا ہے۔ طور طریقے کی سطح پر، رپورٹ او ڈی آر کے اپنانے کی سفارش کرتی ہے، جس کا مقصد سرکاری محکموں اور وزارتوں سے متعلق تنازعات کا تصفیہ کرنا ہے۔ ریگولیٹری سطح پر، رپورٹ او ڈی آر پلیٹ فارمز اور خدمات کی  ضابطہ بندی کرنے کے لیے نرم رویہ اختیار کرنے کی سفارش کرتی ہے۔ اس میں ماحولیاتی نظام میں ترقی اور اختراعات کو فروغ دیتے ہوئے  او ڈی آر سروس فراہم کنندگان کو خود کو منظم کرنے میں رہنمائی کے لیے ڈیزائن اور اخلاقی اصول وضع کرنا شامل ہے۔ رپورٹ میں قوانین میں ضروری ترامیم متعارف کروا کر او ڈی آر کے لیے موجودہ قانون سازی کے فریم ورک کو مضبوط بنانے پر بھی زور دیا گیا ہے۔ رپورٹ، بھارت میں او ڈی آر کے لیے مرحلہ وار نفاذ کا فریم ورک پیش کرتی ہے۔

 

 او ڈی آر کیا ہے؟

او ڈی آر تنازعات کا حل ہے، خاص طور پر چھوٹے اور درمیانے درجے کے معاملات، ڈیجیٹل ٹیکنالوجی اور اے ڈی آر کی تکنیکوں کا استعمال کرتے ہوئے، جیسے ثالثی، مفاہمت اور ثالثی۔ عدالتی نظام تنازعات کے حل کے راستے کے طور پر اسے عوامی عدالتی نظام کی توسیع اور اس سے باہر دونوں طرح فراہم کیا جا سکتا ہے۔ دنیا بھر میں، تنازعات کے حل کے طریقہ کار کی صلاحیت، خاص طور پر ٹیکنالوجی کے ذریعے، کو تسلیم کیا جا رہا ہے۔ کووڈ-19 کی وجہ سے رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے او ڈی آر کو تیزی سے حکومت، کاروباری اداروں اور یہاں تک کہ عدالتی عمل میں بھی حوصلہ ملا ہے۔

ہمیں او ڈی آر کی ضرورت کیوں ہے؟

  کووڈ-19 وبائی بیماری کے نتیجے میں معاشرے کے ایک بڑے حصے کو انصاف تک بروقت رسائی حاصل نہیں ہو سکی۔ اس وبائی مرض نے تنازعات کے سیلاب کی وجہ سے پہلے سے طویل عدالتی عمل کو مزید بوجھل کر دیا۔ حکومت ہند کے اہم پالیسی تھنک ٹینک کے طور پر، نیتی آیوگ نے ان لوگوں کو سستا، موثر اور بروقت انصاف دلانے میں مدد کرنے کے لیے ٹیکنالوجی اور اختراع کا استعمال کرنے کے لیے ایک تبدیلی کا اقدام اٹھایا، جن کو اس کی سب سے زیادہ ضرورت ہے۔ اسے عدالت سے منسلک متبادل تنازعات کے حل (اے ڈی آر) مراکز میں ٹیکنالوجی کے انضمام کے ذریعے عدلیہ کی مدد کے لیے بھی  استعمال کیا جا سکتا ہے،  ای- لوک عدالت کے ذریعے اور داخلی تنازعات کے لیے سرکاری محکموں میں بھی متعارف کرایا جا سکتا ہے۔

20 شراکت داروں کی  بات چیت اور ایک ادارہ جاتی اور انفرادی سطح پر تقریباً 100  سرگرمیوں سمیت  وسیع غور و خوض، نیتی آیوگ کے ذریعے متعدد  شراکت داروں کے ساتھ منعقد کئے گئے۔ بات چیت کے دوران عوام سے رائے بھی طلب کی گئی۔

عدلیہ کے اراکین (موجودہ اور سپریم کورٹ کے سابق ججز)، اٹارنی جنرل، اعلیٰ سرکاری افسران، صنعت کے نمائندوں، تعلیمی اداروں اور سول سوسائٹی کی تنظیموں کے علاوہ دیگر ملکی اور بین الاقوامی قانونی اور ٹیکنالوجی ماہرین کے ساتھ مشاورت کی گئی۔

اس اقدام کے سلسلے میں  زبردست پیمانے پر اتفاق رائے تھا۔ درحقیقت، ان میں سے ایک بحث کے دوران، جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ، جو سپریم کورٹ کی ای-کمیٹی کے سربراہ ہیں، نے  اظہار رائے کیا:‘‘ہر عدالت کے سامنے آنے والی قانونی چارہ جوئی میں، بہت ہی اہم اور بہت چھوٹے نہیں، لیکن اہم تنازعات کا سنگم ہوتا ہے، جن کا عدالت کے سامنے آنا ضروری نہیں ہوتا ہے۔ موٹر ایکسیڈنٹ کے دعوے، چیک باؤنس ہونے کے کیسز، ذاتی چوٹ کے دعوے اور اس جیسے مسائل جن سے کہ او ڈی آر کے ذریعے نمٹا جا سکتا ہے۔ نیتی آیوگ کی طرف سے او ڈی آر کی پہل قابل ستائش ہے اور مسودہ رپورٹ کو احتیاط سے مرتب کیا گیا ہے۔ یہ تنازعات کے حل اور ٹیکنالوجی اور ہندوستان میں اس کے امکانات کے درمیان انٹرفیس کا ایک منفرد تجزیہ ہے۔

کمیٹی کے ارکان میں سی ای او، نیتی آیوگ؛ سیکرٹری، قانونی امور کا محکمہ؛ سیکرٹری، محکمہ انصاف؛ سکریٹری، مائیکرو، سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز کی وزارت؛ سکریٹری، محکمہ امور صارفین، سیکریٹری، صنعت اور داخلی تجارت کے فروغ کے لیے محکمہ اور سیکریٹری، کارپوریٹ امور کا محکمہ شامل تھے۔ رپورٹ ایک باہمی اور جامع مشق کا نتیجہ ہے، اور اسے  بڑے پیمانے پر او ڈی آر کو نافذ کرنے میں ہندوستان کو عالمی رہنما بنانے کے لئے ایک طویل مدتی منصوبے کے نقطہ آغاز کے طور پر کام کرنا چاہیے۔

تنازعات کے حل کے مستقبل کی ڈیزائننگ: ہندوستان کے لیے او ڈی آر پالیسی پلان جسٹس (ریٹائرڈ) اے کے سیکری، نیتی آیوگ کے وی سی ڈاکٹر راجیو کمار، ممبران پروفیسر رمیش چند، ڈاکٹر وی کے سرسوات اور ڈاکٹر وی کے پال، سی ای او امیتابھ کانت سکریٹری (قانون) اے کے مینڈیرٹا، اور نیتی آیوگ کے دیگر سینئر عہدیدار کی موجودگی میں جاری کیا گیا۔

رپورٹ کے اجراء پر، جسٹس (ریٹائرڈ) اے کے سیکری نے  اظہار خیال کیا: ‘‘او ڈی آر ایک آئیڈیا ہے جس پر عمل آوری کا وقت آگیا ہے، میں صحیح وقت پر اس ماہر کمیٹی کو قائم کرنے کے نیتی آیوگ کے اقدام کی تعریف کرتا ہوں۔  یہ رپورٹ ، جس میں عدلیہ اور ایگزیکٹو سمیت تمام شراکت دار شامل ہیں، اہم اور اثر انگیز  ثابت ہو گی۔

نیتی آیوگ کے وی سی ڈاکٹر راجیو کمار نے کہا،  نیتی آیوگ نے ​​بڑے پیمانے پر ایسے اقدامات پر کام کیا ہے جو انصاف کے حصول کے لیے ہر اس شخص کی کارکردگی اور رسائی کو بڑھانے میں مدد کر سکتے ہیں، جس کو ان کی ضرورت ہو۔  او ڈی آر تنازعات کو حل کرنے میں بہت آگے جائے گا اور رپورٹ کو تیزی سے لاگو کرنے کی ضرورت ہے۔

نیتی آیوگ کے سی ای او امیتابھ کانت نے مزید کہا، ‘‘ او ڈی آر رپورٹ کے ذریعے، ہمارا مقصد ایک پائیدار فریم ورک بنانا ہے- جو وقت کی آزمائش کو اپناتا اور برداشت کرتا ہے تاکہ کئی قسم کے دعووں کے لیے متحرک انداز میں پہلا سہارا بن سکے۔’’

سکریٹری (قانون) انوپ کمار میندیرتا نے کہا، ‘‘میں نیتی آیوگ کو اس رپورٹ کے سامنے  لانے پر مبارکباد دیتا ہوں، جس سے ہندوستان میں تنازعات کے حل کے منظر نامے کو تبدیل کرنے میں مدد ملے گی۔ او ڈی آر میکانزم کو مضبوط بنانے کے اقدامات پہلے ہی شروع کیے جا چکے ہیں۔’’

رپورٹ یہاں پڑھیں۔

****************

(ش ح۔ س ب  ۔ رض)

U NO:13488



(Release ID: 1776412) Visitor Counter : 206


Read this release in: English , Hindi , Punjabi