وزارت آیوش

آیوش آہار کو ملک بھر میں فروغ دیا جائے: جناب سربانند سونووال

آیوش وزیر نے نئی دہلی میں ریسرچ کونسلوں کے کیمپس کا دورہ کیا

Posted On: 18 SEP 2021 5:55PM by PIB Delhi

نئی دہلی، 18 ستمبر 2021:

آیوش اور بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں کے مرکزی وزیر جناب سربانند سونووال نے آج کہا کہ وزارت کو ملک بھر میں آیوش آہار کو فروغ دینا چاہیے۔ اس سے نوجوانوں کو جنک فوڈ کی بیماریوں سے بچانے میں بھی مدد ملے گی۔ جناب سونووال نے نئی دہلی کے جنکپوری میں سینٹرل کونسلز کامن بلڈنگ کمپلیکس کا دورہ کیاجہاں انھوں نے کیمپس میں واقع وزارت کے تحت پانچوں ریسرچ کونسلوں اور دو قومی کمیشنوں کے عہدیداروں اور سائنسدانوں سے بات چیت کی۔

ملحوظ رہے کہ آیوش کی وزارت آیوش پر مبنی غذا اور طرز زندگی کو فروغ دے رہی ہے اور'سپوشت بھارت' کے مقصد کو پورا کرنے کے لیے پوشن مہم میں خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہے۔ فوڈ سیفٹی اینڈ اسٹینڈرڈز اتھارٹی آف انڈیا (ایف ایس ایس اے آئی) نے آیوش کی وزارت کے اشتراک سے آیوش آہار کے بارے میں ایک مسودہ رہ نما خطوط بھی جاری کیا ہے جس سے معیاری آیوش پر مبنی غذا کی فراہمی میں آسانی ہوگی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001HHUG.jpg

ریسرچ کونسلز، سینٹرل کونسل آف آیورویدک سائنس ریسرچ (سی سی آر اے ایس)، سینٹرل کونسل فار ریسرچ ان یوگا اینڈ نیچروپیتھی (سی سی آر ای این)،سینٹرل کونسل فار ریسرچ ان یونی میڈیسن (سی سی آر یو ایم) اور ہومیوپیتھی (سی سی آر ایچ) میں سینٹرل ریسرچ کونسل کا ہیڈ کوارٹر بھون میں ہے۔ جب کہ سدھا میں سینٹرل کونسل فار ریسرچ (سی سی آر ایس) کا عمارت کے احاطے میں سیٹلائٹ آفس ہے۔ اس کے علاوہ حال ہی میں تشکیل دیا گیا نیشنل کمیشن فار انڈین سسٹم آف میڈیسن (این سی آئی ایس ایم) اور نیشنل کمیشن فار ہومیوپیتھی (این سی ایچ) کے دفاتر عمارت کے احاطے میں ہیں۔ مرکزی وزیر کا آج تحقیقی کونسلوں اور قومی کمیشنوں کا پہلا دورہ ہوا۔

حکام اور سائنسدانوں کے ساتھ مکالمے کے اجلاس میں جناب سونووال نے زمینی سطح پر لوگوں کی شرکت پر زور دیا۔ انھوں نے یہ بھی کہا کہ موثر تبدیلی لانے کے لیے ٹیم کے جذبے اور محنت کی ضرورت ہے۔ سائنسدانوں، پروفیسروں، ڈاکٹروں، تکنیکی ماہرین سمیت خطے کے لوگوں کی محنت کے نتائج کی ملک بھر اور دنیا بھر میں تشہیر کی ضرورت ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ آیوش کے فروغ کے لیے کونسلوں، کمیشنوں کے سینئر افسران کے تجربے اور مہارت کو استعمال کرنے کی ضرورت ہے۔

بات چیت کے دوران آیوش کے سکریٹری ویدیا راجیش کوٹیچا نے دو چیزوں پر زور دیا۔ انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ میرٹ کی تشکیل تمام کونسلوں کی ترجیح ہونی چاہیے اور "ہماری تحقیقی کونسلوں کو ان کونسلوں سے وابستہ مختلف اکائیوں کو جدت لانے کے لیے مزید آزادی دینے کے طریقے تیار کرنےچاہئیں "۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002T9TA.jpg 

جناب سونووال نے کتاب'منتخب رسکلپا کا معیار اور تحفظ - دھات اور معدنیات پر مبنی آیورویدک فارمولیشن، جلد: 6' بھی جاری کی۔ یہ کتاب مختلف اداروں میں کی جانے والی ٹرائیوانگا راکھ (ٹین، سیسہ اور زنک کا کیلیسیلینڈ مرکب) پر معیاری طریقہ کار، کیمیائی تجزیہ اور پری کلینیکل سیفٹی/زہر کے مطالعے سے متعلق ہے۔ انھوں نے این سی آئی ایس ایم پورٹل کا بھی آغاز کیا جسے 'آزادی کے امرت مہوتسو' مہم کے تحت سرگرمیوں اور پروگراموں کی تفصیلات اکٹھا کرنے کے لیے استعمال کیا جائے گا۔ یہ پورٹل ملک بھر میں 75,000 تعلیمی اداروں کو جوڑ رہا ہے۔

جناب سربانند سونووال نے سی سی آر اے ایس کے ایتھانو میڈیکو بوٹینیکل ڈویژن کا بھی دورہ کیا۔ جہاں انھوں نے باقاعدہ کام سے لے کر مخصوص تحقیقی سرگرمیوں تک کے امور پر سائنسدانوں سے تفصیلی بات چیت کی۔ انھوں نے قبائلی فلاح و بہبود کے لیے کونسل کی کوششوں کو سراہا۔ انھوں نے یہ بھی ہدایت کی کہ قبائلی برادریوں کی مقامی صحت کی روایات کو سمجھنے کے لیے مزید کوششیں کی جاسکتی ہیں۔ جو صحت کی جدید سہولیات استعمال کیے بغیر اچھی صحت برقرار رکھتے ہیں۔

اس کے علاوہ انھوں نے سی سی آر یو ایم لائبریری کا دورہ کیا اور انھیں تقریباً 200 مخطوطات اور 17,000 سائنسی دستاویزات کے ایک بڑے مجموعے کے بارے میں بتایا گیا۔ انھیں سی سی آر یو ایم کی سائنسی سرگرمیوں اور اشاعتوں کے بارے میں بھی بتایا گیا۔ جناب سربانند سونووال نے بھی کونسل کی تحقیقی اشاعتوں میں گہری دل چسپی ظاہر کی۔ سی سی آر اے ایس کے دفاتر کے دورے کے دوران انھوں نے کونسل کے مختلف ڈویژنوں کا معائنہ کیا اور ڈویژنوں کے سربراہوں اور عملے کے اراکین سے بات چیت کی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003V2Y2.jpg

این آئی ایس ایم کے چیئرمین ویدیہ جینت دیوپجاری نے انھیں بتایا کہ کمیشن کا موجودہ زور دو امور پر ہے، ایک میرٹ پر مبنی کورسز تیار کرنا اور دوسرا آیوش تعلیمی اداروں کی درجہ بندی اور اجازت۔ انھوں نے مزید کہا کہ کمیشن این سی آئی ایس ایم کے قومی اندراج میں 3 لاکھ سے زائد آیوش ڈاکٹروں کو شامل کرنے کی کوشش کر رہا ہے جہاں 10 ریاستوں کے تقریباً 28 ہزار ڈاکٹروں کو پہلے ہی شامل کیا جا چکا ہے۔

****

U. No. 9145

(ش ح۔ ع ا۔ ع ر)

 

 



(Release ID: 1756180) Visitor Counter : 32


Read this release in: English , Hindi , Punjabi